News
3/28/2019
Muslim Deeni Mahaz (MDM) has expressed grave concern over the deteriorating health condition of its incarcerated Ameer Dr Muhammad Qasim who is lodged at Udhampur Jail. Spokesperson of MDM in a statement said that Dr Qasim is suffering from acute Glaucoma and L4 L5 Disc problem and in absence of any medical treatmen More
Appealed to all the Muslims to pray for the wellbeing of the incarcerated visionary leader Dr. Muhammad Qasim of Kashmiri resistance.
3/28/2019
Muslim Deeni Mahaz (MDM) has expressed grave concern over the deteriorating health condition of its incarcerated Ameer Dr Muhammad Qasim who is lodged at Udhampur Jail. Spokesperson of MDM in a statement said that Dr Qasim is suffering from acute Glaucoma and L4 L5 Disc problem and in absence of any medical treatment, his condition has deteriorated considerably. Recently the family members of Dr Qasim visited him in the Udhampur jail and were taken aback by his worsening health condition. He has developed acute gastroenterologie problem and was bed ridden last ten days. There is no medical doctor available in jail premises and he is not being taken for a medical checkup as well. The spokesperson said that Dr Qasim is being subjected to political vendetta due to his non-compromising political stand. The spokesperson added that Dr Qasim was shifted from Srinagar Central Jail on the pretext of a medical check-up despite clear court orders that he should not be shifted from there. His shifting was against the standing instructions of Supreme Court of India which has clearly laid out that a life prisoner should be lodged at a jail nearest to his home. In Udhampur Jail Dr Qasim has been denied medical treatment that has resulted in the worsening of his health condition. He is being held in solitary confinement and even the inmates are not even allowed to meet him. According to the spokesperson after serving 26 years of imprisonment, the way forward should have been to release him but the Indian government and its local stooges have shredded every word in the book of law in his case. The spokesperson appealed the world community and the human rights organisations to look into the case of Dr Qasim and act against the way a man is being held incarcerated for his political ideology. The spokesperon appealed all the Muslims to pray for the wellbeing of the incarcerated visionary leader of Kashmiri resistance.

X
5/24/2018
Muslim Deeni Mahaz has expressed grave concern over the deteriorating health condition of its incarcerated ameer Dr Muhammad Qasim who is presently lodged at Udhampur Jail. The continuous detention of chairperson Dukhtaran e Millat Syedah Aseyah Andrabi along with her companions was also condemned The spokesperso More
Muslim Deeni Mahaz has expressed grave concern over the deteriorating health condition of its incarcerated ameer Dr Muhammad Qasim.
5/24/2018
Muslim Deeni Mahaz has expressed grave concern over the deteriorating health condition of its incarcerated ameer Dr Muhammad Qasim who is presently lodged at Udhampur Jail. The continuous detention of chairperson Dukhtaran e Millat Syedah Aseyah Andrabi along with her companions was also condemned The spokesperson of MDM said that Dr Qasim is suffering from acute Glucoma and L4L5 Disc problem and in absense of any medical treatment his condition has deteriorated considerably. The spokesperson said that Dr Qasim is being subjected to political Vendetta due to his non compromising political stand and was transferred to Udhampur Jail to make him suffer further. The spokesperson said that his shifting was against the standing instructions of supreme court of India which has clearly laid out that a life prisoner should be lodged at a jail nearest to his home. In Udhampur Jail, he has been denied any kind of medical treatment that has resulted in the worsening of his medical conditions. He further added that even after being bailed out by the court the chairperson of Dukhtaran e Millat Syedah Aseyah Andrabi along with general secretary Nahida Nasreen and personal secretary Fehmeeda Sofi is being held at Rambagh Police station. He said that it is the height of highhandedness that women folk are being held prisoners for the past month despite being bailed out by the court. The spokesperson appealed the world community and the human rights organisation to look into the case of Dr Qasim and Asiyeh Andrabi to realise and act against the way a family is being held incarcerated for its political ideology. Through Spokesperson Muslim Deeni Mahaz

X
4/14/2018
Muslim Deeni Mahaz has termed the recent developments in the Asifa rape and murder case and the blood bath of youth in kashmir as an eye opener for the people who still host any hopes on the Indian Nation. The spokesperson said that the occupational army is going berserk and unarmed civilians are being killed More
The recent developments in the Asifa rape and murder case and the blood bath of youth in kashmir as an eye opener for the people who still host any hopes on the Indian Nation.
4/14/2018
Muslim Deeni Mahaz has termed the recent developments in the Asifa rape and murder case and the blood bath of youth in kashmir as an eye opener for the people who still host any hopes on the Indian Nation. The spokesperson said that the occupational army is going berserk and unarmed civilians are being killed on pretext of encounters. Recently in Kulgam, the mujahideen managed to escape and the army vented their frustration on unarmed civilians killing 4 youth. All this is being done because the Indian army treats every kashmiri as an enemy and a potential target to kill. Moreover the occupational army has given an open hand to do whatsoever in Kashmir without any sense of responsibility or remorse. The spokesperson said that the initial approach adopted by Indian majority and its local stooges in the Asifa rape and murder case is reflective of the hatred that they hold for muslims in their heart. Whatever action is being taken now by the government is due to world pressure otherwise they were just laughing off the tyranny executed on an 8 year old child. The spokesperson appealed the muslims in Jammu and Kashmir to ponder over these issues and realise what kind of a tyrannical occupation we are up against. Need of the hour is that we remain steadfast and fight this occupation while putting our trust in Almighty Allah. It is only through the Help of Allah that we can achieve the cherished goal of Freedom from the Brahmanical occupation. Meanwhile Muslim Deeni Mahaz also condemned the illegal arrest of a party delegation of Dukhtaran-e-Millat by the Task Force at Pinglana, while they were on way to Pulwama to express sympathies and solidarity with the family members of Shaheed Mussavir Ahmad Wani. Through spokes person Muslim Deeni Mahaz

X
3/5/2018
Paying glowing tributes to youth slain in shopian, General Secretary MDM, Muhammad Maqbool Bhat said that the youth are sacrificing their precious lives for a greater cause to serve nation and we are duty bound to carry their mission to its logical conclusion”. Blaming India’s “haughty and stubborn” approach fo More
Paying glowing tributes to youth slain in shopian, General Secretary MDM, Muhammad Maqbool Bhat.
3/5/2018
Paying glowing tributes to youth slain in shopian, General Secretary MDM, Muhammad Maqbool Bhat said that the youth are sacrificing their precious lives for a greater cause to serve nation and we are duty bound to carry their mission to its logical conclusion”. Blaming India’s “haughty and stubborn” approach for continuous bloodshed in state, Muhammad Maqbool Bhat said: “We are a peaceful nation and frequent killing of our youth, is a matter of serious concern to us.” Muhammad Maqbool Bhat said that decades have passed since the Kashmir's illegal occupation by India but the dispute remains unresolved and while stressing its resolution through right to self-determination, added that India and international community has accepted its disputed nature. We have sacrificed more than 6 lakh souls for its resolution and even now youth are laying their lives for its settlement, said Maqbool . Meanwhile A delegation of MDM led by Shakeel Khalid visited Shopian to express solidarity with the relatives of the martyrs .

X
3/4/2018
MDM has strongly condemned the shifting of Dr. Muhammad Qasim to Udhampur Jail and termed it as a well sorted conspiracy to kill the ailing leader. General Secretary MDM, Muhammad Maqbool Bhat said that the ailing leader was taken for a health checkup on 3rd march 2018 and instead of being brought back to centra More
MDM has strongly condemned the shifting of Dr. Muhammad Qasim to Udhampur Jail.
3/4/2018
MDM has strongly condemned the shifting of Dr. Muhammad Qasim to Udhampur Jail and termed it as a well sorted conspiracy to kill the ailing leader. General Secretary MDM, Muhammad Maqbool Bhat said that the ailing leader was taken for a health checkup on 3rd march 2018 and instead of being brought back to central jail he was shifted to Udhampur. It is blatant deception, even as, the court had clearly directed the Jail Authorities to lodge him at Central jail. Maqbool said that the Transfer of Dr Qasim is against the supreme court rulings as well as the apex court has already judged that an incarcerated person should be held at a detention facility nearest to his home. The general secretary added that Dr sahab is already facing a lot of ailments like Glaucoma, L4, L5 Disc problem and we doubt whether proper healthcare would be provided to him in udhampur jail. He said the incarceration of Dr Qasim is a political vendetta against him and now shifting him away from his family shows that the Government and administration is hell bent to rake up difficulties on him to satisfy their ego. The proper way forward would have been to follow the law in his case and release him as he has completed 25 years in jail but the indian government and its local stooges have shredded every word of the book of law in Dr sahab's case. He appealed the world community to look into the case of Dr Qasim and see how a man is being subject to political vendetta because of the ideology he holds. Through Spokesperson Muslim Deeni Mahaz

X
2/6/2018
Since 1931 Dr Muhammad Qasim is the only prisoner to have completed 25 years in prison and he has authored 20 books during this period, which includes Tafseer Ahsan ul Hadith and The Status of Sunnah. The release of Dr Muhammad Qasim was advocated by the Review board but the the government declined to accept the r More
Dr Muhammad Qasim is the only prisoner to have completed 25 years in prison.
2/6/2018
Since 1931 Dr Muhammad Qasim is the only prisoner to have completed 25 years in prison and he has authored 20 books during this period, which includes Tafseer Ahsan ul Hadith and The Status of Sunnah. The release of Dr Muhammad Qasim was advocated by the Review board but the the government declined to accept the recommendations. According to the Jammu and Kashmir jail manual Dr Qasim was to be released after 20 years but again government declined to follow the manual. The council of Dr Qasim Advocate Miya Abdul Qayoom represented before the court that jail manual must be followed in Dr Qasim's case . The first hearing was held on 11th Dec 2017 and the next hearing is scheduled for 19th February 2018. If the court gives a favorable decision it would open the chances of release for the other life prisoners who have completed 20 years of imprisonment. MDM organised this protest to express solidarity with its Ameer Dr Muhammad Qasim and other prisoners. We salute the steadfastness and the contribution of Dr Muhammad Qasim and feel that he is being subjected to political Vendetta.

1931 عہ سے آجتک سیاسی اسیروں کی تاریک میں ڈاکٹر محمد قاسم ایسے پہلے اسیر ہے جنہوں نے 25 سال کی اسیری مکمل کی ہے اور اس اسیری کی ایام میں 20 سے زائد کتابیں تالیف کی ہے جسمیں تفسیر احسن الحدیث اور The status of sunnah جیسی مشہور تالیفات بھی شامل ہے ڈاکٹر محمد قاسم کو چودہ سال کی اسیری مکمل کرنے پر ریاستی Review board نے رہائی کی سفارش کی تھی مگر حکومت نے ان سفارشات کو قبول کرنے سے انکار کردیا پهر بیس سال کی اسیری پر انکو رہا کیا جانا تها کیونکہ جمو ں کشمیر جیل مینو ل میں عمر قید کی مدت 20 سال بنائی گئی ہے مگر حکومت نے جیل مینول پر عمل کرنے سے انکار کردیا ڈاکٹر محمد قاسم کے وکیل جناب میاں عبدل قیوم صاحب نے ان کی طرف سے ریاستی عدالت عالیہ میں درخواست دی ہے جس میں عدالت عالیہ سے گزارش کی گئی ہے کہ وہ ریاستی حکومت کو ڈاکٹر محمد قاسم کے متعلق ریاست کے جیل مینول پر عمل کرنے کی ہدایت جاری کریں اس کیس کی شنوائی 11 دسمبر 2017 کو ہوئ ہے اور اگلی شنوائی 19 فروری 2018 کو مقرر ہو ئی ہے اگر عدالت عالیہ حکومت کو انکے بارے میں جیل مینول پر عمل کرنے کی ہدایت دیتی ہے تو اسے ان سیاسی عمر قیدیوں کی رہائی کی صورت بهی پیدا ہوتی جنہوں نے جیل میں 20 سال کی اسیری مکمل کی ہے مسلم دینی محاز آج اپنے قائد محترم ڈاکٹر محمد قاسم صاحب اور دوسرے تمام اسیران کے ساتھ یکجہتی کیلئے اور خراج تحسین پیش کرنے کیلئے اس درنے کا اہتمام کرتی ہے ہم اسیر حریت ڈاکٹر محمد قاسم کی استقامت جیل میں انکی عملی خدمت اور نہ بکنے والی اور نہ جگنے والے کردار کو سلام پیش کرتے ہے واضح رہے اسیر حریت ڈاکٹر محمد قاسم صاحب بدترین سیاسی انتقام گیری کا شکار کیے جارہےہیں
X
2/4/2018
Respected Dear… We want to bring into your kind notice the following facts to clear some misinformation’s about the imprisonment of Dr Muhammad Qasim Faktoo, and hope you will communicate to us if any further clarification is required. Indian government and Indian media is vigorously propagating against D More
Facts about the imprisonment of Dr Muhammad Qasim Faktoo.
2/4/2018
Respected Dear… We want to bring into your kind notice the following facts to clear some misinformation’s about the imprisonment of Dr Muhammad Qasim Faktoo, and hope you will communicate to us if any further clarification is required. Indian government and Indian media is vigorously propagating against Dr Muhammad Qasim from last many years and is presenting him as a militant responsible for killing of “Human Rights Activist” and bigot. These are two main objectives Indian government want to achieve by this nefarious propaganda. a) To Justify Dr Qasim’s incarceration of 25 years, and mislead world community in general and organisations and institutions working for political prisoners in particular about his imprisonment and status. b) To belittle his academic, religious and mundane services as a scholar in prison, besides being an author/editor of more than twenty books on various subjects .More than hundred prisoners have completed their graduation and post-graduation through IGNOU under his supervision. Some important facts about his imprisonment: a) When Dr Muhammad Qasim was arrested in February 1993 with his wife and infant son, he was booked under so-called Public Safety Act and there is no mention of FIR about any killing in detention grounds. (See book The Crito Page 27) b) In the month of June 1993, he was asked to sign some papers by BSF, IB and CBI officials in notorious Interrogation Center (jIC) of Kashmir latterly presented as so-called confessional statement before the TADA court Jammu. (See “Truth About My Confession”, “The Crito” Page 69). c) As it was no evidence, no proof and no witness turned up against accused, TADA court Jammu acquitted Dr Muhammad Qasim and his two colleagues in July 2001. (For full judgment see “The Crito, Page 31). d) In January 2002 Dr Muhammad Qasim was booked under so-called PSA and was taken to Talab Tillo Interrogation Center Jammu where intelligence officials tried their best to motivate him to contest state assembly elections of 2002. On his blunt refusal he was shifted to Kot Balwal jail Jammu, while being under detention, government after challenging their acquittal by TADA court Jammu got him and his two colleagues sentenced for life imprisonment by the Supreme Court of India in January 2003. e) The Supreme Court of India while sentencing him for life imprisonment admitted this fact that, this case is solely based on confessional statement. (See “The Crito”, page 60). Conclusion Even if we accept this government propaganda that, Dr Muhammad Qasim is in jail because he has been declared guilty and sentenced for life imprisonment by the Supreme Court of India, is this not an established government practice in India and Jammu and Kashmir that authorities used to release lifers on their completion of 14 years, on Indian independence and republic days? Why Dr Muhammad Qasim is in jail even after completion of 25 years? That too when state review board has recommended his release in June 2008 on his completion of 14 years in prison? Keeping all these recorded facts into account, this fact emerges as crystal clear truth that, Dr Muhammad Qasim is not suffering incarceration because he has been involved in any killing case or he has been sentenced by the Supreme Court of India, but purely because of his political beliefs that are unacceptable to Indian government and their stooges here in Kashmir. And by this nefarious propaganda Indian government through its biased media not only want to justify his incarceration, belittle his academic, religious and mundane services as a scholar in prison but also want to damage his spiritual and political reputation. (Note: The book “The Crito” is available on Muslim Deeni Mahaz website http://muslimdeenimahaz.com).

ڈاکٹر محمد قاسم کی اسارت کے 25سال مکمل ہوگئے ہیں دوران اسیری انہوں نے 20سے زائد کتابیں اسلام ، سیاست اور کشمیر پر تالیف کیں۔ معروف حریت پسند رہنما اور اسلامی اسکالر ڈاکٹر محمد قاسم نے اسیری کے 25سال مکمل کرلئے ہیں۔ 5فروری 1993ءکو ان کو اہلیہ آسیہ اندرابی اور چھ ماہ کے فرزند کے ساتھ سرینگر ائیرپورٹ پر گر فتار کیا گیا۔ مارچ 1999ءمیں جموں کی ٹاڈا عدالت نے اُن کوضمانت پر رہائی کے احکامات جاری کئے وہ 11ماہ تک ضمانت پر رہے جس دوران انہوں نے WAMYکی دعوت پر سعودی عرب اور پاکستان کا دورہ کیا اور مسلم پارلیمینٹ کی دعوت پر برطانیہ میں کشمیر کانفرنس میں شرکت کی، برطانیہ سے واپسی پر فروری2000 ءمیں اُن کو دہلی کے اندر گاندھی انٹرنیشنل ائیرپورٹ پر گرفتار کیا گیا۔ جو لائی2001 ءمیں جموں کی ٹاڈا عدالت نے اُن کو دو ساتھوں سمیت با عزت رہا کر دیا مگر5 ماہ بعد ہی جنوری 2002میں ان کو دوبارہ PSAکے تحت گرفتار کرکے کورٹ بلوال جیل بھیج دیا گیا۔ اور دوران اسیری ہی اُن کو دوساتھوں کے ساتھ بھارت کی عدالت عظمٰی نے عمر قید کی سزا سنائی۔ 1931 ءسے آج تک سیاسی اسیروں کی تاریخ میں ڈاکٹر محمد قاسم پہلے ایسے اسیر ہیں جنہوں نے 25سال کی اسیری مکمل کی ہے اور اس اسیری میں 20سے زائد کتابیں تالیف کی ہیں جسمیں”تفسیراحسن الحدیث“اور ”The Status of Sunnah“ جیسی مشہور تالیفات بھی شامل ہیں۔ ڈاکٹر محمد قاسم کو 14سال کی اسیری مکمل کرنے پر ریاستی Review Boardنے رہائی کی سفارش کی تھی مگر حکومت نے ان سفارشات کو قبول کرنے سے انکار کردیا۔ پھر 20سال کی اسیری پر اُن کو رہا کیا جانا تھا کیونکہ جموں کشمیر ’Jail Manual‘میں عمرقید کی مدت 20سال بنائی گئی ہے مگر حکومت نے جیل مینول پر عمل کرنے سے انکار کردیا۔ ڈاکٹر محمد قاسم کے وکیل جناب میاں عبدالقیوم نے ان کی طرف سے ریاستی عدالت عالیہ میں درخواست دی ہے جسمیں عدالت عالیہ سے گذارش کی گئی ہے کہ وہ ریاستی حکومت کو ڈاکٹر محمد قاسم کے متعلق ریاست کے جیل مینول پر عمل کرنے کی ہدایت جاری کرے۔ اس کیس کی ثنوائی 11دسمبر 2017کو ہوئی ہے اور آخری ثنوائی 19فروری 2018کو مقرر ہوئی ہے۔ اگر عدالت عالیہ حکومت کو ان کے بارے میں جیل مینول پر عمل کرنے کی ہدایت دیتی ہے تو اس سے ان سیاسی عمرقیدیوں کی رہائی کی صورت بھی پیدا ہوگی جنہوں نے جیل میں20 سال کی اسیری مکمل کرلی ہے۔
X
1/29/2018
The ties between indian rulers and bollywood are well known and it’s this relationship indian rulers have scripted role for pro indian political parties in kashmir also. According to which NC is entrusted the killing of Kashmiri muslims for 6 years and serves the Indian interests. During this time PDP has role of More
The ties between indian rulers and bollywood are well known and it’s this relationship indian rulers have scripted role for pro indian political parties in kashmir also.
1/29/2018 12:00:00 AM
The ties between indian rulers and bollywood are well known and it’s this relationship indian rulers have scripted role for pro indian political parties in kashmir also. According to which NC is entrusted the killing of Kashmiri muslims for 6 years and serves the Indian interests. During this time PDP has role of a vociferous protestor. Then for the next 6 years PDP has been entrusted the massacre of the Kashmiri muslims and NC has to make hue and cry over it. For this political acting, both the Sheikh Family and the Mufti Family is allowed to do whatever the favours they can manage for their families and allowed to plunder the resources of the state. Being in power the real tyrannical face of these parties and in opposition there hypocritical face becomes visible. For NC autonomy means monopoly of their party rule and for PDP self-rule means rule of the Mufti Family. When they are in power they condemn the killing of Indian forces at the hands of militants and when they are in opposition they raise hue and cry over the killing of Kashmiris by Indian forces. Pro freedom leadership and muslims of kashmir should understand the fact that pro Indian political parties have just one agenda i.e. maintaining Indian political writ over Kashmir. From 1990 to 1994 when there were no pro Indian political parties in jammu and kashmir, Delhi was thinking of leaving kashmir and saving jammu and then former Prime Minister Rajiv Gandhi had admitted this fact and said that Kashmir is slipping from our hands. These pro India parties are responsible for every misery and tyranny we are facing. If not for these political entities India would not be able to exercise its writ in Kashmir through forces only. The pro India parties are preparing ground to settle Indian people here by killing the Kashmiri people. Since their first and last motive is attaining power therefore even daily massacres here don’t bother them at all. Dr. Muhammad Qasim. Ameer Muslim Deeni Mahaz. Through Spokes Person. Rambagh Srinagar.

بھارتی حکمرانوں اور بالی ووڈ (Boollywood) کے درمیان گہرے تعلقات ہیں اسی وجہ سے بھارتی حکمرانوںنے جموں کشمیر کی بھارت نواز سیاسی جماعتوں کے لئے بھی ایک اسکرپٹ (Script) تیار کیا ہے جسمیں 6سال کے لئے نیشنل کانفرنس کی قیادت میںیہاں مسلمانوں کا قتل عام کیا جاتا ہے اور کشمیر کے متعلق بھارت کے سامراجی عزائم کی تعمیل ہوتی ہے اور PDP کو ان چھ سالوں میں احتجاج کی اداکاری کا رول دیا جاتا ہے پھر 6سال کے لئے PDP کی قیادت میں مسلمانوں کا قتل عام کیا جاتا ہے نوجوان نسل کو اندھا بنایا جاتا ہے اور اس دوران نیشنل کانفرنس احتجاج کی اداکاری کرتی ہے۔ اس بھارت کیطرف سے متعین رول کے عوض ان دونوں ، شیخ اور مفتی خاندانوں کو اپنے اپنے خاندانوں کو آباد کرنے اور بھارتی خزانوں کولوٹنے کی کھلی چھوٹ دی جاتی ہے۔ اقتدار میں ان دونوں جماعتوں کا ظالمانہ اور اپوزیشن میں منافقانہ چہرہ سامنے آتا ہے۔ نیشنل کانفرنس کے لئے اٹانومی کے معنی NC کے لئے اقتدار کی اجارہ واری (Monopoly) ہے اور PDP کے لئے خود حکمرانوں کے معنی مفتی خاندان کی حکمرانی (Family Rule) ہے۔ جب یہ اقتدارمیں ہوں تو بھارتی افواج اور پولیس اہلکاروں کے عسکریت پسندوں کے ہاتھوں مارے جانے کی مذمت کرتے ہیں اور جب اپوزیشن میں ہوتے تو بھارتی افواج اور پولیس کے ہاتھوں کشمیری مسلمانوں کے مارے جانے کی مذمت کرتے ہیں۔ حریت پسند قیادت اور ملت اسلامیہ کشمیر یہ بات اچھی طرح جان لیں جب تک بھارت نواز سیاسی جماعتوں کے ذریعے کشمیر میں بھارت کی Political Writ قائم ہے، بھارت کو کشمیر چھوڑنے پر مجبور نہیں کیا جاسکتا ہے۔ 1990سے 1994 جب یہاں بھارت نواز سیاسی جماعتیں نہیں تھیں تو دہلی میں کشمیر چھوڑ کر جموں بچانے کے مشورے ہوتے تھے اور سابق وزیر اعظم ہندراجیوگاندھی نے یہ بات اعلاناً کہی” کشمیر ہمارے ہاتھوں سے نکل رہا ہے“۔ بھارت نواز سیاسی جماعتیں ہی کشمیریوں کے تمام مصاتب کے لئے ذمہ دار ہیں۔ یہ جماعتیں نہ ہوں تو بھارت کشمیر جیسے حساس خطّہ پر صرف افواج کی بنیاد پر اپنا قبضہ جاری نہیں رکھ سکتا ہے۔ کشمیر کی بھارت نواز سیاسی جماعتیں اقتدار حاصل کرنے کے لئے کشمیر میں مسلمانوں کا قتل عام کرکے بھارتی باشندوں کو جموں کشمیر میں بسانے کے لئے تیار ہیں۔ چونکہ ان بھارت نواز سیاسی جماعتوں کا پہلا اور آخری مقصد اقتدار کا حصول ہے، اس لئے آئے دن کشمیر ی مسلمانوں کے قتل عام سے بھی ان کی مردہ زمیرنہیں جاگ سکتی۔ ڈاکٹر محمد قاسم (امیر) مسلم دینی محاذ بزریعہ ترجمان ۔بمقام رامباغ سرینگر کشمیر
X
1/15/2018
Pro india political parties in jammu and kashmir have been allowed nepotism and corruption by the indian rulers. Till date no scandals have been unearthed against them nor they have been ever made accountable for their corruption. The indian media also turns a blind eye towards their nepotism and corruption. It is More
Pro political parties are responsible for our subjugation, who for their personal and family interests are destroying and ruining muslims of jammu and Kashmir.
1/15/2018 12:00:00 AM
Pro india political parties in jammu and kashmir have been allowed nepotism and corruption by the indian rulers. Till date no scandals have been unearthed against them nor they have been ever made accountable for their corruption. The indian media also turns a blind eye towards their nepotism and corruption. It is matter of great surprise that a party like BJP whose leadership doesn’t believe in heavenly rule nepotism and opposes the Nehru Gandhi dynasty vehemently because of Sonia and Rahul Gandhi supports Sheikh and Mufti families for their family rule, nepotism and corruption .The sole reason for this worst kind of duplicity seems to be that it is in National interest of India. Sheikh Abdullah (1947 to1953) Bakshi Ghulam Muhammad from (1953 to 1964) and now the Mufti Family have been given a free hand for family rule and corruption with dispensation that they will serve Indian imperialistic designs in Jammu and Kashmir without any ifs and buts. Sheikh Abdullah, Bakshi Ghulam Muhammad and Mufti Syed all were from poor families but today there families are billionaires. The corruption prevalent today in Jammu and Kashmir was actually initiated by India in 1947. Indian rulers have not only encouraged this corruption but have supported it. Lalu Prasad Yadav is unfortunate person if he would have been born in Kashmir he would have been chief minister despite all the scandals. The pro political parties are responsible for our subjugation and these pro India political parties who for their personal and family interests are destroying and ruining muslims of jammu and Kashmir. Therefore until we understand the animosity and interests of these pro India politicians we will have to face Indian aggression. Dr. Muhammad Qasim. Ameer Muslim Deeni Mahaz. Through Spokes Person. Rambagh Srinagar

جموں کشمیر میں بھارت نواز سیاسی جماعتوں کو بھارتی حکمرانوں نے خاندانی راج، کنبہ پروری اور لوٹ کھسوٹ کی کھلی چھوٹ دی ہے۔ آج تک جموں کشمیر کے کسی بھی حکمران کے خلاف نہ کوئی سکینڈل سامنے آیا ہے اور نہ اُن کے کورپشن پر اُن کے خلاف کوئی مقدمہ چلا ہے اور نہ ہی اُن کے خاندانی راج اور کنبہ پروری پر کبھی بھارتی ذرائیع ابلاغ میں بحث ومباحثہ ہوا ہے۔ تعجب ہے بھاجپا جسکی قیادت میں نہ ہی خاندانی راج یا کنبہ پروری کی روایت ہے اور جو نہرو خاندان کے صرف دوا فراد (سونیا گاندھی ، راہل گاندھی ) کی بنیاد پر اس پر خاندانی راج اور کنبہ پروری کا الزام لگاتی ہے، یہاں بھاجپا کو عبدﷲ اور مفتی خاندان کے خاندانی راج اور کنبہ پروری پر کوئی اعتراض نہیں ہے، کیونکہ ان کو گوارا کرنا ’قومی مفاد‘میں ہے۔ شیخ عبد ﷲکو (1947سے 1953تک ) بخشی غلام محمد کو (1953سے1964تک)اور اب مفتی خاندان کو جو خاندانی راج،کنبہ پروری اور کورپشن کو کھلی چھوٹ دی گئی ہے وہ اس شرط پر دی جاتی ہے کہ وہ جموں کشمیر کے متعلق بھارتی حکمرانوں کے عزائم کی تعمیل میں بھر پور رول ادا کریں گے۔ شیخ عبدﷲ، بخشی غلام محمد اور مفتی سید تینوں غریب گھرانوں سے تعلق رکھتے تھے آج ان خاندانوں کا شمار کشمیر کے کروڑ پتی خاندانوں میں ہوتا ہے۔ اس لئے جموں کشمیر کی ریاست میں جو بدترین قسم کا کورپشن پایا جاتا ہے اسکی بنیاد 1947ءمیں بھارت کی حکومت نے ڈالی ہے، بھارتی حکمران ہمیشہ اس کورپشن کی نہ صرف حوصلہ افزائی کرتے ہیں بلکہ اسکی پردہ داری بھی کرتے ہیں۔ یہ لالو پرساد یا دو کی بد قسمتی ہے وہ بہار میں پیدا ہوا ہے اگر وہ کشمیر میں پیدا ہوے ہوتے تو تمام سکینڈلوں کے باوجود بھی یہاں کے وزیر اعلیٰ ہوتے۔ ملت اسلامیہ جموں کشمیر کی غلامی کی اصل ذمہ دار یہی بھارت نواز سیاسی جماعتیں ہیں جو ذاتی اور خاندانی مفادات کی خاطر ملتِ اسلامیہ کے خلاف تمام بھارتی منصوبوں کو عملا رہے ہیں۔ اس لئے جب تک ملتِ اسلامیہ ان کشمیر دشمن سیاسی جماعتوں کی اصل حقیقت نہیں سمجھے گی وہ موجودہ پریشان کن صورت حال سے خلاصی حاصل نہیں کرسکتی۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر (مسلم دینی محاذ) بزریعہ ترجمان بمقام رامباغ سرینگر کشمیر
X
1/12/2018
On the directions of the J&K High court dated 29-12-2017 (LPA-230/2012) the team of Doctors comprises Dr. Showket Ahmad Kadla (Gastro), Dr. Arshad Bashir (Ortho) and Dr. Shawnawaz (Optho) visited Central Jail Srinagar to examine Dr. Muhammad Qasim Faktoo, who is suffering from Gluacoma, severe backache and intesti More
On the directions of the J&K High court the team of Doctors visited Central Jail Srinagar to examine Dr. Muhammad Qasim Faktoo.
1/12/2018
On the directions of the J&K High court dated 29-12-2017 (LPA-230/2012) the team of Doctors comprises Dr. Showket Ahmad Kadla (Gastro), Dr. Arshad Bashir (Ortho) and Dr. Shawnawaz (Optho) visited Central Jail Srinagar to examine Dr. Muhammad Qasim Faktoo, who is suffering from Gluacoma, severe backache and intestine ailment, after thorough examinations, the team of Doctors advised several tests. He was advised, visual analyzing to ascertain the present condition of his Gluacoma, MRI to ascertain the present nature of his L4L5 discs and endoscopy for his stomach problem. Doctors have decided to prescribe the treatment only after going through the reports of these tests. Dr. Muhammad Qasim was examined in presence of Jail Medical Superintendent in Jail hospital and Jail MS Dr. Sajad Rouf was asked to make the arrangements for conducting above said tests. Through spokes person muslim deeni mahaz rambagh srinagar

X
1/1/2018
Indian rulers can only demolish and crush the freedom movement in kashmir by changing the muslim majority of Jammu and Kashmir state into a minority. Therefore, it is imperative that the muslim community makes efforts to safeguard its majority. The theory of poverty and hunger due to increasing in population of More
Indian rulers can only demolish and crush the freedom movement in kashmir by changing the muslim majority of Jammu and Kashmir state into a minority.
1/1/2018 12:00:00 AM
Indian rulers can only demolish and crush the freedom movement in kashmir by changing the muslim majority of Jammu and Kashmir state into a minority. Therefore, it is imperative that the muslim community makes efforts to safeguard its majority. The theory of poverty and hunger due to increasing in population of the world proposed by Malthus has been proved to be farce. Today if the world faces hunger and poverty it is not because of shortage of food and fruits. 50% production of fruits and 30% of food get wasted because of poor and inadequate transport. Another reason of this increasing poverty is rapid increasing billionaires club of the. China who raised the slogan of one child have now retracted from it. Singapore government appealed to its people to have three or more children in 1987. In France and Chile government offered monthly incentives for third, fourth and fifth babies. Their parents are provided 10% increased pension and 75% rebate in travel fares. Third child is called as a golden child. All these arrangements were made because the world today faces a scarcity of working age population. Therefore retirement age is being enhanced in certain places and at other places women, children and elderly are being made a part of the working age population. The basis of freedom struggle in Jammu and Kashmir is the majority of muslims in the state therefore to looking at this issue from economical point of view is unfortunate. We request all those businessman and employees whose monthly income exceeds 70 or 80 thousand to have more than two children. We appeal private schools to offer free education to poor parents who have more than two children. Social organisations should offer monthly or annual financial assistance for poor parents who have more than two children. The remarriage of widows and free education for orphans should be encouraged. This would be their greatest contribution to the islam and freedom movement. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person Rambagh Srinagar

بھارتی حکمران جموں کشمیر کی تحریک آزادی کو جموں کشمیر میں مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرکے ہی ختم کرسکتے ہیں۔ اس لئے ملت اسلامیہ جموں کشمیر پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ اس اکثریت کی حفاظت کریں۔ مالتھس (Malthus) نے دنیا میں آبادی کے اضافے سے افلاس اور بھوک کا جو خوف پیدا کیا تھا وہ بے بنیاد ثابت ہوا ہے۔ آج اگر دنیا میں بھوک اور غربت پائی جاتی ہے اسکی وجہ یہ نہیں ہے کہ دنیا میں غلہ (food) اور میوہ جات (fruits) کی ناکافی پیدا وار ہورہی ہے۔ دنیا میں 30 فیصد غلہ اور 50 فیصد میوہ جات ٹرانسپوٹ کے ناقص انتظامات اور ذرائع کی وجہ سے ضائع ہوتے ہیں۔ اور غربت کی ایک بنیادی وجہ تمام ممالک میں ارب پتی لوگوں میں ہورہا اضافہ ہے۔ چین نے سب سے پہلے ’ایک بچہ‘ کا جو نعرہ لگا یا تھا اسکو اب وہ تبدیل کرچکے ہیں۔ 1987 ء میں سنگاپور حکومت نے لوگوں کو تین یا تین سے زائد بچے پیدا کرنے کی اپیل کی، فرانس او ر چلی میں حکومت نے تیسرے ، چوتھے اور پانچویں بچے کے لئے وظیفہ مقرر کیا ہے، ان کے والد ین کے لئے پنشن میں اضافہ اور سفرٹکٹوں کے لئے رعایت دی جاتی ہے، تیسرے بچے کو Third Golden Child کہا جاتا ہے۔ کیونکہ آج کئی ترقی یافتہ ممالک کو جو بڑا مسلہ درپیش ہے وہ Working Age Population کی افزائش میں ہورہی کمی کا مسلہ ہے‘ اسی لئے کہیں پر ریٹائرمنٹ عمر میں اضافہ کیا جاتا ہے تو کہیں پر بوڑھوں، عورتوں اور بچوں کو Working Age Population میں شامل کیا جاتا ہے۔ جموں کشمیر کی تحریک آزادی کی بنیاد ہی مسلمانوں کی یہاں اکثریت ہے اس لئے اس مسلہ کو صرف معاشی نقطہ نگاہ سے دیکھنا افوسناک ہے۔ ہم ا±ن سرکاری ملازموں اور تاجروں سے‘ جن کی ماہانہ آمدنی ستر (70) اور اسی (80) ہزار سے زائد ہے اپیل کرتے ہیں کہ وہ دو سے زائدبچے پیدا کریں۔ ہم پر ائیوٹ اسکولوں کے مالکان سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ ا±ن غریب والدین جن کے دو سے زائد بچے ہوں ا±ن کے دو سے زائد بچوں کو مفت تعلیم دیں، ہم یہاں کی دینی اور سماجی جماعتوں سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ ایسے غریب والدین جن کے دو سے زائد بچے ہوں کے دو سے زائد بچوں کے لئے ماہانہ یا سالانہ وظیفہ مقرر کریں، اور بیواو¿ں کے لئے نکاح ثانی اور یتیموں کے لئے مفت تعلیم کی موثر تحریک چلائیں۔ یہ ان کی طرف سے دین اور تحریک کی عظیم خدمت ہوگی۔ ڈاکٹر محمد قاسم (امیر) مسلم دینی محاذ بزریعہ ترجمان۔مسلم دینی محاذ مرکزی دفتررامباغ سرینگر کشمیر
X
12/20/2017
For the first time since 1947, in India, a single party is ruling at the centre and 19 out of 29 states. It has proved beyond doubt that India has consolidated into a hindu nation as no sane person will consider BJP as a secular party or a party with secular electoral agenda. The victory of BJP in Himachal and Guj More
In Jammu and Kashmir the pro India parties have received a license from delhi for Corruption and dynasty rule in lieu of being India's tools of oppression.
12/20/2017 12:00:00 AM
For the first time since 1947, in India, a single party is ruling at the centre and 19 out of 29 states. It has proved beyond doubt that India has consolidated into a hindu nation as no sane person will consider BJP as a secular party or a party with secular electoral agenda. The victory of BJP in Himachal and Gujarat proves that the majority of Indian population backs the torture meted out to muslims, Dalits and other minorities, under the pretext of cow vigilantism, love jihad and other fanatic concepts, during the past three and half years of Modi rule. Anti muslim, anti Pakistan and anti kashmir ideology of Modi has found backing from the majority in India. Emboldened by the win in Gujarat and Himachal, BJP would aim for three objectives before the national elections in 2019. 1. To begin construction of Ram temple in place of Babri Masjid. 2. A controlled small scale war against Pakistan or a sort of surgical strike. 3. Pogrom of Muslim in India under the garb of cow vigilantism and love jihad and in Kashmir under the tag of operation all out. All this would be done to consolidate the 82%Hindu vote in India on the ideology of Hindutva. Since Pakistan right now is facing a political and diplomatic isolation on world stage, muslims in India have become non existant. In Jammu and Kashmir the pro India parties have received a license from delhi for Corruption and dynasty rule in lieu of being India's tools of oppression. They are not even in a position to raise voice against the atrocities by Indian army and police on kashmiri muslims therefore BJP is set to effectively achieve these three objectives. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person Rambagh Srinagar

1947 ءکے بعد سے بھارت کی تاریخ میں یہ پہلا موقع ہے کہ بھارت کی کوئی سیاسی جماعت مرکزی حکومت کے ساتھ بھارت کی 29ریاستوں میں سے 19ریاستوں پر حکومت کررہی ہو۔ جو اس بات کی شہادت ہے کہ بھارت نظریاتی اور عملی طور ایک ھندو ملک ہے، کیونکہ بھاجپا کے متعلق کوئی معقول انسان یہ دعویٰ نہیں کرسکتا ہے کہ وہ سیکولر جماعت ہے یا سیکولر ایجنڈا پر انتخابات لڑتی ہے۔ گجرات اور ہماچل میں بھاجپا کی جیت اس بات کی دلیل ہے کہ مودی کی حکومت میں تقریباً پچھلے ساڑھے تین سال میں جو بدترین مظالم مسلمانوں اور دلتوں پر ڈھائے گئے، جسطرح گاورکشک اور لوجہاد کے نام پر مسلمانوں کا قتل عام کرکے اُن کو زندہ جلایا جاتا ہے، اس پالسی کو بھارت میں لوگوں کی اکثریت کی حمایت اور تائید حاصل ہے۔ مودی کی معاشی پالسیوں پر ناراض ہونے کے باوجود بھی بھارت کے لوگوں نے اس کے نظریہ تثلیث (Trinity) ’مسلمان دشمنی ‘ پاکستان دشمنی‘ کشمیر دشمنی‘ کے حق میں ہی ووٹ دیا ہے۔ گجرات اور ہماچل میں بھاجپا کی کامیابی کے بعد بھارت میں 2019ءمیں ہونے والے قومی انتخابات سے پہلے تین کام بھاجپا کیطرف سے ہوں گے: ۱ !۔بابری مسجد کی جگہ رام مندر تعمیر کرنے کا باضابطہ آغاز کیاجائے گا ۔ ۲ ۔پاکستان کے ساتھ چھوٹے پیمانے کی جنگ یاموثر سرجیکل سٹرائیک ہوسکتی ہیں ! ۳ ۔بھارت میں گاورکشک اور لوجہاد اور کشمیر میں آپریشن آل آوٹ کے نام پر مسلمانوں کے قتل عام کا سلسلہ وسیع ہو جائے گا ! یہ کام بھارت کی 82فیصد ھندو آبادی کو بھاجپا کے ھند تو نظریہ پر متحد اور منتظم کرکے ان انتخابات میں کامیابی کو یقین بنانے کے لئے کئے جائیں گے۔ چونکہ اس وقت پاکستان عالمی سطح پر سیاسی اور سفارتی طور تنہائی (Isolation) میں ہے، بھارت کے مسلمان سیاسی طور بے وقعت (Non-existent) بن گئے ہیں، جموں کشمیر میں بھارت نواز سیاسی جماعتیں بھارت سے، کور پشن اور خاندانی راج کی ملی اجازت کے عوض، آلہ کار کے طورکام کررہی ہیں اور بھارت کی افواج اور پولیسی سے جموں کشمیر کے مسلمانوں پر جومظالم ڈھا ئے ہیں اسکی وجہ سے وہ اس قتل عام کے خلاف موثر آواز بلند کرنے کی پوزیشن میں بھی نہیں ہیں، اس لئے بھاجپا یہ تینوں کام موثر طریقے پر کرسکتی ہے۔ ڈاکٹر محمد قاسم (امیر) مسلم دینی محاذ بزریعہ ترجمان MDM۔بمقام رامباغ سرینگر کشمیر
X
12/18/2017
Sectarian differences in muslims won’t end till Qayamah. The people who rise to end these differences end up being a new sect. When great ulema like Imam Ibn Taimiyah and Shah Wali ullah couldn’t end these differences, todays ulema, who don’t enjoy such command over knowledge and acceptance among ummah, can’t More
Appeal to scholars of all the sects, put up a joint resistance against these liberal scholars who are hell bent to change the beliefs and practices of Islam.
12/18/2017 12:00:00 AM
Sectarian differences in muslims won’t end till Qayamah. The people who rise to end these differences end up being a new sect. When great ulema like Imam Ibn Taimiyah and Shah Wali ullah couldn’t end these differences, todays ulema, who don’t enjoy such command over knowledge and acceptance among ummah, can’t achieve it. Therefore it is wise that these differences are accepted and the ulema of Salfi, Hanfi, Malki, Shafi and Hanbli schools unite to counter those socalled modern day scholars who are working on the dictations of American RAND corporation. RAND corporation is working to develop a new edition of Islam by altering the belief and ideological systems of Islam through agencies like Building Moderate Muslim Networks. These scholars in the name of research and Ijtihad are trying to create a wedge between the two basic sources of Islam Quran and Hadees and want interpret the Quran the way They like. They want to limit the universality of the Prophethood of Rasool Ullah S.A.A.W to the Arabs. However as Allah has promised protection to Quran till the Last day so will he protect the Prophethood of Muhammad S.A.A.W. These liberal moderate scholars are very active in countries like Syria, Egypt, Turkey, Tunisia, Malaysia, Pakistan , India, Britain and USA and media is giving them allout publicity. We request scholars of all the sects to set aside their differences and stop wasting resources on negating each other and instead put up a joint resistance against these liberal scholars who are hell bent to change the beliefs and practices of Islam which are prevalent since the times of Rasoolullah S.A.A.W. as their deviant teachings have found their way into Kashmir. Dr Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person Rambagh Srinagar

مسلکی اختلافات مسلمانوں میں قیامت تک ختم نہیں ہوسکتے ،جو لوگ مسلکی، اختلافات ختم کرنے نکلتے ہیں وہ خود پھر ایک نیا مسلک بن جاتے ہیں۔ جب امام ابن تیمیہؒ اور شاہ ولی اﷲؒ جیسے مجدد (Great Scholars) مسلکی اختلافات کو ختم نہیں کرسکے، آج جب اہل علم میں نہ وہ علمی صلاحیت ہے اور نہ ہی امت اسلامیہ میں قبولیت وہ اِن مسلکی اختلافات کو کیسے ختم کرسکتے ہیں؟ اس لئے حقیقت پسندی اور عقلمندی کا تقاضا یہی ہے کہ ان مسلکی اختلافات کو تسلیم کرکے سلفی ، حنفی، مالکی، شافعی اور حنبلی مسالک سے وابستہ علماءمتحد ہو کر ا±ن گمراہ اہل علم کا مقابلہ کریں جو مشہور امریکی ادارہ Rand Corporation ، جس نے اسلام کے عقائد ، عبادات اور احکام حلال، حرام کو تبدیل کرنے کے ساتھ ساتھ مسلمانوں کے اسلام کے متعلق نظریات تبدیل کرنے کا کام شروع کیا ہے، اور یہ کام مذکورہ ادارہ Building Moderate Muslim Networks کی آڑمیں کر رہا ہے، کی سرپر ستی میں آج اسلام کا نیا ایڈیشن تیار کررہے ہیں۔ یہ اہل علم تحقیق اور اجتہاد (Ijthihad) کے نام پر قرآن اور احادیث جو اسلام کے دو بنیادی ذرایئع ہیں تفریق کرکے ’صرف قرآن ‘ کا نظریہ پیش کررہے ہیں۔ رسول اﷲ کی رسالت کو عالمگیریت ختم کرے آپ کو ،عرب کا نبی ‘ (Prophet for Arabs) ثابت کرنا چاہتے ہیں۔ حالانکہ جسطرح اﷲتعالیٰ نے قیامت تک قرآن مجید کی حفاظت فرمائی ہے اسی طرح قیامت تک رسول اﷲکی رسالت کی حفاظت بھی فرمائی ہے۔ اسی طرح کے ’ روشن خیال ‘ اسکالرس (Moderate Scholars) شام ، مصر ، ترکی، تیونس، ملیشیا، پاکستان، بھارت، برطانیہ اور امریکہ میں کافی سرگرم ہیں اور ذرایئع ابلاغ میں ان کو کافی شہرت دی جاتی ہے۔ ہم تمام مسالک سے وابستہ علماءسے گزارش کرتے ہیں کہ وہ مسلکی تنازعات پر وقت اور سرمایہ ضائع کرنے کے بجائے ان ’روشن خیال‘ اہل علم کی گمراہیوں کا عملی مقابلہ کریں جو اسلام کے ا±ن عقائد ، عبادات اور احکام کو تبدیل کرنا چاہتے ہیں جن پر مسلمان رسول اﷲکے دور سے آج تک متفق رہے ہیں۔ کیونکہ ان کے گمراہ کن خیالات کشمیر میں بھی پہنچ چکے ہیں۔ ڈاکٹر محمد قاسم ( امیر ) مسلم دینی محاذ۔ بزریعہ ترجمان MDM رامباغ سرینگر کشمیر
X
12/12/2017
The death of advocate Abdul Mateen is not only huge loss to this resistance moment but the deep blow to the muslim deeni mahaz also . He was one of the pioneer of the muslim deeni mahaz, an intellectual and pious muslim. He worked as a close associate of Dr Muhammad Qasim in 1999 and 2000. He has also contributed More
Death of advocate Abdul Mateen, deep blow to the Muslim Deeni Mahaz.
12/12/2017
The death of advocate Abdul Mateen is not only huge loss to this resistance moment but the deep blow to the muslim deeni mahaz also . He was one of the pioneer of the muslim deeni mahaz, an intellectual and pious muslim. He worked as a close associate of Dr Muhammad Qasim in 1999 and 2000. He has also contributed in social work and has written research based papers where he has given the detailed account of how indian government is going to change the demography of jammu and Kashmir. He has written booklet on Dr Muhammad Qasim also. We pray for his departed soul and at the same time share shock with his family. Through Spokes Person Muslim Deeni Mahaz

X
12/4/2017
If Sheikh Muhammad Abdullah would have delved into the Quran and the writings of Sheikh Ahmad Sarhindi, Shah Wali Ullah and Sir Syed Ahmad Khan then he would never have chosen the composit nationalism of Indian National Congress over the Two nation theory of Muslum league. In 1944 Muhammad Ali Jinnah had advised More
Pro India politicians haven't learnt lessons from the failed life of Sheikh Abdullah. Dr Muhammad Qasim
12/4/2017 12:00:00 AM
If Sheikh Muhammad Abdullah would have delved into the Quran and the writings of Sheikh Ahmad Sarhindi, Shah Wali Ullah and Sir Syed Ahmad Khan then he would never have chosen the composit nationalism of Indian National Congress over the Two nation theory of Muslum league. In 1944 Muhammad Ali Jinnah had advised Sheikh Abdullah that the Hindu congress leadership is not trust worthy but sheikh paid no heed. Sheikh Abdullah organised two movements in his life and made them a source of grabbing power for himself. From 1932 to 1947 he led the anti dogra movemnt and in 1947 took up the charge as emergency administrator to serve the same Dogras. From 1953 to 1975 he led the plebiscite movement and in 1975 chose to serve Delhi by being CM. All those sacrifices laid down by the people in these movements were sold by Sheikh for personal interests and nothing changed for the muslim masses of Kashmir. Sheikh Abdullah is more to blame than Hari Singh for Indian occupation because in october 1947 Hari singh had fled Kashmir and the actual control of state lied with NC volunteers led by Sheikh Abdullah. If he had decided not to accept the accession signed by Hari Singh, it would have carried no weight. Sheikh Abdullah was released from Bhadarwah sub jail on the intervention of Ghandhi only after he engaged with Kashmir deputy prime minister Ram Lal Batra and the basic condition for his release was handing over of Kashmir to India. This anti Kashmir decision by Sheikh Abdullah not only sowed seeds of war between India and Pakistan but led to worst opression on muslims of Jammu and Kashmir. History proved Sheikh Abdullah wrong. When Sheikh was arrested by his close friend Nehru in 1953 for opposing the anti autonomy movement in Jammu he should have realised his mistakes but the way he betrayed the exemplary sacrifices of people during the plebiscite movement for power in 1975 shows that his first and last ambition was power. Knowing that with India kashmiri muslims will have to face perpetual slavery of Hindus, he was overwhelmed with greed for power. If he would have supported Hari singh and Ram Chand Kak in there effort to keep Kashmir independent he wouldnt have been able to grab power, If Kashmir would have acceeded to Pakistan, Pakistan would have preffered Maulana Yousuf shah and Chaudhry Abbas for government over Sheikh Abdullah. Therefore he took calculated steps to join India because he had spent 15 years with Indian national Congress. The power for which he decieved his own people and pushed entire subcontinent into perils of war was snatched from him first in 1953 and then completely in 1982. But what is astonishing is the fact that Pro India politicians havent learnt lessons from the failed life of Sheikh Abdullah. Dr Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person Rambagh srinagar

شیخ محمد عبدﷲ نے اگر قرآن مجید پر غور کیا ہوتا اور شیخ احمد سرہندیؒ، شاہ ولی ﷲؒ اور سرسید احمد خان کی تحریروں کا مطالعہ کیا ہوتا تو وہ کبھی بھی انڈین نیشنل کانگریس کے نام نہاد متحدہ قومیت کو مسلم لیگ کے دوقومی نظریہ پر تر جیح نہیں دیتے۔ 1944ءمیں محمد علی جناح ؒ نے شیخ عبدﷲ کو نصیحت کی تھی کہ کانگریس کی ھندوقیادت قابل بھروسہ نہیں ہے مگر شیخ عبدﷲنے اسکی طرف توجہ نہیں دی۔ شیخ عبدﷲ نے زندگی میں دو تحریکیں چلائیں اور دونوں تحریکوں کو حصول اقتدار کا ذریعہ بنایا۔ 1932ءسے1947ءتک انہوں نے جس ڈوگرہ حکومت کے خلاف تحریک چلائی پھر 1947ءمیں ایمرجنسی منتظم اعلیٰ بن کر ڈوگرہ حکومت کے ملازم ہوگئے، 1953ءسے 1975ءتک رائے شماری کی تحریک چلائی پھر1975 ءمیں وزارت اعلیٰ بن کر دہلی کی ملازمت کرلی۔اِن دونوں تحریکوں کے لئے لوگوں نے جو قربانیاں دیں ان کے بدلے صرف شیخ عبدﷲ کو اقتدارہی حاصل ہوا ملت اسلامیہ کشمیر کی سیاسی حالت جو غلامی کی تھی وہ تبدیل نہیں ہوئی۔ کشمیر پر بھارتی قبضے کے لئے ہری سنگھ سے زیادہ ذمہ دار شیخ عبدﷲہیں کیونکہ اکتوبر 1947ءمیں کشمیر سے ہری سنگھ بھاگ چکا تھا اور عملاً کشمیر کاکنٹرول نیشنل کانفرنس کے رضاکاروں نے سنبھالا تھا اس لئے اگر شیخ عبدﷲ جموں کشمیر کو بھارت کے سپرد نہ کرتے تو ہری سنگھ کے الحاق کی کوئی وقعت نہیں تھی۔ شیخ عبدﷲ کو بھد رواہ سب جیل سے کشمیر کے نائب وزیر اعظم رام لال بترہ کے ساتھ مذاکرات کے نتیجے میں ہی گاندھی کی سفارش پر اس شرط پر رہا کیا گیا تھا کہ وہ کشمیر کو بھارت کے سپردکردے گا۔ شیخ عبدﷲ کے اس ملت دشمن فیصلے سے نہ صرف پاکستان اور بھارت کے درمیان مستقل جنگ کی صورت حال پیدا ہوگئی بلکہ ملت اسلامیہ کشمیر بھی بدترین مظالم سے دو چارہوئی ، وقت نے شیخ عبدﷲکو غلط ثابت کیا ہے۔شیخ عبدﷲ نے جب 1953 ءمیں جموں کی اٹانومی مخالف تحریک کی مزاحمت کی اور اسکو اسکے دوست پنڈت نہرو نے جیل بھیج دیا اس وقت اسکو اپنی 1947ءکی غلطی کا احساس ہونا چاہئے تھا مگر 1975ءمیں رائے شماری کی تحریک ، جسکے لئے لوگوں نے بے شمار قربانیاں دیں، کو وزارت اعلیٰ کی کرسی کے لئے نیلام کرنے سے یہی معلوم ہوتا ہے شیخ عبدﷲ کی زند گی کا پہلا اور آخری مقصد کشمیر کا اقتدار حاصل کرنا بن گیاتھا۔ کشمیر کو بھارت کے سپرد کرنے میں، یہ جانتے ہوئے بھی کہ بھارت میں ہمیشہ ھندو حکمران ہوں گے اور مسلمان ہمیشہ یہاں محکوم اور مظلوم ہوں گے، اسکو صرف اقتدار کی طلب تھی۔ اگر وہ ہری سنگھ اور رام چند کاک کی کشمیر کو آزاداور خودمختار رکھنے کی حمائت کرتا پھر اسکوکشمیر کا اقتدار نہیں مل سکتا تھا، اگر وہ کشمیر کا پاکستان کے ساتھ الحاق کی وکالت کرتے تو پاکستان کشمیر کی حکومت میں مولانا یوسف شاہ اور چودھری عباس پر شیخ عبدﷲ کو ترجیح نہیں دیتا اس لئے شیخ عبدﷲ کو کشمیر کا اقتدار صرف بھارت کی حکومت سے ہی مل سکتا تھا جن کی تربیت میں وہ 15سال رہے تھے۔ جس اقتدار کے لئے انہوں نے کشمیر کو بھارت کے سپرد کرکے برصغیر کو جنگ اور تباہی میں دھکیل دیا وہ اقتدار 1953ءمیں بھی پھر ہمیشہ کے لئے 1982ءمیں اس سے چھین لیا گیا۔ مگرتعجب ہے ان کی عبرت ناک زندگی سے آج بھارت نواز سیاست کار سبق حاصل نہیں کررہے ہیں۔ ڈاکڑمحمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بذزیعہ ترجمان رامباغ سری
X
11/22/2017
The ever increasing interest and influence of Israel in Kashmir is alarming and matter of serious concern for the muslims of Kashmir. The increased strategic cooperation between the Jewish government of Israel and Hindu government of India needs to be understood in the perspective of the Holy Quran (al Maidah..82) More
In kashmir the Israel government started training indian army, intelligence cadre and kashmir police since 1990.
11/22/2017 12:00:00 AM
The ever increasing interest and influence of Israel in Kashmir is alarming and matter of serious concern for the muslims of Kashmir. The increased strategic cooperation between the Jewish government of Israel and Hindu government of India needs to be understood in the perspective of the Holy Quran (al Maidah..82) and the historical events that occurred during the battle of ditches(khandaq). Judaism and Hinduism both religions are based upon the superiority of race and both treat muslims as illeterate (Umeyeen) and impure ( Malich). Both these countries have expansionist ideologies for west Asia and south Asia which is actually based on their religious teachings. After 1947 the congress governments support to the Palestine cause was a vote bank gimmick and in reality the two countries shared military ties right from 1947. In kashmir the Israel government started training indian army, intelligence cadre and kashmir police since 1990. This cooperation continues since then. Now both indian and Israeli governments want to give social cover to these activities through education, cultural activities and trade etc. Muslims of Kashmir know how indian government is trying all its efforts to change the muslim majority of jammu and kashmir into a minority as was done by Israel in Palestine. India wants to follow the Israeli designs in Kashmir therefore they want enhance and consolidate Israelis activities in kashmir by giving education ,cultural and trade cover to it. The religious organisations , traders and profreedom leadership should make people aware about these indian Israel joint designs and should not support these designs at any cost. Dr Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

اسرائیل کی یہودی حکومت کا کشمیر میں بڑھ رہا اثر ورسوخ ملت اسلامیہ کشمیر کے لئے انتہائی پریشان کن ہے۔ اسرائیل کی یہودی حکومت اور بھارت کی ھندوحکومت کے درمیان ملت اسلامیہ کشمیر کے خلاف اشتراک اور تعاون کو قرآن مجید کی روشنی (المائدہ۔82) اور غزوہ خندق کے تاریخی واقعہ سے سمجھنے کی کوشش کرنی چاہیے۔ یہودیت اور ھندومت دونوں مذاہب بنیادی طور نسلی بر تری پر مبنی ہیں دونوں مسلمانوں کو (امئیین۔ ان پڑھ) (ملیچھ۔ ناپاک) سمجھتے ہیں، دونوں ممالک عرب اور جنوبی ایشامیں سامراجی سیاسی عزائم ، جو ا±ن کے مذاہب پر مبنی ہیں، کی تکمیل چاہئے ہیں۔1947ءکے بعد بھارت کی کانگریس نے جو فلسطین کاذ کی حمائت کی سرکاری پالیسی اختیار کی تھی وہ صرف اسکی ووٹ بنک سیاست تھی، حقیقت یہ ہے فوجی تربیت اور جدید اسلحہ کے حوالے سے دونوں ممالک کے تعلقات 1947ءکے فورًا بعد شروع ہوچکے تھے۔ کشمیر میں1990ءسے ہی اسرائیل کی حکومت نے فوج اور پولیس کی تربیت ، سراغرساں امور میں معاونت اور عسکریت پسندوں کے خلاف آپریشن کرنے میں بھارتی افواج، سراغرساں اداروں کے ساتھ تعاون کیا ہے، اس لئے اب باضابطہ اسرائیل کی حکومت نے اپنی اس موجودگی کو معاشرتی آڑ میں مزید موثر بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔طلبہ اور طلبات کی تعلیم، اسکا لرشپ ، تاجروں کے لئے تجارت کے مواقع فراہم کرنا ان ہی تحریک دشمن اور مسلمان دشمن منصوبوں کا حصہ ہے۔ ملت اسلامیہ کشمیر یہ بات اچھی طرح جانتی ہے کہ بھارتی حکمران اسی طرح کشمیر میں مسلمانوں کو بے بس اقلیت میں تبدیل کرنا چاہتے ہیں جسطرح اسرائیل کی یہودی حکمرانوں نے فلسطین کے مسلمانوں کو بنایا ہے۔ اس لئے بھارتی حکمران کشمیر میں مکمل طور اسرائیل کی حکومت کی رہنمائی میں کام کرنا چاہتے ہیں۔ اس لئے اب بھارت بھی چاہتاہے کہ کشمیر میں اسرائیل کی موجودگی کو تعلیم، طب، کلچر اور تجارت کی شکل میں مضبوط اور موثر بنایا جائے۔ کشمیر کی دینی رہنماوں، تاجر برادری اور حریت پسند قیادت کو اس بارے میں لوگوں کو باخبر کرنا چاہئے اور خود بھی ان منصوبوں کا حصہ بننے سے بچنا چاہئے۔ ڈاکڑمحمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بذزیعہ ترجمان رامباغ سرینگر
X
11/13/2017
Indian rulers and media are not only misleading their own people by terming Kashmir imbroglio as a national issue of India but are degrading their standing on the international standards as well. By terming Kashmir issue as a national Indian Issue they are trying to negate the historical context of the division More
Indian rulers and media are not only misleading their own people by terming Kashmir imbroglio as a national issue of India but are degrading their standing on the international standards as well.
11/13/2017 12:00:00 AM
Indian rulers and media are not only misleading their own people by terming Kashmir imbroglio as a national issue of India but are degrading their standing on the international standards as well. By terming Kashmir issue as a national Indian Issue they are trying to negate the historical context of the division of the subcontinent. Right after 1947 there has been a gradual policy of negating the historical perspective of the kashmir imbroglio and they have been presenting kashmir issue as an internal matter of India. This has led to the Indian masses falling for this propaganda and then the political parties of India made it into a political issue for vote bank gains. It is a distortion of history to term kashmir issue as a national matter of India or something related to India's security and integrity. Due to its geographic and demographic expanse and military might India should have had a world standing along with USA, China, Russia, Britain and France but it is in a constant strife over kashmir with Pakistan which is a country much smaller in geography, economy and military might. This strife has badly affected the international standing of India. It is due to Kashmir issue, India has not been able to secure a permanent seat in UN security council and neither has attained a strong stature in world political setup. In India 40% people live under the poverty line. While 20 crore people have to go without dinner on daily basis and its reason is Kashmir issue. It is imperative in such scenario that Indian people think how Kashmir issue has held India back on the international and economic front. The kashmiri youth should reach out to the Indian youth through social media to apprise them about the correct historical perspective of Kashmir issue. It will yield us two benefits: 1. Indian youth will understand the reality of the 'atoot ang' rant. 2. They will understand that Indian actual borders will not change with the freedom of Kashmir from India and neither will it effect the integrity and security of India. When kashmir is not a part of India how it can be a national issue for India? Dr Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

بھارتی حکمران اور بھارتی ذرائع ابلاغ مسئلہ کشمیر کو بھارت کا قومی مسئلہ بتا کر نہ صرف بھارتی عوام کو گمراہ کررہے ہیں بلکہ اپنی بین الاقوامی حیثیت بھی خراب کررہے ہیں۔ جموں کشمیر کو بھارت کا قومی مسئلہ بتانا برصغیر کے ان مسلمہ اصولوں کو چھپانے کی کوشش ہے جسکی بنیاد پر برصغیر کی تقسیم ہوئی ہے۔ 1947ءکے بعد سے جسطرح بھارتی حکمرانوں اور ذرائع.ابلاغ نے تدریجا ًمسئلہ کشمیرسے متعلق تاریخی حقائق سے انحراف کی پالسی اختیار کی اور کشمیر کو اٹوٹ انگ کے طور بھارتی عوام کے سامنے پیش کرتے رہے اس سے وہ مسئلہ کشمیر کو قومی مسئلہ سمجھنے لگے اور سیاسی جماعتوں نے اسکو اب باضابطہ ووٹ بنک سیاست کا مسئلہ بھی بنا دیاہے۔ مسئلہ کشمیر کو بھارت کا قومی مسئلہ یا بھارت کی سلامتی اورجغرافیائی وحدت سے جوڑنا انتہائی قسم کی تاریخی بددیانتی ہے۔ بھارت کو جغرافیائی وسعت، آبادی ، فوجی طاقت اور معاشی وسائل کے اعتبار سے امریکہ، چین، روس، برطانیہ اور فرانس جیسے عالمی طاقتوں کے صف میں ہونا چاہیے تھا مگر مسئلہ کشمیر کی وجہ سے بھارت ایک ایسے ملک، (پاکستان) جو جغرافیہ ، معاشی وسائل، آبادی اور فوجی طاقت کے اعتبار سے اس سے چھوٹا ہے، کے ساتھ اسطرح تنازع میں ملوث ہو گیا ہے اس سے بھارت کی بین الاقوامی حیثیت بری طرح متاثر ہوئی ہے۔ مسلہ کشمیر کی وجہ سے ہی آج تک بھارت UNO کی سیکورٹی کونسل کا مستقل رکن نہیں بن سکا ہے اور نہ ہی بین الاقوامی سیاست میں فیصلہ کن حیثیت حاصل کرسکا ہے۔ اور بھارت میں جو 40 فیصد لوگ غربت کی سطح سے نیچے زندگی گزار رہے ہیں ہرروز 20 کروڑ لوگ شام کو بغیر کھانا سوتے ہیں اسکی وجہ بھی مسئلہ کشمیر ہے۔ بھارت کے لوگوں کو انتہائی سنجیدگی اور عقلمندی کے ساتھ سوچنا چاہیے کہ تنازعہ کشمیر نے کسطرح بھارت کی بین الاقوامی حیثیت اور معیشثت کو تباہ کیا ہے۔ کشمیر کے جوان نسل کو چاہیے کہ وہ سوشل میڈیا کے ذریعے زیادہ سے زیادہ بھارت کی جوان نسل تک مسلہ کشمیر کے تاریخی حقائق کو پہنچائیں اس سے دو فائد ے ہوں گے۔۱۔بھارت کی جوان نسل ’اٹوٹ انگ ‘ کی اصل حقیقت جان لیں گے۔ ۲۔ وہ یہ جان لیں گے کشمیر کی آزادی سے نہ اصل بھارتی سرحدیں تبدیل ہوں گی اور نہ ہی یہ بھار تی سلامتی کے ساتھ جڑا مسلہ ہے،کشمیر جب بھارتی قوم میں شامل ہی نہیں مسلہ کشمیر قومی مسلہ کیسے ہوسکتا ہے؟ ڈاکڑمحمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بذزیعہ ترجمان رامباغ سرینگر
X
10/29/2017
Muslims and Dalits are being persecuted in India ever since RSS has come into power. Muslims are living in a constant fear. The indian hyper nationalism has overwhelmed Indian politics, economy, society, education and media. But this is only one aspect of this scenario. This has proved it again that no country in More
Muslims in Kashmir cannot safeguard their identity under hindu Indian rule.
10/29/2017 12:00:00 AM
Muslims and Dalits are being persecuted in India ever since RSS has come into power. Muslims are living in a constant fear. The indian hyper nationalism has overwhelmed Indian politics, economy, society, education and media. But this is only one aspect of this scenario. This has proved it again that no country in the world can truly be secular even if its constitution is secular. In fact every state and government follows the religion of the majority RSS head Mohan Bhagwat is very right when says india is hindu country. RSS is sincere about hinduism and hindu india and do not deceive people by secularism. India has been a hindu rashtra in the past it continues to be so and will be so in the future as well. The secular nation of India held by some muslim circles and moderate hindu liberals has become irrelevant. The way the hindu majority in India rewarded the executer of Gujrat pogrom Narendra modi by electing him as the prime minister of India shows the thinking trends in hindu India. Modi has also lived upto the expectations of hindu majority by forming a Muslim free government. India has evolved as a hindu rashtra in the world, and thus the political vision of Sir Syed Ahmad Khan and Muhammad Ali Jinnah has been proved right. The excesses being meted out to muslim in jammu and kashmir under the rule of PDP and RSS are more haunting than the torture dished out by the peace brigade of NC and Koka Parray but this is one aspect of this government the other aspect is that it has brought out the real face of India and those people who would advocated India in Kashmir are now finding it difficult to speak for india. Some educated youth who would term the ideas of freedom and sovereignty as archaic ideas in presence of IMF and UNO have now realized that freedom is not just in the spheres of politics and economy but in the fields of religion, culture, education and identity also and muslims in Kashmir cannot safeguard their identity under hindu Indian rule. Therefore we see an awakening in the youth regarding the freedom struggle. The tyranny of PDP and RSS combine is just one aspect this tyranny has helped people in understanding the real face of India and its stooge organisations in jammu and kashmir. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

بھارت میں RSS کی حکومت قائم ہو جانے کے بعد سے جسطرح مسلمانوں اور دلتوں پر مظالم ڈھائے جارہے ہیں ، مسلمان جسطرح انتہائی خوف و دھشت کی حالت میں زندگی گزار رہے ہیں اور جارحانہ ھندو تہذیب کی جوفضا بھارت میں بنی ہوئی ہے، جس نے سیاست ، معشیت ، معاشرت ، نظام تعلیم اور ذرائع ابلاغ کو پوری طرح اپنی لپیٹ میں لیا ہے یہ اس حکومت کی تصویر کا ایک رخ ہے اس کا دوسرا رخ یہ ہے ایک بار یہ بات پھر ثابت ہو گئی ہے کہ دنیا کا کوئی ملک سیکولر نہیں ہوتا خواہ و ہاں کاآئین سیکولر ہی کیوں نہ ہو بلکہ ہر ملک کی حکومت اور ریاست کا مذہب وہی ہوتا ہے جو وہاں کی اکثریت کا مذہب ہوتا ہے، بھارت ھندو راشٹر تھا ھندو راشٹر ہے اور ھندوراشٹر ہی رہے گا اس لئے موہن باگھوت کی بات بالکل صحیح ہے۔ RSS ہندو جماعت ہے اور سیکولرازم کے نام پر بھارت کے عوام کو دھوکہ نہیں دیتی ہے ،اس لئے بھارت کے متعلق بعض مسلمان حلقوں اور اعتدال پسند ھندو دانشوروں کو جو وہم تھا کہ بھارت سیکولر ملک ہے وہ اب ختم ہوگیا ہے اورگجرات میں مسلمانوں کی نسل کشی کرنے پر بھارت کی ھندو اکثریت نے جسطرح نریندرمودی کو وزیر اعظم ھند کے منصب تک پہنچایا ہے وہ ھندو اکثریت کی سوچ کا پتہ دیتی ہے اور نریندرمودی نے بھی ھندو اکثریت کے جذبات کا خیال کرتے ہوے بھارت کو پہلی بار مسلمان مکت (Muslim Free) حکومت اور صدارت دی ہے۔ بھارت پوری دنیا میں آج ایک ھندو ملک کے طور سامنے آیا ہے، اسطرح وقت نے سرسید احمد خان اور محمد علی جناح کی سیاسی بصیرت (Vision) کو صحیح ثابت کیا ہے۔ جموں کشمیر میں RSS اور PDP کی حکومت میں ملت اسلامیہ پر جو مظالم ڈھائے جارہے ہیں وہ نیشنل کانفرنس کے پیس بریگیڈ اور کوکہ پرے کے مظالم سے زیادہ دھشت ناک ثابت ہوئے ہیں یہ مگر یہ اس حکومت کا ایک رخ ہے اس کا دوسرا رخ یہ ہے کہ جموں کشمیر میں جو بعض لوگ بھارت کے ساتھ ہی رہنے کی وکالت کرتے تھے ان کی آنکھیں اب کھلنی چاہیے کیونکہ ان کے لئے بھارت کے ساتھ ہی رہنے کی وکالت کرنااب ممکن نہیں ہے، کچھ پڑھے لکھے نوجوان UNO اور IMF کی موجودگی میں آزادی اور خود مختاری کے قدیم تصورات کو اب بے معنی قرار دیتے تھے اس لئے یہاں کی تحریک مزاحمت کو غیر ضروری سمجھتے تھے ، ان کو بھی اب یہ معلوم ہوچکا ہے کہ آزادی کا تعلق صرف سیاست اور معشیت ہی کے ساتھ نہیں بلکہ مذہب، تہذیب، تعلیم اور تشخص کے ساتھ بھی ہے، اس لئے ملت اسلامیہ کشمیر ان کی حفاظت بھارتی حاکمیت کے اندد نہیں کرسکتی۔ یہی وجہ ہے بھارت اور جموں کشمیر میں RSS کی حکومت کے بعد جموں کشمیر میں جوان لڑکوں اور لڑکیوں میں تحریک مزاحمت کے متعلق وسیع پیمانے پر نظریاتی بیداری پائی جاتی ہے، جموں کشمیر میں RSS اور PDP کی حکومت کا ملت اسلامیہ کشمیر پر مظالم ڈھانا حکومت کا ایک پہلو ہے اسکا دوسرا پہلو یہ ہے کہ اس حکومت سے ملت اسلامہ کو بھارت اور یہاں کی بھارت نواز جماعتوں کو پہچاننے میں کافی مدد ملی ہے۔ ڈاکڑمحمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بذزیعہ ترجمان
X
10/15/2017
The muslim society has been divided into two extremist ideologies that has led to internal discord and disputes amongst muslims. The one ideology is that the first and the only aim of Islam is government formation and the other ideology is that Islam has no relation with politics or state.The outcome of these two More
The muslim society has been divided into two extremist ideologies, Dr. Muhammad Qasim
10/15/2017 12:00:00 AM
The muslim society has been divided into two extremist ideologies that has led to internal discord and disputes amongst muslims. The one ideology is that the first and the only aim of Islam is government formation and the other ideology is that Islam has no relation with politics or state.The outcome of these two ideologies has been a strife in Muslim societies. The former ideology has degraded the importance of ibadaat( worship) in Islam and has brought it closer to communism in the passion of grabbing power.The later ideology has separated Islam from the politics, economics, society, judicial system and education. This has led to secularization of muslims and today muslims feel no harm in accepting the sovereignty of unbelievers.Islam is a religion of justice and moderation, It encompasses the principles for beliefs, modes of worship, lawful and prohibitions and morality. Islamic teachings gives appropriate importance to all these. Therefore until these two extremist ideologies are shunned and an intermediate and moderate approach is adopted by muslims the strife in our societies won’t end and the ever increasing secularization won’t be contained .Muslims all over the world have been torn apart by internal strife and external aggression. Therefore need of the hour is that Muslims remain alert about these two extremist ideologies. Those ulema and scholars who present Islam as a way to usurp power and those scholars who present Islam as just like Buddhism and Jainism should be watched out for.Islam has discouraged extremism in everything be it beliefs or any other practical field of life and preaches moderation. It is therefore imperative upon scholars that they should first clean up islam from these extremist ideologies and then work for reforms among muslims Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

مسلمانوں کے معاشرے دو ا نتہا پسند افکار کے درمیان تقسیم ہو چکے ہیں جسکی وجہ سے تقریباً تمام مسلم معاشروں میں داخلی انتشاراور تنازعات پیدا ہوچکے ہیں۔ ایک انتہاپسند نظریہ یہ ہے کہ اسلام کا پہلا اورآخری مقصد اسلامی حکومت کا قیام ہے دوسرا انتہا پسند نظریہ یہ ہے کہ اسلام کا سیاست اور ریاست سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اول الذکر نظریہ نے مسلمان معاشروں میں جنگ وجدال کا ماحول پیدا کیا ہے، اس سے اسلام میں عبادت کی اہمیت بھی مجروح ہوگئی ہے اور اسلام حصولِ اقتدار کے متعلق کمیونزم کے فلسفہ کے ساتھ کھڑا ہوگیا ہے، ثانی الذکر نظریہ کی وجہ سے اسلام مسلمانوں کی سیاست، معیشت، معاشرت اور نظام عدلیہ وتعلیم سے بے دخل ہوگیا ہے، مسلمانوں کی Secularisation ہوگئی ہے اور مسلمانوں اغیار کی حاکمیت کی اطاعت اور وفاداری میں کوئی قباحت محسوس نہیں کرتے۔ اسلام عدل اور اعتدال کا دین ہے، اس میں عقائد، عبادات ، احکام حلال وحرام، اخلاق، اسلامی حکومت سب باتوں کو اپنی اپنی اہمیت حاصل ہے۔ اس لئے جب تک نہ دونوں انتہا پسندی پر مبنی نظریات کو ترک کرکے مسلمانوں میں اعتدال کی سوچ پیدا کی جاتی ہے، تب تک مسلمانوں میں نہ جنگ وجدال کی سوچ ختم ہوسکتی ہے اور نہ ہی ان میں پائی جانے والی Secularisation پر قابو پایا جاسکتا ہے۔ مسلمان اس وقت پوری دنیا میں داخلی انتشار اور خارجی تصادم آرائی میں مبتلا ہو کر تباہ وبرباد ہورہے ہیں۔ اس لئے ملت اسلامیہ کو چاہیے کہ وہ ایسے اہل علم و دانش جو اسلام کو حصول اقتدار کے فلسفہ کے طور پیش کررہے ہیں یا جو اسلام کو بدھ مت اور جین مت کی طرح صرف ایک اخلاقی فلسفہ کے طور پیش کرتے ہیں دونوں سے خبردار رہیں۔ اسلام نے انتہا پسندی کی تمام صورتوں کی خواہ عقائد سے متعلق ہویا عبادات کے متعلق، معاشرت کے متعلق ہو یا معیشت کے متعلق حوصلہ شکنی کی ہے اور ہر معاملے میں عدل اور اعتدال کی تعلیم دی ہے، اس لئے اہل علم کا کام یہ ہے کہ وہ پہلے تصفیہ کا کام کریں(اسلام پر انتہا پسندی اور بدعات کا گردوغبارہٹائیں) پھر اصلاح کا کام کریں (مسلمانوں کے عقائد واعمال کی درستگی کریں)۔ ڈاکڑمحمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بذزیعہ ترجمان مسلم دینی محاز (مرکزی دفتر راجباغ سرینگر)
X
10/4/2017
The attack on Javaid Ahmad and Muhammad Shafi in Tihar jail needs to be condemned in the strongest possible terms . This attack is not a one off incident but a well planned conspiracy against Kashmiri inmates in Jails outside Kashmir. These attacks are done on the directions of jail authorities through criminal e More
Attack on Javaid Ahmad and Muhammad Shafi in Tihar jail needs to be condemned in the strongest possible terms .
10/4/2017 12:00:00 AM
The attack on Javaid Ahmad and Muhammad Shafi in Tihar jail needs to be condemned in the strongest possible terms . This attack is not a one off incident but a well planned conspiracy against Kashmiri inmates in Jails outside Kashmir. These attacks are done on the directions of jail authorities through criminal elements in the jail. We have seen in the past such incidents where Kashmiri inmates were targeted under well planned attacks with sharp edged weapons and many a times these attacks have proved fatal. Incidents that happened to Farooq Qasid and Iftikhar Mirza earlier prove that these attacks are not a one off incident. All Kashmiris need to condemn these attacks and rise in solidarity with those who are undergoing incarceration in various jails across Kashmir and India. Amnesty international should also look into this matter at the earnest and take appropriate steps to save these inmates and provide medical relief to them. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

X
10/3/2017
For the first time since 1990 an under trail in a case in srinagar is being held in a Jammu jail and this has led to the worst practice of not producing them under trail for court hearings.Ailing women pro freedom leader Asiya Andrabi whose PSA has been revoked and orders passed for her release by the court but More
No difference between PDP and Kuka Parray' s Ikhwan
10/3/2017
For the first time since 1990 an under trail in a case in srinagar is being held in a Jammu jail and this has led to the worst practice of not producing them under trail for court hearings.Ailing women pro freedom leader Asiya Andrabi whose PSA has been revoked and orders passed for her release by the court but instead of being set free she has been incarcerated in Jammu Jail. Continuous detention in Jammu Jail has taken a serious toll on her health and recently she had to be treated for swine flu. She was not produced in Srinagar court consecutively on 14th September 21st September and 4th October.Police has clearly said that they have directions from chief ministers office not to produce her in court.The tyranny meted out by Kuka parray and Mehbooba Mufti to Kashmiri Muslims is unmatched in history. MDM is not surprised by this tyranny as we don't see a difference between PDP and Kuka Parray' s Ikhwan Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

1990 سے پہلی بار سرینگر کے ایک مقدمہ میں کسی انڈر ٹرائل کو کشمیر کے بجائے جموں جیل میں رکھا گیا ہے اور اس سے یہ بدترین روایت قائم کی گئی کہ مقدمہ کی سماعت کیلئے ان کو عدالت میں پیش ہی۔نہیں کیا جاتا۔علیل خاتون رہنما آسیہ اندرابی کا ریاستی عدالت عالیہ نے PSA کلعدم کرکے رہا کرنے کا حکم سنایا تھا مگر ان کو رہا کرنے کے بجائے جموں جیل بھیج دیا گیا ۔جموں میں قید کی وجہ سے ان کی صحت انتہائی خراب ہوگئی ہے اور کچھ دن قبل ان کو ایمرجنسی میں سوائن فلو کا انجیکشن بھی لگانا پڑا۔ ان کو 14 ستمبر، 21 ستمبر اور 4 اکتوبر کو سرینگر کی عدالت میں پیش کیا جانا تھا لیکن ایسا نہیں کیا گیا۔پولیس ذمہ دار صاف طور ان کو عدالت میں پیش کرنے سے یہ کہہ کر معذوری ظاہر کر رہے ہیں کہ وزیر اعلی کے دفتر سے ہدایات ہیں کہ اس کو عدالت میں پیش نہ کیا جائے۔ کوکہ پرے اور محبوبہ مفتی نے جو مظالم ملت کشمیر پر ڈھائے ہیں اس کی مثال دنیا میں کہیں نہیں ملتی انہوں نے فرعون اور چنگیز خان کے مظالم بھی بھلا دئے ہیں ۔مسلم دینی محاذ کو حکومت کے ان مظالم پر تعجب نہیں کیونکہ ہم PDP حکومت کو کوکہ پرے اخوان سے مختلف نہیں سمجھتے۔ مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
9/18/2017
In 2018 the Kashmir will complete 200 years of continued subjugation. In 1818 the 480 year long period of Muslim rule (1339 to 1818) ended and Sikhs usurped power in Kashmir. From 1818 to 1846 the Sikh period of 27 years proved to be tyrannical after which Dogras took over the reigns of power in 1846 and their tor More
In 2018 the Kashmir will complete 200 years of continued subjugation.
9/18/2017 12:00:00 AM
In 2018 the Kashmir will complete 200 years of continued subjugation. In 1818 the 480 year long period of Muslim rule (1339 to 1818) ended and Sikhs usurped power in Kashmir. From 1818 to 1846 the Sikh period of 27 years proved to be tyrannical after which Dogras took over the reigns of power in 1846 and their torturous period extended for another 100 years till 1947 and now for the last 70 years we are being subjugated at the hands of India. We should ponder why our period of subjugation is not ending? We have laid numerous exemplary sacrifices but these sacrifices haven’t yet yielded the fruit of freedom. We should introspect why Allah's Help is not being bestowed upon us? This is an established fact that we can't gain freedom from India on the basis of materialistic resources, the only way left for us is to invoke Allah's Help. Quran tells us that in history only Bani Israel had to face such long subjugation and Quran has described the vices of these people ( Al-Baqarah 40 to 120) which led to their lengthy slavery.Tyrant rulers are a punishment of Allah on disobedient people as well. Allah's Help for muslims has certain prerequisites, if we are not sincere towards Allah and His servants and claim frequently that our struggle has nothing to do with Islam, how can we expect Allah's Help? Falsehood and treachery has already stripped us of our economic and agricultural independence and the political hypocrisy has lengthened of our slavery.Need of the hour is that we all, people , resistance leadership and intellectuals should introspect. We should shun the three vices of falsehood , treachery and hypocrisy for which we have earned a bad name world over. Only then it is possible that Allah will get us rid of this awe full life and grant us freedom. The world powers will never ever risk making a rising economic power like India angry for us.Therefore it is necessary that we strengthen our relation with Allah and unite on the basis of Islam to continue this resistance movement. Dr Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

اگلے سال (2018) میں ملتّ اسلامیہ کشمیر غلامی کے دو سو سال مکمل کر رہی ہے، 1818ءمیں جموں کشمیر میں مسلم حکمرانوں کا 480 سالہ (1818 ء۔1339ء) دور ختم ہو گیا اور سکھوں کی حکومت کشمیر میں قائم ہوگئی۔ سکھوں نے27سال(1846ء۔1818ء) تک ہم پر مظالم ڈھائے پھر جموں کے ڈوگرہ حکمرانوں نے 100 سال(1947 ء۔1846ء)تک ان مظالم کا سلسلہ جاری رکھا اور اب پچھلے70 سال (2017ء۔1947ء) سے ہم پر بھارتی حکمران مظالم ڈھارہے ہیں۔ غور طلب بات یہ ہے کہ آخر کیا وجہ ہے کہ ہماری غلامی کا سلسلہ طویل ہو رہا ہے ؟ ہم نے بے حساب قربانیاں دیں مگر آج تک ہم کو غلامی سے خلاصی نہیں مل سکی۔ہمیں اپنا احتساب کرنا چاہیے آخر ﷲتعالیٰ کی مدد اور نصرت ہمیں کیوں حاصل نہیں ہورہی ہے؟ یہ بات تو معلوم ہے ہم مادی قوت کی بنیاد پر بھارت سے آزادی حاصل نہیں کرسکتے اگر ہمیں آزادی حاصل ہوسکتی ہے تو وہ صرف ﷲ کی مدد ونصرت سے، قرآن مجید میں ہمیں اسطرح کی طویل ترین غلامی کی تاریخ مصر میں یہود کے متعلق معلوم ہوتی ہے، قرآن مجید نے اُن بدترین یہودی خصلتوں کا ذکر کیا ہے (البقرہ۔ 120۔40آیات ) جو اُن کی غلامی کا باعث بنی تھیں۔ قوموں پر ظالم حکمرانوں کا سلسلہ ہونا بھی قوموں پر ﷲ کے عذاب کی ایک صورت ہے۔ مسلمانوں کے لئے ﷲ تعالیٰ کی مدد اور نصرت کا ایک خاص معیار ہے، اگر ایک طرف ہم ﷲ اور ﷲ کے بندوں کے بارے میں مخلص (Sincere) نہ ہوں اور پھر باربار یہ اعلان بھی کرتے ہوں کہ اسلام کا اس جدوجہد کے ساتھ کوئی تعلق نہیں ہے پھر ﷲکی مدد کیوں حاصل ہوگی؟جھوٹ اور فریب کی وجہ سے پہلے ہی ہماری معاشی اور زرعی خود کفالت ختم ہوچکی ہے، اور سیاسی دورخی کی وجہ سے ہم مسلسل غلام بنائے جارہے ہیں۔ ضرورت اس بات کی ہے ہم سب، عوام، حریت پسند قیادت اور اہل علم ودانش اپنا احتساب کریں ان تینوں خصلتوں (جھوٹ، فریب، دوزخی مزاج) جسکے لئے ہم پوری دنیا میں بدنام ہیں ، کو ترک کرکے اپنا تعلق ﷲ اور ﷲکے بندوں کے ساتھ درست کریں، کشمیر میں روحانی اور اخلاقی اقدار کو دوبارہ زندہ کریں، پھرممکن ہے ﷲ تعالیٰ ہماری موجودہ ذلت آمیز زندگی ختم کرکے ہمیں آزادی نصیب فرمائے۔ دنیا کی طاقتیں کبھی بھی ہمارے لئے بھارت جیسی ابھر رہی سیاسی اور معاشی طاقت کو ناراض نہیں کریں گی۔ اس لئے ہمیں چاہیے ہم ﷲتعالیٰ کے ساتھ ہی اپنا تعلق مضبوط کریں، اپنی اصلاح کرکے اسلام کی بنیاد پر متحد ہو کر اس تحریک مزاحمت کو جاری رکھیں۔ ڈاکڑمحمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بذزیعہ ترجمان(رامباغ سرینگر)
X
9/5/2017
Ameer Muslim Deeni Mahaz Dr Muhammad Qasim has condemned the summon issued against senior advocate and President Kashmir Bar Association Mian Abdul Qayoom, by the Indian NIA. He said that this was a sinister design by India to target pro-resistance people of Kashmir as all other methods to break our resolve have More
Dr Muhammad Qasim has condemned the summon issued against senior advocate and President Kashmir Bar Association Mian Abdul Qayoom, by the Indian NIA.
9/5/2017 12:00:00 AM
Ameer Muslim Deeni Mahaz Dr Muhammad Qasim has condemned the summon issued against senior advocate and President Kashmir Bar Association Mian Abdul Qayoom, by the Indian NIA. He said that this was a sinister design by India to target pro-resistance people of Kashmir as all other methods to break our resolve have failed. He added that all this is just a drama and it will die a silent death as happened to the earlier such tactics . He said that such things won’t deter people of Jammu and Kashmir from their right to determine their future. Dr Qasim added that since Mian Abdul Qayoom has been helping the people and leaders of Kashmir, who have been the victims of unjustified and unlawful Indian system, legally therefore NIA has summoned him to pressurize him against helping the oppressed Kashmiris so that no one comes to their legal aid and India continues to oppress them as must as it can. Dr Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

مسلم دینی محاذ کے امیر ڈاکٹر محمد قاسم نے این آئی اے کی طرف سے سرکردہ وکیل اور کشمیر بار ایسو سی ایشن کے صدر میاں عبد القیوم کو طلب کئے جانے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ یہ حریت پسندوں کا قافیہ حیات تنگ کرنے کی مکروہ سازش ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس مکروہ سازش کا اختتام بھی اسی طرح ہوگا جس طرح اس سے قبل کئے گئے ڈراموں کی ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ ان ہتھکنڈوں سے کشمیریوں کے حوصلے کبھی پست نہیں ہونگے۔ ڈاکٹر قاسم نے کہا میاں عبدالقیوم بھارت کے ظالمانہ چنگل میں پھنسے کشمیری رہنماوں اور عوام کو قانونی امداد فراہم۔کرتے رہے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ اب این آئی اے کے ذریعہ ان کی تنگ طلبہ شروع کر دی گئی ہے۔ ڈاکٹر قاسم نے کہا ان ہتھکنڈوں سے میاں عبد القیوم جیسے عالی ہمت لوگوں کے حوصلے کبھی پست نہیں ہوسکتے۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
8/31/2017
Even after quashing of PSA on Asiyeh Andrabi and Sofi Fehmeeda by the high court and the directions of the judge to provide both these ladies medical care Police has pressurized doctors to relieve them from hospital. Tyranny is that after the quashing of PSA both the ladies are under trails even then they are More
PDP and police have devised a plan to kill Asiyeh Andrabi in Jammu Jail.
8/31/2017
Even after quashing of PSA on Asiyeh Andrabi and Sofi Fehmeeda by the high court and the directions of the judge to provide both these ladies medical care Police has pressurized doctors to relieve them from hospital. Tyranny is that after the quashing of PSA both the ladies are under trails even then they are being shifted to Jammu despite court directions have been served to the Jammu jail authorities on 30th August itself. Since PDP and police have devised a plan to kill Asiyeh Andrabi in Jammu Jail, we want to tell those people who overtly or covertly supported PDP to come into power that differentiating between PDP and National conference can prove disastrous. Since 1947 this kind of tyranny prevalent in PDP rule on people especially those pro freedom people who have no overt or covert connections with PDP had similarity only in Kuka Parray period. Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

آسیہ اندرابی اور فہمیدہ صوفی کو ہائی کورٹ کی طرف سے PSA کلعدم قرار دئے جانے کے باوجود اور جج کی طرف سے ان کو طبی امداد پہنچانے کی ہدایت پر بھی پولیس نے اسپتال کے ڈاکٹروں پر دباو ڈال کر ان کو اسپتال سے رخصت کروایا۔ پھر ظلم اور بربریت کی انتہا یہ کہ اب جب آسیہ اندرابی اور فہمیدہ صوفی undertrail تھیں اسکے باوجود بھی ان کو جموں جیل منتقل کیا گیا حالانکہ 30 اگست کو ہی جموں جیل میں psa کے متعلق ہائی کورٹ آرڈر کو جمع کرایا گیا تھا۔ چونکہ PDP اور جموں کشمیر کی پولیس نے باضابطہ آسیہ اندرابی کو جموں جیل میں قتل کرنے کا منصوبہ بنایا ہے، ہم ان لوگوں کو یہ بتانا چاہتے ہیں جنہوں نے pdp کو اقتدار میں لانے کیلئے اعلانیہ اور درپردہ کوششیں کیں کہ بھارت نواز سیاسی جماعتیں بالخصوص نیشنل کانفرنس اور PDP میں فرق کرنا انتہائی خطرناک ثابت ہوسکتا ہے۔ 1947 سے آج تک صرف کوکہ پڑے کے دور میں ہی وہ بدترین مظالم دیکھے گئے ہیں جو آج PDP کے دور میں ملت کشمیر پر بالخصوص ان حریت پسندوں پر جن کا PDP یا پولیس کے ساتھ کسی قسم کے اعلانیہ یا خفیہ تعلقات نہیں ہیں جاری ہیں ۔ مسلم دینی محاذ بذزیعہ ترجمان
X
8/21/2017
The statement of Indian home minister Rajnath singh regarding the resolution of Kashmir issue by 2022 reflects towards the important plans of indian for Kashmir. Operation All out against the mujahideen in Kashmir, jailing of resistance leadership, American ban on the Kashmiri resistance organizations and changing More
Responsibility of the resistance leadership to chalk out a comprehensive strategy for 2021.
8/21/2017 12:00:00 AM
The statement of Indian home minister Rajnath singh regarding the resolution of Kashmir issue by 2022 reflects towards the important plans of indian for Kashmir. Operation All out against the mujahideen in Kashmir, jailing of resistance leadership, American ban on the Kashmiri resistance organizations and changing the political discourse in Jammu kashmir by raking up the issue of article 35A, need to be looked at in the spectrum of this statement of Rajnath. In 2021 polls, BJP will emerge as single largest party in Jammu and kashmir as it will sweep all 37 seats in Jammu while as in Kashmir the 46 assembly seats will be divided amongst NC, PDP , Congress and other pro India parties as their existence has been shrunken to the valley. This is the reason that all the development work is in full swing in the Jammu region. In 2021, being the single largest party BJP will dictate terms to the valley based parties in government formation. On acquiring majority in the assembly, BJP will pass a resolution requesting the President to scrap the state autonomy. This may lead to widespread protests in the valley for saving the autonomy of the state after which BJP will reconsider the request and use this scraping of autonomy as a sword hanging on the heads of Kashmiris. The motive of BJP through this move is to convert the freedom movement of Kashmir into a movement to safeguard the autonomy. They want to start a discourse in kashmir that azadi is impossible to achieve and it is better to safeguard the autonomy instead. At this stage there will be overt and covert attempts to make hurriyat leadership join the autonomy safeguard bandwagon. Since PDP, NC and congress will have been ousted from power these parties will instigate public agitation on the autonomy issue. Even though congress and NC are directly responsible for the slavery of Jammu and Kashmir. Autonomy was eroded by Congress and from 1975 to 1989 NC did not lead any agitation against the erosion of autonomy. What did National conference do when its autonomy report was thrown into dustbin by the Delhi Government? People know well PDP was created by Indian agencies to keep people interested in the electoral politics after the political standing of National conference was decimated in Kashmir. The elimination of residual autonomy and bringing BJP into power and transferring the power centre from Kashmir to Jammu are the three jobs PDP is carrying out with full sincerity. It is the responsibility of the resistance leadership to chalk out a comprehensive strategy for 2021 so that the freedom movement is saved from being converted into an autonomy safeguard movement and steps are taken to carry forward the freedom movement indigenously and independently. Dr Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

بھارتی وزیرداخلہ راجناتھ سنگھ کا 2022ءتک مسلہ کشمیر حل کئے جانے کا اعلان کشمیر کے متعلق بھارتی حکمرانوں کے اہم منصوبے کی طرف اشارہ ہے۔ کشمیر میں عسکریت پسندوں کے خلاف آل آوٹ آپریشن ، حریت پسندوں کو جیل بھیجنے کا سلسلہ ،پاکستان میں کشمیرکی مزاحمتی جماعتوں پر امریکی پابندی، جموں کشمیر میں 35Aکے نام پر سیاسی موسم کی تبدیلی ان باتوں کو راجناتھ سنگھ کے اعلان کے تناظر میں دیکھنے کی ضرورت ہے،چونکہ 2021ءمیں ریاستی انتخابات میں بھاجپا سب سے بڑی سیاسی جماعت کے طور سامنے آئے گی، کیونکہ نیشنل کانفرنس، PDP،کانگریس اور کشمیر کی باقی بھارت نواز سیاسی جماعتیں صوبہ کشمیر کی 46نشتوں کے لئے سیاسی دنگل کرسکتی ہیں کیونکہ جموں کی 37نشتیں بھاجپا لاشریک طور حاصل کرسکتی ہے اسی لئے جموں میں ترقیاتی کام سرعت سے کئے جارہے ہیں۔ چونکہ 2021ءانتخابات میں کشمیر صوبہ پر انحصار کرنے والی جماعتوں میں ہر ایک 8یا10نشتیں ہی حاصل کریے گی اس طرح بھاجپا اپنے شرائط پر ان میں کسی بھی جماعت سے حمائت حاصل کرکے حکومت بنائے گی۔ حکومت بنانے کے فوراً بعد بھاجپا اسمبلی میں نام نہاداٹانومی ختم کرنے کے لئے صدر ھند سے سفارش کرے گی۔ پھر دو صورتیں پیدا ہوسکتی ہیں: اگر جموں کشمیر میں اس سفارش کے خلاف موثر تحریک شروع کی جاتی ہے توبھاجپا اس سفارش پر نظرثانی کرکے اس کو کشمیر یوں کی گردن پر لٹکتی تلوار کے طور استعمال کرے گی، اس سفارش سے جو بڑا مقصد بھاجپا حاصل کرنا چاھتی ہے وہ یہ کہ جموں کشمیر کی تحریک آزادی کو تحریک تحفظ اٹانومی ، میں تبدیل کیا جا ئے، یعنی اس سے کشمیر میں بھی یہ مباحثہ شروع ہوگا آیا آزادی ممکن بھی ہے یا ہمیں تحفظ اٹانومی کے لئے کام کرنا چاہیے ؟ اس مرحلے پر حریت پسند قیادت کو بھی شعوری یا غیر شعوری طور اٹانومی کی گاڑی میں سوار کرنے کی کوشش کی جائے گی۔ چونکہ نیشنل کانفرنس، PDP اور کانگریس یہاں اقتدار سے محروم ہوجائیں گی اس لئے وہ اٹانومی کے لئے خوب ہنگامہ آرائی کریں گے۔ حالانکہ کشمیر کی غلامی کے لئے کانگریس اور نیشل کانفرنس ہی ذمہ دار ہے، اٹانومی کو کانگریس نے ختم کیا ہے ا ور نیشنل کانفرنس نے 1975سے 1989تک اٹانومی کی بحالی کے لئے کونسی تحریک چلائی، 2000 میں اٹانومی رپورٹ دہلی کیطرف سے مسترد کئے جانے پرنیشنل کانفرنس نے کیا کیا؟ PDP کے متعلق ملت اسلامیہ اچھی طرح جانتی ہے کو اس جماعت کو بھارتی سراغرسا اداروں نے کشمیر میں نیشنل کانفرنس کی سیاسی حیثیت ختم ہوجانے کے بعد لوگوں کو انتخابی سیاست کے ساتھ جوڑے رکھنے، نام نہاد اٹانومی کے باقی بچے کچے آثار کو ختم کرنے،اور بھاجپا کو اقتدار حاصل کرنے کی پوزیشن میں لا کر ریاست کی حکومت کو صوبہ کشمیرکے بجائے صوبہ جموں کومنتقل کرنے کے لئے قائم کیا ہے اور یہ تینوں کام وفاداری کے ساتھ کررہی ہے۔ حریت پسندوں پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ 2021ءاسے پہلے ہی ایک لائحہ عمل ترتیب دیں جس سے تحریک آزادی کو، تحریک اٹانومی، میں تبدیل ہونے سے بچایا جائے۔ اور تحریک آزادی کو خود کفیل وسائل کی بنیاد پر جاری وساری رکھنا ممکن ہو۔ ڈاکڑمحمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
8/20/2017
Ameer Muslim Deeni Mahaz Dr Muhammad Qasim has condoled the demise of MS Qureshi father of Dr Tariq Qureshi. Dr Qasim siad that Dr Tariq Qureshi has done a lot of service to the kashmiri Nation especially during the 2016 uprising by catering to those blinded by pellets showered by the Indi More
Condoled the demise of MS Qureshi father of Dr Tariq Qureshi
8/20/2017 12:00:00 AM
Ameer Muslim Deeni Mahaz Dr Muhammad Qasim has condoled the demise of MS Qureshi father of Dr Tariq Qureshi. Dr Qasim siad that Dr Tariq Qureshi has done a lot of service to the kashmiri Nation especially during the 2016 uprising by catering to those blinded by pellets showered by the Indian regime. Dr Qasim said that the entire muslim nation condoles the loss of Dr Qureshi. He said that it was a personal loss for him because besides having a doctor patient relation is a dear friend. Dr Qasim prayed to Allah to bestow Rahmah on the departed soul and provide Sabr to the bereaved family especially Dr Tariq Qureshi. Dr Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

X
8/18/2017
The extension of three months in the so called PSA of Asiyah Andrabi and Fehmeda Sofi is nothing but political vendetta. The Government very well knows the various ailments Asiyeh Andrabi is suffering and she needs frequent oxygen support, despite this she was sent to Jammu jail instead of Baramullah Jail. In ja More
Extension of three months in the so called PSA of Asiyah Andrabi and Fehmeda Sofi is nothing but political vendetta.
8/18/2017
The extension of three months in the so called PSA of Asiyah Andrabi and Fehmeda Sofi is nothing but political vendetta. The Government very well knows the various ailments Asiyeh Andrabi is suffering and she needs frequent oxygen support, despite this she was sent to Jammu jail instead of Baramullah Jail. In jammu jail due to substandard food and no medical facilities her condition has worsened. A war has been declared by PDP and BJP on the muslims of Jammu and Kashmir and they want to kill some profreedom people by bullets and others by leaving them to rot in jail. But this won’t kill the freedom spirit of the people. The tyranny of the present government has proved beyond doubt the point of view of Dr Muhammad Qasim that there is no difference at all in pro India political parties and harboring the notion of difference between them is political ignorance and disastrous for the freedom movement. MDM on behalf of Dr Muhammad Qasim , Asiyah Andrabi and other ideological prisoners want to clarify to the indian government that through these tactics they can murder us but they can’t kill our yearning for freedom. Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

آسیہ اندرابی اورفہمیدہ صوفی کے نام نہاد PSA میں مزید تین ماہ کی توسیع حکومت کی بدترین سیاسی انتقام گیری کا ثبوت ہے۔ آسیہ اندرابی کے متعلق حکومت بھی جانتی ہے کہ وہ کئی امراض میں مبتلا ہے اور اسکو بار بار Oxygen Support System کی ضرورت پڑتی ہے، اسکے باوجود انکو بارہ مولہ جیل کے بجائے جموں جبل بھیجا گیا، پھر وہاں ان کی حالت انتہائی ناقص غذا اورطبی سہولیات کی عدم دستیابی کی وجہ سے مزید خراب ہوگئی ہے۔ PDP اور بھاجپا کی حکومت نے جموں کشمیر کی ملت کے خلاف جسطرح کا اعلان جنگ کیا ہوا ہے، کچھ حریت پسندوں کو گولیوں سے اورکچھ کو جیلوں میں قتل کرنے کا منصوبہ بنایا ہے۔ اس سے کشمیر یوں کا جذبہ حریت ختم نہیں ہوسکتا۔ موجودہ حکومت کے مظالم سے یہ حقیقت بالکل کھل کر سامنے آگئی ہے جسکا ڈاکڑ محمد قاسم بار بار اظہار کرتے رہے ہیں کہ بھارت نواز سیاسی جماعتوں میں کسی بھی طرح کا فرق کرنا نہ صرف سیاسی جہالت ہے بلکہ یہ فرق کرنا تحریک آزادی کے لئے تباہ کن ثابت ہوسکتا بے ۔ مسلم دینی محاذ ڈاکڑ محمد قاسم ، آسیہ اندرابی اور دیگر نظریاتی حریت پسند محبوسین کی طرف سے یہ حکومت پر واضح کرتا ہے کہ ان بدترین مظالم سے ان کو قتل تو کیا جاسکتا ہے مگر اُن کے جزبہ حریت کو ختم نہیں کیا جاسکتا۔ ترجمان۔مسلم دینی محاذ
X
8/17/2017
The incarcerated ameer of Muslim Deeni Mahaz Dr muhammad qasim's health is deteriorating with each passing day. He was taken to hospital on thursday for visual fielding, he is suffering from glaucoma from last ten years and has lost most of his vision (-5-50). In addition to this he has multiple back discs and h More
MDM appeals people to pray for Dr muhammad qasim's and asiyah andrabi's health conditions and their release.
8/17/2017
The incarcerated ameer of Muslim Deeni Mahaz Dr muhammad qasim's health is deteriorating with each passing day. He was taken to hospital on thursday for visual fielding, he is suffering from glaucoma from last ten years and has lost most of his vision (-5-50). In addition to this he has multiple back discs and has duodenum ulceration, his deterioration of health at alarming pace is matter of serious concern for his disciples and wel wishers. Muslim Deeni Mahaz appeals the world human rights organizations to look into the matter and start a concentrated effort to secure his release. Dr Muhammad Qasim's spouse asiyah andrabi is also suffering from various ailments in jammu jail. MDM appeals people to pray for their health and release. Muslim Deeni Mahaz Through Spokes Person

مسلم دینی محاذ کے محبوس امیر ڈاکٹر محمد قاسم کی طبیعت ہر گزرتے دن کے ساتھ بگڑ رہی ہیں ۔جمعرات کو انہیں آنکھوں کے معالجہ کیلئے اسپتال لے جایا گیا ۔ واضح رہے کہ وہ گلوکومہ کے مریض ہے اور ان کی بیشتر بینائی ضائع ہوچکی ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ انہیں ملٹپل ڈسک اور آنتوں میں زخم کی شکایت بھی ہے۔ ان کی صحت کی ابتری سے ان کے شاگردوں اور مداحوں میں بے چینی ہے۔ مسلم دینی محاذ بین الاقوامی انسانی حقوق کی تنظیموں سے اپیل کرتی ہے کہ وہ اس معاملہ کا نوٹس لے اور سیاسی عناد کی بنا پر قید ڈاکٹر صاحب کی رہائی کیلئے کوشش کرے۔ ڈاکٹر محمد قاسم کہ اہلیہ آسیہ اندرابی بھی جموں کی جیل میں شدید علیل ہے ۔ مسلم دینی محاذ عوام اور ائمہ سے ملتمس ہے کہ وہ ان دونوں کی صحت یابی اور رہائی کیلئے دعا کریں ۔ مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
8/13/2017
The martyrdom of mujahid Yaseen Itoo alias Gaznavi and his two associates is a huge loss to the movement. Yaseen was a mujahid par excellence and has done glorious service in the field of Jihad. After serving a detention of more than a decade Yaseen instead of choosing a life of comfort joined back Jihad and was More
Martyrdom of mujahid Yaseen Itoo alias Gaznavi and his two associates is a huge loss to the movement.
8/13/2017 12:00:00 AM
The martyrdom of mujahid Yaseen Itoo alias Gaznavi and his two associates is a huge loss to the movement. Yaseen was a mujahid par excellence and has done glorious service in the field of Jihad. After serving a detention of more than a decade Yaseen instead of choosing a life of comfort joined back Jihad and was seen as a man of great acumen. In this period of great fitna Yaseen was a mujahid commander who stood for unity in the ranks and was looked upto by all rank and file in mujahideen. It is a moment of sadness for entire resistance camp. The sacrifice of Yaseen Itoo and his two associates will be remembered for times to come because they stood the ground and allowed his associates to escape safely thus setting a great example of bravery and leading by example. Yaseen's martyrdom is an irreparable loss. His efforts to maintain unity and his leadership will be missed. We pray to Almighty Allah to elevate the status of these martyrs and bestow sabr on their families. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

X
8/12/2017
The integrity, development and strength of Pakistan is of utmost importance in checking the growth of Bharat Warsha and Arya Warsha in the sub-continent. The 5000 year old hindu history, culture and Chanakiyan Political Idea of Mandala, which he has put forth in Arth Shastra, describe the policy of India's relatio More
Understand the importance and place of Pakistan in context of Hindu history, culture and the deep seated hegemonic vision of Indian Rulers.
8/12/2017 12:00:00 AM
The integrity, development and strength of Pakistan is of utmost importance in checking the growth of Bharat Warsha and Arya Warsha in the sub-continent. The 5000 year old hindu history, culture and Chanakiyan Political Idea of Mandala, which he has put forth in Arth Shastra, describe the policy of India's relationship with its neighbours and the understanding of this policy in its correct realm helps one in fathoming the importance of Pakistan in the sub-continent. Pakistan has been created in the name of Islam in Hindu heartland and its constitution, through objective resolutions, has given Islam a constitutional and political supremacy in the country. It has been settled once for all that there will be no legislation in Pakistan that is repugnant to Quran and Sunnah. But the Rulers of Pakistan till date have failed to implement this constitution in Pakistan. The anti-Islamic steps of the rulers and their tyranny cannot change the ideological and constitutional foundations of Pakistan. Therefore those who call Pakistan a secular country seem to be ignorant about the ideology and constitution of Pakistan. The anti-Pakistan stance of people, no matter how much pious Muslims they are and no matter pro freedom they are, leaves them in the pro India Camp. Sheikh Abdullah is a glaring example of this fact. To see Pakistan only from the prims of Kashmir Issue is a selfish approach. World is akin to this reality that Pakistan is the only stumbling block to the Indian ideological and military hegemony. Bhutan, Maldives, Nepal, Sri Lanka, Bangladesh and Afghanistan all have practically accepted Indian political supremacy. We request the Muslims of Jammu and Kashmir to understand the importance and place of Pakistan in context of Hindu history, culture and the deep seated hegemonic vision of Indian Rulers. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

پاکستان کی اہمیت، سالمیت، ترقی اور استحکام برصغیر کو بھارت ورش (Bharat Warsha) اور آریہ ورت میں تبدیل ہونے سے بچانے کے لئے انتہائی اہم ہے۔ بھارت کی5000 سالہ ھندو تاریخ، تہذیب اور چانکیہ کے سیاسی نظریہ منڈالا (Mandala) جواس نے ارتھ شاستر (ّArth Shastre) میں پیش کیا ہے، پر مبنی بھارتی حکمرانوں کے ہمسایہ ممالک سے متعلق عزائم کو سمجھنے کے بعد ہی برصغیرمیں پاکستان کی اہمیت اور حیثیت سمجھ میں آسکتی ہے۔ ھندو برصغیر میں اسلام کے نام پرقائم کیا گیا یہ خطئہ ارضی اور جہاں قرار دار مقاصد (Objective Resolutions) کے ساتھ ہی نہ صرف اسلام کو آئینی اور سرکاری حیثیت حاصل ہوگئی بلکہ یہ بات بھی ہمیشہ کے لئے طے ہوگئی کہ پاکستان کے پارلمینٹ میں قر آن اور سنت کے خلاف کسی بھی طرح کی قا نون سازی نہیں کی جاسکتی، بد قسمتی سے آج تک پاکستانی حکمران آئین پاکستان کو صحیح معنوں میں نافذ کرنے کے لئے تیار نہیں ہوئے ہیں، حکمرانوں کی غیر اسلامی حرکتوں اور ظلم سے پاکستان کی نظریاتی بنیادیں اور آئینی حیثیت تبدیل نہیں ہوسکتی ، اس لئے پاکستان کو سیکولر ملک کہنے والے پاکستان کی نظریاتی بنیادوں اور آئین پاکستان سے بے خبر معلوم ہوتے ہیں۔ پاکستان دشمنی انسان کو خواہ وہ اچھا مسلمان اور آزادی پسند بھی کیوں نہ ہونہ چاہتے ہو ے بھی بھارتی خیمے میں پہنچا دیتی ہے، شیخ محمد عبداﷲاسکی معلوم مثال ہے۔ پاکستان کی حیثیت کو صرف مسلہ کشمیر کے حوالے سے دیکھنا انتہائی خودغرضانہ اور مطلب پرستانہ سوچ ہے۔ اس بات کا ا عتراف پوری دنیا کو ہے کہ بھارت کو نظریاتی اور عسکری طور صرف پاکستان سے مزاحمت کا سامنا ہے،بھوٹان، مالدیپ، نیپال، سری لنکا ، بنگلہ دیش اور ا فغانستان کے حکمرانوں نے عملاً بھارت کی سیاسی حاکمیت کو قبول کیا ہے۔ ملت اسلامیہ کشمیر سے گزارش ہے کہ وہ پاکستان کی حیثیت کا تعئین برصغیر کی ھندو تاریخ، تہذیب اور بھارتی حکمرانوں کے برصغیر کے متعلق عزائم کو سامنے رکھتے ہوئے کریں۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
7/29/2017
When the seven lakh occupational troops, one lakh local police and the third strongest propagandist indian media failed in breaking the resolve of the kashmiri people, the Indian authorities have now put their stock on the NIA and hope that the NIA will succeed in breaking the will of kashmiri people. NIA has t More
Request to muslims of Kashmir to show patience unity and steadfastness.
7/29/2017 12:00:00 AM
When the seven lakh occupational troops, one lakh local police and the third strongest propagandist indian media failed in breaking the resolve of the kashmiri people, the Indian authorities have now put their stock on the NIA and hope that the NIA will succeed in breaking the will of kashmiri people. NIA has three ambitions in kashmir. 1: To create an environment of terror and fear in Jammu and Kashmir for this it has begun targeting hurriyat leaders, traders and stonepelters alike. 2) On one hand torture hurriyat leaders mentally and physically and on the other hand do character assassination of them so that wedges are created between people and them. 3) To hoodwink international opinion by claiming that claiming that whatever is happening in Kashmir is due to financing from Pakistan. These ambitions make it evident that banning hurriyat is on the cards. Pro freedom people and leadership should understand these plans of NIA and to face them with patience resoluteness and unity and fail this last nefarious of design of Indian rulers and the dream of freedom of the people will be fulfilled. The NC period from 1947 to 1953 and the Ikhwan period from 1995 to 2001 were similar dreadful periods but could not break the resolve of the people neither can this tyranny of NIA break our resolve .we request muslims of Kashmir to show patience unity and steadfastness. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

سات لاکھ بھارتی افواج، ایک لاکھ جموں کشمیر پولیس دنیا میں تیسرا سب سے زیادہ موثر طریقہ پر جھوٹا پروپیگنڈا کرنے والا بھارتی میڈیا ، بھارت نواز سیاسی جماعتیں جب ملت کشمیر کا جذبہ آزادی کچلنے میں ناکام ہوگئیں اب بھارتی حکمرانوں کی ساری امیدNIA سے وابستہ ہوگئیں ہیں کہ شاید اب NIA اس جذبہ حریت کو ختم کر دے گی۔ NIA کے کشمیر میں بنیادی طور پر تین اہداف ہے1۔ جموں کشمیر میں خوف دہشت کا خطرناک ماحول پیدا کیا جائے یہی وجہ ہے کہ NIA حریت پسند قیادت کے ساتھ ساتھ تاجروں اور سنگ بازوں کو بھی اپنی لپیٹ میں لارہی ہیں ۔ 2 ۔ایک طرف حریت پسندوں پر بدترین مظالم ڈھائے جائیں تو دوسری طرف ان کو بدنام کرکے ان کے اور لوگوں کے دوریاں اور نفرتیں پیدا کرنا 3۔ بین الاقوامی برادری کو یہ کہہ کر گمراہ کرنے کی کوشش کی جائے کہ کشمیر میں جو کچھ ہو رہا ہے اسکی وجہ یہ ہے کہ پاکستان یہاں حریت پسندوں کو پیسے بھیج رہا ہے ان ہی اہداف کے پیش نظر یہ بھی ممکن ہے کہ مستقبل میں حریت پر پابندی عائد کی جائے۔ حریت پسند عوام اور قیادت پر لازم ہے کہ وہ NIA کے ان اہداف کو سمجھے اور ان کا مقابلہ صبر استقامت اخوت اور اتحاد کے ساتھ کرے تو انشاء اللہ بھارتی حکمرانوں کی یہ آخری کوشش بھی ناکام ہوجائے گی اور کشمیریوں کا جذبہ حریت سرخرو ہو جائے گا۔ 1947 سے 1953 تک نیشنل کانفرنس کے دور میں پھر 1995 سے 2001 تک اخوان کے دور میں بھی کشمیریوں نے اس طرح کے خوف ناک اور دہشت ناک دور دیکھے ہیں مگر نہ اس وقت عوام کا جذبہ حریت ختم کیا جاسکا اور نہ آج ختم کیا جاسکتا ہے۔ہم ملت اسلامیہ کشمیر سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ صبر و استقامت اور اتحاد باہمی کا مظاہرہ کریں ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
7/23/2017
Should husband and wife be allowed to talk or not this is now to be decided by the home ministry! The environment of terror and tyranny created by PDP and BJP is unparalleled in history of Kashmir and was not even seen in the worst period of Ikhwan in 1996. Dr Muhammad Qasim who has completed 24 years in prison More
Should husband and wife be allowed to talk or not this is now to be decided by the home ministry.
7/23/2017
Should husband and wife be allowed to talk or not this is now to be decided by the home ministry! The environment of terror and tyranny created by PDP and BJP is unparalleled in history of Kashmir and was not even seen in the worst period of Ikhwan in 1996. Dr Muhammad Qasim who has completed 24 years in prison had asked the court to allow him to communicate with his incarcerated ailing wife Asiya Andrabi who is in Amphala jail under jail authorities supervision. The court denied permission observing that it was under the purview of jail authorities. About a couple of months back the jail authorities assured Dr Muhammad Qasim that he would be allowed to talk to his wife, But now the jail authorities have informed that they had sent the matter to home ministry and the reply is awaited. Probably Jammu Kashmir is the only state in the world where communication between husband and wife is subservient to the orders of home ministry. MDM is not astonished by this tyrranical approach of the government towards Dr Qasim and Asiya Andrabi and this in no way will break their resolve. Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

میاں بیوی کو آپس میں بات کرنے کی اجازت دی جائے یا نہیں دی جائے اعلٰی جیل حکام نے معاملہ وزارت داخلہ کو بھیج دیا ھے۔ جموں کشمیر میں پی ڈی پی اور بھاجپا حکومت نے ظلم ودھشت کا جو ماحول بنایا ہے اسطرح کا ماحول 1996 کے اخوانی دور میں بھی نہیں تھا۔ 24 سال سے اسیر زندان ڈاکٹر محمد قاسم نے تین ماہ پہلے عدالت سے اس بات کی اجازت مانگی تھی کہ جموں جیل میں مقیدان کی اہلیہ آسیہ اندرابی کے ساتھ جیل حکام کی موجودگی میں جیل ٹیلفون پر بات کرنے کی اجازت دی جائے تاکہ وہ علیل اہلیہ کی خیر وعافیت معلوم کرسکے ،عدالت نے یہ کہہ کر اجازت دینے سے انکار کردیا کہ اس طرح کی اجازت دینا اعلٰی جیل حکام کے دائرہ اختیار میں ہے، پھر ڈیڑھ ماہ قبل اعلٰی جیل حکام سے اس بارے میں جب ڈاکٹر محمد قاسم نے بات کی تو انہوں نے کہا ہم اسکی اجازت دیں گے ،مگر اب جیل حکام کا کہنا ہے کہ ہم نے یہ معاملہ وزارت داخلہ کے پاس بھیجا ہے کہ آپ کواہلیہ کے ساتھ بات کرنے کی اجازت دی جائے یانہیں مگر ڈیڑھ ماہ سے وہاں سے کوئی جواب نہیں آرہا ہے۔ جموں کشمیر دنیا کی شاید ایسی واحد ریاست ہے جہاں میاں بیوی کو بات کرنے کے لئے حکومت سے اجازت کی ضرورت پڑتی ہے۔ مسلم دینی محاذ اسطرح کی ظالمانہ اور انتہائی سفاکانہ حرکتوں پر تعجب نہیں کرتا بلکہ یہ واضح کرتا ہے کہ اس طرح کے ظلم وجبر سے ڈاکڑ محمد قاسم اور آسیہ اندرابی جو جموں جیل میں انتہائی سخت تکلیف دہ حالات میں ہے کے حوصلے پست نہیں ہوں گے۔ ترجمان مسلم دینی محاذ
X
7/17/2017
In a simple and austere function at the party headquarter of Muslim Deeni Mahaz a book authored by K.K. Aziz and edited by the incarcerated Amir of Muslim Deeni Mahaz Dr. Muhammad Qasim under the name of “ Idea of Pakistan” was launched by the Islamic scholar Mr. Abdul Majeed Dar . president of High Court Bar As More
Book edited by the incarcerated Amir of Muslim Deeni Mahaz Dr. Muhammad Qasim under the name of “ Idea of Pakistan” released today.
7/17/2017
In a simple and austere function at the party headquarter of Muslim Deeni Mahaz a book authored by K.K. Aziz and edited by the incarcerated Amir of Muslim Deeni Mahaz Dr. Muhammad Qasim under the name of “ Idea of Pakistan” was launched by the Islamic scholar Mr. Abdul Majeed Dar . president of High Court Bar Association Main Abdul Qayoom, Tariq Ahmad Dar( recently acquitted after 12 years from Tihar) Muhammad Maqbool Bhat party general secretary, Tahir Sahib district amir Srinagar , Khalid Bashir district Amir Pulwama, Muhammad Hussain Fazili senier leader and Shakeel Khalid Amir of south Kashmir. It is worth to mention here that govt. agencies are not allowing book launch where participants can elaborate the idea of the book or talk about the present explosive conditions of Jammu Kashmir. Through spokesperson Muslim Deeni Mahaz

مسلم دینی محاذ کے پارٹی ہیڈکوارٹر پر ایک سادہ اور پروقار تقریب کے دوران محاذ کے پابند سلاسل امیر ڈاکٹر محمد قاسم کی جانب سے ایڈٹ کی ہوئی کے کے عزیز کی کتاب کی رسم رونمائی ہوئی۔The Idea of Pakistan کے نام سے کتاب کی رسم رونمائی میں معروف اسلامی سکالر عبد المجید ڈار المدنی، ہائی کورٹ بار ایسوایشن صدر ایڈوکیٹ جناب میاں عبد القیوم، حال ہی میں 12 برس کی اسیری سے رہائی پانے والےحریت پسند جناب طارق احمد ڈار کے ساتھ ساتھ پارٹی کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ ، امیر ضلع سرینگر جناب طاہر ، امیر ضلع پلوامہ خالد بشیر ، سینئر لیڈر محمد حسین فاضلی اور پارٹی لیڈر شکیل خالد نے بھی شرکت کی۔ کتاب میں تفصیلا ان حالات و تقاضوں کا تذکرہ صحیح تاریخی تناظر میں کیا گیا ہے جن میں ہندو اور مسلمانوں کی تحریکیں برصغیر میں پروان چڑھی اور اس وقت کے لیڈران کی دوڑ اندیشی اور معاملہ فہمی پر بھی تفصیلی گفتگو کی گئی ہے جنہوں نے پاکستان کو محمد بن قاسم کے بعد پھر وجود بخشا۔ ترجمان مسلم دینی محاذ
X
7/11/2017
The way Prophet Muhammad S.A.A.W was a leader of the authority, leader and guide for the people of His times He remains the leader, guide and authority for today’s times and the times to come. The way He was a alerting (nazir) people in His Time He is doing so in present times as well through Quran and Hadith( sur More
Request Ulema and Imams to make people aware that the Way Allah is without Partners so is Islam.
7/11/2017 12:00:00 AM
The way Prophet Muhammad S.A.A.W was a leader of the authority, leader and guide for the people of His times He remains the leader, guide and authority for today’s times and the times to come. The way He was a alerting (nazir) people in His Time He is doing so in present times as well through Quran and Hadith( surah Alanaam 92) This is the agreed upon belief of umaah from the time of Sahabah till date. During the Prophet's time the Jew Scholars propagated the lie that the Prophet S.A.A.W is for His Time and people only and this propaganda has been spread by orientalists since then. Afterwards these Jews and orientalists employed some slave minded Muslims to spread this fallacy in Muslims. Therefore today the propose that for wellbeing in this world and in the hereafter any religion can be followed and it is not essential to follow Prophet S.A.A.W any more. I request Ulema and Imams to make people aware that the Way Allah is without Partners so is Islam (Al Imran 19) If other religions are the paths of Truth as well then these religions were present at the times of Prophet Muhammad S.A.A.W as well then what was the reason of sending a Prophet and revealing Quran? To consider all religions as truth is actually the fallacy of Unity Of Religions and it puts a question mark on Quran and Prophethood of Muhammad S.A.A.W (may Allah Forbid).People of Kashmir are known world over for overwhelming Love of the Prophet Muhammad S.A.A.W and would not tolerate any such astray thought. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

سیدنا رسولﷲجسطرح اپنے زمانہ رسالت میں پوری دنیا کے لئے حجت، ہادی اور رہنما تھے آج بھی وہ اسی طرح پوری دنیا کے لئے حجت، ہادی اور رہنما ہیں۔ جسطرح وہ اپنے زمانہ میں لوگوں کو خبردار کرتے تھے (نذیر کی حیثیت سے ) وہ آج بھی اسی طرح قرآن مجید اور احادیث کے ذریعے لوگوں کو خبردار کررہے ہیں (سورة الانعام آیت92)۔ یہ صحابہ سے لیکر آج تک امت کا اجماعی عقیدہ ہے۔ زمانہ رسالت میں یہ پرو پگنڑا یہودی علماءنے کیا، پھر ان کی تقلید میں آج تک مستشرقین یہی پرو پگنڑاکرتے ہیں کہ رسول ﷲصرف مکہ کے لوگوں کے لئے اور ہم زمانہ لوگوں کے لئے ہی رسول بنا کر بھیجے گئے تھے۔ مگر پھر یہودیوں اور مستشرقین نے اپنے کچھ مقلدین مسلمانوں میں تیار کئے جنہوں نے امت میں یہ گمراہی پھیلانی شروع کی کہ رسولﷲ صرف اپنے ہم زمانہ لوگوں کے لئے حجت تھے۔ اس لئے آج بیسویں اور اکیسویں صدی میں دنیاوی ہدایت اور اُخروی فلاح کے لئے کسی بھی مذہب کی پیروی خدا اور آخرت کے یقین کے ساتھ کی جاسکتی ھے یعنی، دنیاوی ہدایت اور اُخروی فلاح کے لئے رسولﷲ پر ایمان لانا ضروری نہیں ہے۔ میں ملت اسلامیہ کشمیر کے ائمہ اور علماءسے اپیل کرتا ہوں کہ وہ لوگوں میں اس بات کی تبلیغ کریں کہ جسطرح ﷲ تعالٰی لاشریک ہے اسی طرح ﷲ کا دین (آل عمران ۔19) بھی لاشریک ہے۔اور اگر اسلام کے بغیر باقی مذاہب بھی حق ہیں، یہ سب مذاہب تو نزول قرآن کے وقت بھی موجود تھے، پھر قرآن نازل کرنے اور سیدنا رسول ﷲ کو رسول بنانے کا کیا مقصد تھا ؟ سارے مذاہب کو حق جاننا’وحدت ادیان کا فتنہ ہے‘ اور اس سے قرآن مجید اور رسالت محمد یہ پر سوالیہ نشان لگ جاتا ہے (نعوذبا للہ) امت اور ملت اسلامیہ کشمیر جو سیدنا رسولﷲ کے ساتھ والہانہ عقیدت کے بارے میں پوری دنیا میں مشہور ہے، اس طرح کی گمراہی کو برداشت نہیں کرسکتی۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
7/4/2017
Muslim Deeni Mahaz has paid glowing tributes to Bashir Lashkari , guest mujahideen and expressed deep grief over the killing of civilian woman Tahira Begum martyred in Dialgam . The delegation of MDM led by senior Leader Khalid shakeel comprising of Zeeshan , Tahir district Amir Srinagar and shabir zargar visite More
Glowing tributes to our Mujahideen
7/4/2017
Muslim Deeni Mahaz has paid glowing tributes to Bashir Lashkari , guest mujahideen and expressed deep grief over the killing of civilian woman Tahira Begum martyred in Dialgam . The delegation of MDM led by senior Leader Khalid shakeel comprising of Zeeshan , Tahir district Amir Srinagar and shabir zargar visited families of martyrs and expressed their condolences and sympathy .During their interaction with bereaved families and people, Khalid shakeel prayed for eternal peace of martyrs. he said that martyrs never die and are placed at the highest levels of Janah. Paying glorious tributes to martyrs of Dialgam encounter, Khalid shakeel said that we are indebted to our martyrs.These martyrs are icons of our freedom movement and we are obliged to follow their mission. They said that these martyrs are laying their lives for a sacred cause and they for all times will remain a source of inspiration and deserve our salute . Through spokesperson Muslim Deeni Mahaz

X
6/29/2017
Young men should not insist for working girls in marriage. The girls are also requested to desist from doing jobs in Government or private sector especially indian companies and factories. In families Islam has placed the economic responsibility on the shoulders of men. But the economic activities of women have More
Appeal to young men not to set condition of working ladies for marriages and express religious zeal in these matters.
6/29/2017 12:00:00 AM
Young men should not insist for working girls in marriage. The girls are also requested to desist from doing jobs in Government or private sector especially indian companies and factories. In families Islam has placed the economic responsibility on the shoulders of men. But the economic activities of women have not been altogether banned however it has been deemed essential that the economic activities of female folk should be within the ambit of Islam and these activities should not affect their basic responsibilities as wives and mothers and these should not affect their honor and chastity in any way. As per a survey by Indian NGO's 53%of women folk face sexual harassment at work place. The kind of materialistic and lustful world we live in these figure should not be surprising. Getting a good education does not necessarily mean that girls have to do a job! If they want they can take up tuition at home or at mohalla level can set up coaching centers in collaboration with other like minded girls. Exclusive girls schools can be set up by these girls and thus not only earn an honorable income but serve the society as well. If they want they can join their father, brother or other lawful relatives in business and groups of girls can set up business ment exclusively for females. When condition of working ladies is set for marriages we render finding a job a matter of life and death for these girls. Many vices can be controlled in the society if the condition of job is avoided for marriages. I appeal the young men not to set this condition of working ladies for marriages and express religious zeal in these matters. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

نوجوان لڑکے شادی کے لئے لڑکیوں کی نوکری شرط نہ بنائیں۔ اور لڑکیوں سے بھی گزارش ہے کہ وہ سرکاری اور پرائیوٹ نوکریوں بالخصوص بھارتی کمپنیوں اور فیکٹریوں میں نوکریاں کرنے سے اجتناب کریں۔ اسلام نے گھر کی معاشی ذمہ داری بنیادی طور مردوں پر عائد کی ہے۔ مگر عورتوں کی معاشی سرگرمی پر پابندی عائد نہیں کی گئی ہے مگر لازم ہے ان کی یہ معاشی سرگرمی دائرہ اسلام میں ہو اور اس سے ان کی ماں اور بیوی کی حیثیت متاثر نہ ہوتی ہو اور یہ عزت ونامو س کی قیمت پر نہ ہو۔ کئی بھارت کی غیر سرکاری تنظیمں سروے کی بنیاد پر یہ بات کہہ چکی ہیں کہ53 فیصد نوکری کرنے والی خواتین کو دوران ِ نوکری کسی نہ کسی سطح پر جنسی استحصال کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ آج جس مادہ پر ست اور شہوت پرست دنیا میں ہم رہ رہے ہیں اس بات پر کوئی تعجب نہیں ہوتا ہے۔ تعلیم حاصل کرنے کا مطلب یہ نہیں ہے کہ پھر لازماً لڑکیاں نوکری ہی کریں! وہ چاہیں تو اپنے گھر میں،محلے میں کوچنگ سنٹر قائم کرسکتی ہے،کئی لڑکیاں مل کر لڑکیوں کے لئے اسکول قائم کرسکتی ہیں اس طرح نہ صرف لڑکیوں کو تعلیم دے سکتی ہے بلکہ با عزت طور معاش بھی حاصل کرسکتی ہیں،وہ چاہیں تو اپنے باپ، بھائی اور دیگر محرم رشتہ داروں کے ساتھ مل کر کاروبار کر سکتی ہیں، اور کئی لڑکیاں مل کر ایسا کاروبار کرسکتی ہیں جو صرف خواتین سے متعلق ہو۔ لڑکے جب لڑکیوں کے لئے نوکری کی شرط رکھتے ہیں پھر نوکری حاصل کرنا لڑکیوں کے لئے موت وحیات کا مسلہ بن جاتا ہے۔ بے روز گاری اور برائیوں کی کئی صورتوں پر قابو پایا جاسکتا ہے اگر لڑکے شادی کے لئے یہ شرط رکھیں گے کہ وہ نوکری کرنے والی لڑکی نہ ہو۔ میں جوانوں سے اپیل کرتا ہوں کہ وہ شادی کے لئے لڑکیوں کی نوکری کو شرط نہ رکھیں اور اپنی دینی اور ملی غیرت کا مظاہرہ کریں۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
6/12/2017
The materialistic and vulgar trends prevalent today in Jammu and Kashmir are alarming. Vices in a societies always find roots in astray ideologies. Thus it is imperative that we find the underlying ideologies for the vices present in our society and address them. Need of the hour is that along with islamic teachi More
The materialistic and vulgar trends prevalent today in Jammu and Kashmir are alarming.
6/12/2017 12:00:00 AM
The materialistic and vulgar trends prevalent today in Jammu and Kashmir are alarming. Vices in a societies always find roots in astray ideologies. Thus it is imperative that we find the underlying ideologies for the vices present in our society and address them. Need of the hour is that along with islamic teachings, the realities of the ideologies of Charles Darwin, Karl Marx, Sigmund Freud and Oak are propagated among the ummah especially the muslim youth. Unless this is done the current materialism and vulgarity that has rendered man as an economic and sexual beast contained. Since we are facing a war like situation in Jammu and Kashmir therefore the full attention of the masses and leaders is on the freedom movement which is and should be our first priority. But those religious organisations, ulema, intellectuals and scholars who are not playing a direct role in freedom movement have this responsibility to atleast aware people and negate these vicious ideologies of materialism, vulgarity and social evils so that those spiritual and moral values are restored which thrived in jammu and kashmir before 1818. Dr. MUHAMMAD QASIM AMEER MUSLIM DEENI MAHAZ THROUGH SPOKESPERSON

جموں کشمیر میں آج جسطرح کی مادہ پرستی اور بے حیائی کا ماحول بنا ہے یہ انتہائی پریشان کُن ہے۔ بداعمالیاں ہمیشہ گمراہ نظریات کی وجہ سے پھیلتی ہیں اس لئے ضروری ہے کہ معاشرے میں پھیلی بداعمالیوں کے لئے ذمہ دار نظریات کی تشخیص کرکے ان کی عقلی اور نقلی دلائل کی بنیاد پر موثر طریقے پر تردید کی جائے۔ جب تک جموں کشمیر کی ملت اسلامیہ بالخصوص نوجوان نسل میں اسلامی تعلیمات کی اشاعت کے ساتھ ساتھ چارلس ڈارون، کارل مارکس ، سگمنڈ فرائڑ اور ہوی اوک جیسے لوگوں کے نظریات سے متعلق بیداری پیدا نہیں کی جاتی ہے، موجودہ مادہ پرستی اور بے جیائی جس نے انسانوں کی اکثریت کو معاشی اور جنسی حیوان بنادیا ہے پر قابو نہیں پایا جاسکتا۔ جموں کشمیر میں چونکہ جنگ جیسی صورت حال ہے اس لئے ملت اور ملت کے ذمہ داروں کی پو ری توجہ تحریک آزادی پر مرکوز ہے۔بلاشبہ تحریک آزادی ملت اسلامیہ کشمیر کی پہلی ترجیح ہے۔ مگر وہ دینی تنظیمیں اور ادارے اور وہ علماءاور اہل دانش جو براہ راست تحریک آزادی میں کوئی فعال رول ادا نہیں کررہے ہیں یانہیں کرنا چاہتے ہیں وہ کم سے کم اتنا تو کرسکتے ہیں کہ ایسے گمراہ کن نظریات جن کی وجہ سے معاشرے میں مادہ پرستی ، بے حیائی اور سماجی برائیاں پھیل رہی ہیں ،کی موثر طریقہ پر تردید کریں اور جموں کشمیر میں دوبارہ روحانی اور اخلاقی اقدار جو 1818ءسے پہلے یہاں پائے جاتے تھے ظاہر ہوں۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان۔
X
5/22/2017
The issues relating to orphans, widows and unmarried poor girls has attained alarming rate in Jammu and Kashmir. Almost in all localities and extended families we have at least one or more individuals who are well off and it is their responsibility to arrange for the education and well being of orphans, looking af More
Issues relating to orphans, widows and unmarried poor girls has attained alarming rate in Jammu and Kashmir
5/22/2017 12:00:00 AM
The issues relating to orphans, widows and unmarried poor girls has attained alarming rate in Jammu and Kashmir. Almost in all localities and extended families we have at least one or more individuals who are well off and it is their responsibility to arrange for the education and well being of orphans, looking after widows and to marry the young poor girls. There is no concept of creating orphanages and widow homes in islam and Islam asks for remarrying widows in order to take care of them and the orphaned children. But in Kashmir we have many social orders heavily influenced by Hinduism therefore remarriage is looked down upon. In such a situation the orphanages is working well are doing a commendable job. Need of the hour is that special attention is given to the 30000 widows,225000 orphans and 250000 poor young girls. The well off businessmen and those receiving large salaries can easily take care of widows, orphans and girls in their relation and localities. I request muslims that in this month of Ramadan all the attention should be lent upon these three categories. It should be planned out how to make a permanent arrangement for the education, well being and remarriage of these three downtrodden classes. I request the well off people to consider it a mode of worship to help these people. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

جموں کشمیر میں یتیموں، بیواووں اور غریب بالغ لڑکیوں کے مسلے نے انتہائی تشویشناک صورت حال اختیار کی ہے، تقریباً ہرخاندان اور محلے میں کچھ لوگ معاشی طور آسودہ حال ہوتے ہیں ان پر یہ شرعی ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ دیکھیں کہ ان کے خاندان اور محلہ میں جو یتیم ہے اسکی تعلیم وتربیت کا بندوبست ہو، بیوا ہے تو اسکی کفالت کی جائے اور بالغ غریب لڑکیاں ہیں تو ان کا نکاح کیا جائے۔ اسلام میں بنیادی طور یتیم خانے اور بیوا گھر وغیرہ قائم کرنے کا تصور نہیں ہے بلکہ قرآن مجید نے بیواووں اور یتیموں کے مسلے کا حل یہ بیان کیا ہے کہ ان یتیم بچوں کی ماووں کے ساتھ نکاح کئے جائیں۔ چونکہ کشمیر میں کئی سماجی مسائل پر ھندوازم کا اثر ہے اس لئے آج بھی یہاں نکاحِ ثانی کومعیوب جانا جاتا ہے۔ ایسے میں اگر یتیم خانے اور بیواووں کے لئے کچھ ادارے قائم ہوتے ہیں وہ احسن طور کام کررہے ہیں تو ٹھیک ہے۔ مگر ضرورت اس بات کی ہے کہ کشمیر میں 30,000بیواووں،225,000 یتیموں اور 250,000کے قریب بالغ غریب لڑکیوں کی طرف تر جیحی بنیادوں پر توجہ کی جائے۔ جموں کشمیر کے معاشی طور آسودہ حال لوگوں اور کثیر رقم تنخواہ لینے والے حضرات بآسانی اپنے خاندان اور محلہ میں یتیموں ، بیواووں اور بالغ لڑکیوں کی ضروریات پوری کرسکتے ہیں۔ میری ملت اسلامیہ سے گزارش ہے کہ وہ اس ماہ رمضان میں اپنی ساری توجہ ان ہی تین مستحقین پر دیں کہ کسطرح یتیموں کی تعلیم وتربیت کا مستقل بندوبست، بیواووں کی ماہانہ کفالت اور غریب بالغ لڑکیوں کے لئے سامانِ نکاح کا بندوبست ہوسکتا ھے۔معاشی طور آسودہ حال لوگوں سے میری یہ گزارش ہے کہ وہ ان تینوں کی مدد معاونت کو عبادت جان کر انجام دیں۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان۔
X
5/13/2017
Indian rulers through local stooges are extended worst form repression on muslims in Jammu Kashmir. This has created an environment more fearful than the terror of Ikhwanis. In this repression Renowned profreedom leaders Dr Muhammad Qasim and his wife Asiyah Andrabi are being particularly targetted. The 24 year More
Indian rulers through local stooges are extended worst form repression on muslims in Jammu Kashmir.
5/13/2017
Indian rulers through local stooges are extended worst form repression on muslims in Jammu Kashmir. This has created an environment more fearful than the terror of Ikhwanis. In this repression Renowned profreedom leaders Dr Muhammad Qasim and his wife Asiyah Andrabi are being particularly targetted. The 24 years of the continuous incarceration of Dr Muhammad Qasim despite the recommendations of the review board and the detention of Asiyeh Andrabi in 1993, 1994,2005 and 2006 and then in 2008 and 2010. In 2016 not only she but her younger brother and her brother in law were sent to jail. In addition to this in 2016 she was held at Rambagh police station in February, March, August and in Eid ul Azha. She has been arrested despite her being very ill .she is being held in Rambagh where heavy construction is taking place just outside. The dust and pollution has taken a heavy toll on her already fragile health but she is not being released. The silence adopted on her arrest by the international human rights organisations is condemnable. The silence of profreedom camp is striking as well. If ailing Asiya Andrabi and her aide Sofi Fehmeeda is not released in a couple of days Muslim Deeni Mahaz and Dukhtaran e Millat will start a public campaign to secure their release. Through Spokesperson Muslim Deeni Mahaz

بھارتی حکمرانوں نے مقامی سیاسی آلہ کاروں کے ذریعے جسطرح کشمیر کی ملت اسلامیہ پر مظالم کا بدترین سلسلہ ڈھانا شروع کیا ہے، اس سے کشمیر میں خوف و دھشت کا ایسا ماحول پیدا ہوگیا ہے جو بدنام زمانہ اخوان دور میں بھی نہیں تھا۔ ان مظالم میں کشمیر کے معروف حریت پسند قائدین ڈاکٹر محمد قاسم اور آسیہ اندرابی کو خصوصی طور ٹارگٹ بنایا گیا ہے۔ ڈاکٹر محمد قاسم24سال کی اسیری اور Review Boardکی سفارشات کے باوجود رہانہ کرنا آسیہ اندرابی جو1993 اور1994 میں2005اور 2006میں پھر 2008سے 2001تک جیلوں میں رہیں اور پھر 2016 میں نہ صرف وہ بلکہ ان کے برادار اصغراور برادنسبتی بھی جیل بھیج دیئے گئے، اسکے علاوہ آسیہ اندابی ہر سال ، فروری ، مارچ ، ا گست اور عیدالاضحی کے موقع پر رام باغ پولیس تھا نے میں کئی ماہ تک قید رہتی ہیں یہ جانتے ہوئے بھی آسیہ اندرابی بے حد علیل ہیں اور بوقت گرفتاری بھی کافی بیمار اور رام باغ کے گردہ نواح میں تعمیراتی کاموں کی وجہ سے جو گردوغبار ہے وہ آسیہ اندرابی کے لئے جان لیواثابت ہوسکتا ہے حکمران ان کو رہا نہیں کررہے ہیں۔ آسیہ اندابی کی اس مسلسل اسیری پر جسطرح حقوق انسانی کے لئے کام کرنے والی جماعتوں نے خاموشی اختیار کی ہے وہ باعث ا فسوس ہے۔ کشمیر کی حریت پسند قیادت نے اس پر جسطرح کی خاموشی اختیار کی ہے وہ بے حد معنی خیز ہے اگر ایک دو دنوں میں علیل آسیہ اندرابی اور فہمیدہ صوفی کو رہا نہیں کیا جا تا ہے تو مسلم دینی محاذ اور دختران ملت ان دونوں رہائی کے لئے باضابطہ عوامی پر پروگرام دے گی۔ ترجمان مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان۔MDM
X
5/9/2017
The basic difference between Islam, Judaism, Christianity and hinduism is not the set of beliefs regarding God and Hereafter. These beliefs regarding God and Hereafter are found in one form or the other in all the religions of the world. The real difference between Islam and other religions is the belief in Prophe More
The real difference between Islam and other religions is the belief in Prophet Muhammad(S.A.W).
5/9/2017 12:00:00 AM
The basic difference between Islam, Judaism, Christianity and hinduism is not the set of beliefs regarding God and Hereafter. These beliefs regarding God and Hereafter are found in one form or the other in all the religions of the world. The real difference between Islam and other religions is the belief in Prophet Muhammad(S.A.W). The followers of these religions donot accept prophet Muhammad (S.A.W) as the final prophet of Allah. Two major movements were initiated in the subcontinent against the prophethood of Muhammad (S.A.W): one was against the finality of prophethood and the other against the Sunnah and Hadees of the prophet. Ghulam Ahmad Qadiyani started the movement against the finality of Prophethood while as Abdullah Chakdalwi rose up against the status of Sunnah and Hadees. Nowadays, the philosophy of unity of religions is propagated which propounds that all religions are right. This Philosophy is actually a conspiracy against the Prophethood of Muhammad(S.A.W) because as per this philosophy for there is no need to believe in Prophet Muhammad (S.A.W) for guidance and enlightment in this world and in the hereafter. This implies that there is no need for propagation of Islam. Hadees Rejecters raise the slogan 'Quran only' which is highly misleading as it opens the gates for interpretation of the Quran as per ones wishes and whims. Modern Hadith Rejecters in India are being led by Dr Rashid Shaaz and in Pakistan this movement is being led by Javaid Ahmad Ghamidi( presently residing in Malaysia). I request Hanafi and Salafi Scholars that they should work inculcating the importance of Hadees along with Quran in the masses. I request youth that they should present the books of these Hadith Rejecters before reknowned Islamic Scholars so that they guide them towards the gross misguidances in these books. The muslim Ummah Alhamdulillah understands the very important relationship between Quran and Hadees and Islam is based on them both. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

اسلام اور یہودیت ، عیسائیت اور ھندوازم کے درمیان اختلاف کی بنیاد خدا اور آخرت کے متعلق عقیدہ نہیں ہے ،خدا اور آخرت کا عقیدہ تقریباً تمام مذاہب میں کسی نہ کسی صورت میں پایا جاتا ہے۔ ان مذاہب کے ساتھ اسلام کا اصل اختلاف محمد رسول اﷲ کی رسالت کو لیکر ہے کہ ان مذاہب کے ماننے والے محمد رسول اﷲ کو اﷲ کا آخری رسول نہیں مانتے ہیں۔ برصغیر میں رسالت محمدیہ کے متعلق دو بڑی سازشیں ہوئیں ایک ختم نبوت کے خلاف دوسری احادیث نبوی کے خلاف : غلام احمد قادیانی کو ختم نبوت کے خلاف کھڑا کیاگیا اور عبداللہ چکڑالوی کو احادیث نبوی کے خلاف۔آج کل جو وحدت ادیان کا فلسفہ عام کیا جارہا ہے جسکے مطابق تمام مذاہب صحیح ہیں، یہ فلسفہ بھی دراصل رسالت محمدیہ کے خلاف خطرناک سازش ہے، کیونکہ اس فلسفہ کے مطابق دنیاوی ہدایت اور ا±خروی فلاح کے لئے رسول اﷲ پر ایمان لانے کی ضرورت نہیں ہے۔ اس سے اشاعتِ اسلام اور تبلیغ اسلام کی ضرورت بھی باقی نہیں رہتی ہے۔ احادیث نبوی کا انکار کرنے والوں کا یہ نعرہ ’صرف قرآن‘ گمراہ کن ھے‘ وہ اس طرح قرآن مجید کے احکام اور تعلیمات کی من پسند تاویل وتشریح کرنا چاہتے ہیں۔ بھارت میں انکار حدیث کی گمراہی کی علَم ڈاکڑ راشد شاذ نے اور پاکستان میں (حال ملیشیا) جاوید احمد غامدی نے اٹھائی ہے۔ میں حنفی اور سلفی علماءسے گزارش کرتا ہوں کہ وہ مسلمانوں میں قرآن مجید کی طرح حدیث کی اہمیت بھی اجاگر کریں۔ اور ساتھ ہی تعلیم یافتہ جوانوں سے بھی گزارش کرتا ہوں کہ وہ ان منکرین حدیث کی کتابوں،جو بظاہر خوشنما اور اچھی معلوم ہوتی ہیں،کو مستند علماءکے سامنے پیش کیا کریں وہ ان کو بتائیں گے کہ ان کتابوں میں کس کس طرح کی گمراہیاں موجود ہیں۔ ملت اسلامیہ کو اس بات کاالحمداﷲ بخوبی علم ھے کہ قرآن اور حدیث کا باہمی تعلق جسم اور روح کیطرح ہے۔اور اسلام ان دونوں سے عبارت ہے۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان
X
5/1/2017
The teachings of the great Kashmiri saints Sheikh Noor ud din Wali and Sheikh Hamza Makhdoom regarding their understanding of Quran and Hadees need to be preached to people in their correct prespective. So that the indian rulers are not able to exploit the sentimental association of kashmiri people with these piou More
Not allow Indian rulers to politically exploit these great and pious saints who have done an exemplary service to Islam.
5/1/2017 12:00:00 AM
The teachings of the great Kashmiri saints Sheikh Noor ud din Wali and Sheikh Hamza Makhdoom regarding their understanding of Quran and Hadees need to be preached to people in their correct prespective. So that the indian rulers are not able to exploit the sentimental association of kashmiri people with these pious saints. The monotheism propagated by these saints is today being termed by Indian rulers and media as Wahabism and thus trying to pit Saudi Islam against Kashmiri Islam in Kashmir. Need of the hour is that the teachings of the pious saints that came from other parts of the world and the local kashmiri saints which include relation with Allah on the basis of Tawheed and relation with people on the basis of justice, are propagated among masses. It should be made clear on the Indian rulers that Islam is one and the basis of this universal deen are the Quran and Sunnah. Islam is neither Saudi nor Kashmiri. It is a universal deen that was propagated well by the saints that came from other parts of the world and the local saints. We request people not to allow Indian rulers to politically exploit these great and pious saints who have done an exemplary service to Islam. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

شیخ نورالدین ولی ؒ اورشیخ ھمزہ مخدوم جیسے عظیم کشمیری اولیاءکرام نے جو قرآن مجید اوراحادیث نبوی کی تشریح اپنے قول وعمل سے کی ہے اس تشریح کو لوگوں میں صحیح تناظر میں پیش کرنے کی ضرورت ہے۔ تاکہ بھارتی حکمران جو ان اولیاءکرام کے ساتھ مسلمانان کشمیر کی جزباتی وابستگی کا سیاسی استحصال کرنا چاہتے ہیں کا مقابلہ کیا جاسکے۔ ان اولیاءکرام نے جو کشمیر میں تو حید کی نشرواشاعت کی ہے آج بھارتی حکمران اور میڑیا اس توحید کو وہابیت کا نام دے کر کشمیر میں سعودی اسلام بمقابلہ کشمیری اسلام کے لئے ماحول بنا رہی ہے۔ اس لئے ضرورت اس بات کی ہے کہ وہ اولیاءکرام جو باہر سے یہاں آئے ہیں اور جو یہاں کے کشمیری اولیاءکرام ہیں دونوں کی اسلامی تعلیمات: تو حید کی بنیاد پر تعلق با ﷲاور عدل کی بنیاد پر تعلق بالناس ،کو لوگوں میں عام کیا جائے۔ بھارتی حکمرانوں پر یہ بات واضح کی جائے کہ اسلام صرف ایک ہے اور اس آفاقی دیں کی بنیاد قرآن اور سنت ہے۔ اس لئے اسلام نہ سعودی ھے نہ کشمیری ہے۔ یہ یہی آفاقی اسلام ہے جسکی اشاعت اور تبلیغ باہر سے آئے اولیاءکرام نے بھی اور یہاں کے کشمیری اولیاءنے بھی کی ہے۔ ہم لوگوں سے گزارش کرتے ہیں وہ بھارتی حکمرانوں کو یہاں کے عظیم اولیاءکرام جنہوں نے دینِ اسلام کی ناقابل فراموش خدمت کی ہے، کا سیاسی استحصال کرنے کی اجازت نہ دیں۔ ٓٓٓ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ۔ ترجمان۔
X
4/27/2017
The general secretary of Muslim Deeni Mahaz Muhammad Maqbool Bhat has termed the arrest of Chairperson Dukhtaran e Millat Syedah Asiyah Andrabi along with personal secretary, Sofi Fehmeeda as the frustration of indian forces and the puppet government. It is for the firat time that all the three generations of Kash More
Condemned the arrest of Asiyeh Andrabi along with personal secretary, Sofi Fehmeeda
4/27/2017
The general secretary of Muslim Deeni Mahaz Muhammad Maqbool Bhat has termed the arrest of Chairperson Dukhtaran e Millat Syedah Asiyah Andrabi along with personal secretary, Sofi Fehmeeda as the frustration of indian forces and the puppet government. It is for the firat time that all the three generations of Kashmiris....80 year olds, 40 year olds and 15 year olds are on the road resisting the indian occupation in unision. This Mass awarness has frustrated the indian forces and agemcies and they have employed the age old tactic of mass arrests. Syedah Asiyah Andrabi along with personal secretary, Sofi Fehmeeda was arrested at 12 midnught from her home. Indian forces barged into her home by jumping over the walls and poimted guns at all the windows. All this was done with full knowledge that no male family member was present in the home. Syedah Asiyah Andrabi is very ill for the past one month and has been hospitalised many times. She suffers from Asthma besides many other ailments. The General secretary of MDM condemned the arrest of Asiyeh Andrabi along with personal secretary, Sofi Fehmeeda and said that this frustration is our success in actuality.

مسلم دینی محاذ کے جنرل سیکریٹری جناب محمد مقبول بٹ نے دختران ملت کی چیئرپرسن سیدہ آسیہ اندرابی صاحبہ اور انکی سیکرٹری صوفی فہمیدہ کی گرفتاری کو بھارتی فورسز کی اور حکومت وقت کی بوکھلاہٹ سے تعبیر کیا ہے ۔ جموں و کشمیر کی تحریک آزادی میں پہلی بار تینوں نسلیں یعنی 80 برس کے بزرگ، 40 سالہ نوجوان اور 15 سالہ بچے بہ یک زبان بھارتی ناجائز قبضہ کیخلاف ہر سطح پر سرگرم ہے۔ بھارتی عزائم کو تینوں نسلیں مسترد کرتے ہوئے سڑکوں پر نکل آئی ہیں عوامی بیداری نے صیہونی بھارتی حکومت کو ہلا کر رکھ دیا ہے جس کے نتیجہ میں انہوں نے تحریک قیادت کو پابند سلاسل کرنا تیز کردیا ہے۔ سیدہ آسیہ اندرابی صاحبہ اور انکی سیکرٹری صوفی فہمیدہ کو کل رات قریب 12 بجے اپنے گھر سے گرفتار کرلیا گیا ۔ فورسز نے درندگی کی انتہا کردی دیواریں پھلانگتے ہوئے گھر میں گھس گئے اور گھر کی کھڑکیوں پر بندوقیں تان لیں۔ حالانکہ سیدہ کے گھر میں مرد نامی بچہ بھی نہیں رہتا صرف عورتیں ہی مسکن رکھتی ہیں۔یہ حقیقت بھارتی فورسز کو بخوبی معلوم ہے مگر اس کے باوجود چاردیواری کا کوئی احترام نہیں کیا گیا۔ سیدہ آسیہ اندرابی قریب ایک ماہ سے علیل ہیں اور اس سلسلے میں ان کو اسپتال میں بھی زیر علاج رہنا پڑا سیدہ استھما ہیں کی مریضہ ہیں اور اسکے علاوہ دیگر کئی امراض میں بھی مبتلا ہیں۔ محاذ کے جنرل سیکریٹری جناب محمد مقبول بٹ نے فورسز کی زبردست الفاظ میں مذمت کی اور فورسز اور حکمرانوں کی بوکھلاہٹ کو کامیابی سے تعبیر کیا۔
X
4/19/2017
The book ‘’Ghamidi Nazriyat Ka Tehqeeqi Wa Tanqeedi Jaiza’’ authored by Dr Muhammad Qasim’s ameer Muslim Deeni Mahaz was released today in a simple ant austere function held at Muslim Deeni Mahaz head office . The dignitaries who participated in the book release function included Adv. Miyan Abdul Qayoom ,Tarq Ahma More
"Ghamidi Nazriyat Ka Tehqeeqi Wa Tanqeedi Jaiza’’ authored by Dr Muhammad Qasim’s was released today
4/19/2017
The book ‘’Ghamidi Nazriyat Ka Tehqeeqi Wa Tanqeedi Jaiza’’ authored by Dr Muhammad Qasim’s ameer Muslim Deeni Mahaz was released today in a simple ant austere function held at Muslim Deeni Mahaz head office . The dignitaries who participated in the book release function included Adv. Miyan Abdul Qayoom ,Tarq Ahmad Dar , Abdul Majeed Dar Al Madni and Mohd Maqbool Bhat. The function was earlier scheduled at a local hotel in munawarabad but police and agencies siezed the venue and threatned the hotel owner of dire consequences if any book release function took place . the organizers later decided to hold the function at party head office . the spokes person of mdm condemned the police highhandedness and said that the scheduled function was absolutely peaceful and literary function and the police action shows the fear that the state and its agencies have developed . he said that the book addresses a very important issue facing the muslim world , particularly muslims of sub-continent. the released book ‘’Ghamidi Nazriyat Ka Tehqeeqi Wa Tanqeedi Jaiza’’ will be available all over the valley. Through Spokes person muslimdeenimahaz

X
4/15/2017
The secular democratic system of government which has been presented as the best political system after 1787 (French revolution) in actuality has proved to be the worst system for religious, linguistic and ethnic minorities. In every country this system has given absolute power and rule in to the hands of relig More
Election boycott should be seen more in the ideological and religious context than in mere political context.
4/15/2017 12:00:00 AM
The secular democratic system of government which has been presented as the best political system after 1787 (French revolution) in actuality has proved to be the worst system for religious, linguistic and ethnic minorities. In every country this system has given absolute power and rule in to the hands of religious and ethnic majorities while as minorities be it religious, ethnic or any other have been rendered as permanent subordinates. This reality of democracy(majoritarian dictatorship) has been veiled under the hollow claim that state has no religion and all the citizens will be equal were before the state. Question is has the American political system put the black people at par with the white? Or does the Indian state see the hindus and muslims at the same level? Any countries claim of being secular is just a propaganda of the majority, the religion of the majority is in fact the religion of the state. Is it possible ever that the Indian parliament will have a majority of muslims or for that matter Pakistani Parliament will have a majority of hindus? It is evident that the people in parliaments represent and protect the religious ideas and emotions of people who choose them. Today in India under BJP, the fast pace of hinduisation (congress believed in stepwise and slow hinduisation) is a natural imperative of the democratic system. Why should BJP care for the muslim sentiments and interests when they have been elected on exclusive Hindu Vote. Thus India is a Hindu Rashter because of its democratic political system and untill the time India has a Hindu Majority it will always remain so. The historic boycott of the Indian parliamentary elections by the Kashmiri Muslims shows the ideological awakening of the muslims towards the freedom movement. It also makes evident that Muslims in Jammu Kashmir do not want to be part of a Hindu Rashter (India) where Hindus will be the permanent Ruling race and Muslims and other religious minorities will be rendered as permanent subordinate race. Therefore this boycott should be seen more in the ideological and religious context than in mere political context. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

سیکولر جمہوری نظام جسکو 1787 ء( انقلاب فرانس) کے بعد بہترین سیاسی نظام کے طور دنیا کے سامنے پیش کیا گیا عملاً مذہبی، لسانی اورنسلی اقلیتوں کے لئے بدترین نظام ثابت ہوا ہے۔ اس نظام نے ہر ملک میں وہاں کی مذہبی اور نسلی اکثریت کومستقل حکمران اور مذہبی اور نسلی اقلیتوں کو مستقل محکوم بنادیاہے۔ جمہوری نظام کی اس حقیقت (اکثریت کی آمریت) کوسیکولرازم کی آڑھ میں یہ کہہ کر چھپانے کی کوشش کی گئی کہ ریاست کا کوئی مذہب نہیں ہوگا اور تمام ملک کے باشندے ریاست کی نظروں میں یکساں ہوں گے؟ کیا امریکہ میں سیاہ فام لوگ ریاست کی نظروں میں سفید فام لوگوں کیطرح ہیں؟ کیا بھارت میں ریاست کی نظروں میں ھندو اور مسلمان یکساں ہیں؟ کسی بھی ملک کا سیکولر ہونے کا دعویٰ وہاں کی اکثریت کا پروپیگنڈا ہوتا ہے، ہر ملک کا مذہب وہی ہوتا ہے جو وہاں کی اکثریت کا مذہب ہوتا ہے۔ سوال یہ ہے کیا کبھی بھارت کے پارلمینٹ میں مسلمانوں کی اکثریت اور پاکستان کے پارلمینٹ میں ھندووں کی اکثریت ہوسکتی ہے؟ اس لئے ظاہرہے پارلمینٹ میں پہنچنے والے لوگ انہی لوگوں کے مذہبی خیالات اور جذبات کی ترجمانی اور حفاظت کرتے ہیں جن کے ووٹ سے وہ منتخب ہوتے ہیں۔ آج بھارت میں بھا جپا کی قیادت میں جو Hinduiasation سرعت کے ساتھ ہورہی (کانگریس تدریجیHinduasation پر یقین رکھتا ہے) وہ جہوری نظام ہی کا لازمی تقاضا ہے۔ بھاجپا مسلمانوں کے جذبات اور مفادات کا خیال کیوں کرے گی جبکہ وہ صرف ھندو ووٹ سے اقتدار میں آتی ہے اس لئے بھارت جمہوری نظام کی وجہ سے ہی ھندو راشٹر ہے اور جب تک بھارت میں ھندووں کی اکثریت ہے یہ ہمیشہ ھندو راشٹر ہی رہے گا۔ ملت اسلامیہ جموں کشمیر نے حال ہی میں جو بھارتی پارلیمینٹ کے انتخابات کا تاریخی بائیکاٹ کیا ہے وہ اس بات کی شہادت ہے کہ ملت اسلامیہ میں تحریک آزادی کے تئیں فکری بیداری پیدا ہوچکی ہے دوم یہ کہ ملت اسلامیہ ایسے ھندو راشٹر (بھارت) کے ساتھ اپنا مستقبل نہیں جو ڑنا چاہتے ہے جہاں ھندو Permanent Ruling Race اور مسلمان اور دیگر مذہبی اقلیتیں Permanent Subordinate Race ہوں گی۔ اس لئے اس بائیکاٹ کو خالصتا سیاسی نقطہ نگاہ کے بجائے نظریاتی اور دینی نقطہ نگاہ سے دیکھنے کی ضرورت ہے۔ ڈاکڑ محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بذریعہ ترجمان مسلم دینی محاذ۔
X
3/28/2017
The government efforts for rejuvenation and revival of the teachings and personality of Abhinav Gupt, a philosopher of Shaivism of the 8th and 9th century AD is thought provoking. The efforts to start a pilgrimage to Abhinav cave in Arizal Budgam a couple of years ago and now a recent seminar held in Jammu Univer More
Propagate the ideas of Islamic Sufism in its right context and perspective.
3/28/2017 12:00:00 AM
The government efforts for rejuvenation and revival of the teachings and personality of Abhinav Gupt, a philosopher of Shaivism of the 8th and 9th century AD is thought provoking. The efforts to start a pilgrimage to Abhinav cave in Arizal Budgam a couple of years ago and now a recent seminar held in Jammu University on Acharya Abhinav Gupta are very important events. Indian government by dessiminating the teachings (Philosophy of Shaivism and the idea of Pantheism) of Abhinav Gupta wants to attain three objectives: 1. To propagate the teachings of Shaivism especially the idea of Pantheism that is an inseparable part of Shaivism. 2. To prove Sufism especially the teachings of Muslim saints as an offshoot of Shaivism. 3. To propagate idea of monotheism as included in Shaivism in place of Islamic monotheism. The teachings of Saints in Jammu and Kashmir are rooted in Quran and Sunnah and not in Shaivism. Life's of Hasan Basari, Junaid Baghdadi, Zunoon e Misri, Imam e Ghazali and Syed Abdul Qadir Jeelani are worth emulating in Islamic Sufism. Through these efforts it is being tried to cut off Kashmiri Sufism from Arab and Central Asia and connect it to Shaivism and Abhinav Gupt. The similarities between Shaivism and Islamic Sufism are not due to any impression of Shaivism on Islamic Sufism but because they are universal realities. We request the intelligentsia in Kashmir to keep a vigil on these efforts of the Indian government and propagate the ideas of Islamic Sufism in its right context and perspective. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesperson

آٹھویں اور نویں صدی کے شیومت کے مشہور فلسفی آچاریہ ابھینو گپت کی شخصیت اور تعلیمات کی احیاء کی حکومتی کوششیں توجہ طلب ہیں۔دو سال قبل بڈگام کے علاقہ میں آری زال میں ابھینو گپھا کو یاترا کی جگہ بنانے کی کوشش اور تین دن قبل جموں یونیورسٹی میں آچاریہ ابھینو گپت پر سمینار کا انعقاد انتہائی اہم اقدام ہیں۔ بھارت کی حکومت جموں و کشمیر میں ابھینو گپت کی تعلیمات (شیومت کی فلسفی اور صوفیانہ تشریحات بالخصوص نظریہ وحدت الوجود (pantheism) )کو جو عام کرنا چاہتی ہے اس سے تین مقاصد حاصل کرنا چاہتی ہے: 1۔شیومت کی تعلیمات کو فروغ دینا بالخصوص شیومت سے نظریہ وحدت الوجود کو عام کرنا۔ 2۔کشمیر کے صوفی ازم بالخصوص اولیاء کرام کی تعلیمات کی اصل شیومت کو ثابت کیا جائے۔ 3۔اسلام کے تصور توحید کے بجائے شیومت کے تصور توحید کو مقبول عام بنایا جائے۔ چونکہ جموں و کشمیر میں اولیاء کرام نے جو صوفیانہ تعلیمات پیش کی ہیں اسکی اصل شیومت نہیں بلکہ قرآن مجید اور سنت رسول ہے اور اس کیلئے حسن بصری، جنید بغدادی ، ذونون مصری، امام غزالی اور سید عبدالقادر جیلانی جیسے اولیاء اسلام کی زندگیاں قابل تقلید رہی ہیں ۔ اسلئے کشمیر کے صوفی ازم کو عرب اور وسط ایشیاء کے اولیاء کرام کے بجائے شیومت اور ابھینو گپت سے جوڑنے کی کوششیں جہالت یے۔ شیومت اور اسلامی تصوف میں جو مشترکہ باتیں ہیں اس کی وجہ یہ نہیں ہے کہ اسلامی تصوف شیومت سے متاثر ہے بلکہ یہ آفاقی حقائق universal truth کی مماثلت ہے۔ہم کشمیر کے اہل علم دے گذارش کرتے ہیں کہ وہ بھارتی حکومت کی ان کوششوں پر کڑی نظر رکھیں اور اسلام می تزکیہ و احسان (تصوف) کا جو تصور ہے اسکو صحیح طور پیش کریں۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بذریعہ ترجمان
X
3/20/2017
The appointment of Aditya Nath Yogi as the chief minister of Uttar Pradesh is a clear sign that BJP has set its eyes on building Ram Temple in place of Babri Masjid before the general elections of 2019. The work on the temple could well start in 2018. If India has to face international pressure or Backlash Modi ca More
A very critical and difficult time is awaiting muslims in Jammu Kashmir and India.
3/20/2017 12:00:00 AM
The appointment of Aditya Nath Yogi as the chief minister of Uttar Pradesh is a clear sign that BJP has set its eyes on building Ram Temple in place of Babri Masjid before the general elections of 2019. The work on the temple could well start in 2018. If India has to face international pressure or Backlash Modi can wash off his hands by passing the buck on to Aditya Nath Yogi. If Muslims of India wont resist this effectively central government will join the badwagon of temple building with all pomp and show. After the 2002 Gujarat anti Muslim Roits a new political Period of 'Aggressive Hindutva' started and it became the key to power in India. 2014 general elections proved that the period of secular politics has ended in India. In such conditions it is quite possible that congress and other parties will also adopt 'Soft Hindutva' to remain relevant and satisfy the 100 crore hindu population of India. Therefore when BJP through Aditya Nath Yogi starts work on Ram Temple, Congress and other parties will find it difficult to oppose keeping in view 2019 elections. In this way BJP will not only score a historical win in 2019 but with it the political importance of Muslims and other minorities in India will end for ever. This will lead to India officially becoming a Hindu country in accordance with the two nation theory and the regional parties will either become shadow organisations of RSS or they will be rendered stooge organisations like NC and PDP in Jammu and Kashmir. A very critical and difficult time is awaiting muslims in Jammu Kashmir and India. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni Mahaz Through Spokesman

ادتیہ ناتھ یوگی کو بھارتی ریاست اتر پر دیش کا وزیر اعٰلی بنایا جانا اس بات کی واضح شہادت ہے کہ بھاجپا نے بھا رت کے مرکزی انتخابات (2019) سے پہلے بابری مسجد کی جگہ رام مندر بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔ اس لئے 2018ءمیں باضابطہ رام مندر تعمیر کرنے کا سلسلہ شروع ہوسکتا ہے۔ اگر بین الاقومی سطح پر یا بھارت میں اس تعمیر پر سخت ردعمل سامنے آتا ہے تو اُس تعمیر سے بھارتی وزیر ا عظم نر یندر مودی لاتعلقی کا اظہار کرکے اسکو ادتیہ نا تھ کا ذاتی فیصلہ قرار دیں گے اورا گر بھارت میں مسلمانوں کیطرف سے اسکی مخالفت موثر طور نہیں ہوتی پھر بھارت کی مرکزی حکومت بھی اعلانیہ طور اس تعمیر میں شامل ہوگی۔ بھارت میں 2002ءکے گجرات میں ہوئے مسلم کش فسادات کے بعد ایک نیا سیاسی دور شروع ہوا ہے‘ یعنی’ جارحانہ ہند تو ‘ اقتدار حاصل کرنے کا آسان ذریعہ بن گیا ہے۔ چونکہ 2014ءکے بھارت کے مرکزی انتخابات سے بھی یہ بات سامنے آگئی ہے کہ اب بھارت میں سیکولر سیاست کا دور ختم ہوچکا ہے۔ ان حالات میں بھارت کے 100کروڑ ھندووں کو خوش کرنے کے لئے عین ممکن ہے کانگریس اور دیگر علاقائی جماعتیں بھی اگر جارحانہ نہ سہی مگر ’نرم ہندتو‘ کو ہی اختیار کرنے پر مجبور ہوں گی۔ اس لئے بھاجپا جب ادتیہ ناتھ کی قیادت میں رام مندر کی تعمیر شروع کرے گی تو کانگریس اور دیگر سیاسی جماعتوں کے لئے اسکی مخالفت کرنا 2019 انتخابات کی وجہ سے مشکل ہو جائے گی ، اسطرح بھاجپا بھارت کے 100کروڑ ھندووں کو خوش کرکے 2019ءمیں نہ صرف تاریخی فتح دوبارہ حاصل کرسکتی ہے بلکہ اسکے ساتھ ہی بھارت میں مسلمانوں اور دیگرا قلیتوں کی سیاسی اہمیت ہمیشہ کے لئے ختم کردی جائے گی ، پھر عملاً بھارت دو قومی نظریہ کی بنیاد پر اعلانیہ طور ھندو راشٹر ہوگا اور علاقائی جماعتیں RSSکی یا Shadow Organization بن جائیں گی یاپھر جموں کشمیر میں نیشنل کانفرنس اور PDP کی طرح StoogeOrganization بن جائیں گی ۔ ایسا معلوم ہوتا ہے۔ نہ صرف جموں کشمیر کے مسلمانوں کے لئے بلکہ بھارت کے مسلمانوں کے لئے بھی بے حد صبر آزما اور مشکلات سے پُرسال آنے والے ہیں۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ ترجمان
X
3/15/2017
The Indian Independence act passed by the British parliament in July 1947 pages way for the transfer of all the powers from British crown to the governments of Pakistan and India through its section 7(1)(B). It also nullified all the agreements and pacts signed between the British and the kings and princes of th More
Accession of Jammu and Kashmir with India has no legal or moral sanctity.
3/15/2017 12:00:00 AM
The Indian Independence act passed by the British parliament in July 1947 pages way for the transfer of all the powers from British crown to the governments of Pakistan and India through its section 7(1)(B). It also nullified all the agreements and pacts signed between the British and the kings and princes of the erstwhile states. This act also nullified the amritsar treaty of 16th March 1846 which had led to the rule of Dogra dynasty . Thus after 15th August 1947 the treaty of Amritsar had no legal or moral validity . The British crown had asked the 562 states including Jammu and Kashmir to decide their future before 15th August 1947. If Hari Singh would have decided to join India before 15th August, eventhough it would have been against the principles of partition, against the geographical realities of the state and against the wishes of the Muslim majority. But despite of this the pact would have carried a legal sanctity. But after 15th August 1947 the revolt against Hari Singh in Jammu and Kashmir was at its peak and the Dogra rule was neither De Jure nor De Facto and he had fled from Kashmir, the pact of accession signed by him has neither legal nor moral sanctity. The only pact signed by Hari Singh that holds legal sanctity is the stand still agreement he signed with Pakistan. At the time of division of subcontinent Muslim conference was representing the people here as it had won 16 out of 21 seats of the erstwhile PrajaSabha. On 19th July 1947 it passed a resolution for accession to Pakistan which was ratified by Mirwaiz Kashmir Maulana Muhammad Yousuf Shah in Jamia Masjid on 14th August. Therefore the accession of Jammu and Kashmir with India has no legal or moral sanctity. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni mahaz Through Spokesman

16 مارچ 1846ء مسلم دینی محاذ کے محبوس امیر ڈاکٹر محمد قاسم کا اخباری بیان۔ جولائی 1947 ءمیں برطانوی پارلیمینٹ نے جب Indian Independence Act پاس کیا اِس کی ایک دفہ (B)(1) 7 کے مطابق 15 آگسٹ 1947ءکو جب اختیارات پاکستان اور بھارت کی حکومتوں کو منتقل کئے جائیں گے‘ اس کے ساتھ ہی وہ تمام معاہدات جو تاج برطانہہ اور ریاستوں کے حکمرانوں اور راجاو¿ں کے درمیان ہوتے تھے کا لعدم (Null and Void) قرار پائیں گے۔ اس مسلمہ اصول کے مطابق16 مارچ 1846 ءکا معاہدہ امرتر جو تاج برطانیہ اورگلاب سنگھ کے درمیان ہوا تھا جسکی بنیاد پر گلاب سنگھ کو کشمیر کی حکمرانی حاصل ہوئی تھی ،بھی کا لعدم قرار پایا۔اس طرح 15اگست 1947 کے بعد اس معاہدہ امر تسر کی کوئی قانونی اور اخلاقی حیثیت باقی نہیں رہی تھی ۔ اسی لئے تاج برطانیہ کیطرف سے تمام 562ریاستوں جسمیں جموں کشمیر بھی شامل تھا کو کہا گیا تھا کہ وہ 15 اگست1947 ءسے پہلے پاکستان یا بھارت کے ساتھ اپنے مستقبل کا تعیّن کریں۔ اگر ہری سنگھ 15 اگست 1947 ءسے پہلے جموں کشمیر کا بھارت کے ساتھ الحاق کرتے تووہ بلاشبہ تقیم برصغیر کے لئے طے پائے اصولوں کی صریح خلاف ورزی ‘ جموں کشمیر کی جغرافیائی حقائق کی پامانی اور سب سے اہم ملت اسلامیہ کی خواشہات کی بے قدری ہوتی مگر پھر بھی اس الحاق کی ایک قانونی حیثیت تھی ‘ مگر 15 اگست 1947 ءکے بعد جب ہری سنگھ کے خلاف تحریک جموں کشمیر میں جاری تھی اور وہ یہاں سے فرار ہوچکا تھا جموں کشمیر پر ہری سنگھ کی حکومت کو نہ De Jure قانون کی روسے) اور نہ ) De facto ( معملی طور سے ) حیثیت حاصل تھی ، جموں کشمیر کا بھارت کے ساتھ الحاق کرنا غیر قانونی اور غیر اخلاقی اقدام ہے۔ جموں کشمیر کے بارے میں ہری سنگھ کے ایک ہی معاہد ے کو قانونی حیثیت حاصل ہے ‘ وہ 12 آگست 1947ءکو پاکستان کے ساتھ کئے گئے اس کے Stand Still Agreement ہے۔ تقسیم بر صغیر کے وقت چونکہ مسلم کا نفرنس عوام کی نمائندگی کرتی تھی اس نے (1947 ءجنوری ) میں پر جاسبھا انتخابات میں 21 نشتوں میں 16نشتوں پر کامیابی حاصل کی تھی ، اور پھر باضابطہ 19جولائی 1947ءکو الحاق پاکستان کی قراردار پاس کی جسکی تائید کشمیر کے سب سے معروف شخصیت میر واعظ کشمیر مولانا محمدیوسف شاہؒ نے 14اگست کے دن جامعہ مسجد سرینگر میں عوامی اجتماع میں کی۔ اس لئے جموں کشمیر کا بھارت کے ساتھ الحاق نہ کوئی قانونی حیثیت رکھتا ہے اور نہ اخلاقی حیثیت رکھتا ہے۔ بزریعہ ترجمان مسلم دینی محاذ
X
3/8/2017
The foreign policy of Pakistan right from 1948 has been docile and self conceding especially with regard to India. Indian rulers annexed Junagadh which was a part of Pakistan, landed army in Kashmir even though as per the plans of partition Kashmir was a part of Pakistan, and then under operation POLO occupied More
The foreign policy of Pakistan right from 1948 has been docile and self conceding especially with regard to India.
3/8/2017 12:00:00 AM
The foreign policy of Pakistan right from 1948 has been docile and self conceding especially with regard to India. Indian rulers annexed Junagadh which was a part of Pakistan, landed army in Kashmir even though as per the plans of partition Kashmir was a part of Pakistan, and then under operation POLO occupied Hyderabad.The Pakistani government couldn't create a world opinion on these three illegal occupations by India. As a result in 1965 the resolutions and applications in UNO were rendered useless by 1965. In 1971 Pakistan was divided and the Indian rulers proudly accepted the responsibility but Pakistan couldn't present its case forcefully in front of the world. In 1982 Indian forces occupied 72 km stretch of the Siachen Glaicier and the Pakistan government again remained mum. Now the Indian rulers are openly boasting of separating Balochistan from Pakistan. But Pakistan government is ashamed of presenting the Indian spy Kulbhushan Yadav caught from Balochistan in front of UNO. Among the four provinces of Pakistan, Afghanistan under Indian influence is laying its claim on Khyber PakhtoonKhwah. India mixes no words in terming Sindh as part of larger Indian culture and as far as Balochistan is concerned India is trying its best to carve it out of Pakistan. Despite all this the rulers of Pakistan are not learning their lessons. The terrorism inside Pakistan found it roots due to the unworthy military dictators like Zia ulhaq and Parvez Musharaf. Pakistan present and possible future rulers have already surrendered the historical stand of Pakistan on Kashmir by proposing solutions like 4 point formula and Chenab formula. The disinterest shown by Imran Khan regarding Kashmir became evident when due to an unprecedented uprising in Kashmir it was expected that Pakistan would play a strong diplomatic role on the world forum but this gentle man decided to rake up Panama leaks issue and boycotted the joint session of Pakistani parliament about Kashmir and thus served India in the best possible way. To expect a strong and active foreign policy from politicians like Nawaz, Imran and Bilawal is nothing but ignorance as their first preference is friendship with India. If the Kashmir cause still survives in Pakistan it is because if the army and religious organisations. If these current and possibly future rulers of Pakistan only succeed in keeping the present Pakistan intact it would be their biggest benevolence on the people of Pakistan. The profreedom leadership in Kahsmir should set up an international diplomatic front on priority so that the true picture of our freedom movement is presented before the world. Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni mahaz Through Spokesman

پاکستان کی خارجہ پالسی 1948 سے ہی بالخصوص بھارت کے حوالے سے معزرت خواہانہ اور بے اثر رہی ہے، بھارتی حکمرانوں نے جوناگڑھ‘ جو پاکستان کا حصہ تھا پر قبضہ کیا، پھر کشمیر میں فوجیں داخل کی، حالانکہ اصول تقسیم کی بنیاد پر کشمیر کو پاکستان کا حصہ ہونا چاہیے تھا، پھر آپریشن پو لو (POLO) کے ذریعے حیدر آباد پر قبضہ کیا گیا ، پاکستان کی حکومت ان تینوں ریاستوں پر بھارت کے ناجائز قبضے کے خلاف بھارت کے خلاف عالمی رائے عا مہ منظم نہیں کرسکی نتیجتاً 1965 ءتک ان تینوں ریاستوں کے متعلق قرار دادیں او ردرخواستیں UNO میں بے اثر ہو کر رہ گیئں۔ 1971ءمیں پاکستان کے دوٹکڑے کئے گئے آج بھی بھارتی حکمران فخراً اسکی ذمہ دار ی قبول کررہے ہیں مگر حکومت پاکستان اس کی بھارتی جارحیت پر بھی بھارت کے خلاف اپنا موقف عالمی برادری کے سامنے موثر طور پیش نہیں کرسکی، اسکے بعد 1984ءمیں سیاچن میں 72کلو میٹر بر فیلی پٹی پر بھارتی افواج نے قبضہ کیا اس پر بھی پاکستان کی حکومت خاموش رہی، اب بھارتی حکمران اعلانیہ طور بلوچستان کو پاکستان سے الگ کرنے کے لئے سر گرم ہوگئے ہیں ، حکومتِ پاکستان کو UNOاجلاس میں بلوچستان سے پکڑے گئے بھارتی سرا غرساں ذمہ دار کلبوشن یا دو کا نام لینے میں شرم محسوس ہوتی ھے۔ چارصوبوں پر مشتمل پاکستان میں خیبر پختون خواہ کے متعلق افغانستان کی حکومت بھارت کی ترغیب پر اپنا دعویٰ کر رہی ہے، سندھ کے متعلق بھارتی حکمران اعلاناًکہتے ہیں کہ یہ بھارتی تہزیب کا حصہ ھے اور بلوچستان کو پاکستان سے الگ کرنے کے لئے بھی حکومتِ بھارت کام کررہی ھے، اسکے باوجود بھی پاکستان کے حکمران ٹس سے مس بھی نہیں ہوتے۔پاکستان کے اندد جو دھشت گردی کی فضابن گئی ہے اسکے لئے ضیاالحق اور پرویز مشرف جیسے نااہل فوجی آمر ذمہ دار ہیں۔پاکستان کے موجودہ اور ممکنہ حکمران چناب فارمولہ اور چارنکاتی فارمولا کشمیر کے متعلق پیش کرکے پہلے ہی کشمیرکے متعلق پاکستان کے تاریخی موقف سے انحراف کر چکے ہیں ، اور عمران خان کی کشمیر کے متعلق عدم دلچسپی کے لئے یہی شہادت کافی ہے کہ جب کشمیر کی احتجاجی تحریک زوروں پر تھی حکومتِ پاکستان سے یہ تو قع تھی کہ وہ عالمی سطح پر کشمیر پر موثر سفارتی رول ادا کرے عمران خان نے پانامہ انکشافات کو لیکر ملک پر ہنگامہ آرائی بر پا کی ،پاکستان کے پارلیمینٹ میں کشمیر کے متعلق مشترکہ اجلاس کا بایکاٹ کیا اور اسطرح بھارتی مفاد کے لئے ہی یہ سب کچھ کیا گیا ۔ نواز شریف ،عمران خان اور بلاول بھٹو سے یہ توقع رکھنا کہ وہ کشمیر کے متعلق بھارت کے خلاف فعال اور موثر خارجہ پالسی اختیار کر یں گے بالکل جہالت ہے‘ ان تینوں کی پہلی ترجیح بھارت کے ساتھ دوستانہ تعلقات قائم کرنا ھے۔ پاکستان میں کشمیر کاز اگر آج بھی زندہ ہے تو پاکستانی افواج اور دینی جماعتوں کی وجہ سے ہے۔ اگر پاکستان کے موجودہ اورممکنہ حکمران پاکستان کے چارصوبوں کو ہی متحد رکھیں گے تو یہ ان کا ملتِ پاکستان پر بڑا احسان ہوگا جموں کشمیر کی حریت پسند قیادت کو چاہیے کہ وہ کشمیر کی تحریک آزادی کے لئے اولین فرصت میں International Diplomatic Front قائم کریں تاکہ کشمیر کی تحریک آزادی کو موثر طورعالمی برادریکے سامنے پیش کیا جاسکے۔ ڈاکڑ محمد قاسم امیر مسلم دینی محاز بزریقہ ۔ترجمان
X
2/28/2017
The real cause of strain in relations between India and Pakistan is not any LOC or border skirmishes but an ideological war prevalent between these countries. The Muslims of Jammu and Kashmir and pro freedom leadership should understand that the ideological forces of India has never accepted the existence of P More
The real cause of strain in relations between India and Pakistan is not any LOC or border skirmishes but an ideological war prevalent between these countries.
2/28/2017 12:00:00 AM
The real cause of strain in relations between India and Pakistan is not any LOC or border skirmishes but an ideological war prevalent between these countries. The Muslims of Jammu and Kashmir and pro freedom leadership should understand that the ideological forces of India has never accepted the existence of Pakistan. Even today the map of India in the RSS headquarters in Nagpur shows Pakistan as a part of India. When Gandhi took over the leadership of Congress in 1915 the party ceased to be political and administrative reformist movement and transformed into a movement of revival of Hindu political supremacy with the soul aim of creating a Hindu supremacist sub continent. As this part of the continent was under Ashok but the creation of Pakistan destroyed all these plans of Congress leadership. It is unbearable of Indian ideological forces that a religion from Arab peninsula could gain political supremacy alongwith a free country because this destroyed their aim of creating a Hindu subcontinent for ever. The ideological forces of India can at the most give the right to existence to alein religions coming to subcontinent if they agree to exist as subordinate branches of Hinduism. Therefore prior to 1947 repeated attempts were made to create the notion that Prophet Muhammad S.A.W was an avtaar of Vishnu. They want that now matter what religions do the people believe in they should culturally accept Hinduism as a way of life. In 1947 after independence from British It was easier for the congress leadership to choose the wheel as the national emblem of India but since their aim was to create a Hindu subcontinent therefore stupa of Sarnath (sarnath lions) of Ashok was chosen as the emblem because it symbolises the era of hindu supremacy in the subcontinent. It was chosen to remind every Indian day in and day out that the real aim is to create a Hindu subcontinent and the enthusiasm to achieve this aim is maintained. This emblem is seen every where from the parliament to assemblies, official building,uniforms of army and police and currency notes so that the political setup, administration, executive , army and common people are reminded every second that our aim is to recreate the golden era of Hinduism. Since the first and only problem in creation of Hindu subcontinent is Pakistan therefore the hindu ideological forces is to break apart Pakistan. The conflict between these countries needs to be understood in this context. The conflict between these countries has Kashmir as it's battle ground . Muslims in Kashmir have the opinion either to align with the Sarnath lions and work for Hindu supremacy or work for strengthening Muslim forces in the subcontinent. Thanks to Allah, the Muslims in Kashmir by fighting against India for freedom have chosen the secondSpokesman Dr. Muhammad Qasim Ameer Muslim Deeni mahaz Through Spokesman

بھارت اور پاکستان کے درمیان تناو اور کشیدگی کی وجہ سرحدوں پر ہونے والی گولہ باری نہیں بلکہ دونوں ممالک میں جاری نظریاتی جنگ ہے ۔ ملت اسلامیہ جموں کشمیر اور حریت پسندقیادت کے لیے جو چز سمجھنے کی ہے وہ یہ ہے کہ بھارت کی نظریاتی قوتوں نے ابھی پاکستان کے وجود کو قبول نہیں کیا ہے ، آج بھی ناگپور میں RSS کے ہیڈکواٹر میں بھارت کا جو نقشہ موجود ہے اس میں پاکستان کو بھی شامل دکھایا گیا ہے۔ 1915 ءمیں جب موہن داس گاندھی نے انڈین نیشنل کانگریس (INC) کی قیادت سنبھالی پھر کا نگریس بھارت میں سیاسی اور انتظامی اصلاحات کی تحریک نہیں بلکہ احیائے ھندومت کی تحریک بن گئی جس کا مقصد بر صغیر کو ھندوسیاسی حاکمیت میں ھند وبرصغیر میں تبدیل کرنا تھا جسطرح یہ اشوک کے دور میں رہا ہے مگر کانگریس قیادت کے ان عزائم کو قیام پاکستان نے ناکام بنایا۔ بھارت کی نظریاتی قوتوں کے لئے یہ بات ناقابل برداشت ہے کہ عرب سے آئے ہوئے کسی مزہب کو برصغیر میں سیاسی حاکمیت کے ساتھ ایک آزاد اور خود مختار ملک حاصل ہو۔ کیونکہ اس سے برصغیر کو ھندو برصغیر میں تبدیل کرنے کا مقصد حاصل نہیں کیا جاسکتا‘ بھارت کی نظریاتی قوتیں بھارت سے باہر برصغیر میں آئے ہوئے مذاہب کو ماننے والوں کو یہ رعایت دینے کے لئے تیار ہیں کہ یہ مذاہب ھندواز م کے شاخ بن کررہیں، اسی لئے 1947 سے پہلے کئی بار رسولﷲ کو وشنو کااوتار ثابت کرنے کی کوشش کی گئی ‘ ان مذاہب کے ماننے والے خواہ کیسے ہی عقائد رکھتے ہوں مگر تہذیبا ًوہ ھندوازم ہی اختیار کریں گے۔ 1947ءمیں برطانیہ سے آزادی کرنے کے بعد کانگریس کی قیادت کے سامنے سب سے بڑا مسلہ یہ پیدا ہوا کہ بھارت کا قومی نشان کیا ہو کانگریس کے نشان ’چرخہ‘ (Wheel) کو ہی بظاہر قومی نشان بنایا جانا چاہیے تھا مگر چونکہ برصغیر کو ھندو سیاسی حاکمیت میں ھندوبرصغیر بنانا چاہتی تھی اس لئے ’چرخہ ‘(Wheel) کے بجائے (Stupas of Sarnath) یا (Sarnath Lions) جسکو اشوک کے دور میں ھندوازم کے سنہرے دور کی علامت مانا جاتا ہے کو بھارت کا قومی نشان بنایا گیا۔ تاکہ تمام بھارتی باشندوں کے دل و دماغ میں یہ بات تازہ رہے کہ ابھی وہ اپنا مقصد بر صغیر کو ھند و بر صغیر میں تبدیل کرنے کا مقصد ‘ حاصل نہیں کرسکے ہیں۔ اور اسطرح اس مقصد کے حصول کے لئے جدو جہد کا جذبہ ان میں زندہ رہے۔اسی وجہ سے بھارتی پارلمینٹ ریاستی اسمبلیوں ‘ تمام سرکاری دفتروں میں ‘ افواج اور پولیس کی وردیوں اور کرنسی کے نوٹوں میں Stupas of Sarnath کو شامل کیا گیا، تاکہ سیاسی حکومت، انتطامیہ پولیس، افواج اور عام لوگوں کے دل ودماغ میں یہ بات رہے کہ وہ ھندوازم کی عظمت رفتہ کو بحال کرنے کے لئے ہر وقت کام کریں گے۔ چونکہ برصغیر کو ھندوبرصغیر میں تبدیل کرنے میں پہلی اور آخری رکاوٹ پاکستان ہے اس لئے بھارت کی نظزیاتی قوتوں کی پہلی ترجیح یہ ہے کہ وہ پاکستان کو توڑ دیں۔ اس لئے بھارت اور پاکستان کے درمیان موجودہ کشیدگی کو اسی نظزیاتی تناظز میں دیکھنے کی ضرورت ہے ۔ بھارت اور پاکستان کے درمیان اس نظریاتی معرکہ آرائی کے لئے کشمیر کو میدان جنگ کی حیثیت حاصل ہے۔ ملت اسلامیہ کشمیر کے لئے ایک طرف Sarnath Lions کے ساتھ وابستگی اور ھندوازم کی عظمت رفتہ کو بحال کرنے کا آپشن (Option) ہے دوسری طرف برصغیر میں مسلمانوں کی حاکمیت میں مسلمانوں کی صف بندھی کا آپشن (Option) ھے ا لحمداﷲ ملتِ اسلامیہ نے بھارت سے آزادی حاصل کرنے کی جدوجہد شروع کرکے دوسرے آپشن کا انتخاب کیا ہے۔ ڈاکٹر محمد قاسم امیر مسلم دینی محاذ بزریعہ ترجمان
X
2/24/2017
Muslim Deeni Mahaz has expressed satisfaction over the release of Tariq Ahmad Dar, Muhammad Rafiq Shah and Muhammad Hussain Fazili. The ameer of Muslim deeni Mahaz Dr Qasim said that the release of these three person is a source of Joy for the enslaved Muslims. He hoped that these three highly knowledgeble persons More
Release of these three person is a source of Joy for the enslaved Muslims.
2/24/2017 12:00:00 AM
Muslim Deeni Mahaz has expressed satisfaction over the release of Tariq Ahmad Dar, Muhammad Rafiq Shah and Muhammad Hussain Fazili. The ameer of Muslim deeni Mahaz Dr Qasim said that the release of these three person is a source of Joy for the enslaved Muslims. He hoped that these three highly knowledgeble persons who sacrificed the best part of their life in the clutches of the tyrant will come forward to guide the nation on the path of resistance.

X
2/18/2017
The so called jihadist organisations working on international level who have destroyed Afghanistan, Iraq and Syria will target Turkey, Saudi Arab and Pakistan and ruin them in the next 15 years. When these 6 countries will be destroyed completely in the name of Islam and Khilafah, ways will be paved for t More
The so called jihadist organisations working on international level who have destroyed Afghanistan, Iraq and Syria will target Turkey, Saudi Arab and Pakistan and ruin them in the next 15 years.
2/18/2017 12:00:00 AM
The so called jihadist organisations working on international level who have destroyed Afghanistan, Iraq and Syria will target Turkey, Saudi Arab and Pakistan and ruin them in the next 15 years. When these 6 countries will be destroyed completely in the name of Islam and Khilafah, ways will be paved for the expansionist policies of Israel in the middle East and India in the subcontinent . For this reason these organisations are being supported by America, Israel and India. The attacks of 9/11 didn't establish Islam in America but what it did was destroy the Islamic government formed in Afghanistan after centuries of struggle. All these Kharji organisations are being supported by many people and organisations from with Turkey, Saudi and Pakistan who have some grudge against the government of these countries. Without doubt among these 6 countries 3 have been ruined and the rest 3 will be targeted in the next 15 to 20 years. The rulers of these countries are directly responsible for whatever has happened in these countries. Since these three countries hold utmost and core importance among the affairs of Muslim Ummah it is imperative that the rulers deal with all those having descent, either expresing it through peaceful means or violence, with love and constructive dialogue and shouldn't use force against them. Those advocating violence should differentiate the fact that they have differences against governments and not the country. The land, naval and air assets of a country are not of the government but Of the entire Ummah and destroying them is a haram as per shariah. Armed rebbelion in Muslim countries is haram. These armed rebellion will only serve the interest of the rulers of these countries who would be able to garner more and more armed support of the western powers and render these countries into ruins. Muslims in Jammu Kashmir should neither support these groups nor the rulers of these countries but should support and pray for dialogue and unification between these parties.

بین الاقوامی سطح پر نام نہاد جہادکے نام پر جو تنظیمیں کام کررہی ہیں، افغانستان، عراق اور شام کو کھنڑرات میں تبدیل کرنے کے بعد اگلے 15سال میں یہ تنظیمیں تُرکی، سعودی عرب اور پاکستان کو کھنڑرات میں تبدیل کرنے کی کوشش کریں گی۔ جب یہ چھ ممالک پوری طرح اسلام اور خلافت کے نام پر کھنڑرات میں تبدیل ہوں گے تو اس سے عرب میںاسرائیل اور بر صغیر ایشیا میں بھارت کے تو سیع پسندانہ عزائم کی تکمیل کے لئے راہ ہموار ہوجائے گی۔ یہی وجہ ہے ان تنظیموں کی امریکہ، اسرائیل اور بھارت بھر پور حمائت کررہے ہیں۔ ستمبر 2001ءمیں امریکہ میں ہوے حملوں سے امریکہ میں اسلام تو نافز نہیں ہوا مگر 1400سال بعد جو اسلامی حکومت افغانستان میں قائم ہوئی تھی وہ ضرور ختم ہوگئی۔ ان خوارجی (Kharji) تنظیموں کو تینوں ممالک تُرکی، سعودی عرب اور پاکستان کے اندد سے بھی ایسی جماعتوں کی حمائت حاصل ہو رہی ہے جو ان مملک کی حکومتوں سے بے ذار ہو کر ان کے خلاف مسلح بغاوت پر آمادہ ہیں۔ بلاشبہ ان چھ اہم مسلم ممالک جسمیں اب تک تین کھنڑرات میں تبدیل ہو چکے ہیں اور تین اگلے 15 یا 20 سال میں کھنڑرات میں تبدیل ہو سکتے ہیں اس کے لئے ان ممالک کے حکمران بھی براہ راست ذمہ دار ہیں۔ چونکہ مسلم امت میں ان تین ممالک کو انتہائی اہم حیثیت اور اہیمت حاصل ہے اس لئے لازم ہے ان ممالک کے حُکمر ان اپنے دونوں طرح کے مخالفین (پُر امن سیاسی جدوجہد پر یقین رکھنے والی سیاسی جماعتیں اور مسلح جدوجہد پر یقین رکھنے والی دینی جماعتیں)کے ساتھ محبت اور تعمیری بات چیت شروع کریں اور ان کے خلاف طاقت کا استعمال نہ کریں۔ مسلح جدوجہد پر آمادہ ان تنظیموں کو چاہئے کہ وہ حکومت اور ریاست کے درمیان فرق کریں ریاست کے بُری ، بحری اور فضائی اثاثات حکمرانوں کے نہیںملت اسلامیہ کے ہوتے ہیں اس لئے ان کو تباہ وبرباد کرنا شرعاًحرام ہے۔ مسلم ممالک میں مسلح بغاوت (خروج)حرام ہے۔ ان مسلح بغاوتوں سے یہی ہوگا کہ ان ممالک کے اقتدار پرست حکمران عالم کفر کی زیادہ سے زیادہ فوجی امداد حاصل کریں گے اس سے عالم کفر کو ان ممالک کو کھنڑرات میں تبدیل کرنے کا موقع ملے گا ۔ملت اسلامیہ جموں کشمیر کو چاہئے کہ وہ ان ممالک میں نہ ہی مسلح جدوجہد کرنے والوں کی حمائت کرے اور نہ ہی حکمرانون کی طرفداری کرے بلکہ دونوں کے درمیان بات چیت اور صلح ہوا سکے لئے دُعا کریں۔
X
2/13/2017
General secretary of Muslim Deeni Mahaz has condemned the arrest of Chairperson Dukhtaran e Millat Syedah Asiya Andrabi along with her personal Secretary Sofi Fehmeeda. He termed it as a case of extreme political vendetta.The duo was arrested from their Soura residence early in the morning on Monday.A huge contige More
Condemned the arrest of Chairperson Dukhtaran e Millat Syedah Asiya Andrabi along with her personal Secretary Sofi Fehmeeda.
2/13/2017
General secretary of Muslim Deeni Mahaz has condemned the arrest of Chairperson Dukhtaran e Millat Syedah Asiya Andrabi along with her personal Secretary Sofi Fehmeeda. He termed it as a case of extreme political vendetta.The duo was arrested from their Soura residence early in the morning on Monday.A huge contigent of police barged into her house and arrested her along with Sofi Fehmeeda.They were shifted to Women's police station Rambagh. The spokesperson said that Asiya Baji was severely ill. Eversince her release from Baramula jail on 21st December she was confined at her home with a huge contingent of police restricting her movement. She wasn't allowed even to go to a hospital to get proper medical attention. She is facing respiratory distress and is on oxygen support most of the time. A Doctor used to visit her weekly to monitor her condition. She was advised to move to a warmer location but it was not allowed by the government. She wasn't even allowed to meet her incarcerated husband Dr. Muhammad Qasim in central jail. Meanwhile he paid glorious tributes to Mujahideen who were killed by Indian occupational forces in Redwani area of Kulgam district and to the civilians who were murdered by the brutal forces in Kulgam and Srigufwara areas. He said India has been shedding blood in Jammu and Kashmir since 1947 and the blood of these martyrs will never go in vain nor shall the sacrifices of the martyrs be allowed to do politics over. He said “Those striving for a sacred cause do not die rather find place in history. They have been sacrificing there lives for our future and their sacrifices will never go waste. We also pursued our case peacefully for a long time but India turned deaf to our voices thereby not hearing our screams and pleas. India with its military might is trying to crumble our struggle however, they are living in a fools paradise with that notion.” He reiterated that the Mujahideen leadership should look within their camps as some black sheep have infiltrated deep into their ranks thereby working as collaborators. He said that people should raise voice against the Indian brutality and oppression so that world comes to know that Indian forces are commiting heinous crimes in the name of nationalism in Kashmir. “The world should come to know that Indian forces are playing a dirty game in Kashmir and their hands are bloodied with the blood of innocent Kashmiris.” He said that people of Kashmir are ready to sacrifices their lives for the Mujahideen and it should serve as an eye opener to those who say that the people of Kashmir are not with Jihad. “The claims of such stooges and collaborators have been punctured,” he said.

X
2/10/2017
The statements of RSS are not mere political but an elaborate historical and political context lies at their base. The concept of India and Hinduism are inseparable. Hinduism basically is the name of the historical, cultural and caste based social system of India. The greatest strength of Hinduism in the world i More
The statements of RSS are not mere political but an elaborate historical and political context lies at their base.
2/10/2017 12:00:00 AM
The statements of RSS are not mere political but an elaborate historical and political context lies at their base. The concept of India and Hinduism are inseparable. Hinduism basically is the name of the historical, cultural and caste based social system of India. The greatest strength of Hinduism in the world is the power of its assimilation. Hinduism can absorb into itself any other religion of India. Jainism, Buddhism and Sikhism, which had started as reformation movements within Hinduism , rose as separate religions but Hinduism with its excellent power of absorption assimilated them back into its fold thus eliminating their separate identities. Since Christianity, Judaism and Zoarastrainism as per their own edicts are neither missionary nor universal and complete thus these three religions don't pose any challenge to Hinduism. It is Islam that has a unique and separate status in beliefs, modes of worship, day to day affairs and morals, and is missionary, complete and universal. Thus it is Islam that poses a direct challenge to Hinduism in the subcontinent. In spite of this Hinduism has already affected the beliefs and day to day affairs of Muslims in subcontinent. Barring Hinduism, it is almost impossible for any other religion to maintain its teachings and identity in the pristine form in India. This is the reality that made creation of Pakistan essential and this fact is the foundation of the freedom movement in Kashmir. In the real sense of term India can be best understood through these statements of RSS. Therefore instead of getting angry at these statements we should understand that RSS is truthfully presenting it's ideology and ambitions unlike others.

آر ایس ایس کی طرف سے شائع ہونے والے بیانات سیاسی بیانات نہیں ہوتے ہیں بلکہ وہ بیانات تاریخی اور تہذیبی حقائق پر مبنی ہوتے ہیں۔ ہندوستان اور ہندوازم ناقابل تفریق ہیں۔ہندوازم بنیادی طور ہندوستان کی تاریخ، تہذیب اور ذات پات پر مبنی معاشراتی نظام کا نام ہے۔اس لئے ہندوازم کو دنیا میں جو سب سے بڑی قوت حاصل ہے وہ اس کہ قوت تجازب (ASSIMILATION )ہے۔ہندوازم ہندوستان کے کسی بھی مذہب کو اپنے اندر جذب (ABSORB )کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے۔ جین مت، بدھ مت اور سکھ مت جو بنیادی طور ہندوازم میں شروع کی گئی اصلاحی تحریکیں تھیں نے کچھ وقت کیلئے علیحدہ مذاہب کی شکل اختیار کی تھی مگر ہندوازم نے اپنی قوت تجازب سے ان کی وہ علیحدہ شناخت بآسانی ختم کر دی۔چونکہ عیسائیت، یہودیت، اور پارسیت اپنی تعلیمات کے اعتبار سے نہ دعوتی(MISSIONARY ) اور نہ ہی ہمہ گیر و عالم گیر (COMPLETE AND UNIVERSAL) اس لئے ہندوستان میں ہندوازم کیلئے یہ تینوں مذاہب کسی بھی طرح کا چیلنج نہیں بن سکتے۔اس لئے صرف اسلام جو عقائد، عبادات ، معاملات اور اخلاقیات میں اپنی منفرد اور الگ شناخت رکھتا ہے اور دعوتی و آفاقی ہے، اس برصغیر میں ہندوازم کیلئے چیلنج ہے ۔حالانکہ ہندوازم نے پہلے ہی برصغیر میں مسلمانوں کے عقائد، عبادات اور عادات کو کافی متاثر کیا ہے۔ ہندوستان میں ہندوازم کے بغیر کسی اور مذہب کیلئے اپنی تعلیمات اور شناخت کے ساتھ قائم رہنا تقریبا ناممکن ہے ۔اور یہی وہ حقیقت ہے جس نے پاکستان کو ناگزیر بنایا تھا اور یہی حقیقت کشمیر کی تحریک آزادی کی بنیاد ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ آر ایس ایس کے بیانات سے ہی ہندوستان کے متعلق صحیح رائے قائم کی جاسکتی ہے اس لئے ان کے بیان پر غصہ کرنے کے بجائے غور کرنا چاہئے وہ بالکل سچائی کے ساتھ اپنے نظریات اور عزائم پیش کرتے ہیں۔
X
2/6/2017
The General Secretaryof Muslim Deeni Mahaz Muhammad Maqbool Bhat has thanked Raja Najabat Hussain, the chairman of Jammu Kashmir Self Determination Movement Europe for his efforts to raise the issue of Dr.Muhammad Qasim and other lifers in British Parliament and subsequently with the Indian Government. We thank th More
The General Secretaryof Muslim Deeni Mahaz Muhammad Maqbool Bhat has thanked Raja Najabat Hussain
2/6/2017
The General Secretaryof Muslim Deeni Mahaz Muhammad Maqbool Bhat has thanked Raja Najabat Hussain, the chairman of Jammu Kashmir Self Determination Movement Europe for his efforts to raise the issue of Dr.Muhammad Qasim and other lifers in British Parliament and subsequently with the Indian Government. We thank the American human right worker Madam Gazala and the lawyers, Doctors and civil society in Pakistan as well who have decided to raise the issue of continuous detention of Dr.Muhammad Qasim and other lifers on the international level so that pressure can be built up on Indua to ensure their release. In this reqard we expect OIC and Almi Rabita Islami to make efforts for the release of lifers in Jammu Kashmir.

مسلم دینی محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے کہا ہے کہ برطانیہ میں Jammu Kashmir Self Determination Movement Europe کے چیئرمین راجہ نجابت حسین کی طرف سے محبوس حریت پسند ڈاکٹر محمدقاسم اور دیگر تاحیات اسیروں کا مسئلہ برطانوی پارلیمینٹ اور پھر بھارتی حکومت کے ساتھ اٹھائے جانے کی کوشش پر مسلم دینی محاذ نے ان کا بے حد شکر گزار ہے۔ہم امریکہ میں انسانی حقوق کیلئے کام کرنے والی خاتون محترمہ غزالہ اور پاکستان میں وکلاء، ڈاکٹر،اور سیول سوسائیٹی کے بھی بے حد ممنون ہیں جنہوں نے ڈاکٹرقاسم اور دیگر اسیروں کے مسئلہ کو عالمی سطح پر اجاگر کرنے کا فیصلہ کیا ہے تاکہ بھارتی حکمرانوں پر ان سیاسی اسیروں کی رہائی کیلئے دباو ڈالا جاسکے ۔ہم اس ضمن میں OIC اور عالمی رابطہ اسلامی سے بھی توقع رکھتے ہیں کہ وہ جموں کشمیر کے تاحیات اسیروں کی رہائی کیلئے عالمی سطح پر کوشش کریں۔
X
2/1/2017
Year 2017 can prove very difficult for the mujahideen organisations in Pakistan and pro freedom leadership in Kashmir. The new US President Donald Trump will exert tremendous pressure on Pakistan for two objectives: improve ties with India and for this wipe out anti India Mujahideen organisations from pakistan the More
Year 2017 can prove very difficult for the mujahideen organisations in Pakistan and pro freedom leadership in Kashmir.
2/1/2017 12:00:00 AM
Year 2017 can prove very difficult for the mujahideen organisations in Pakistan and pro freedom leadership in Kashmir. The new US President Donald Trump will exert tremendous pressure on Pakistan for two objectives: improve ties with India and for this wipe out anti India Mujahideen organisations from pakistan therefore it is quite possible that during this year all the mujahideen organisations in Pakistan will be banned as Nawaz Shareef, Imran Khan and Bilawal Bhuto are eagerly ready for it. Once Pakistan does this dialogue with India will resume by May or June. In this dialogue though Kashmir will be discussed but as always it will be a lip service with nothing being actually done to solve the vexed Kashmir Issue. If Pakistan shows any laziness in implementing American orders of eliminating Jihadi organisations it is quite possible that in late 2018 or early 2019 India will do large scale surgical strikes inside Pakistan for which India will have full support from USA. Pro freedom leadership in Jammu Kashmir will be pressurised from all corners to participate in the assembly elections and play a role for resolution of Kashmir Issue in the assembly. The situation right now is strongly pointing to the fact that a third front will be formed and those Pro freedom elements who will oppose and call for boycott of electoral politics will be brutally dealt with. All this emerging situation demands that the sincere profreedom leadership will have to work out ways to make this movement self sufficient and indigenous. This would be better both for Kashmir and Pakistan.

2017 کا سال حکومت پاکستان ، پاکستان میں موجود عسکری جماعتوں اور جموں کشمیر کی حریت پسند قیادت کے لئے انتہائی مشکل اور سخت ثابت ہوسکتا ھے ۔ حکومتِ پاکستان پر امریکہ کے نئے صدر ڈونالڑ ٹرمپ کیطرف سے دو باتوں کے لئے زبردست دباو بڑھے گا ایک یہ کہ بھارت کے ساتھ پاکستان تعلقا ت بہتر کرے اور اسکے لئے پاکستان میں قائم عسکری جماعتوں کو مکمل طور ختم کریں ، اس لئے عین ممکن ہے اس سال پاکستان میں قائم عسکری جماعتیں ایک کے بعد ایک ختم کردی جا ئیں ، اور اسکے لئے میاں نواز شریف ، عمران خان اور بلال بھٹو پہلے ہی سے آما دہ ہیں۔ اس کے ساتھ ہی مئی یا جون میں بھارت اور پاکستان کے درمیان بات چیت کا سلسلہ شروع ہوگا ‘ اس ساری صورت حال میں کشمیرپر بات تو ہوگی مگر یہ صرف زبانی باتیں ہوں گی عملاً مسلہ کشمیر حل کر نے کے لئے کچھ نہیں ہوگا۔ اگر حکومتِ ِپاکستان نے پاکستان میں قائم عسکری جماعتوں کو ختم کرنے کے امریکی احکام کو ماننے میں کوتاہی کی تو عین ممکن ہے 2018 کے آخری یا 2019 کے ابتدائی مہینوں میں بھارتی حکومت پاکستان میں وسیع پیمانے پر Surgical Strikesکرے جسکے لئے بھارت کو امریکہ کی بھر پور حمائت حاصل ہوگی۔ جموں کشمیر میں حریت پسند قیادت پر ہر طرف سے دباو بڑھے گا کہ وہ ریاستی اسمبلی انتخابات میں شریک ہوں اور اسمبلی میں مسلہ کشمیر کے حل کے لئے رول ادا کریں، آثار و قارئین بتارہے ہیں اسی لئے یہاں Third Frontقائم ہوگا اور جو حریت پسند انتخابات کا بائیکاٹ یا اس عمل کے خلاف ہوں گے اُن پر طرح طرح کے مظالم ڑھاے جائیں گے۔ اس سا ری صورت حال کے پیش ِنظر ضرورت اس بات کی ہے کہ جموں کشمیر کے مخلص حریت پسند جموں کشمیر کی تحریک آزادی کو خود کفیل بنانے کی عملی اور سنجیدہ کوشش کریں یہ ملتِ اسلامیہ جموں کشمیر اور پاکستان دونوں کے لئے بہتر ہوگا
X
1/28/2017
Entire Pro freedom camp should put in efforts to strengthen the unity forged between Syed Ali Geelani, Mirwaiz Umar Farooq and Muhammad Yaseen Malik. Since India is unleashing offensive after offensive on us therefore need of the hour is that we should unite under the unified leadership to resist these offensives. More
Entire Pro freedom camp should put in efforts to strengthen the unity forged between Syed Ali Geelani, Mirwaiz Umar Farooq and Muhammad Yaseen Malik.
1/28/2017 12:00:00 AM
Entire Pro freedom camp should put in efforts to strengthen the unity forged between Syed Ali Geelani, Mirwaiz Umar Farooq and Muhammad Yaseen Malik. Since India is unleashing offensive after offensive on us therefore need of the hour is that we should unite under the unified leadership to resist these offensives. Those Pro freedom activists who knowingly or unknowingly are trying to create rifts in this unity are actually serving Indian interests. I request these Pro freedom people to support the unified leadership. They should advise them, obey their programmes and if there are some weaknesses in the leadership we should meet them and point it out to them. Any fissures in this unity would be a great loss to the resistance movement. We request Those people who consider this unity as a threat to their political existence that they should work sincerely for the movement and they will gain respect and honour among the ranks and people. No Pro freedom leader or activist can be threat to another profreedom person. All of us are brothers and the pious mission of tehreek joins us in ranks. I request Syed Ali Geelani, Mirwaiz Umar Farooq and Muhammad Yaseen Malik that they should maintain close contact Pro freedom activists and youth. They should meet youth on a weekly basis so that they receive feedback and well aware of the mood of the people

سید علی گیلانی ، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یٰسین ملک کے درمیان موجودہ اتحادکو تمام حریت پسند مضبوط کرنے کی کو شش کریں۔ چونکہ بھارتی حکمران جموں کشمیر میں ایک کے بعد ایک اپنے جارحانہ منصوبوں کی تکمیل کر رہے اس لئے عقل ودانش کا یہی تقاضا ہے کہ مشترکہ طورمتحدہ قیادت کے ذریعے ان منصوبوں کی مزاحمت کی جائے۔ جو حریت پسند اس مو جو د اتحاد کو توڑ نا چاھتے ہیں وہ شعوری یا غیر شعوری طور بھارتی حکمرانوں کی مدد کر رہے ہیں، میری ان حریت پسندوں سے گزارش ہے کہ وہ اِن تینوں لیڑروں کے ساتھ تعاون کریں، ان کو مشورہ دیں اور ان کے پروگراموں پر عمل کریں، اور اگر ان لیڑروں میں کچھ کمزوریاں ہیں یا ان سے کوتاہیاں ہوتی ہیں تو ان کے ساتھ ملاقات کرکے ان کو ان کمزوریوں اور کو تاہوں سے آگاہ کریں۔ اس اتحاد ثلاثہ کو توڑنا تحریک آزادی کے لئے زبردست نقصان دہ ثابت ہوگا۔ جو لوگ اس اتحاد کو اپنی سیاسی حیثیت اور شناخت کے لئے خطر ہ سمجھ رہے ہیں ہماری ان حریت پسندوں سے گزارش ہے کہ وہ تحریک آزادی میں اخلاص کے ساتھ فعال اور متحرک رول اداکریں پھر ازخود اُن کو لوگوں میں عزت اور اعتباریت حاصل ہوجائے گی ۔ کوئی بھی حریت پسند کسی دوسرے حریت پسند کے لئے خطرہ نہیں بنتا ‘ سب حریت پسند آپس میں بھائی بھائی ہیں اور ایک ہی مقدس مقصد کے لئے بھارتی قبضے کے خلاف جدوجہد کررہے ہیں۔ میں سید علی گیلانی، میر واعظ عمر فاروق اور محمد یٰسین ملک سے بھی گزارش کرتا ہوں کہ وہ تمام حریت پسندوں اور ملتِ اسلامیہ کے جوانوں کے سا تھ مسلسل رابطہ رکھیں اور کم سے کم ہفتے میں ایک دن جو انوں کے ساتھ ملاقات کے لئے رکھیں تاکہ جوانوں کے جزبات اور خیالات سے مسلسل آگاہی ہوتی رہے۔
X
1/17/2017
About 3 decades back there were hardly any sectarian tensions in the valley, but today the pace at which these secterian differences are increasing is alarming. Today in every locality in Kashmir we have numerous mosques, darululooms and darasgah's with sectarian connotation springing up. It is evident that in nex More
About 3 decades back there were hardly any sectarian tensions in the valley
1/17/2017 12:00:00 AM
About 3 decades back there were hardly any sectarian tensions in the valley, but today the pace at which these secterian differences are increasing is alarming. Today in every locality in Kashmir we have numerous mosques, darululooms and darasgah's with sectarian connotation springing up. It is evident that in next decade or so we might have to face violent sectarian clashes in the valley. The muslims of the valley have already lost the unity through political differences. If this secterian monster attains violent colour it will devour off the resistance movement in Kashmir thus plunging the kashmiri people into a bottomless pit of slavery. I request the muslims of valley to ponder over the fact that the so called heads and office bearers of these proactive religious organisations sprang up all of a sudden and nobody knew them a decade back. People don't know their aims and objective or what they are preaching. Nobody knows the source of funding of these organisations. As no person can be called an intellectual merely by wearing a suit and tie similarly wearing an Islamic dress does not render a person as religious scholar. Need of the hour is that a close vigil is kept in these organisations and their office bearers as Indian home ministry is on record claiming that they provided financial aid to the tune of 80 crore to the religious organisations and institutions. We know as well what kind of Islam does the Indian prime minister want to see in #Kashmir!

جموں کشمیر میں 30سال پہلے مسلکی اختلافات نہ ہونے کے برابر تھے، لیکن جس تیزی کے ساتھ ملت اسلامیہ کشمیر میں مسلکی اختلافات بڑھ رہے ہیں اور جسطرح مسلکوں کے نام پر یہاں ہر محلے میں مسجدیں، درسگا ہیں اور دار العلوم بن رہے ہیں اس سے یہ بات معلوم ہوتی ہے کہ اگلے دس یا پندرہ سال میں یہاں مسلکی اختلافات پُر تشدد شکل اختیار کرسکتے ہیں۔ ملت اسلامیہ پہلے ہی سیاسی انتشار اور افتراق کی وجہ سے اجتماعی قوت کھو چکی ہے اب اگریہاں مسلکی اختلافات نے پُر تشدد شکل اختارکی تو یہ یہاں جاری مزاحمتی تحریک جسکو ملت اسلامیہ کے لئے موت وحیات کی حیثیت حاصل ہے، کے لئے تباہ کن ثابت ہوگی۔ میں ملت اسلامیہ سے گزارش کرتا ہوں کہ وہ اس بات پر غور کریں کہ آج سے 20 سال پہلے جن دینی جماعتوں اور ان کے ذمہ داروں کو جموں کشمیر میں کوئی نہیں جانتا تھا یہ دینی جماعتیں کہاں سے اپنے وسائل حاصل کررہی ہیں ؟ اور ان کے ذمہ دار جو اخبارات میں دینی شخصیات کے طور نظر آتے ہیں یہ کون لوگ ہیں؟ ان کے مقاصد کیا ہیں ؟ یہ کس چیز کی تبلغ کررہے ہیں؟ جسطرح ٹائی اور سوٹ پہننے سے کوئی انسان دانشو ر نہیں بنتا اسی طرح علما نہ لباس پہننے سے کوئی انسان عالم ِدین نہیں بنتا۔ ضرورت اس بات کی ہے ان پچھلے 20سال سے نمودار ہوئی ان دینی جماعتوں اور ان کے ذمہ داروں جن کو 20سال پہلے کوئی جانتا بھی نہیں تھا پر کروی نگاہ رَکھی جائے ،کیونکہ بھارت کی وزارت داخلہ نے چند سال پہلے باضابطہ اعلان کیا ہے کہ انہوں نے کشمیر کی بعض دینی جماعتوں اور اداروں کو 80کروڑ روپے بطور امداد دیے ہیں۔ اور ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ بھارت کے وزیر اعظم جموں کشمیر میں کس طرح کے اسلام کو دیکھنا چاہئے ہیں۔
X
1/15/2017
Prime Minister of Pakistan Nawaz Sharief should reconstitute the Kashmir Committee afresh to make it pro active on the international level. Maulana Fazl ur Rehman should be relieved from the chairmanship of this committee as his performance has remained unsatisfactory. A non political figure, who is well qualified More
Prime Minister of Pakistan Nawaz Sharief should reconstitute the Kashmir Committee afresh to make it pro active on the international level.
1/15/2017 12:00:00 AM
Prime Minister of Pakistan Nawaz Sharief should reconstitute the Kashmir Committee afresh to make it pro active on the international level. Maulana Fazl ur Rehman should be relieved from the chairmanship of this committee as his performance has remained unsatisfactory. A non political figure, who is well qualified and well versed with the history of the sub continent and Kashmir Issue besides having experience in international politics and diplomacy , should be appointed as the head of this committee. Prime Minister of Azad Kashmir can be the president of the committee. Only Kashmiris, whether residing in Pakistan, Azad Kashmir or any other part of the world should be made its members. Mini secretariats for the Kashmir Committee should be made in Pakistan and Azad Kashmir while as in countries like USA, UK, France, China, Russia, Germany, Japan, Saudi Arabia, Iran, Turkey , Indonesia and Malaysia Kashmir Diplomatic offices should be setup. These offices should remain in constant touch with the governments of these countries to apprise them about the atrocities meted out to Kashmiri people by Indian army and police and ask them to play a role in resolving Kashmir Issue in its historical context or as per the UN Resolutions. Until and unless Pakistan adopts a pro active policy on Kashmir and strengthens the Kashmir Diplomatic front, India with its overactive external affairs and diplomacy will continue to paint Kashmir’s indigenous freedom struggle as Cross border terrorism and thus hoodwink the international opinion as it has done in the past 27 years particularly during last 3 months. Funds would be required the make Kashmir committee dynamic on the international front .Pakistan can allocate a special budget for the purpose and aid can be garnered from OIC members as well. People of Jammu and Kashmir are giving supreme sacrifices for freedom, Indian forces have set new records for human rights violations but all these sacrifices are not yielding results at the international level which could force India to settle Kashmir Dispute as per the wishes of the people. I request all the political and religious organizations, civil society, Lawyers and Media of Pakistan to play a role to help Pakistan in shaping a pro active external affairs policy especially regarding Jammu and Kashmir. They should also help in making Kashmir Committee dynamic at the international diplomatic front.

وزیر اعظم پاکستان میاںنوازشریف کشمیر کمیٹی کو بین الاقوامی سطح پر فعال اور متحرک بنانے کیلئے اس کمیٹی کی نئے سرے سے تشکیل کریں۔ مولانا فضل الرحمان کو اس کمیٹی کی چیرمین شپ سے فارغ کیاجائے کیونکہ ان کی چیرمین کشمیر کمیٹی کی حیثیت سے کارکردگی انتہائی مایوس کن ہے۔ کشمیر کمیٹی کا چیرمین کسی غیر سیاسی شخصیت کو ،جو اعلیٰ تعلیم یافتہ ہونے کے ساتھ ساتھ برصغیر پاک ہند کی تاریخ، مسئلہ کشمیر کی تاریخی بنیادوں، بین الاقوامی سیاسیات کے ساتھ ساتھ سفارت کاری کاتجربہ رکھتا ہو، بنایاجائے۔ مذکورہ شخصیت کوکشمیر کمیٹی کاچیرمین اور وزیر اعظم آزاد کشمیر کواس کشمیر کمیٹی کاصدر بنایا جاسکتا ہے اور اس کمیٹی کے تمام ارکان کشمیری ہوںخواہ وہ فی الاقوت پاکستان میں، آزاد کشمیر میںیادنیاکے کسی بھی ملک میں رہائش پذیر ہوں،کشمیر کمیٹی کے پاکستان اور آزاد کشمیر میں Mini Secretariatقائم کئے جائیں اور اس کے ساتھ ساتھ امریکہ، برطانیہ، فرانس، چین ، روس ،جرمنی جاپان، سعودی عرب ، ایران ، ترکی، انڈونیشیا ، ملیشیا ءمیں کشمیر کمیٹی کی طرف سے Kashmir Diplomatic Officeقائم کئے جائیں جہاںکشمیر کاسفارتی عملہ وہاںکے حکمرانوں کے ساتھ مسلسل تعلق قائم کر کے ان کو مسئلہ کشمیر کو اسکے تاریخی پس منظر میںحل کرنے یا UNOقرار دادوں کے ذریعہ حل کرنے کیلئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرنے پر آمادہ کرنے کی کوشش کرے گا اور اسکے ساتھ ساتھ جموںکشمیر کے لوگوں پر بھارتی افواج اور بھارتی پولیس کے ذریعہ ڈھائے جارہے مظالم کو بھی اجاگر کرےگا ۔ جب تک عالمی سطح پر کشمیر کے حوالے سے حکومت پاکستان Pro Active Diplomacyاختیار کرنے کے ساتھ ساتھ KashmirDiplomatic Frontکومتحرک اور مضبوط نہیں کرتا ہے بھارتی حکمران جن کی خارجی سیاست اور سفارت کاری کشمیر کے حوالے سے پاکستان کے مقابلے میں بہت فعال اور متحرک ہے، کشمیر کی خود کفیل تحریک آزادی کوCross Border Terrorismکانام دے کر عالمی برادری کو اسی طرح گمراہ کرتے رہیں گے جس طرح وہ پچھلے 27برس سے بالخصوص پچھلے 3ماہ سے کررہے ہیں۔ بلا شبہ کشمیر کمیٹی کوبین الاقوامی سطح پر سفارتی محاذ پر فعال اور موثر بنانے کیلئے کثیر رقومات کی ضرورت ہے اس کےلئے حکومت پاکستان سرکاری خزانے سے ایک بجٹ مقرر کرسکتی ہے اور OICممالک سے اس بارے میںمالی معاونت بھی حاصل کر سکتا ہے۔ اس بات کاتجربہ ہمیں بار بار ہورہاہے جموں کشمیر کے لوگ آزادی کیلئے بے تحاشا قربانیاں دیتے ہیں، ان پر بھارتی افواج قیامت خیز مظالم ڈھاتے ہیںمگر عالمی سطح پر ہماری یہ قربانیاں وہ نتائج حاصل نہیں کر پارہی ہیںجو بھارت کو مسئلہ کشمیر لوگوں کی خواہشات کے مطابق حل کرنے پر مجبور کرسکتے ہوں۔ میں پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں،دینی تنظیموں ،سول سوسائیٹی کے لوگوں، وکلاءبرادری اور میڈیا سے وابستہ حضرات سے گزارش کرتا ہوں کہ وہ حکومت پاکستان کی خارجہ سیاست کو بالعموم اور کشمیر کے متعلق بالخصوص اپنی خارجہ سیاست اور سفارت کاری کوموثراور اقدامی نہ کہ خاموش اور ردعمل بنانے میں اپنا کردار ادا کریں اور ساتھ ہی کشمیر کمیٹی کو International Diplomatic Frontپر فعال بنانے کیلئے اقدام کریں۔
X
12/15/2016
The expansionist policies of Indian rulers regarding the subcontinent are aimed at creating a hindu hegemony in Sub continent. On the ground we see that Bhutan, Nepal, Maldives, Bangladesh and Afghanistan have been reduced to being parts of this Hindu sub continental hegemony politically and economically. Who shou More
The expansionist policies of Indian rulers regarding the subcontinent are aimed at creating a hindu hegemony in Sub continent.
12/15/2016 12:00:00 AM
The expansionist policies of Indian rulers regarding the subcontinent are aimed at creating a hindu hegemony in Sub continent. On the ground we see that Bhutan, Nepal, Maldives, Bangladesh and Afghanistan have been reduced to being parts of this Hindu sub continental hegemony politically and economically. Who should rule in these countries, where and how much investment should be done, how much stake should these countries have in developmental projects, how their armies should be trained and what should be their policy towards Pakistan all these policies are decided in New Delhi. The lining up of the heads of these states for Modi at his oath ceremony, unfortunately Nawaz Sharief was in the line as well, is an evidence for the same. Since Indian rulers right from 1947 wanted to recreate Aryawarat of Ashoks times. But this dream was shattered by the creation of Pakistan. Therefore Pakistan was weakened economically and militarily. Its boundaries were kept vague so that it could be assimilated back in India. Keeping Jammu and Kashmir separate from Pakistan in 1947 and then annexing it. The creation of Bangladesh in 1971 through Sheikh Mujeeb and Mukhti Bahni and afterwards overt military intervention, the opposition to the membership of Pakistan in UN by the Afghan Ruler Zahir Shah and afterwards overt supports to Afghan claim over the Khyber pakhtunkhwa province, starting of Baloch services from AIR in 1979 to sow seeds of descent in Balochistan and now overt support to it, the military and tactical support to Tehreek Taliban, Sindhudesh and #Baloch terrorists are the evidences that prove Indian rulers even today wish to cover the entire subcontinent in Hindu Hegemony and even today Pakistan is the thorn in their flesh. Therefore breaking Pakistan is the first priority of Indian rulers Unfortunately some people from within Pakistan are helping India in these heinous designs. The policies of two previous dictators of Pakistan Gen Zia ul Haq and Gen Parvez Musharaf and the politicians including Nawaz Shareef, Bilawal Bhutoo and Imran khan are equally responsible for the current turmoil in Pakistan. These politicians prefer power for themselves instead of the interests of the country thus they can't be expected to face the Indian designs. Only those sensitive people can understand the importance of a strong Pakistan in the subcontinent who are well versed with the history culture and the nefarious designs of India. The duty of the protection of the ideological boundaries of Pakistan lies in the #Pakistani Army and the Kashmiri people also trust these two kinds of people to help proactively in our struggle for freedom . It is a religious duty for the entire ummah especially Pakistani muslims to work for strengthening Pakistan.

16دسمبر 1971سانحہ سقوط ڈھاکہ بر صغیر پاک و ہند کے متعلق بھارتی حکمرانوں کے جو توسیع پسندانہ عزائم ہیں ان کا مقصد بر صغیر کو ہندو بر صغیر میں تبدیل کرنا ہے۔ عملاً اس وقت بھوٹان، نیپال ، مالدیپ، بنگلہ دیش اور افغانستان سیاسی اور معاشی طور ہندو برصغیر کا حصہ بن چکے ہیں ۔ان ممالک میں کس شخص یا جماعت کو ملک کی حکمرانی کرنی چاہئے، ان میں کتنی سرمایہ کاری ہونی چاہئے، ترقی اور تعمیراتی کاموں میں کس ملک کا کتنا حصہ ہونا چاہئے اور ان کے افواج اور سرغرساں اداروں کی کیسی تربیت ہونی چاہئے اور پاکستان کے متعلق ان کی خارجہ پالیسی کیا ہو یہ سب فیصلے ان ممالک کے متعلق دہلی میں ہوتے ہیں، مودی کی 2014میں حلف برداری کی تقریب میں ان ممالک کے سربراہوں کو قطار میں کھڑا ہو کر مودی کے ساتھ مصافحہ کرنا (بد قسمتی سے اس قطار میں نواز شریف بھی شامل تھے ) اس حقیقت کی شہادت ہے، چونکہ بھارتی حکمران 1947 سے پہلے ہی بھارت کو اشوک کے دور کا بھارت ورش (آریہ ورت)بنانا چاہتے تھے مگر ان کا یہ خواب پاکستان کی وجہ سے پورا نہیں ہوسکا اور پاکستان کو اسی لئے معاشی اور فوجی طور کمزور رکھا گیا اور سرحدیں بھی بے حد مختصر رکھدی گئی تاکہ وہ مجبور ہوکر دوبارہ بھارت میں شامل ہو۔1947میں جموں کشمیر کو پاکستان سے الگ رکھنا اور پھر اس پر قبضہ کرنا،1971میں شیخ مجیب الرحمٰن اور مکتی باہنی اور بھارت کی اعلانیہ فوجی مداخلت کے ذریعے مشرقی پاکستان کو مغربی پاکستان سے الگ کرنا،1947میں اقوام متحدہ میں پاکستان کی طرف سے رکنیت حاصل کرنے کی کوششوں کی افغان حکمران ظاہر شاہ کے ذریعے مخالفت کرنا ور پھر افغان حکمرانوں کے صوبہ سرحد(خیبر پختون خواہ)پر افغان صوبہ ہونے کے دعوے کی اعلانیہ حمائت کرنا ،مشرقی پاکستان کو مغربی پاکستان سے الگ کر کے 1979 میں آل انڈیا ریڈیو سے بلوچ سروس شروع کر کے بلوچستان کو پاکستان سے الگ کرنے کی کوششوں جو اب اعلانیہ اور منظم طور ہو رہی ہیں کا آغاز کرنا ، تحریک طالبان، سندھو دیش اور بلوچ دہشت گردوں کی حمائت اور پیسہ اور ہتھیار دینا اس بات کی ناقابل تردید شہادتیں ہیں بھارتی حکمران آج بھی برصغیر کو ہندو برصغیر میں تبدیل کرنے میں پاکستان کو پہلی اور آخری رکاوٹ سمجھتے ہیں اسی لئے پاکستان کو توڑنا بھارتی حکمرانوں کی پہلی اور لازمی ترجیح ہے، بدقسمتی سے پاکستان کے متعلق ان بھارتی عزائم کے معاون اندرون پاکستان بھی کچھ لوگ شعوری یا غیر شعوری طور بن رہے ہیں۔ پاکستان کی موجودہ تشویشناک صورتحال کیلئے نہ صرف دو سابق فوجی آمروں جنرل ضیاءالحق اور جنرل پرویز مشرف کی پالیسیاں بھی ذمہ دار ہیں بلکہ موجودہ اور ممکنہ حکمرانوں نواز شریف، عمران خان اور بلاول بھٹو ، جن کیلئے پاکستان کی امن و سلامتی، خوشحالی اور استحکام سے زیادہ اہم اقتدار کی کرسی ہے سے یہ امید نہیں ہے کہ وہ بھارتی عزائم کی مزاحمت کر سکیں گے ۔ یہ بر صغیر میں پاکستان کی سلامتی اور استحکام اور جموں کشمیر کی بھارت سے آزادی کی اہمیت اور ضرورت کا احساس صرف ان حساس مسلمانوں کو ہی ہوسکتا ہے جو ہندوستان کی تاریخ، تہذیب اور ہندو حکمرانوں کے اسلام اور مسلمانوں کے متعلق عزائم سے با خبر ہوں، پاکستان کی نظریاتی سرحدوں کی حفاظت کی ذمہ داری افواج پاکستان پر عائد ہوتی ہیں۔جموں و کشمیر کی آزادی کیلئے بھی ملت اسلامیہ کشمیر ان ہی دو قوتوں سے عملی حمائت و تعاون کی امید رکھتی ہے،پاکستان کے امن و سلامتی اور ترقی و استحکام کیلئے کام کرنا امت مسلمہ کیلئے بالعموم اور ملت اسلامیہ پاکستان کیلئے بالخصوص دینی فریضہ ہے
X
12/3/2016
It took 50 years to end the political and social acceptance of national conference(1938 to 1950). Afterwards Indian agencies came up with PDP as an alternative to NC. PDP with its slogans of Boli and Healing touch played a cunning role with the muslims in Kashmir. Today due to this cunningness of PDP Kashmiri musl More
It took 50 years to end the political and social acceptance of national conference(1938 to 1950).
12/3/2016 12:00:00 AM
It took 50 years to end the political and social acceptance of national conference(1938 to 1950). Afterwards Indian agencies came up with PDP as an alternative to NC. PDP with its slogans of Boli and Healing touch played a cunning role with the muslims in Kashmir. Today due to this cunningness of PDP Kashmiri muslims have been rendered slaves not only to India but to the Dogras of Jammu. PDP has made BJP a permanent shareholder of Power in Jammu Kashmir. Now since PDP has lost its political and social acceptability in just 17 years (1999-2016) it is expected that the Indian agencies will soon start efforts to form a third front in order to keep the kashmiri muslims attached to the election drama. Some political renegades and new faces under this third front banner will raise slogans against PDP and NC terming them as backstabbers of Kashmiri muslims. They too will claim to settle the Kashmir Issue in the assembly. Indian agencies will aim for two achievements through this third front: 1) since this third front will depend on the muslims votes in Kashmir and will claim from among the 46 assembly seats of Kashmir. This will lead to BJP becoming the single largest party in the assembly as it's vote bank in Jammu is intact.2) after BJP comes into power the autonomy will become the issue of political contention as BJP will forcefully raise the issue of scrapping any traces of autonomy. Even though Pro freedom leadership has nothing to do with this pro Indian politics but they can't remain completely aloof of this situation. Therefore the need of the hour is that the pro freedom parties and religious organisations donot differentiate between pro india parties on any basis. Eyes of those people would have opened in the last 4 months who termed PDP as a lesser evil. If these people will start flirting with this idea of third front it would result as the last nail in the coffin of the Pro freedom movement. Pro freedom leadership and people should realise that India has to face an examination on the international level only once every 6 years and the Indian stooges here hoodwink people by invoking slogans of Sadak, Bijli and Pani. Afterwards Indian rulers present these elections as an alternative to the self determination and expression of the trust of Kashmiri people on the Indian state. Thus all our sacrifices and hardships of the preceding 6 years are nullified. Untill the muslims in Jammu kashmir make these Pro India parties irrelevant and the assembly elections futile, which can very well be done in at least 50 assembly segments, India cannot be pressurised to solve Kashmir Issue in its historical perspective. India cannot rule a sensitive and disputed territory like Kashmir at the point of Gun only. It is only because of pro india parties and the state assembly that lends strength to the Indian dominance in state. Every Muslim of the state should understand that the first and the last roadblock in our path of our freedom are these Pro India parties.

(NC) جموں کشمیر میں بھارت نواز سیاسی جماعت نیشنل کانفرنس کی سیاسی اور سماجی اعتباریت 50سال(1938-1988) میں ختم ہوگئی۔ پھر بھارتی سراغرساں اداروں نے PDP کے متبادل کے طور پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی بنائی۔ NC نے بولی سے اور ہیلنگ ٹچ سے جموں کشمیر میں سیاسی فریب کا ایسا کھیل کھیلا کہ ملت اسلامیہ کشمیر نہ صرف بھارتی حکمرانوں کی بلکہ جموں کے ڈوگرہ سیاست کاروں کی بھی غلام بن کر رہ گئی ۔ اور اس طرح نے جموں کشمیر کی حکومت میں بھاجپا PDP کیلئے مستقل شراکت کو ہمیشہ کیلئے یقینی بنایا ۔چونکہ اب (BJP) PDP کی سیاسی و سماجی اعتباریت صرف 17سال (1999-2016) میں ہی ختم ہوگئی ہے اس لئے یہ بات طے ہے بھارتی ساغرساں ادارے ملت اسلامیہ کشمیر کو انتخابی سیاست کے ساتھ وابستہ بنائے رکھنے کیلئے یہاں Third Front قائم کریں گے اس میں کچھ منحرفین اور نئے چہرے بھی ہوں گے ان کا نعرہ یہی ہوگا NC اور PFP نے ملت کشمیر کے ساتھ غداری کی ہے اس لئے اب Third Front کو ووٹ دینا چاہئے تاکہ وہ اسمبلی میں مسئلہ کشمیر حل کرنے کی کوشش کر سکیں۔ third front کے قیام سے بھارتی سراغرساں ادارے دو طرح کے مقاصد حاصل کرنا چاہئیں گے،۱ول) چونکہ Third front کا انحصار PDP کی طرح کشمیر کے مسلم ووٹ پر ہوگا اس طرح وہ کشمیر کی 46نشستوں میں ہی اپنی کھیپ حاصل کر کے بھاجپا (BJP) کو سب سے بڑی اکثریت کے ساتھ اسمبلی میں پہنچنے کیلئے راہ ہموار کرے گا کیونکہ بھاجپا کی ساری نشستیں جموں میں محفوظ ہیں۔ دوم) BJP کی حکومت قائم ہونے کے بعد یہاں آزادی کے بجائے نام نہاد اٹانومی کو سیاسی اشو بنا دیا جائے گا کیونکہ زور شور سے اٹانومی ختم کرنے کی باتیں کرے گی۔ BJP اگر چہ اس بھارت نواز سیاست کے ساتھ حریت پسندوں کا کوئی لینا دینا نہیں ہے مگر وہ اس صورت حال سے بے تعلق بھی نہیں رہ سکتے۔ اس لئے ضرورت اس بات کی ہے حریت پسند سیاسی جماعتیں ، دینی جماعتیں اور عوام بھارت نواز سیاسی جماعتوں کے درمیان فرق نہ کریں ۔ PDP کو NC سے بہتر یا کم نقصان دہ قرار دینے والوں کیلئے حالیہ چار ماہ سے ملت اسلامیہ پر ڈھائے جارہے تاتاری مظالم چشم کشا ہیں۔ اب اگر کے بعد وہ PDP کا تجربہ کریں گے تو یہ تحریک آزادی کے تابوت میں آخری کیل کے مترادف ہوگا۔ Third Front حریت پسند قیادت اور ملت اسلامیہ کشمیر کیلئے جو بات سب سے اہم سمجھنے کی ہے وہ یہ ہے کہ بھارت کشمیر کے حوالے سے بین الاقوامی سطح پر 6سال میں صرف ایک بار آزمائش میں پڑتا ہے اس وقت اسمبلی انتخابات میں بھارت کے مقامی آلہ کار سڑک بجلی اور پانی کے نام پر لوگوں کو بیوقوف بنا کر ووٹ حاصل کرتے ہیں پھر بھارتی حکمران بین الاقوامی سطح پر یہی ووٹ حق خود ارادیت کے نعم البدل اور کشمیریوں کی بھارتی حاکمیت پر اعتماد اور حمایت کے طور پیش کرتے ہیں اس طرح 6سال تک ہم جو جدو جہد کرتے جو قربانیاں دیتے ہیں وہ ان انتخابات میںشرکت کی وجہ سے بے نتیجہ ثابت ہوتی ہیں۔ جب تک ملت اسلامیہ کشمیر یہاں کی بھارت نواز سیاسی جماعتوں کو مکمل طور Irrelevant نہ بنائیں اور نام نہاد اسمبلی انتخابات کو مکمل طور ناکام عمل ثابت نہ کریں جیسا کہ وہ86میں سے 50نشستوں میں کرسکتے ہیں بین الاقوامی سطح پر بھارت پر جموں کشمیر کو اس کے تاریخی تناظر میں حل کرنے کیلئے دباو ¿ نہیں پڑسکتا ، بھارت صرف افواج کی بنیاد پر کشمیر جیسے حساس اور متنازعہ خطے پر حکومت نہیں کر سکتا۔ یہ صرف یہاں کی بھارت نواز سیاسی جماعتیں اور یہاں کی اسمبلی ہے جو بھارت کے قبضے کو ممکن بنا رہی ہے۔ جو بات جموں کشمیر کے ہر مسلمان کو سمجھنی چاہئے وہ یہ ہے کہ ہماری آزادی میں پہلی اور آخری رکاوٹ اگر ہے تو وہ یہاں کی بھارت نواز سیاسی جماعتیں ہیں۔
X
11/26/2016
Ameer Muslim Deeni mahaz has condoled the sad demise of the mother of famous opthamologist Dr Tariq Qureshi. Praying for the departed soul Dr Qasim said that it is a personal loss to him as more than a kind doctor Dr Qureshi has been a good friend. He said that the commendable work that Dr Qureshi did during the More
Ameer Muslim Deeni mahaz has condoled the sad demise of the mother of famous opthamologist Dr Tariq Qureshi.
11/26/2016 12:00:00 AM
Ameer Muslim Deeni mahaz has condoled the sad demise of the mother of famous opthamologist Dr Tariq Qureshi. Praying for the departed soul Dr Qasim said that it is a personal loss to him as more than a kind doctor Dr Qureshi has been a good friend. He said that the commendable work that Dr Qureshi did during the past 4 months with those youth who were blinded by pellets shot by occupational forces. It would remain a sadqa e jariah not only for Dr Qureshi but for his deceased mother as well.

نامور ماہر امراض چشم ڈاکٹر طارق قریشی کی والدہ ماجدہ کے انتقال پر امیر مسلم دینی محاذ ڈاکٹر محمد قاسم نے دلی رنج و غم کا آظہار کیا ہے ۔ مرحومہ کیلئے دعائے مغفرت کرتے ہوئے محبوس امیر نے کہا ہے کہ مرحومہ کا انتقال ان کیلئے ایک ذاتی صدمہ ہے کیونکہ ڈاکٹر طارق قریشی میرے لئے ایک محسن معالج سے بڑھ کر ایک شفیق دوست رہے ہیں۔ ڈاکٹر قاسم کا مزید کہنا تھا کہ گذشتہ چار ماہ میں ڈاکٹر طارق قریشی نے جس تندہی اور جان فشانی اس ان لوگوں کا علاج معالجہ اور خدمت کی جن کی آنکھوں کی روشنی غاصب افواج نے پلیٹ گنوں سے چھین کی قابل صد ستائش ہے اور اللہ تعالی اس کا اجر ضرور خود ان کو اور ان کی مرحوم والدہ کو عطا کرے گا۔ امیر محترم نے پوری ملت اسلامیہ سے ڈاکٹر طارق قریشی کی والدہ کیلئے دعا کی درخواست کی۔
X
11/12/2016
The election of Donald Trump for the presidency in USA can impact the kashmir struggle in 3 ways---1- all the 50 year old resolutions of UNO including those on Kashmir may be trashed .The Indian Lobby in UNO is working for the same from a long time.2- Pressure may be created on Pakistan government to stop the supp More
The election of Donald Trump for the presidency in USA can impact the kashmir struggle in 3 ways
11/12/2016 12:00:00 AM
The election of Donald Trump for the presidency in USA can impact the kashmir struggle in 3 ways---1- all the 50 year old resolutions of UNO including those on Kashmir may be trashed .The Indian Lobby in UNO is working for the same from a long time.2- Pressure may be created on Pakistan government to stop the support of Kashmiri freedom movement and improvement of ties with India by relegating Kashmir Issue to the back burner. 3- The existence of DAESH may be proved in Kashmir thus linking the freedom struggle of Kashmir to the global terror scenario so that full support of USA is garnered to crush this movement. The Strong Indian Lobby in UNO, the wish of Nawaz shareef, Imran Khan and Bilawal Bhutto to get rid of the Kashmir Issue and the continous effort of some sentimental people to link Kashmir struggle with global terror is strengthening these three possible scenarios. Need of the hour is that resistance leadership should adopt a futuristic vision and create a broad policy outline to counter any such possible scenario. The muslims should strengthen their commitment with the movement as well till Allah the ALmighty creates favourable circumstances for us and we get rid of the Indian Occupation.

امریکہ میں ریپبلکن پارٹی کے ڈونالڈ ٹرمپ کے صدر بن جانے کے بعد کشمیر کی تحریک آزادی تین طرح سے متاثر ہوسکتی ہے۔ا۔UNO میں پچاس (50) سال سے زائد عرصے سے التواء میں پڑی قراردادیں خارج از دفتر ہوسکتی ہیں، جن میں ظاہر ہے کشمیر کے متعلق قراردادیں بھی شامل ہیں اور اس کیلئے اقوام متحدہ میں بھارتی لابی کئی سالوں سے کام کر رہی ہے۔ب۔حکومت پاکستان پر کشمیر کی تحریک آزادی کی حمایت نہ کرنے اور مسئلہ کشمیر کو سرد خانے میں ڈال کر بھارت کے ساتھ تعلقات بہتر بنانے کیلئے دباو ڈالا جاسکتا ہے۔ج۔کشمیر میں دائش کے وجود کو ثابت کر کے بھارتی حکومت کشمیر کی مزاحمتی تحریک کو عالمی دہشتگردی ثابت کرنے کی کوشش کرے گی تاکہ کشمیر کی مزاحمتی تحریک کو کچلنے کیلئے امریکہ کی بھر پور حمایت حاصل کی جا سکے۔ اقوام متحدہ میں کام کر رہی بھارت کی مضبوط لابی ، نواز شریف، عمران خان اور بلاول بھٹو کی مسئلہ کشمیر سے دامن چھڑانے کی سوچ اور بعض جذباتی قسم کے لوگوں کی کشمیر کی جد و جہد کو عالمی دہشتگردی ثابت کرنے کی کوشش ان تینوں ممکنہ اثرات کو بہت موثر بنا سکتی ہے۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ حریت پسند قیادت انتہائی سنجیدگی اور فہم و فراست کے ساتھ ان ممکنہ اثرات سے نمٹنے کیلئے لائحہ عمل ترتیب دیں۔اور ملت اسلامیہ تحریک آزادی کے ساتھ فکری اور عملی وابستگی کو یکسوئی کے ساتھ مضبوط بنائیں۔جب تک اللہ تعالی ہمارےلئے حالات کو سازگار اور موافق بنائے اور ہم بھارت سے آزاد ہوجائیں۔
X
11/10/2016
Kashmiri muslims are not animals that only their economic well being and development is being talked about. Indian rulers and their regional puppets have been exploiting kashmiri muslims on the name of development. Since subjugation is against the basic tenets of civilised life Therefore any conscious human being More
Kashmiri muslims are not animals that only their economic well being and development is being talked about.
11/10/2016 12:00:00 AM
Kashmiri muslims are not animals that only their economic well being and development is being talked about. Indian rulers and their regional puppets have been exploiting kashmiri muslims on the name of development. Since subjugation is against the basic tenets of civilised life Therefore any conscious human being never lives a life of slavery. But for india and its puppets humans are just about material urges of hunger and Sex (principles of marx and freud) Therefore they are least concerned about the spiritual needs and development of the kashmiri subjects. The development of spirit takes place in a free environment. They consider Kashmiris as just material entities. Therefore all they think of is providing jobs, development and economic prosperity to keep kashmiris subjugated. Question arises whether slaves have a right to properties? Or does all their properties belong to their masters? The houses, bunglows, orchards, shopping Malls belonging to kashmiri muslims are actually under the control of the India and its People. They can evict kashmiri muslims from these properties Whenever they want. The confiscation of properties of muslims in spain, palestine and in Jammu before 1947 are glaring examples of this confiscation. Therefore Talking about the development of slaves is just a farce. For muslims excessive want of this world is shirt for which their is a serious reprimand in holy Quran. We request the Muslims living in Kashmir that they should not fall prey to the conspiracy of changing their aim of life (earning pleasure of Allah) by india and its puppets. They are trying to Convert muslims into materialistic animals and we should fight it tooth and nail. Because when a person changes into a materialistic animal it is not able to differentiate between freedom and slavery. The increasing material tendencies in kashmiri muslims is the biggest hurdle in our movement for independence.

کشمیری مسلمان حیوان نہیں ہیں جو صرف ان کی معاشی خوشحالی اور ترقی کی باتیں کی جائیں۔بھارتی حکمران اور ان کے مقامی آلہ کار1947سے ہی کشمیریوں کی معاشی ترقی کے نام پر سیاسی استحصال کرتے رہے ہیں ۔غلامی چونکہ مہذب انسانی فطرت کےخلاف ہے اسلئے زندہ ضمیر انسان غلامی کی غیر فطری زندگی گزارنے کیلئے کبھی تیار نہیں ہوسکتا ہے۔ مگر بھارت کے کشمیری آلہ کاروں کیلئے انسان صرف شکم اور شرمگاہ(مارکس اور سیگمنڈ فرائڈ کا فلسفہ) کا نام ہے اسلئے وہ انسان کی روحانی تقاضوں اور ارتقاءجسکے لئے آزادی کی فضا ناگزیر ہے کا تصور ہی نہیں کر سکتے۔وہ کشمیریوں کو صرف مادی وجود مانتے ہیں اس لئے صرف بے روز گای کے خاتمے،تعمیر و ترقی اور معاشی خوشحا لی کے نام پر ملت کشمیر کو غلام بنائے ہوئے ہیں۔ سوال یہ ہے کیا غلام کی کوئی ذاتی ملکیت ہوتی ہے؟یا پھر اسکی ساری جائیداد اسکے مالک کی ہوتی ہے؟ کشمیر میں مسلمانوں کے مکانات،کوٹھیاں، باغات،شاپنگ مال اور دیگر جائیدادیں حقیقت میں آقا قوم(بھارتی عوام) کی جائیدادیں ہیں وہ جب چاہیں مسلمانوں (غلاموں) کو اس سے بے دخل کرسکتے ہیں۔ اندلس اور فلسطین میں مسلمانوںکی جائیدادوں اور جموں میں 1947سے پہلے مسلمانوں کی جائیدادوںپر آج کون قابض ہے؟ اسلئے غلاموں کی معاشی ترقی کی بات کرنا سب سے بڑا دھوکا اور فریب ہے۔ فرزندان توحید کیلئے دنیا پرستی شرک ہی کہ ایک صورت ہے جس پر قرآم مجید میں سخت وعید سنائی گئی ہے۔ہم ملت کشمیر سے ملتمس ہیں کہ وہ بھارتی حکمرانوں اور مقامی آلہ کاروں کی طرف سے کشمیری مسلمانوں کا زندگی کے متعلق نصب العین ( حصول رضائے الٰہی) تبدیل کر کے ان کو مادی حیوان بنانے کی کوششوں کی بھر پور مزاحمت کریں۔ کیونکہ انسان جب معاشی حیوان بن جاتا ہے تو اس میں آزادی اور غلامی میں تمیز کرنے کی صلاحیت ختم ہوجاتی ہے ۔ کشمیری مسلمانوں میں بڑھتی ہوئی مادہ پرستی حصول آزادی میں حائل سب سے بڑی رکاوٹ ہے
X
11/9/2016
This organised genocide of kashmiri muslims by indian forces should be dealt by proactive resistance movement with long term strategy . The people who are ready to give such sacrifices can't be held enslaved for long. It was a cold blooded masacre and a single day strike can't be a response to this brutality. The More
Organised genocide of kashmiri muslims by indian forces should be dealt by proactive resistance movement with long term strategy .
11/9/2016 12:00:00 AM
This organised genocide of kashmiri muslims by indian forces should be dealt by proactive resistance movement with long term strategy . The people who are ready to give such sacrifices can't be held enslaved for long. It was a cold blooded masacre and a single day strike can't be a response to this brutality. The leadership should ponder over a proactive and prompt response to this barbaric act.

پلوامہ قتل عام کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے ۔ اس کے خلاف دور رد اقدامی مزاحمت کی اشد ضرورت ہے ۔ جو قوم ایسی قربانیاں دینے کیلئے تیار ہے ان کو زیادہ دیر غلام نہیں بنایا جاسکتا۔یہ قتل عام ایک سوچے سمجھے منصوبہ کے تحت کیا گیا اور یک روزہ پڑتال اس کا جواب نہیں ہوسکتی۔ قیادت کو غور کرنا چاہئے اور اقدامی اور موثر مزاحمت کا راستہ اختیار کرنا چاہئے
X
11/6/2016
The resistance movement can never be made result oriented unless the decay in the societal fabric is arrested. The ideological base of resistance movement can be made strong by working for reform of the moral fabric of the society. The idea that either moral values of the society can be worked on or the freedom mo More
The resistance movement can never be made result oriented unless the decay in the societal fabric is arrested.
11/6/2016 12:00:00 AM
The resistance movement can never be made result oriented unless the decay in the societal fabric is arrested. The ideological base of resistance movement can be made strong by working for reform of the moral fabric of the society. The idea that either moral values of the society can be worked on or the freedom movement can be taken forward,both can't happen simultaneously is wrong and against the commandments of the holy Quran.It is a matter of concern that in jammu and Kashmir the religious organisations only concentrate on the moral righteousness considering it the final and only aim! This thinking ceases any chances of collaboration between pro freedom and religious organisations . From an Islamic point of view the efforts for moral betterment can niether be holistically society centric nor entirely state centric both these fronts have to be taken up simultaneously in all Islamic states. Since in Jammu Kashmir state authority Is not in the hands of muslims Therefore in our society the efforts for moral betterment can only be society centric but to make these efforts result oriented it is essential that we gain freedom from the rule of the non believers. The history of Islam ( from Nooh A.S to present times) there is no such instance where a true Islamic society has thrived under the rule of deniers .Niether does political freedom essentially lead to a Islamic society. Politically free Islamic countries have failed till date in developing an Islamic society. We request the religious and pro freedom organisations in Jammu kashmir that they should understand the value of their collaboration and should cooperate with each other on both the fronts and desist from any clasification of these works.

معاشراتی بگاڑ کے ساتھ مزاحمتی تحریک کو کبھی بھی نتیجہ خیز نہیں بنایا جاسکتا ہے،اس لئے اصلاح معاشرہ کے ساتھ ہی مزاحمتی تحریک کیلئے فکری بنیادوں کو مضبوط بنایا جاسکتا ہے۔ اسلئے یہ کہنا پہلے ''اصلاح معاشرہ پھر آزادی کی تحریک یا پہلے آزادی کی تحریک پھر اصلاح کی کاوشیں '' یہ دونوں طرح کی سوچ اصلاح کے متعلق قرآن مجید کی جامع تعلیمات سے خلاف ہیں۔جموں کشمیر میں پریشان کن صورتحال یہ ہے کہ یہاں دینی جماعتیں صرف اصلاح معاشرہ کو ہی اصلی اور حتمی کام مانتی ہیں! اس سوچ کی وجہ سے دونوں طرح کی جماعتوں میں باہمی تعاون کے امکانات تقریبا ختم ہوگئے ہیں۔ اسلامی نقطہ نگاہ سے نہ تو اصلاح کی کاوشیں صرف society centric ہوتی ہیں اور نہ ہی یہ صرف state centric ہوتی ہیں بلکہ دونوں سطح پر اصلاحی کاوشیں اسلامی ریاستوں میں ساتھ ساتھ ہوتی ہیں۔ چونکہ جموں کشمیر میں state authority اغیار کے ہاتھوں میں ہے اسلئے یہاں اصلاح کی کاوشیں صرف society centric ہی ہوسکتی ہے مگر ان کوششوں کو موثر اور نتیجہ خیز بنانے کیلئے ضروری ہے کہ اغیار کی غلامی سے آزادی حاصل کی جائے۔آج تک اسلام کی تبلیغی تاریخ (نوح سے لیکر آج تک ) میں ہمیں ایسی کوئی مثال نہیں ملتی جہاں مکذبین (deniers) کی حکمرانی میں اسلامی معاشرہ اپنی تکمیل کو پہنچا ہو اور نہ ہی یہ صحیح ہے کہ سیاسی آزادی لازما اسلامی معاشرہ کا ذریعہ بنے گی سیاسی طور آزاد مسلم ممالک آج تک اسلامی معاشرہ تیار نہیں کر سکے ہیں۔ ہم جموں کشمیر کی دینی اور حریت پسند جماعتوں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ اصلاح معاشرہ کی کاوشوں اور مزاحمتی تحریک کے درمیان لازمی تعلق کو سمجھیں اور ایک دوسرے کے ساتھ دونوں محاذوں پر تعاون کریں اور ان دونوں طرح کے کاموں میں اہم اور غیر اہم کی تفریق سے گریز کریں۔
X
11/3/2016
The alliance forged between Syed Ali Geelani, Mirwaiz Umar farooq and Muhammad Yaseen Malik six months ago needs to be strengthened and made permanent. The Resistance movement needs this Unity even after the current pro active phase of the movement reaches its conclusion. India is working on both long term and sho More
The alliance forged between Syed Ali Geelani, Mirwaiz Umar farooq and Muhammad Yaseen Malik six months ago needs to be strengthened and made permanent.
11/3/2016 12:00:00 AM
The alliance forged between Syed Ali Geelani, Mirwaiz Umar farooq and Muhammad Yaseen Malik six months ago needs to be strengthened and made permanent. The Resistance movement needs this Unity even after the current pro active phase of the movement reaches its conclusion. India is working on both long term and short term plans with respect to Kashmir. These include Crushing the freedom sentiment of the masses through the use of brute force and alongside it changing the muslim majority demography of the state. To resist these evil Indian designs and to inculcate a pro active Character in our struggle this unity in our leadership needs to be protected and strengthened. We request these three leaders to christen this unity as ‘Apex Hurriyat Committee ‘to make it permanent. It is our request that noted legal luminary and Pro freedom leader Mian Abdul Qayoom should be included as the fourth member of this committee. Undoubtedly, Indian agencies and some “profreedom activists ” are hell bent on breaking this Unity. Some of them want to appease their political masters in Delhi by creating rifts in the unity while others do it as they feel a threat to their political existence in the prevalence of this unison. Syed Ali Geelani Knows well that those among his forum who are against this unity are not even his well-wishers. They are some small time people dreaming of rising to the highest chairs. Mirwaiz will be facing the most pressure as some of the members of his forum have overtly and covertly raised voices against any unity But Mirwaiz knows well theat these people who are pressurizing him are known in the masses as advisers of Indian rulers and are politically non existent . If someone from them even had a few thousand voters in a certain Tehsil he has already sold them to RSS and BJP and received full payment for it. Therefore Mirwaiz should not come under this pressure as all the pro freedom organisations will back him for being a party to this unison. We request Syed Ali Geelani that he , along with MIrwaiz and Yaseen Malik , in order to make this Unison permanent, should write down clauses for unity so that whosoever heads the factions of Hurriyat and JKLF in future become members of this Apex Hurriyat Commiittee automatically.

جناب سید علی گیلانی، جناب میرواعظ ڈاکٹر عمر فاروق اور جناب محمد یاسین ملک کے درمیان چھ ماہ پہلے قائم ہوئے اتحاد ثلاثہ کو مستقل شکل دے کر اور زیادہ مضبوط بنانے کی ضرورت ہے، تحریک آزادی کے موجودہ اقدامی دور (Pro Active Phase ) کے بعد بھی اس اتحاد ثلاثہ کی ضرورت ہے چونکہ بھارتی حکومت جموں کشمیر کے متعلق قلیل مدتی اور طویل مدتی....دونوں طرح کے منصوبے رکھتی ہے، جس میں ایک طرف بد ترین ظلم و تشدد کے ذریعہ ملت اسلامیہ کشمیر کے جذبہ آزادی کو کچلنا ہے اور اسکے ساتھ ساتھ یہاں کی مسلم اکثریت کو مختلف طریقوں سے اقلیت میں تبدیل کرنا شامل ہے۔ اس لئے ان بھارتی منصوبوں کی مزاحمت کیلئے اور تحریک آزادی میں اقدامی کردار پیدا کرنے کیلئے ضروری ہے یہ اتحاد قائم اور مضبوط رہے۔ ہماری ان تینوں لیڈروں سے گزارش ہے کہ وہ اس اتحاد کو (APEX HURRIYAT COMMITTEE)کا نام دے کر مستقل شکل دیں، اور ہماری یہ بھی گزارش ہے کہ اس (AHC)میں ماہر قانون اور حریت پسند رہنما جناب میاں عبد القیوم کو بھی چوتھے رکن کے طورشامل کیا جائے۔ بلاشبہ بھارتی حکمران اور ان کے سراغرساں ادارے ہی نہیں بلکہ کچھ’حریت پسند‘ بھی اس اتحاد کو توڑنے کی کوشش کر رہے ہیں ’بعض حریت پسند‘ اس اتحاد کو دہلی کے حکمرانوں کو خوش کرنے کیلئے توڑنا چاہتے ہیں اور بعض ’حریت پسندوں‘ کو اس اتحاد میں اپنی سیاسی گمنامی نظر آتی ہے۔ جناب سید علی گیلانی اچھی طرح جانتے ہیں ان کے فورم میں جو لوگ اس اتحاد کی مخالفت کرتے ہیں وہ خود ان کے بھی خیر خوہ نہیں ہیں یہ کچھ چھوٹے لوگ ہیں جو بڑی کرسیوں پر بیٹھنا چاہتے ہیں۔میر واعظ عمر فاروق پر بلاشبہ سب سے زیادہ دباو ان کے اپنے فورم کے بعض افراد کی طرف سے اس اتحاد سے الگ ہونے کیلئے ہے مگر میر واعظ صاحب اچھی طرح جانتے ہیں جو لوگ ان پر یہ دباو ڈالتے ہیں وہ عوام میں بھارتی حکمرانوں کے مشیر کے طور جانے جاتے ہیں اور یہ لوگ سیاسی طور ’Non-Existant‘ ہیں، ان میں کسی ایک کے پاس اگر کسی تحصیل میں چند ہزار ووٹر تھے بھی وہ ان کو RSSاورBJPکو فروخت کر کے اس کی قیمت بھی وصول کر چکے ہیں،اس لئے میر واعظ کو لوگوں کے دباومیں نہیں آنا چاہئے، تمام حریت پسند مزاحمتی جماعتیں ان کے اس اتحاد میں شامل ہونے پر ان کے ساتھ ہیں۔ جناب سید علی گیلانی سے ہماری گزارشہے کہ وہ میر واعظ عمر فاروق اور یاسین ملک کے ساتھ اس اتحاد کو مستقل شکل دے کر اس کے لئے با ضابطہ ایک تحریر تیار کریں تاکہ مستقبل میں حریت کانفرنس کے دونوں دھڑوں اورJKLFکا جو بھی سربراہ بن جاتے ہیں وہ اس Apex Hurriyat Committeeکے بھی از خود رکن ہونگے۔
X
11/1/2016
Sectarian differences have been prevalent in the ummah right from the 3rd century of Hijrah and these differences in no way are the differences of Kuffar and Islam or Jannah and Hell. These are differences in understanding and comprehension . Rigidity and extremism in these sectarian difference is a result of prej More
Sectarian differences have been prevalent in the ummah right from the 3rd century of Hijrah and these differences in no way are the differences of Kuffar and Islam or Jannah and Hell.
11/1/2016 12:00:00 AM
Sectarian differences have been prevalent in the ummah right from the 3rd century of Hijrah and these differences in no way are the differences of Kuffar and Islam or Jannah and Hell. These are differences in understanding and comprehension . Rigidity and extremism in these sectarian difference is a result of prejudice or ignorance. These differences can’t be sorted out till Qayamah. The people who rose to eliminate these differences they have turned into a sect themselves. Our ancestors had these differences in approach but they respected each other and despite these differences where helpful to each other in the matters of virtue. To convert Hanfi Muslims in to Salfi and vice versa was never the priority of the Ummah and never will be . Ulema and pious people always preferred the reformation in muslim and Dawah to Kuffar as their priority because any muslim who has Imaan and virtous deeds will be in Jannah no Matter what Maslak he follows. Muslms have been under slavery fr the past two hundred years therefore the enemies have always fanned these sectarian rifts in Muslim’s. Their main objective is to consume our abilities in these rifts so that the resistance movement can be weakened. This sectarian rift is being funded by Saudi Arabia, Iran and India and the agents of these countries are fanning this fire so that a civil war can be initiated. We request the youth to remain away from sectarian extremism and show a moderate and tolerant approach in these matters. They should remain vigilant from such preachers who propagate secterain hate to earn bread and butter. The main feature of these Preachers is that they never speak against congress , BJP, National Confrence PDP and other anti Muslim and Islam parties and only give efforts in propagating their sect.

مسلکی ا ختلافات امت اسلامیہ میں تیسری صدی ہجری سے ہی شروع ہوئے ہیں اور یہ اختلافات کفر اور اسلام کے اختلاف نہیں ہیں اور نہ ہی یہ جنت اور جہنم کا مسئلہ ہے،یہ دراصل تعبیر اور تشریح کے اختلافات ہیں، ایک مسلمان میں مسلک کے بارے میں شدت پسندی جہالت یا تعصب کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے، یہ اختلافات ایسے ہیں جو قیامت تک ختم نہیں ہوسکتے اور جو لوگ مسلک اختلافات کو ختم کرنے کی بات کرتے ہیں وہ بذات خود ایک مسلک بن گئے یں ! ہمارے اسلاف مسلکی ختلافات کے باوجود نہ صرف ایک دوسرے کی عزت اور احرام کرتے کرتے تھے بلکہ معرو ف میں ایک دوسرے کے ساتھ اشتراک اور تعاون بھی کرتے تھے۔ حنفی مسلمانوں کو سلفی مسلمان بنانا یا سلفی مسلمانوں کو حنفی مسلمان بنانا نہ کبھی امت کی ترجیح رہی ہے اور نہ کبھی ہوسکتی ہے علماءاور صلحاءنے ہمیشہ مسلمانوں میں اصلاح اور غیر مسلموں میں دعوت اسلام کو ہی ہی ترجیح بنایا ہے، کیونکہ ایمان اور عمل صالح کا سرمایہ جس کسی مسلمان کے پاس ہوگا وہ انشا ءاللہ جنت میں جائے گا خواہ وہ کسی بھی مسلک یا جماعت کے ساتھ وابستہ ہو، جنت کی اجارہ داری کسی مسلک یا جماعت کو حاصل نہیں ہے۔ ملت اسلامیہ چونکہ دو صدیوں سے غلامی کی زندگی گزار رہی ہے اس لئے دشمن کی ہمیشہ یہی کوشش رہی ہے یہ ملت اسلامیہ کشمیر مسلکی اور جماعتی معرکہ آرائی میں ہی اپنی علمی و عملی صلاحیتو ں کو ضائع کرے تاکہ مزاحمتی تحریک جو ملت اسلامیہ کشمیر کی پہلی ترجیح ہے کیلئے افراد سازی کے امکانات ختم ہوں۔ کشمیر میں مسلکی آرائی کیلئے با ضابطہ سعودی عرب، ایران اور بھارت سے پیسہ آرہا ہے اور ان ممالک کے بے ضمیر ایجنٹ یہاں مسلکی اختلافات کو فروغ دے کر خانہ جنگی کا ماحول تیار کر رہے ہیں۔ ہم نوجوانوں سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ مسلک کے بارے میں اعتدال پسندی اور وسیع القلبی کا مظاہرہ کریں اور ایسے واعظوں اور خطیبوں سے خبردار رہیں جنہوں نے مسلکی شدت پسندی پھیلانے کو اپنا ذریعہ معاش بنایا ہے ایسے واعظوں ور خطیبوں کی پہچان یہ ہے کہ وہ کبھی بھی کانگریس ، بھاجپا ، نیشنل کا نفرنس اور پی ڈی پی جیسی اسام اور مسلمان دشمن جماعتوں کے خلاف نہیں بولیں گے بکہ صرف مسلکی اختلافات کو ہی اچھالیں گے۔
X
10/25/2016
Ameer of MDM Dr Muhammad Qasim has condemned the terrorist strike on the police academy in Quetta Pakistan. He said that the terrorists in Pakistan are being funded and supported militarily by India as was exposed by the Indian Prime minister Modi himself when he owned the insurgency in Balochistan and elsewhere i More
Condemned the terrorist strike on the police academy in Quetta Pakistan.
10/25/2016 12:00:00 AM
Ameer of MDM Dr Muhammad Qasim has condemned the terrorist strike on the police academy in Quetta Pakistan. He said that the terrorists in Pakistan are being funded and supported militarily by India as was exposed by the Indian Prime minister Modi himself when he owned the insurgency in Balochistan and elsewhere in Pakistan. He said that India is repeating what it did in Pakistan and TTP and its other manifestations are playing the role of Mukhti Bahani.

X
10/20/2016
Prime Minister of Pakistan Nawaz Sharief should reconstitute the Kashmir Committee afresh to make it pro active on the international level. Maulana Fazl ur Rehman should be relieved from the chairmanship of this committee as his performance has remained unsatisfactory. A non political figure, who is well qualified More
Prime Minister of Pakistan Nawaz Sharief should reconstitute the Kashmir Committee afresh to make it pro active on the international level
10/20/2016 12:00:00 AM
Prime Minister of Pakistan Nawaz Sharief should reconstitute the Kashmir Committee afresh to make it pro active on the international level. Maulana Fazl ur Rehman should be relieved from the chairmanship of this committee as his performance has remained unsatisfactory. A non political figure, who is well qualified and well versed with the history of the sub continent and Kashmir Issue besides having experience in international politics and diplomacy , should be appointed as the head of this committee. Prime Minister of Azad Kashmir can be the president of the committee. Only Kashmiris, whether residing in Pakistan, Azad Kashmir or any other part of the world should be made its members. Mini secretariats for the Kashmir Committee should be made in Pakistan and Azad Kashmir while as in countries like USA, UK, France, China, Russia, Germany, Japan, Saudi Arabia, Iran, Turkey , Indonesia and Malaysia Kashmir Diplomatic offices should be setup. These offices should remain in constant touch with the governments of these countries to apprise them about the atrocities meted out to Kashmiri people by Indian army and police and ask them to play a role in resolving Kashmir Issue in its historical context or as per the UN Resolutions. Until and unless Pakistan adopts a pro active policy on Kashmir and strengthens the Kashmir Diplomatic front, India with its overactive external affairs and diplomacy will continue to paint Kashmir’s indigenous freedom struggle as Cross border terrorism and thus hoodwink the international opinion as it has done in the past 27 years particularly during last 3 months. Funds would be required the make Kashmir committee dynamic on the international front .Pakistan can allocate a special budget for the purpose and aid can be garnered from OIC members as well. People of Jammu and Kashmir are giving supreme sacrifices for freedom, Indian forces have set new records for human rights violations but all these sacrifices are not yielding results at the international level which could force India to settle Kashmir Dispute as per the wishes of the people. I request all the political and religious organizations, civil society, Lawyers and Media of Pakistan to play a role to help Pakistan in shaping a pro active external affairs policy especially regarding Jammu and Kashmir. They should also help in making Kashmir Committee dynamic at the international diplomatic front.

وزیر اعظم پاکستان میاںنوازشریف کشمیر کمیٹی کو بین الاقوامی سطح پر فعال اور متحرک بنانے کیلئے اس کمیٹی کی نئے سرے سے تشکیل کریں۔ مولانا فضل الرحمان کو اس کمیٹی کی چیرمین شپ سے فارغ کیاجائے کیونکہ ان کی چیرمین کشمیر کمیٹی کی حیثیت سے کارکردگی انتہائی مایوس کن ہے۔ کشمیر کمیٹی کا چیرمین کسی غیر سیاسی شخصیت کو ،جو اعلیٰ تعلیم یافتہ ہونے کے ساتھ ساتھ برصغیر پاک ہند کی تاریخ، مسئلہ کشمیر کی تاریخی بنیادوں، بین الاقوامی سیاسیات کے ساتھ ساتھ سفارت کاری کاتجربہ رکھتا ہو، بنایاجائے۔ مذکورہ شخصیت کوکشمیر کمیٹی کاچیرمین اور وزیر اعظم آزاد کشمیر کواس کشمیر کمیٹی کاصدر بنایا جاسکتا ہے اور اس کمیٹی کے تمام ارکان کشمیری ہوںخواہ وہ فی الاقوت پاکستان میں، آزاد کشمیر میںیادنیاکے کسی بھی ملک میں رہائش پذیر ہوں،کشمیر کمیٹی کے پاکستان اور آزاد کشمیر میں Mini Secretariatقائم کئے جائیں اور اس کے ساتھ ساتھ امریکہ، برطانیہ، فرانس، چین ، روس ،جرمنی جاپان، سعودی عرب ، ایران ، ترکی، انڈونیشیا ، ملیشیا ءمیں کشمیر کمیٹی کی طرف سے Kashmir Diplomatic Officeقائم کئے جائیں جہاںکشمیر کاسفارتی عملہ وہاںکے حکمرانوں کے ساتھ مسلسل تعلق قائم کر کے ان کو مسئلہ کشمیر کو اسکے تاریخی پس منظر میںحل کرنے یا UNOقرار دادوں کے ذریعہ حل کرنے کیلئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کرنے پر آمادہ کرنے کی کوشش کرے گا اور اسکے ساتھ ساتھ جموںکشمیر کے لوگوں پر بھارتی افواج اور بھارتی پولیس کے ذریعہ ڈھائے جارہے مظالم کو بھی اجاگر کرےگا ۔ جب تک عالمی سطح پر کشمیر کے حوالے سے حکومت پاکستان Pro Active Diplomacyاختیار کرنے کے ساتھ ساتھ KashmirDiplomatic Frontکومتحرک اور مضبوط نہیں کرتا ہے بھارتی حکمران جن کی خارجی سیاست اور سفارت کاری کشمیر کے حوالے سے پاکستان کے مقابلے میں بہت فعال اور متحرک ہے، کشمیر کی خود کفیل تحریک آزادی کوCross Border Terrorismکانام دے کر عالمی برادری کو اسی طرح گمراہ کرتے رہیں گے جس طرح وہ پچھلے 27برس سے بالخصوص پچھلے 3ماہ سے کررہے ہیں۔ بلا شبہ کشمیر کمیٹی کوبین الاقوامی سطح پر سفارتی محاذ پر فعال اور موثر بنانے کیلئے کثیر رقومات کی ضرورت ہے اس کےلئے حکومت پاکستان سرکاری خزانے سے ایک بجٹ مقرر کرسکتی ہے اور OICممالک سے اس بارے میںمالی معاونت بھی حاصل کر سکتا ہے۔ اس بات کاتجربہ ہمیں بار بار ہورہاہے جموں کشمیر کے لوگ آزادی کیلئے بے تحاشا قربانیاں دیتے ہیں، ان پر بھارتی افواج قیامت خیز مظالم ڈھاتے ہیںمگر عالمی سطح پر ہماری یہ قربانیاں وہ نتائج حاصل نہیں کر پارہی ہیںجو بھارت کو مسئلہ کشمیر لوگوں کی خواہشات کے مطابق حل کرنے پر مجبور کرسکتے ہوں۔ میں پاکستان کی تمام سیاسی جماعتوں،دینی تنظیموں ،سول سوسائیٹی کے لوگوں، وکلاءبرادری اور میڈیا سے وابستہ حضرات سے گزارش کرتا ہوں کہ وہ حکومت پاکستان کی خارجہ سیاست کو بالعموم اور کشمیر کے متعلق بالخصوص اپنی خارجہ سیاست اور سفارت کاری کوموثراور اقدامی نہ کہ خاموش اور ردعمل بنانے میں اپنا کردار ادا کریں اور ساتھ ہی کشمیر کمیٹی کو International Diplomatic Frontپر فعال بنانے کیلئے اقدام کریں۔
X
10/12/2016
The general secretary of Muslim Deeni Mahaz Mohammad Maqbool Bhat accused the authorities of playing with the life of incarcerated chairperson of Dukhtaran-e-Millat, Asiya Andrabi. In a statement issued here, the general secretary of M.D.M said, that the health condition of Asiya Andrabi was deteriorating in Baram More
The general secretary of MDM accused the authorities of playing with the life of incarcerated chairperson of D-e-M, Asiya Andrabi.
10/12/2016
The general secretary of Muslim Deeni Mahaz Mohammad Maqbool Bhat accused the authorities of playing with the life of incarcerated chairperson of Dukhtaran-e-Millat, Asiya Andrabi. In a statement issued here, the general secretary of M.D.M said, that the health condition of Asiya Andrabi was deteriorating in Baramulla Sub jail.In a statement issued here the general secretary of M.D.M said that the cell that Aasiyah Andrabi is being kept in is in a very unhygienic condition and there is no proper sanitation facility available in the cell. she has developed serious ailments during the continuous detention and her condition is worsening every passing day due to the lack of proper medical care. the general secretary of M.D.M said that the authorities are taking political revenge from Asiya by agonizing her despite her ailing health. “Shifting her to jail in such a condition is the epitome of political vendetta,”.

X
7/7/2016
To term the resistance movement of Jammu Kashmir as a reaction to the large scale bungling in election s of 1987 is a conspiracy to sabotage the historic and ideological basis of the Kashmir issue. In the garb of such statements ground is being prepared to repeat a MUF environment for 2021 elections. Indian intell More
To term the resistance movement of Jammu Kashmir as a reaction to the large scale bungling in election s of 1987 is a conspiracy to sabotage the historic and ideological basis of the Kashmir issue.
7/7/2016 12:00:00 AM
To term the resistance movement of Jammu Kashmir as a reaction to the large scale bungling in election s of 1987 is a conspiracy to sabotage the historic and ideological basis of the Kashmir issue. In the garb of such statements ground is being prepared to repeat a MUF environment for 2021 elections. Indian intellectuals are on purpose terming our resistance struggle a result of the rigging of 1987 elections so that world is given an impression that Kashmiri’s want to live under the constitution and political system of India and it was only after the riggings of 1987 that these people were pushed to resist Indian Rule! It is sad state of affairs that some of our Journalists and Intellectuals are becoming a party to this propaganda. The Resistance movement in Jammu and Kashmir started on the same day when the first Indian soldier set foot on this land and should be seen as an extension of the resistance against Dogra Rule. Not a single decade passed from 1947 to 1988 where we cannot find evidences of a political and armed struggle against Indian occupation. At first some Indian Intellectuals made some people give up armed resistance by convincing them that only a peaceful political struggle would yield them world support. Now the Pro freedom people are being told that voices of only democratically elected people are heard at world forums and therefore they should get into the assembly to put forth their demands. The assembly of Jammu Kashmir formed in 1952 has a sole aim of serving Indian interests in Jammu Kashmir and has always been used to do the same. We, not only consider the participation in 1987 election as an anti Islamic step but a sell out as well. Therefore this idea, that the pro freedom people should put forth their ideas in assembly as NC and PDP have failed the Kashmiri people besides Boycott calls not yielding desired results, is in reality a plot to give a burial to the resistance movement in the assembly. The real status of this state assembly is that a man like Sheikh Abdullah with absolute majority could not bring autonomy in 1977. Now if these pro #freedom people go into assembly they won’t even be able to get the position of 1989. We categorically reject the views expressed by people related to MUF and few intellectuals that were published in an English daily. To term the resistance movement as a reaction to the rigging in 1987 elections is an Indian propaganda that should be taken as contempt to the people who laid down their lives and were imprisoned because of being a part of the resistance movement between 1947 and 1987. We request all ideological pro freedom people to resist against this propaganda that is being unleashed with the sole aim of repeating a MUF like scenario in 2021.

جموں و کشمیر کی مزاحمتی تحریک1987 ئ میں نام نہاد اسمبلی انتخابات میں ہوئی دھاندلی کا نتیجہ قرار دینا نہ صرف جموں کشمیر کی مزاحمتی تحریک کی تاریخی اور نظریاتی بنیادوں کو منہدم کرنے کی کوشش ہے بلکہ اسطرح 2021ئمیں ہونے والے نام نہاد اسمبلی انتخابات کیلئے MUF(مسلم متحدہ محاذ)جیسا ماحول بنانے کی کوشش ہے۔ بھارتی دانشور دانستہ طور موجودہ مزاحمتی تحریک کو 1987میں انتخابات میں ہوئی دھاندھلی کا نتیجہ قرار دینا چاہتے ہیں تاکہ دنیا کو یہ تاثر دیا جائے کہ ملت کشمیر بھارتی آئین اور نظام سیاست کے ساتھ ہی رہنا چاہتے ہیں مگر صرف الیکشن دھاندلی کی وجہ سے تحریک آزادی کی طرف دھکیلے گئے! مگر انتہائی افسوسناک اور تشویش ناک معاملہ یہ ہے کہ کشمیر کے بعض جرنلسٹ اور اہل دانش بھی اس بھارتی پروپیگنڈا کا حصہ بن گئے ہیں ۔ جموں وکشمیر کی موجودہ مزاحمتی تحریک ٹھیک اس دن سے شروع ہوئی ہے جس دن بھارتی افواج جموں وکشمیر میں داخل ہوئی ہیں اور یہ مزاحمتی تحریک ڈوگرہ حکمرانوں کیخلاف جاری تحریک کا تسلسل ہے۔1947ئ سے1988تک چار دہائیوں میں ایسی کوئی دہائی نہیں جس میں تحریک مزاحمت کی دونوں طرح (مسلح، سیاسی) کی مثالیں موجود نہ ہوں۔ پہلے بھارتی دانشوروں نے یہاں کے بعض سادہ لوح جوانوں کو یہ کہہ کر مسلح جد و جہد ترک کرنے کیلئے کہا کہ آزادی کیلئے پر امن سیاسی جد جہد کرو دنیا اسکی حمایت کرے گی اب حریت پسندوں کو یہ سبق پڑھایا جارہا ہے کہ دنیا جمہوری طور منتخب لوگوں کی بات سنتی ہے اس لئے تم اپنی بات اسمبلی میں جمہوری طریقے پر کرو! جموں وکشمیر کی اسمبلی1952میں جموں وکشمیر میں بھارت کے خاکوں میں رنگ بھرنے کیلئے بنی ہے اور ہمیشہ اس کام کیلئے استعمال ہوگی۔ہم 1987میں اسمبلی انتخابات میں شرکت کو نہ صرف غیرشرعی فعل سمجھتے ہیںبلکہ واضحSell outبھی قرار دیتے ہیں ۔ اسلئے چند ماہ سے جو مسلسل یہ پروپیگنڈا کیا جاتا ہے کہ حریت پسندوں کو اسمبلی میں پہنچ کر آزادی کی بات کرنا چاہئے کیونکہ نیشنل کانفرنس ملت دشمن ہے اور PDP بھی کشمیر دشمن ثابت ہوئی ہے اور پھر بائیکاٹ کی کال بھی غیر موثر ثابت ہوتی ہے، دراصل یہ تحریک مزاحمت کی اسمبلی میں تجہیز و تکفین کرنے کی تیاری ہورہی ہے۔ ریاستی اسمبلی کی آئینی حالت یہ ہوگئی ہے کہ 1977میں شیخ عبد اللہ جیسا شخص بھاری اکثریت کے باوجود بھی اٹانومی حاصل نہ کرسکا اب اگر حریت پسند وہاں جائیں گے وہ 1989 کی پوزیشن بحال نہیں کر پائیں گے ۔ہم 1987کے انتخابات میں شرکت کیلئے MUFسے وابستہ افراد اور بعض اہل دانش کے دلائل یکسر مسترد کرتے ہیں جو چند روز پہلے ایک انگریزی روزنامہ میں شائع ہوئے ہیں۔ موجودہ مزاحمتی تحریک کو انتخابی دھاندلی کا ردعمل قرار دینا نہ صرف بدترین ھارتی پروپیگنڈا ہے بلکہ ان شہداءاور اسیروں کی تذلیل اور توہین ہے جو 1947سے 1987تک تحریک مزاحمت سے وابستہ تھے ،ہم تمام نظریاتی حریت پسندوں سے ملتمس ہیں کہ وہ ان کوششوں کا مقابلہ کریں جو یہاں 2021تک MUF کا ماحول بنانے کیلئے ہو رہی ہیں۔
X
7/5/2016
Attack in Medina attack on Islam Muslim Deeni mahaz condemns the suicide attack carried out outside Masjid Nabawi in Madina in the strongest possible terms. The Ameer of MDM Dr. Qasim Faktoo said that the sanctity and peace in the Haramain is more important to muslims than their own life. No Muslim can ever think More
Attack in Medina attack on Islam
7/5/2016 12:00:00 AM
Attack in Medina attack on Islam Muslim Deeni mahaz condemns the suicide attack carried out outside Masjid Nabawi in Madina in the strongest possible terms. The Ameer of MDM Dr. Qasim Faktoo said that the sanctity and peace in the Haramain is more important to muslims than their own life. No Muslim can ever think of the henious crime.of attacking the Haramain. He said that a conspiracy and a foriegn hand is evident in this attack. He asked muslims to stand United against these conspiracies and criminals to protect our places of faith. He condemned the hanging of Dr Asma AlKhateeb in Egypt. He said that the tyrant regime in egypt has started a war against islamists but it will result in a resounding defeat to them.

X
6/29/2016
The general secretary of Muhammad Maqbool Bhat has paid glowing tributes to the martyr Sameer Ahmad wani. He said that the struggle of freedom for Islam thrives on the sacrifice of these youth.The day is not far away when these youth will drive away the Indian troops from Kashmir in similitude to what happened w More
Glowing tributes to the martyr Sameer Ahmad wani...
6/29/2016
The general secretary of Muhammad Maqbool Bhat has paid glowing tributes to the martyr Sameer Ahmad wani. He said that the struggle of freedom for Islam thrives on the sacrifice of these youth.The day is not far away when these youth will drive away the Indian troops from Kashmir in similitude to what happened with Russia in Afghanistan.Allah willing Kashmir will soon see the rise of the Islamic freedom

مسلم دینی محاز کےجنرل سیکٹری محمد مقبول بٹ نےشہیدسمیراحمد وانی کو خراج عقیدت اداکرتےہوے کہاجموں کشمیر کی جدوجہد آزادی براےاسلام انہی نوجوانوں کی شہادتوں سے زندہ ہے اور اپنی منزل کی طرف رواں دواں ہے انشاءاللہ اب وہ دن دور نہں جب ھندوستان کی قابض فوج ویسے ہی نکلے گی جیسے افغانستان سے روس کی فوج نکلی اور انشااللہ جموں کشمیر میں آزادی براےاسلام کا سورج طلوع ہوگا
X
6/24/2016
The religious and pro freedom organisations and the entire Muslim Ummah needs to introspect and ponder why we are enslaved by foreigners for nearly part two centuries ( from 1819).We are giving huge sacrifices but they are not yielding any result. It is evident that Allah is angry with us therefore it has stopped More
The nation that does not introspect does not come to recognize its weakness and folly and thus is not able to rectify them.
6/24/2016 12:00:00 AM
The religious and pro freedom organisations and the entire Muslim Ummah needs to introspect and ponder why we are enslaved by foreigners for nearly part two centuries ( from 1819).We are giving huge sacrifices but they are not yielding any result. It is evident that Allah is angry with us therefore it has stopped the divine help. Today our condition is such that in the entire face of earth we have no supporters and neither any divine help is coming. There should be some reason for our continous degradation .The nation that does not introspect does not come to recognize its weakness and folly and thus is not able to rectify them. Today we are facing the same situation that Jews and Hindus had to face during the thousands of years preceding 1947. Distance from religion , materailistic approach and rifts have made us loose our importance and stature in the world.The last 10 days of Ramadhan are on us we All need to revert towards Allah and ask for repentance for our misdeeds so that our miserable life ends.

جموں کشمیر کے دینی اور حریت پسند جماعتوں اور ملت اسلامیہ کو اپنا احتساب کرنے کی ضرورت ہے اور اس بات پر غور کرنے کی ضرورت ہے کہ کیا وجہ ہے کہ ہم تقریبا 2 صدیوں (1819)سے اغیار کی غلامی کی ذلت آمیز زندگی سے دوچار ہیں۔ہم قربانیاں دیتے ہیں مگر وہ نتائج پیدا نہیں کر رہی ہیں!معلوم ہوتا ہے ہے کہ اللہ تعالی ہم سے ناراض ہے اور بہت ناراض ہے اسی لئے اس نے اپنی نصرت روک کی ہے،ہماری حالت یہ ہے کہ زمین پر کوئی ہمارا حمایتی ہے اور نہ آسمان سے ہمیں مدد نہ رہی ہے۔کچھ تو وجہ ہے جو ہم ہر اعتبار سے پستی کی طرف جارہے ہیں۔ جو قوم اپنا احتساب نہیں کرتی وہ اپنی کمزوریوں اورکوتاہیوں سے آگاہ نہیں ہوتی اور جو قوم اپنی کوتاہیوں سے آگاہ نہیں ہوتی وہ ان کو دور بھی نہیں کرسکتی ،آج ہماری حالت وہی ہے جو 1947 سے پہلے دو ہزار سال تک ہندووں اور طبی اسرائیل (یہودیوں)کی تھی۔ دین سے دوری ،مادہ پرستی اورانتشار و افتراق نے ہماری ملت کو بے وقعت اور بے عزت بنا دیا ہے۔ہم سب کو چاہئے کہ اب جب کہ ماہ رمضان کا آخری عشرہ شروع ہورہا ہے کہ تمام 5 شبوں میں اللہ کی طرف رجوع کرکے اپنی کوتاہیوں پر اللہ تعالی سے معافی مانگیں شاید کہ ہماری موجودہ ذلت امیز زندگی ختم ہو
X
6/19/2016
The general secretary of Muslim Deeni Mahaz Mohammad Maqbool Bhat has said that Mehbooba mufti is treading the path of tyranny like her father. She has unleashed a reign of terror and death against the people who stand for truth. When Mufti syed was the home minister of India he appointed the killer of delhi musli More
Mehbooba mufti is repeating the actions of her father
6/19/2016
The general secretary of Muslim Deeni Mahaz Mohammad Maqbool Bhat has said that Mehbooba mufti is treading the path of tyranny like her father. She has unleashed a reign of terror and death against the people who stand for truth. When Mufti syed was the home minister of India he appointed the killer of delhi muslims jagmohan as the governor of Kashmir. After assuming the charge of governor he oversaw the killing of 52 innocent muslims in Gowkadal on January 19,1990. On 23 February 1990 more than 100 women were rapped in Kunanposhpura . On 27th February 27 persons were massacred in kupwara. Now Mehbooba mufti is repeating the actions of her father but she should realise that tyranny can never suppress the movement of freedom and Islam.

مسلم دینی محازکےجنرل سیکٹری محمدممقبول بٹ نےکہاہے محبوبہ جی اپنےوالد مفتی محمد سعید کےنقشہ قدم پرچل کرظلم زیادتی جبر وتشددقیدو بند قتل گارت گری اورحق کی بات کہنےپرقدگن لگانے میں اپنے والد سےایک قدم آگےنکل گئی مفتی صحاب جب ہندوستان کے گھرکُلی وزیر بَنے توانہوں نے دہلی کےمسلمانوں کےقاتل جگ موہن جس نے جامع مسجد کےنمازیوں پر گولی چلانے کا حکم دیا تھا اوران گولیوں کے نشان آج بھی مسجد کےدیوارں پر موجود ہے گورنربناکرکشمیربیجہا کشمیرمیں گورنرکاچارج سہمبالتےہی سی آر پی ایف کےہاتھوں 19جنوری 1990 گاوکدل میں52معصوم شہریوں کوشہیدکیاگیا 23ماہ فروری1990کی درمیانی رات کوکنن پوشہ پورہ میں تقریبًا 100کی تعدارمیں محصوم سےلیکرعمررسیدعورتوں کی اجتماعی عصمت دری کی 27ماہ فروری کپوارہ میں27افراد کوشھیدکیا حریت پسند کوبہارت کےجیلوں میں منتقل کیا محبوبہ جی کیاآپ کےوالدطاقت کی بولی بول کرکشمیر کی جدوجہدہ آذادی کودباسکہا جوآپ اپنے والد کااجنڈالےکر تحریک آزادی براےاسلام کودباسکہے گی
X
6/14/2016
The differences between the resistance organisations and pro india parties are not political but religious in nature. Political differences are either about being in power or varried methodologies. For these differences millions of people don't have to sacrifice lives or spend lives in jail. Be it N.C,PDP,Peoples More
The differences between the resistance organisations and pro india parties are not political but religious in nature.
6/14/2016 12:00:00 AM
The differences between the resistance organisations and pro india parties are not political but religious in nature. Political differences are either about being in power or varried methodologies. For these differences millions of people don't have to sacrifice lives or spend lives in jail. Be it N.C,PDP,Peoples Confrence or Awami Itihad party all of them work to keep Jammu Kashmir as a part of india this among these parties differences can be about being in power or modus operandi.It can't be termed as ideological difference! In the same way the differences between BJP and Congress are in methodology. Both the parties want to change the Muslim majority status of Jammu Kashmir. The difference between pro resistance organisations and pro india parties and institutions should be seen in the light of Quran especially the verse 60 of Surah Almumtahana. These are the differences of the truth and the falsehood. Therefore terming this difference as Political and then talking about keeping human values above political differences shows the ignorance from the basic tenets of Islam and the soul of resistance movement.In this battle of truth and falsehood,to maintain relationships whether political ,social or personal with pro india parties or personalities is against Islamic teachings. We request pro freedom people, journalists, columnists and intellectuals to see and understand the differences between resistance organisations and pro india groups in the light of Islam and suggest whether these relations are allowed or not?

جموں کشمیر کی مزاحمتی تنظیموں اور ہند نواز سیاسی جماعتوں میں اختلاف کی نوعیت سیاسی نہیں دینی ہے۔ سیاسی اختلاف یا تو اقتدار کی رسہ کشی یا پھر طریقہ کار کا اختلاف ہوتا ہے اس کیلئے نہ تو لاکھوں جانیں قربان کرنی پڑتی ہیں اور نہ ہی زندگیاں جیلوں میں گزارنی پڑتی ہیں۔ نیشنل کانفرنس،پی ڈی پی،پیپلز کانفرنس اور عوامی اتحاد پارٹی یہ سب جماعتیں چونکہ جموں کشمیر پر بھارتی قبضہ کو دوام بخشنے کیلئے کام کر رہی ہے اس لئے ان جماعتوں کے درمیان اختلاف کو اقتدار کیلئے رسہ کشی یا پھر طریقہ کار کا اختلاف کہا جا سکتاہے نہ کہ نظریاتی اختلاف! اسی طرح بھاجپا اور کانگریس کے درمیان اختلاف بھی طریقہ کار پر ہے۔دونوں جماعتیں جموں کشمیر کی مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنا چاہتی ہین۔ مزاحمتی جماعتوں اور ہند نواز تنظیموں اور اداروں کے درمیان اختلافات کو قرآن مجید بالخصوص سورہ الممتحنہ ( surah almumtahana :60) کی روشنی میں سمجھنے کی ضرورت ہے اور یہ اختلاف حق و باطل کا اختلاف ہے اسلئے اس حق و باطل کی معرکہ آرائی کو سیاسی اختلاف قرار دینا اور پھر انسانی اقدار کو سیاسی اختلافات سے بلند رکھنے کی باتیں کرنا نہ صرف اسلام سے بے خبری کی دلیل ہے بلکہ مزاحمتی تحریک کی روح سے لا علمی کا ثبوت ہے۔ حق و باطل کی اس معرکہ آرائی میں ذاتی،سیاسی اور سماجی رشتوں کی بنیاد پر بھارت نواز سیاسی جماعتوں اور شخصیات سے تعلق رکھنا قرآن کی تعلیمات کے خلاف ہے۔ ہم حریت پسندوں ،صحافیوں ،مضمون نگاروں اور اہل علم و دانش سے مودبانہ گزارش کرتے ہیں کہ وہ مزاحمتی جماعتوں اور بھارت نواز اور بھارت کی آلہ کار سیاسی جماعتوں کے درمیان تعلقات کو اسلام کی روشنی میں دیکھیں آیا اس قسم کے تعلقات جائز بھی ہے یا نہیں؟
X
6/12/2016
Reacting on the recent statement of puppet CM Mehbooba Mufti,in which she had said that article Rio is the real strength and homour of J&K, the general secretary of Muslim Deeni Mahaz Mohammed maqbool Bhat has said that the CM herself knows how she and the other pro indian parties eroded this law by settling lacs More
INDIA should realise that people of Jammu Kashmir can't be hoodwinked any more know.
6/12/2016
Reacting on the recent statement of puppet CM Mehbooba Mufti,in which she had said that article Rio is the real strength and homour of J&K, the general secretary of Muslim Deeni Mahaz Mohammed maqbool Bhat has said that the CM herself knows how she and the other pro indian parties eroded this law by settling lacs of refugees in Jammu, alotting lacs of kanals of land to army, selling out our water resources and leading out land to Indian industrialists. Now by putting forward the stories of cat and pigeons she is trying settle the goons of RSS in segregated pandit colonies and sainik colonies so that when the time is ripe they can be used to massacre muslims in kashmir to render a Muslim majority into a minority. So that Jammu Kashmir is turned into an integral part of india. ALL this is being done by these politicians to safeguard their own power.But they should realise that people of Jammu Kashmir can't be hoodwinked any more know.

جموں کشمیرکی کٹپتلی وزیراعلی محبوبہ مفتی کےدفعہ370جموں کشمیرکی طاقت اور عزت قرار دینے پرمسلم دینی محاذ کے جنرل سیکرٹری محمد مقبول بٹ نےکہا محبوبہ مفتی صاحبہ کشمیری قوم اس بات سےاچھی طرح باخبرہے کہ دفعہ370کوآپ لوگوں نے کسطرح کھوکھلاکیا آپ لوگوں نےہزاروں رفوجیوں کو جموں میں بسا یا ,ہزاروں اکڑزمین ہندوستانی فوج کو الاٹ کرکےکشمیرکےآبی وسایل کاسودا کیا90،90سال تک بہارت کے سرمایہ داروں کو زمین پٹہ پردےکر کشمیر کی طاقت اور عزت کونیلام کیا اب بلی اود کبوترکی جوٹھی کہانی بناکر آرایس ایس کےبلوایوں کو الگ پنڈت کالونیوں میں بسانے کی کوشیش ہورہی ہے اورسینک کالونیوں میں تربیت یافتہ ہندوں کوبساکر کشمیری مسلمانوں کاقتلِ عام کرنےکاموقع فراہم کرنےکی کوشیش ہورہی ہے تاکہ جموں کشمیرکےمسلمانوں کی اکثریت اقلیت میں تبدیل کرکے جموں کشمیر کی عوام ہمیشہ ہمیشہ کےلیے ہندوستان کی غلام بن جائے بدلےمیں جموں کشمیر کے ہندوستان نوازسیاست دانوں کااقتدار محفوض رہے لیکن جموں کشمیرکے ضمیرفروش بازیگرسیاست دانوں کویہ بات جان لینی چاہے کشمیری قوم اب وہ قوم نہیں ہے جو ان کی ڈفلی پربھروسہ کرے
X
6/9/2016
A delegation on Muslim Deeni mahaz consisting of Mufti Nadeem Ashiq Ahmad, ghulam nabi and general secretary Muhammad maqbool Bhat visited the residence of pro freedom leader nayeem khan to pay condolences on the demise of his father. On the occasion mufti Nadeem adrresed the congregation explaining the philos More
A delegation on MDM visited the residence of pro freedom leader nayeem khan to pay condolences on the demise of his father.
6/9/2016
A delegation on Muslim Deeni mahaz consisting of Mufti Nadeem Ashiq Ahmad, ghulam nabi and general secretary Muhammad maqbool Bhat visited the residence of pro freedom leader nayeem khan to pay condolences on the demise of his father. On the occasion mufti Nadeem adrresed the congregation explaining the philosophy of life and death . They praised the contribution of Khan family towards the movement. He said that Ghulam Muhammad Khan was among the first people who joined the resistance movement and had to face numerous hardships and jail but all this did Not budge his resolve for the movement. They prayed for the salvation of the deceased and strength for the bereaved family.

مسلم دینی محاذ کا تعزیتی وفد مفتی ندیم عاشق احمد,غلام نبی امیر ضلع بڈگام جنرل سیکٹری محمد مقبول بٹ کی قیادت میں چیرمین نیشنل فرنٹ نعیم احمد خان کے گھر گیے تعزیت پر مسلم دینی محاذ کے شعبہ دعوتِ تبلیغ کے امیر مفتی ندیم نے فلسفہ موت پر روشنی ڈالی اور ساتھ میں خان خاندان کی تحریک سے وابستگی کو سراہتے ہوئے کہا کہ غلام احمد خان مرحوم اولین تحریکی لوگوں میں شامل تھے اور کئ مصا ئب جیلے اور جیل بھی گئے مگر کبھی بھی تحریک مزاج میں کمی واقع نہ ھوئی اور آخر پر مرحوم کی جنت کی دُعا کی اور مرحوم کے خاندان کو یہ صدمہ برداشت کرنے کی دُعا کی
X
6/3/2016
All the religious organisations should organise special arrangements during the month of Ramadan to teach quran to kids as well as the adult men and women. In our state majority of adults are either unable to read quran with ease or can't read it at all. Therefore it is imperative that instead of organising religi More
All the religious organisations should organise special arrangements during the month of Ramadan
6/3/2016 12:00:00 AM
All the religious organisations should organise special arrangements during the month of Ramadan to teach quran to kids as well as the adult men and women. In our state majority of adults are either unable to read quran with ease or can't read it at all. Therefore it is imperative that instead of organising religious confrences and iftaar parties,these religious organisations focus all their resources on teaching how to read quran to men women and children in mosques, Darasgahs and religious institutes.in addition I request the private schools in valley to organise a special compulsory quran class for students from first to tenth class. So that in addition to adults the kids are taken care of as well.I request every head of family to ensure that during the holy month they should ensure that every member of the family learns to read quran. we can develop an understanding of Quran last we are able to read it and without this understanding we can't strengthen our relation with Islam.

دینی جماعتیں اس ماہ رمضان میں چھوٹے بچے اور بچیوں اور بالغ مردوں اور خواتین کو قرآن مجید پڑھانے کیلئے خصوصی تحریک چلائیں۔جموں کشمیر میں چھوٹے بچوں اور بچیوں سے زیادہ بالغ مردوں اور خواتین کی بڑی اکثریت ہے جو یا تو قرآن ٹھیک سے نہیں پڑھ پاتے یا سرے سے پڑھ ہی نہیں سکتے۔ اس لئے دینی جماعتیں اس ماہ رمضان میں مسجدوں،درسگاہوں اور دینی اداروں میں بالغ مردوں اور عورتوں کو قرآن پڑھانے کی منظم تحریک چلائیں۔دینی اجتماعات، دینی کانفرنسوں اور افطار پارٹیوں کا اہتمام کرنے سے بہتر ہے کہ اس ماہ رمضان میں دینی جماعتیں اپنی پوری توجہ اور اپنے سارے وسائل قرآن مجید لوگوں کو پڑھانے پر صرف کریں۔ میں اس کے علاوہ وادی کے تمام پرائویٹ سکولوں کے منتظمین سے بھی ملتمس ہوں کہ وہ اول درجہ سے دسویں جماعت تک کے تمام طلبہ و طالبات کیلئے اس ماہ رمضان میں ایک کلاس قرآن پڑھانے کیلئے لازمی کریں۔تاکہ طلبہ و طالبات خصوصی طور سکولوں میں اور بالغ مرد اور عورتیں کیلئے مساجد و مختلف دینی اداروں میں قرآن پڑھنا ممکن بنایا جاسکے۔ میں ہر گھر کے سربراہ سے بھی گزارش کرتا ہوں کہ اس ماہ مبارک میں اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ گھر کا ہر فرد قرآن مجید پڑھنا سیکھ جائے۔قرآن مجید پڑھے بغیر اس کا فہم حاصل نہیں ہوسکتا۔ اور فہم قرآن کے بغیر اسلام سے تعلق مضبوط نہیں ہوسکتا۔
X
5/31/2016
The general secretary of Muslim Deeni Mahaz has said that the participation of thousands of people in funeral processions of Mujahideen should be an eye opener to the Indian occupiers . It should make them realise that every kid and elderly here is with the mujahideen and their mission. Muhammad Maqbool Bhat said More
Participation of thousands of people in funeral processions of Mujahideen should be an eye opener to the Indian occupiers
5/31/2016
The general secretary of Muslim Deeni Mahaz has said that the participation of thousands of people in funeral processions of Mujahideen should be an eye opener to the Indian occupiers . It should make them realise that every kid and elderly here is with the mujahideen and their mission. Muhammad Maqbool Bhat said that in addition to being supportive towards the mujahideen we have greater responsibilities towards the movement. It is imperative that Bait ul Maals are created in every town and village to help those people who lost their belongings and residences in excesses by Indian forces. These institutions can be of great help for the welfare and education of the kin of martyrs who laid down their lives for us. we have to take care of them as this is our prime responsibility. MDM appeals people to set up bait ulMaals for the purpose in every nook and corner for the said purpose. MUSLIM DEENI MAHAZ

مسلم دینی محاذ کے جنرل سیکٹری نے کھا ہے کہ مجاھدین کے جنازوں میں ہزاروں لوگوں کی شمولیت قابض بھارت کیلے چشم کشا ہے کہ مجاھدین کے مشن آزادی برائے اسلام میں وہ اکیلے نھیں ہیں بلکہ جموں کشمیر کا بچہ بچہ انکے ساتھ ہے بٹ صاحب نے کہا کہ اظہار ِ یکجھتی کے ساتھ ساتھ ہم پر بھت سارے فرائض بنتے ہیں خاصکر ہم شہر شہر گاؤں گاؤں میں بیتُ المال قایم کر کے ان لوگوں کی مدد کریں جنکے آشیانے بھارت کے بزدل افواج بارود سے راکھ کے ڈھیر میں تبدیل کرتی ہےاور شھید کےبیواؤں ٰماوؤں بھنوں کے ساتھ ساتھ یتیم بچوں کی پرورش اورتعلیم و تربیت کا انتظام کرسکیں یہی ان شھیدوں کےساتھ وفاء ہےجنھوں نے ہماری آزادی عزت آبرو کی خاطر اپنی جانوں کی قربانی دی اور بیٹیوں کا خاص خیال رکھیں جنکے ھاتھوں کی مھندی ابھی سوکھی بھی نھیں تھی کہ خاوند شھید ھوگئے مسلم دینی محاذ جموں کشمیر کے غیور عوام سے درد مندانہ اپیل کرتا ہے کہ وہ اپنے اپنے علاقوں میں بیت المال قایم کرکے اپنا فرض پورا کریں
X
5/19/2016
If there would not have been a resistance movement prevalent in Jammu Kashmir the pro India parties,bureaucracy and the Indian police in Jammu and Kashmir would have converted the Muslim majority of Kashmir into a minority in a matter of 6 months. As was done by dogra police and RSS volunteers in Jammu from August More
Requesting the pro freedom leadership to not only ready to the sinister Indian plans but launch a counter offensive
5/19/2016 12:00:00 AM
If there would not have been a resistance movement prevalent in Jammu Kashmir the pro India parties,bureaucracy and the Indian police in Jammu and Kashmir would have converted the Muslim majority of Kashmir into a minority in a matter of 6 months. As was done by dogra police and RSS volunteers in Jammu from August 1947 to December 1947 by converting a 61% majority of Muslims into a 38% minority. The Indian rulers are by design anouncing one after another aggressive plans for Kashmir. The priciple of offence is the best defence is being adopted and the role of resistance movement is limited to resisting these issues and plans. The resistance movement being overwhelmed by these issues is not even able to think about a effective and proactive strategy to combat Indian occupation. Even the situation of 2008 and 2010 was the result of reactionary politics . This politics has led to a stagnation and supension in the resistance camp. We request the pro freedom leadership to not only ready to the sinister Indian plans but launch a counter offensive . It is necessary that we develop an offensive mode in our movement in addition to being defensive.

اگر جموں کشمیر مین مزاحمتی تحریک جاری نہیں ہوتی تو بھارت نواز سیاسی جماعتیں،بیروکریسی اور جموں کشمیر کی بھارتی پولیس 6 ماہ میں کشمیر کی مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرکے بھارتی حکمرانوں کے کشمیر کے متعلق عزائم کی تکمیل کرتے جسطرح ڈوگرہ حکمرانوں نے ڈوگرہ پولیس اور RSS کے رضا کاروں کے ذریعے جموں کی 61 فی صد مسلم اکثریت کو اگست 1947 سے دسمبر 1947 تک 38 فیصد اقلیت میں تبدیل کیا۔ بھارتی حکمران دانستہ طور کشمیر کے متعلق ایک کے بعد ایک جارحانہ منصوبے کا اعلان کرتے ہیں تاکہ ''offence is the best defence'' کے ضابطے کے طور ملت اسلامیہ کشمیر کو ان منصوبوں کی مدافعت resistance میں ہی مصروف رکھا جائے اور وہ تحریک آزادی کیلئے موثر اور اقدامی (effective and proactive ) لائحہ عمل کے متعلق سوچیں بھی نہیں۔ 2008 اور 2010 کی صورتحال بھی دراصل ردعمل کی سیاست تھی۔بدقسمتی سے اس طرح کی ردعمل کی سیاست کے بعد مزاحمتی تحریک میں جمود اور تعطل (stagnation and suspension) پیدا ہوتا ہے۔اس لئے ہم حریت پسند قیادت سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ نہ صرف بھارتی منصوبوں کیلئے بلکہ بھارتی قبضہ کے خلاف بھی counter offence (اقدامی مزاحمت ) کیلئے لائحہ عمل مرتب کریں۔اس لئے ضروری ہے کہ ہم تحریک آزادی میں مدافعانہ (defensive ) ہی نہیں بلکہ اقدامی (offensive) کردار پیدا کریں۔
X
5/17/2016
Muslim Deeni Mahaz , spokesperson on Tuesday, said that state administration is all set to implement its RSS agenda and for this state machinery is being used .While strongly reacting to the proposal of construction of structures in some parts of Jammu and kupwara for refugees from west Pakistan, floating famili More
Administration is all set to implement its RSS agenda in JK
5/17/2016
Muslim Deeni Mahaz , spokesperson on Tuesday, said that state administration is all set to implement its RSS agenda and for this state machinery is being used .While strongly reacting to the proposal of construction of structures in some parts of Jammu and kupwara for refugees from west Pakistan, floating families and non-state subjects, spokesperson said that Delhi is hell bent to settle refugees and non-state subjects under the garb of their sinister designs .Warning PDP led collation, spokesperson said that we won’t allow any such move aimed at altering the demography of state. Lashing at PDP, he said that they are hand in glow with Zafrani brigade and this depicts their lust for power and they have sold their conscience just to remain in power corridors. People of state are sensitive enough to preserve their identity and demography and will never allow to settle non-resident Kashmiris in the state under the garb of these schemes, said spokesperson. Meanwhile a delegation led by Provincial Ameer Kashmir, Shakeel Ahmad Thoker and Mufti Nadeem paid his rich tributes to Farooq Ahmad Sheikh, who was martyred in a gunfight with forces. While extending their condolences to bereaved family, they wowed to take ongoing freedom movement to its logical conclusion.

مسلم دینی محاز کے ترجمان نے ریاستی انتظامیہ کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ یہ لوگ آر ایس ایس کے ایجنڈاکی تکمیل کے لئے ریاستی انتظامیہ کو استعمال کررہے ہیں ۔منگلوار کو اخباروں کے لئے جاری بیان میں ترجمان نے کپوارہ اور جموں کے کئی علاقوں میں بے گھر لوگوں ،خانہ بدوش گھرانوں ،مغربی پاکستان سے آئے شرنارتھیوں اور غیر ریاستی باشندوںکے لئے مجوزہ بستیوں کی تعمیر پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ دہلی کے حکام ریاست کے مسلم اکثریتی تشخص کو مٹانے کے درپے ہیں اور اس مقصد کے لئے نت نئی سازشوں کے جال پھیلائے جارہے ہیں ۔ترجمان نے پی ڈی پی کی سربراہی میں مخلوط سرکار کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ ہم ریاست کی آبادیاتی تشخص کو تبدیل کرنے کی اجازت نہیں دیں گے ۔ریاستی سرکار پر برستے ہوئے انھوں نے کہا کہ ان لوگوں نے اپنے ضمیرکی آوازپر کان دھرنے کے بجائے محض اقتدار و اختیار کی خاطر بھاجپائی خاکوں میں رنگ بھر نے کے لئے حامی بھر لی ہے ۔انھوں نے واضح کیا کہ جموں کشمیر کے عوام ریاست کے مخصوص آبادیاتی اور مسلم تشخص کو تبدیل کرنے کی اجازت نہیں دیں گے اور اس طرح کی سازشوں کی آڑ میں غیر ریاستی باشندوں کو بسانے کی کسی بھی سازش کوناکام بنادیں گے ۔ دریں اثناءمسلم دینی محاز کے صوبائی امیر برائے کشمیرشکیل احمد ٹھوکر اورمفتی ندیم نے نازنین پورہ پلوامہ جاکرشہید فاروق احمد شیخ کو خراج عقیدت پیش کیا ۔اس موقع پر انھوں نے شہید کے لواحقین سے تعزیت پرسی کرتے ہوئے کہا کہ رواں جدوجہد آزای کے لئے ان شہداءکی پیش کی گئی قربانیوں کی لاج رکھی جائے گی اور رواں جدوجہد کو اس کے حتمی انجام تک جاری رکھا جائے گا
X
5/15/2016
No need to invite Industrialists .we have ample resourses, can sustain on our own behalf.Muslim Deeni Mahaz Terming the statement of BJP state gen secretary as baseless and misleading, Muslim Deeni Mahaz general secretary ,Mohammad Maqbool Bhat said that state has enough resources and there is no need for the entr More
No need to invite Industrialists .we have ample resourses..
5/15/2016
No need to invite Industrialists .we have ample resourses, can sustain on our own behalf.Muslim Deeni Mahaz Terming the statement of BJP state gen secretary as baseless and misleading, Muslim Deeni Mahaz general secretary ,Mohammad Maqbool Bhat said that state has enough resources and there is no need for the entry of foreign and Indian industrialists as this is aimed to tarnish Muslim majority character of the state.Sunday in a statement, Bhat said that party has no objections if pundits are rehabilitated in their own ancestral places but we won,t allow any separate colonies. In a statement issued to press, Bhat said we are not against the return of Kashmiri Pandits but we want them to return to their respective places in the valley like they used to be in past.They are state sujects and there is no objection but It is deep rooted conspiracy of RSS and BJP to settle the non-resident Kashmiris in the state under the garb of these separate colonies for Pandits. Such Israeli type settlements in J&K won’t be tolerated,” he said .Dehli is hell bent to settle refugees and non state subjects ,said bhat. Slamming at state administration, Bhat said that PDP would be responsible if it lets RSS-BJP fulfill their agendas and termed separate colonies for Kashmiri Pandits as conspiracy against the special status of Jammu and Kashmir. Reacting to the reports about identification of land in Baramulla, Bhat said contrary to this PDP is continuously misleading people and impressed people to remain cautious about the sinister designs of PDP led administration.Reacting to the BJP Gen Secretary for his statement for establishing industrial units in state ,Bhat said that instead this India should vacate from state as they have occupied it with the dint of force ,We have ample sources and can sustain on our own behalf ,said Bhat

مسلم دینی محاز کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے ریاست میں پنڈتوں کے لئے الگ اور مخصوص کالونیزکے قیام ،سینک کالونیز اور غیر ریاستی صنعت کاروں کے لئے زمین فراہم کرنے کے منصوبے سے متعلق آئے روز کے بیانات کا شدید نوٹس لیتے ہوئے کہا کہ پی ڈی پی اور بی جے پی ،دونوں جموں کشمیر میں مسلم اکثریتی کردار کو ختم کرنے کے لئے سازشیں رچارہے ہیں ۔اتوار کو اخباروں میں بارہمولہ میں پنڈتوں کے لئے زمین کی نشاندہی کے بارے میں مقامی انتظامیہ کے بیان پر اپنی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ایک طرف کٹھ پتلی انتظامیہ ا س طرح کے کسی منصوبے سے انکار کررہی ہے اور دوسری طرف یہ سازشی عناصر ریاست کی مسلم شناخت کو مٹانے کے لئے بی جے پی کے خاکوں میں رنگ بھر رہے ہیں ۔جنرل سیکریٹری نے بی جی پی کے ترجمان اشوک کول کے بیان پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ ریاست میں پنڈت کالونیوں اور صنعتی ترقی سے متعلق انکا بیان گمراہ کن ہے ۔انھوں نے واضح کیا کہ بھارت کوریاست کی صنعتی ترقی سے متعلق فکر مندی کا اظہار کرنے کے بجائے اپنا ناجائز قبضہ ختم کرنے کے بارے میں وعدہ پورا کرنا چاہے ۔انھوں نے پنڈت بردری کی وادی واپس آمد کے بارے میں پارٹی موقف کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ وہ یہاں کے پشتنی باشندے ہیں اور انہیں الگ بستیوں میں بودباش کرنے کے بجائے اپنے آبائی علاقوں میں ہی رہائش اختیار کر لینی چاہئے ۔جنرل سیکریٹری نے پنڈتوں کی بحالی کی آڑ میں اسرائلی طرز پر بستیوں کے قیام پر اپنے سخت موقف کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ اس کی کسی بھی سازش کا بھرپور مقابلہ کیا جائے گا ۔
X
5/11/2016
Amir Muslim Deeni Mahaz Dr Mohammad Qasim Faktoo,Wednesday expressed his profound grief and sorrow over the execution of prominent religious scholar Mutie u Rehman Nizami of Jamat e Islamic Bangla Desh .Lashing at Sheikh Haseena regime ,Dr Qasim Said that it is a great tragedy and on the behest of devilish forces, More
Profound grief and sorrow over the execution of prominent religious scholar Mutie u Rehman Nizami of Jamat e Islamic Bangla Desh
5/11/2016 12:00:00 AM
Amir Muslim Deeni Mahaz Dr Mohammad Qasim Faktoo,Wednesday expressed his profound grief and sorrow over the execution of prominent religious scholar Mutie u Rehman Nizami of Jamat e Islamic Bangla Desh .Lashing at Sheikh Haseena regime ,Dr Qasim Said that it is a great tragedy and on the behest of devilish forces, Islamic scholars are being hanged in Bangla Desh.He expressed his dismay and anguish over the criminal silence of OIC and Islamic world and impressed to take serious note of these killings .They are hell-bent to eliminate all Islamic scholars ,said Faktoo and it looks as if some secret hands from India are executing all these killings ,Faktoo maintained .He in his appeal to Muslim world impressed to register their resentment and ask Bangladesh regime to stop these killings . .While praying for the eternal peace of the departed soul and terming it irreparable loss for Islamic movement ,he extended his heartfelt condolences and sympathy with bereaved family and Jamat e Islami Bangla Desh

مسلم دینی محازکے امیر ڈاکٹر محمد قاسم فکتو نے بنگلہ دیش میں جماعت اسلامی کے قائد مطیع الرحمٰن نظامی کو پھانسی دئے جانے پر اپنے دلی رنج و غم کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عوامی لیگ کی سرکار نے اسلام پسندوں کو قتل کئے جانے اور پھانسی دئے جانے کی جو مہم شروع کررکھی ہے وہ انتہائی ناقابل بردشت ہے ۔منگلوار کو اخباروں کے لئے جاری بیان میں ڈاکٹر محمد قاسم نے شیخ حسینہ سرکار کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بنگلہ دیش میں جس طرح اسلام پسندوں کے خلاف مہم شروع کی گئی ہے اس سے بات یہ مترشح ہورہی ہے کہ اسلام پسندوں کو ایک گہری سازش کے تحت صفحہ ہستی سے ہٹایا جارہا ہے ۔ڈاکٹر قاسم فکتو نے اپنے بیان میں کہا کہ اگرچہ اس بات کے صاف اشارے مل رہے ہیں کہ بنگلہ دیش میں یہ سب بھارتی سامراج کے اشارے پر کیا جارہا ہے تاہم شیخ حسینہ خود بھی ایک قاتل اور گمرہ حکمران کے روپ میں ابھر کر سامنے آرہی ہے ۔ڈاکٹر قاسم فکتو نے عالم اسلام ،OICاور پاکستان کی خاموشی پر حیرت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بنگلہ دیش کے علماءکو پاکستان سے محبت کرنے کی سزا مل رہی ہے ۔ انھوں نے مولانا مطیع الرحمٰن نظامی کی شہادت پر ا±نہیں زبردست خراج تحسین اداکرتے ہوئے جملہ وابستگان جماعت سے مکمل یکجہتی کا اظہار کیا ۔
X
5/10/2016
Muslim Deeni Mahaz delegation led by District President Pulwama Khalid Bashir visited various places at Pulwama to pay tributes to martyrs of Panzgam .He was accompanied by Shakil Ahmad Thakur ,Mufti Nadeem ( Amir Tableegat ) Chief organiser Zee Shaan Rafiq and othrers.The delegation visited families of martyrs a More
Delegation led by District President Pulwama Khalid Bashir visited various places at Pulwama to pay tributes to martyrs of Panzgam .
5/10/2016
Muslim Deeni Mahaz delegation led by District President Pulwama Khalid Bashir visited various places at Pulwama to pay tributes to martyrs of Panzgam .He was accompanied by Shakil Ahmad Thakur ,Mufti Nadeem ( Amir Tableegat ) Chief organiser Zee Shaan Rafiq and othrers.The delegation visited families of martyrs and expressed their condolences and sympathy .During their interaction with bereaved families and people, Khalid Bashir and Mufti Nadeem addressed people and prayed for eternal peace of martyrs. Paying glorious tributes to martyrs of Panzgam Pulwama encounter, Khalid Bashir and Mufti Nadeem said that we are indebted to our martyrs.These martyrs are icons of our freedom movement and we are obliged to follow their mission. They said that these martyrs are laying their lives for a sacred cause and they for all times will remain a source of inspiration and deserve our salute .

مسلم دینی محاذ کا ایک وفد ضلع صدر پلوامہ خالد بشیر کی سربراہی میں معرکہ پنزگام کے شہداءکو خراج عقیدت ادا کرنے کے لئے ان کے لواحقین سے ملا اور ان سے ہمدردری اور تعزیت کا اظہار کیا ۔ وفد میں شکیل احمد ٹھاکر،امیر تبلیغات مفتی ندیم ،چیف آرگنائزر ذی شان رفیق،بشیر احمد ندیم اور دیگر اراکین بھی شامل تھے ۔اس موقع پر خالد بشیر اور مفتی ندیم نے عوام اور سوگوار گھرانوںکے ساتھ ہمدردی اور تعزیت کا اظہار کیا ۔ شہدائے پنزگام پلومہ کو خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا دونوں رہنماﺅں نے کہاکہ برصغیر کے متنازءخطہ جموں کشمیر کے دیرپا اور عوامی خواہشات کے مطابق حل کے لئے کوشاں ہمارے پاکباز مجاہدین اپنی عزیز جانوں کا نذرانہ پیش کرکے ہمیں زیر بار احسان کررہے ہیں ۔انھوں نے شہید اشفاق احمد بابا،حسیب احمد پالہ اور اشفاق احمد ڈار کو منصب شہادت پر فائز ہونے پر انہیں دل کی عمیق گہرائیوں سے خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ ہمارے مجاہدین اپنے مقدس اورگرم گرم خون سے اس سرزمین کو سیراب کررہے ہیں ۔ انھوں نے اپنے بیان میں ریاست جموں کشمیر کے عوام کو ان معصوم جوانوں کے جزبہ شہادت کے لئے ان کی تڑپ کو ایک قابل تقلید مثال قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہم ان شہداءکی عظیم قربانیوں کے طفیل ہی بھارتی جبر و ظلم سے آزادی حاصل کریں گے او ر عنقریب آزادی برائے اسلام کے لئے دی جارہی قربانیوں کا نتیجہ دیکھیں گے ۔انشا اللہ
X
5/5/2016
Muslim Deeni Mahaz General Secretary Mohahmmad Maqbool Bhat Strongly reacted against the proposed plan of setting up a Sainik colony in the state. Saturday Mohammad Maqbool warned of public protests in case it is implemented. Bhat said that people of Jammu and Kashmir will never allow such plans as it will More
MDM General Secretary Mohahmmad Maqbool Bhat Strongly reacted against the proposed plan of setting up a Sainik colony in the state.
5/5/2016
Muslim Deeni Mahaz General Secretary Mohahmmad Maqbool Bhat Strongly reacted against the proposed plan of setting up a Sainik colony in the state. Saturday Mohammad Maqbool warned of public protests in case it is implemented. Bhat said that people of Jammu and Kashmir will never allow such plans as it will prove detrimental for state demography of state .It is a conspiracy, said Bhat and warned administration of strong resentment from people if ex- service men are rehabilitated under this garb .We will oppose it tooth and nail ,Bhat said and asked people and resistant leadership to gear up against this evil move of administration .He impressed people and asked not to allow any land for sanik colonies under this move . Paying glorious tributes to martyrs of Panzgam Pulwama encounter, Muslim Deeni Mahaz General Secretary Mohammad Maqbool said that we are indebted to our martyrs.Saturday,Mohammad Maqbool in a statement said that these martyrs are icons of our freedom movement and we are obliged to follow their mission. He said that these martyrs are laying their lives to fulfil the unfinished agenda and for lasting resolution of Kashmir conflict .They will remain a source of inspiration for all time and they deserve our salute and we are indebted to their revered sacrifices .Mohammad Maqbool while praying for eternal peace for martyrs ,expressed his condolence to bereaved families and prayed for eternal peace of martyrs

مسلم دینی محاذ کے سیکریٹری جنرل محمد مقبول بٹ نے اپنے بیان میںریاست میں سینک کالونیز کے قیام کو ریاست کی اکثریتی آبادی کے خلاف ایک سازش قرر دیتے ہوئے خبردار کیا ہے کہ اگر اس طرح کی کسی سازش کے تحت سابق فوجیوں یا غیر ریاستی لوگوں کوبسانے کی کوئی کوشش کی گئی تو س کے خطرناک نتائج برآمد ہوں گے ۔سنیچروار کو اخباروں کے لئے جاری بیان میں محمد مقبول بٹ نے ریاستی سرکار کو خبردار کرتے ہوئے کہا کہ عوام اس طرح کی کسی بھی سازش کو کامیاب ہونے نہیں دیں گے اور اس کا ڈٹ کر مقابلہ کیا جائے گا ۔انھوں مذاحمتی قیادت اور ریاستی عوم کو ریاست کی آبادیاتی تشخص کے خلاف کی جارہی سازشوں سے خبردار کرتے ہوئے کہا کہ ریاستی حکمرن ٹولہ بی جے پی کے ہاتھوں بک کر اور ریاست میں مسلمانوں کو اقلیت میں تبدیل کرنے کے منصوبے کو عملی شکل دینے پر عمل پیرا ہے ۔ شہدائے پنزگام پلومہ کو پر نم آنکھوں سے خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا انھوں نے کہاکہ برصغیر کے متنازءخطہ جموں کشمیر کے دیرپا اور عوامی خواہشات کے عین مطابق حل کے لئے کوشاں ہمارے پاکباز مجاہدین اپنی عزیز جانوں کا نذرانہ پیش کرکے ہمیں زیر بار احسان کررہے ہیں ۔انھوں نے شہید اشفاق احمد بابا،حسیب احمد پالہ اور اشفاق احمد ڈار کو منصب شہادت پر فائز ہونے پر انہیں دل کی عمیق گہرائیوں سے خراج عقیدت ادا کرتے ہوئے کہا کہ یہ مجاہدین برصغیر کے نامکمل ایجنڈے کو پایہ تکمیل تک پہنچانے کے لئے اپنے گرم گرم خون سے اس سرزمین کو سیراب کررہے ہیں ۔محمد مقبول نے اپنے بیان میں ریاست جموں کشمیر کے عوام کو ان معصوم جوانوں کے جزبہ شہادت کے لئے ان کی تڑپ کو ایک قابل تقلید مثال قرار دیتے ہوئے کہا کہ ہم ان شہداءکی عظیم قربانیوں کے طفیل ہی بھارتی جبر و ظلم سے آزادی حاصل کریں گے
X
5/3/2016
The mass murder of the Muslims done by the indian army in Jammu and Kashmir is belittled by another silent genocide that is being carried out here. If the profreedom leadership, religious organisations and research scholars don't focus on this issue straightaway this trend will have dangerous manifestations and th More
The mass murder of the Muslims done by the indian army in JK is belittled by another silent genocide that is being carried out here
5/3/2016 12:00:00 AM
The mass murder of the Muslims done by the indian army in Jammu and Kashmir is belittled by another silent genocide that is being carried out here. If the profreedom leadership, religious organisations and research scholars don't focus on this issue straightaway this trend will have dangerous manifestations and the Muslim majority will be rendered a minority as we earlier said that in further 60 to 70 years the 68 percent muslims population will be reduced to below 50 percent by 2085.In Jammu and Kashmir,only two couples out of every 10 wedded couples are able to concive naturally while other 3 have to seek medical assistance . The remaining 5 are not able to concieve at all. According to experts the main reasons for the problem is the high prevalnce of polycystic ovarian Syndrome in girls and the decrease in sperm count and motility in men. experts term two reasons for these problems. 1- the stressfull conditions created by the presence of Indian forces and the excesses that they commit. 2- The substandard food material and junk food poured in from India. We request learned men and scholars to find data and facts about this issue and make people aware about the reasons of this decrease in fertility. We have repeatedly said that Indian rulers,Military and intellectuals see the decline of Muslim population in Jammu Kashmir as a solution to the Kashmir problem and are using concrete and abstract methods for it.

بھارتی افواج کے ذریعہ جموں کشمیر میں ہورہے قتل عام سے بھی زیادہ خطرناک یہاں مسلمانوں کا وہ genocide ہے جو محسوس بھی نہیں ہوتا ہے جس کی طرف اگر پہلی فرصت میں حریت پسند قیادت،دینی جماعتیں اور اہل علم و دانش توجہ نہیں دیں گے تو جموں کشمیر میں مسلمانوں کی افزائش نسل جس خاموش طریقے سے متاثر ہورہی ہے ہمیں احساس بھی نہیں ہوگا اور ہماری اکثریت اقلیت میں تبدیل ہوگی۔ہم یہ بات پہلے بھی بیان کر چکے ہیں کہ اگر جموں کشمیر پر مزید 60 یا 70 سال بھارت کا قبضہ رہتا ہے تو 2085 تک ہماری موجودہ 68 فیصد آبادی پچاس فیصد سے کم ہوجائے گی۔جموں کشمیر میں دس شادی شدہ جوڑوں میں صرف 2 جوڑوں کے ہاں عام معمول کے مطابق ایک دو سال میں اولاد ہوتی ہے 3 جوڑوں کے ہاں صرف طبی امداد کے بعد ہی اولاد ہوتی ہے اور پانچ جوڑوں کے ہاں اولاد ہوتی ہی نہیں ہے اسکی وجہ لڑکیوں میں تشویش کی حد تک بڑھ رہی PCOD (polycystic ovarian syndrome ) کی تکلیف اور مردوں میں Sperm count کی کمی اور motility کا متاثر ہونا وجہ بتایا جاتا ہےاور ماہرین اسکے دو وجوہات بیان کرتے ہیں 1۔ جموں کشمیر میں بھارتی افواج کی موجودگی اور ان کے مظالم جن کی وجہ سے یہاں پر تناو stressfull conditions ماحول بن گیا ہے۔2۔ بھارت سے آرہے اشیائے خورد و نوش بالخصوص junk food ۔ ہم اہل علم و دانش سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ غیر جانبداری کے ساتھ اس بارے میں ڈیٹا حاصل کریں اور پھر ان اسباب و وجوہات سے لوگوں کو آگاہ کریں جن کی وجہ سے شادی شدہ جوڑوں کے ہاں معمول کے مطابق اولاد پیدا ہونے کی شرح میں زبردست کمی آئی ہے۔ہم یہ بات بار بار کہہ رہے ہیں کہ بھارتی حکمرانوں،افواج اور دانشوروں کے نزدیک جموں کشمیر پر قبضہ کو دوام بخشنے کی واحد صورت یہ ہے کہ یہاں کی مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کیا جائے اور اس کیلئے محسوس و غیر محسوس طریقے استعمال کئے جاتے ہیں
X
4/30/2016
Genral Secretary Mohd Maqbool Bhat expressed his concern and anguish over the detrimental role of agencies and said these agencies are hell bent to sabotage freedom struggle. Saturday General secretary in a statement impressed people of state and pro freedom groups and called their immediate attention about sinist More
Agencies are hell bent to sabotage freedom struggle
4/30/2016
Genral Secretary Mohd Maqbool Bhat expressed his concern and anguish over the detrimental role of agencies and said these agencies are hell bent to sabotage freedom struggle. Saturday General secretary in a statement impressed people of state and pro freedom groups and called their immediate attention about sinister designs of state,forces and their agencies and , said that we need to remain extra cautious as the agencies are hell- bent to ‪‎sabotage‬ movement and promote waywardness among youth .They are ‪luring‬ the ‪‎youth‬ against monetary gains ,involving them in anti movement activities,creating anarchy in society ,encouraging free gender mixing, ‪‎drug‬ addiction and thus promoting indecency in society ,said Bhat . They feel scare about the growing interest and commitment of people for ongoing ‪‎freedom‬ struggle ,said Bhat in his statement and while referring to establishment of so-called social activity centres ,‪‎NGO‬,s and agencies like ‪Sadbhawna‬,Bharat Darshan ,‪‎Udaan‬ etc ,Bhat said that they want to create a sort of ‪‎anarchy‬ in society . Lashing at state sponsored agencies for their veiled and mysterious agenda ,Mohamad Maqbool stressed pro freedom leadership to take serious note of this .He expressed his dismay over the religious clerics who out of their ignorance fall prey to these quarters and extend their support to agencies and forces . He asked the religious clerics to use their influence and insisted to remain extra ‪#‎cautious‬ and educate common masses about evil designs of agencies

مسلم دینی محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے ریاست میں ایجنسیوں اور اُن کی ایماءپرخفیہ ہاتھوںکی تحریک مخالف سرگرمیوں پر اپنی تشویش ظاہرکی اورحریت پسند عوام کو خبردارکرتے ہوئے کہا کہ رواں جدوجہد آزادی کو سبوتاز کرنے اورنوجوانوں میں دینی شعور کوختم کرنے کے لئے کئی ایجنسیاں خفیہ ایجنڈے کے تحت نوجوانوں میںمادی منفعت کے لئے کشمکش کی صورت حال پیدا کرنے اور معاشرے میں بے راہ روی کو بڑھاوا دینے کے لئے کئی محاذوں پرکام کررہی ہیں ،تاکہ ایک جانب تحریک آزادی کے تئیں لوگوں کی بڑھتی ہوئی دلچسپی ختم کیا جاسکے اور دوسری طرف سماج میں انارکی ،بے راہ روی ،انتشار اور سیم و زر کے لئے بے ہنگم دوڑ قائم کرکے ایک ایسے سماج تشکیل جاسکے جس میں بھارت سے آزادی حاصل کرنے کی جستجو میں کوئی دم باقی نہ رہے ۔انھوں نے اس طرح کی صورت حال کو ریاست کے خصوصی تشخص کے لئے سم قاتل قرار دیتے ہوئے کہا کہ اگر اس سلسلے کو روکنے کے لئے منظم کوشش نہ کی گئی تو ہمارا مستقبل اندھیروں میں گم ہوکر رہے گا ۔ بھارتی ایجنسیوں اور فوج کی ایماءپر شروع کئے گئے ''سدبھاونا'' اُڈان" ااوربھارت درشن جیسے منصوبوں پر کڑی تنقید کرتے ہوئے کہا کہ اس کی آڑ میں ہماری جوان نسل کو رجھا کر انہیں ان کے بنیادی مقصد سے دوررکھنے کی کوششیں ہورہی ہیں ۔ بٹ نے اس سلسلے میں فہم و فراست سے محروم چند مولویوں کے رول کو مشکوک قرار دیتے ہوئے کہ کہ یہ لوگ دن کے اُجالے میں فوجیوں کے ہاتھوں قتل غارت گری کے روح فرسامنظر دیکھ کر بھی بھارت درشن کے لئے اپنی حامی بھر لیتے ہیں ۔ترجمان نے صاف الفاظ میں کہا کہ بھارت درشن اوراس طرح کے دیگر منصوبوں کے ذریعہ ہماری جوان نسل کے ذہن کو بھارتیہ رنگ میں ڈھالنے کی کوششیں کی جارہی ہے تاکہ وہ برائیوں کے دلدل میں پھنس کر سماج کے لئے عضوءمعطل بن کر رہ جائیں ۔انھوں نے طلباءکے والدین سے تلقین کی کہ وہ اپنے بچوں پر کڑی نظر رکھیں اور انہیں اخلاق باختگی،مخلوط کلچر اور نشہ آور دوائیوں کا شکار ہونے سے بچائیں ۔ترجمان نے دینی علماء،مولوی صاحبان اور ذی عزت ا شخاص سے بھی گزارش کی کہ وہ اپنے زیر اثر علاقوں میںعوام کو فوجی جھانسے میں آنے سے روکنے کے لئے اپنا اثر و رسوخ استعمال کریں
X
4/24/2016
M.D.M Spokesperson today in statement expressed his deep concern and anguish over the proposal of building structures under “National Urban Livelihood Mission “for non-locals and those that come under privileged category .It is a wicked plan to settle non subjects under this garb ,said spokesperson and warned More
Concern and anguish over the proposal of building structures under “National Urban Livelihood Mission “
4/24/2016
M.D.M Spokesperson today in statement expressed his deep concern and anguish over the proposal of building structures under “National Urban Livelihood Mission “for non-locals and those that come under privileged category .It is a wicked plan to settle non subjects under this garb ,said spokesperson and warned administration that it will be opposed tooth and nail. Slamming administration, spokesperson said that it is deceit and hypocrisy and sheer bargaining between PDP and BJP .Spokesperson stressed people to take serious note of sinister motive of puppet regime and quoted Dr Mohd Qasim Faktoo’s book “BANG” and added that author has made note of all these mischievous proposals of occupant forces and cautioned people about folly being played by Delhi and local administration. Referring to the media reports that India was planning to build some structures to provide shelter to “homeless” spokesperson said that we won’t allow such devilish game plane of turning Muslim majority into minorty and we will take our people on board to fight against the evil design .

سرینگر // سرینگر24اپریل :مسلم دینی محاذ کے ترجمان نے ریاست کے مختلف اضلاع میں "National Urban Livelihood Mission کے تحت غیر ریاستی باشندوں کے لئے مجوزہ تعمیرات کھڑی کرنے کی شدید مخالفت کی ہے ۔اتوار کو اخباروں کے لئے جاری بیان میں مسلم دینی محاذ کے ترجمان نے اسے ریاستی تشخص پر ضرب لگانے کے مترادف قرار دیتے ہوئے کہا کہ ا س طرح کی کسی بھی سازش کوکامیاب نہیں ہونے دیاجائے گا اور ریاستی عوام آبادیاتی تشخص میںکسی بھی تبدیلی کو برداشت نہیں کریں گے ۔ ترجمان نے ریاست میں بے گھر کنبوں کی آڑ میں حکومتی سطح پر رچائی جارہی سازش پر اپنی فکر مندی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ریاست میں جاری عوامی مذاحمتی تحریک کو سازشوں کا شکار بنانے کے لئے پر تولے جارہے ہیں اور بے گھر کنبوں کی بازآبادکاری کی آڑ میں غیر ریاستی باشندوں کو بسانے کی سازش رچی جارہی ہے تاکہ ریاست کی آبادیاتی شناخت پر اثر انداز ہونے کی کوشش کی جائے ۔انھوں نے موجودہ ریاستی سرکار پر شدید نکتہ چینی کرتے ہوئے ہوئے کہا ان لوگوں نے فرقہ پرستوں سے اقتدار کے حصول کی خاطر ہاتھ ملائے اوراب ریاست کی خصوصی شناخت کو داﺅ پر لگانے کے لئے فرقہ پرست قوتوں کے ہاتھوں میں کھیل رہے ہیں ۔ ترجمان نے مسلم دینی محاذ کے امیر اعلیٰ ڈاکٹر محمد قاسم فکتو کی تصنیف ''بانگ ''کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ انھوں نے قبل ازیں اس سلسلے میں ریاستی عوام کو اس طرح کی سازشوں سے باخبر رہنے کا مشورہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ بھارتی حکمران ریاست میں اپنے حاشیہ برداروں کے ذریعہ ریاست میں غیر ریاستی باشندوں کو آباد کرانے کے لئے داﺅ پیچ کھیل رہے ہیں اور اس طرح کی صورت حال کا مقابلہ کرنے کی تاکید کی ہے ۔ ترجمان نے اپنے بیان میں عوام کو حکومتی سطح پر ریاست کی خصوصی شناخت کو ختم کرنے کی سازشوں سے ہوشیار رہنے اور اس کا توڑ کرنے کی اپیل دہراتے ہوئے کہا کہ اگر اس سلسلے میں لاپرواہی کا مظاہرہ کیا گیا تو مستقبل میں ہمارے لئے یہ ایک سنجیدہ مسئلہ بن کر ابھرسکتاہے
X
4/21/2016
A provincial meeting of Muslim Deeni Mahaz was held under the chairmanship of provincial president Khalid Shakeel. besides the Central functionaries of the party the district leaderships also participated. Methods to make the party more proactive were discussed. The recent statment of So called Chief minister Mehb More
A provincial meeting of MDM was held under the chairmanship of provincial president Khalid Shakeel
4/21/2016
A provincial meeting of Muslim Deeni Mahaz was held under the chairmanship of provincial president Khalid Shakeel. besides the Central functionaries of the party the district leaderships also participated. Methods to make the party more proactive were discussed. The recent statment of So called Chief minister Mehbooba Mufti was condemned in which she had said that her father joined hands with a great man (Modi). She should read the history and see what for Modi was made the prime minister of India. His only achievement is the butchering of Muslims in Gujrat and for this he has been brought into power by the communal people in India

مسلم دینی محاذ کی طرف سے آج مرکزی دفتر پر ایک نشست صوبہ صدر خالد شکیل کی صدارت میں منعقد ہوئی جس میں مرکزی زمیدارں کے علاوہ ظلعی زمیدارں نے شرکت کی نشست میں تنظیم کو فعال اور متحرک بنانے پر زور دیا گیا اور ساتھ ہی وادی کشمیر کی موجودہ صورتحال اور نام نہاد وزیر اعلی محبوبہ مفتی کے اُس بات پر جس میں انہوں نے کہا تھا کہ مفتی محمد سعید نے اُس شخصیت یعنی مودی کے ساتھ حکومتی رشتہ جوڈا جب کہ ہم محبوبہ سے یہ کہنا چاہتے ہیں کہ وہ تاریخ کا مطالعہ کریں کہ مودی کو کس بات پر بھارت کا وزیراعظم بنایا گیا شاید وہ یہ بات بھول گئے کہ گجرات میں مسلمانوں کے قتلِ عام کرنے پر بی جے پی اور بھارت کے ہندو تنظیموں نے اسی قتل و غارت گری کی بنیاد پر نریندر مودی کو مینڈیٹ دیا
X
4/19/2016
The alarming pace of the spreading of the ideology of the Unity of Religions in Jammu and Kashmir is worrying. After the Prophet S.A.A.S no attack whether ideological or military did not succeed in obliterating Islam from the would and the anti Islam forces have lost the hope to be able to do so. Islam is not a ma More
Islam is the only true religion and all other religions are made darkness.
4/19/2016 12:00:00 AM
The alarming pace of the spreading of the ideology of the Unity of Religions in Jammu and Kashmir is worrying. After the Prophet S.A.A.S no attack whether ideological or military did not succeed in obliterating Islam from the would and the anti Islam forces have lost the hope to be able to do so. Islam is not a man made religion of that would have been the case it would have faced the Destiny of Bhudism and Jainism. But Since Islam is the Religion chosen by Allah and is the sole path of guidance for the mankind till the judgment day therefore Allah protects this religion Himself. Having lost the hope of obliterating Islam The anti Islam forces have channelised all their energy on to the ideology of Unity of religion. They try to give this notion to the general public that all religions lead to the same God and are a source of success in this world and the hereafter. There is just a difference of names and methods. Therefore Islam should not be considered a complete day of life it should be taken as one amongst the plethora of religions in the world! In this way,something in which the muslims have been unanimous from the very beginning,Islam being a complete way of life ,is being challenged. There conspiracies of the anti Islam forces can never succeed But few self proclaimed scholars are deputed to propagate these ideas and with self styles commentaries in Quran and Hadith they hoodwink the general masses and educated young lot falls prey to them easily. We request the religious organisations and the ulema to counter this ideology being propagated in universities,colleges and Cafe's across the valley. This deviation asumes greater threat because it is being propagated in the name of fresh research in Islamic studies and is being fully backed by media. we request the youth to be remain steadfast in their religion and know the fact that Islam is the only true religion and all other religions are made darkness.

جموں کشمیر میں وحدت ادیان (Unity of Religions) کی گمراہی جس سرعت سے پھیل رہی ہے وہ باعث تشویش ہے۔چونکہ اسلام پر سیدنا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے بعد جتنے بھی نظریاتی اور عسکری حملے ہوئے اگر یہ کوئی انسان ساختہ دین ہوتا تو اس کا بھی حشر وہی ہوا ہوتا جو برصغیر میں بدھمت اور جین مت کا ہوا۔مگر اسلام چونکہ اللہ کا دین ہے اور قیامت تک انسان کیلئے واحد ذریعہ ہدایت ہے اسلئے اس کی حفاظت خود اللہ فرماتا ہے۔اسلام دشمن طاقتیں اب اس بات سے مایوس ہوچکی ہیں کہ وہ اسلام کو اس دنیا سے ختم کر سکیں اس لئے اب وہ سارا زور نظریہ وحدت ادیان پر لگا رہے ہیں جس کا بنیادی فلسفہ یہ ہے کہ تمام مذاہب خدا کی طرف لے جانے والے ہیں اور سب مذاہب دنیا میں ہدایت اور آخرت میں نجات کا ذریعہ ہے اسلئے ان میں صرف ناموں اور طریقوں کا اختلاف ہے مقصد سب کا ایک ہی ہے۔ اس طرح اسلام کو بھی دیگر مذاہب کی طرح ایک مذہب ہی مانا جائے نہ یہ کہ صرف اسلام ہی دین حق ہے!اسطرح دشمنان اسلام امت مسلمہ کا جو ہمیشہ اجماعی (unanimous) عقیدہ رہا ہے کہ صرف اسلام ہی اللہ کے نزدیک دین حق ہے کو ختم کرنا چاہتے ہیں۔عالم کفر کی اسطرح کی کوششیں کبھی بھی کامیاب نہیں ہوسکتیں مگر جب مسلمانوں میں ہی خود ساختہ سکالروں کو اسطرح کی ترویج اور اشاعت کیلئے مامور کیا جاتا ہے تو وہ قرآن اور حدیث کی من مانی تعبیر و تشریح کرتے ہے امکان قوی ہوتا ہے کہ مغرب زدہ جوان بآسانی اس گمراہی میں مبتلا ہوجاتے ہے۔ ہم کشمیر کی دینی جماعتوں اور اہل علم سے گزارش کرتے ہیں کہ پہلی فرصت میں ہی وحدت ادیان کی گمراہی جو کشمیر کے کالجوں ،یونیورسٹیوں اور قہوہ خانوں میں ایک منصوبے کے تحت پھیلائی جارہی ہے کی علمی مزاحمت کریں ۔یہ گمراہی اسلئے بھی خطرناک ہے کہ یہ اسلامی تعلیمات کی نئی تحقیقات کے نام پر پھیلائی جارہی ہے اور زرائعہ ابلاغ کے پورے تعاون اور تائید سے پھیلائی جارہی ہے۔ ہم نوجوانان ملت سے بھی ملتمس ہے کہ اسلام کے متعلق اپنے اندر اطمینان اور اعتماد پیدا کریں اور اس بات کا یقین اور ایمان راسخ رکھیں کہ صرف اسلام ہی اللہ تعالی کا پسند کیا ہوا دین ہے اور باقی سب مذاہب اندھیرے ہیں۔
X
4/13/2016
The general Secretary of Muslim Deeni Mahaz Mohammad Maqbool Bhat while paying tributes to Nayeem Qadir and Muhammad Iqbal said that these two youth created an example of bravery for other people to follow. They made it clear that kashmiris will never remain silent over any harrasment of our women folk. He siad th More
Glowing tributes to Nayeem Qadir and Muhammad Iqbal
4/13/2016
The general Secretary of Muslim Deeni Mahaz Mohammad Maqbool Bhat while paying tributes to Nayeem Qadir and Muhammad Iqbal said that these two youth created an example of bravery for other people to follow. They made it clear that kashmiris will never remain silent over any harrasment of our women folk. He siad that the real reason behind these incidents is the slavery of India and unroll this problem is addressed these instance will happen again and again. He said that Mehbooba Mufti after becoming chief minister is repeating what her father did as home minister through Jagmohan. He had seen over the firing by army over protesters in Handwara in which 17 people were killed. people should understand that to be faithfull with the blood of martyrs it is necessary to boycott every type of electoral politics and desist from voting at all costs. Through

مسلم دینی محاز کےجنرل سیکٹری محمد مقبول بٹ نےنعیم قادراور محمد اقبال پیر کو خراجِ عقیدت پیش کرتے ہوے کہا کہ با ضمیر اور بہادر نو جوان ہونےکا کارنامہ انجام دیکر شہیدوں نےمشعلِ راہ دیکھایئ اور بھارت اوربھارت کے قابض فوج کو واضح پیغام دیا کہ یہ وہ با ضمیر قوم ہے جونہ کنن پوشپورہ ٰ شوپیان آسی نیلوفرٰ چھانپورہ جیسے واقعوں پر خاموش بیٹھی نہ انشاالّللہ آیندہ بیٹھی گئ اور قوم سےاپیل ہے کہ غلامی ہی ایسے واقعوں کی اصل وجہ ہے تبتک نہ ہماری عصمت نہ ہمارے نوجوان نہ اسلام معفوض ہے اور عوام جانے کہ محبوبہ مفتی نے اقتدار سنبھالتےوہی کچھ کیا جو 25 ماہ نومبر 1990 میں بحثتِ وزیرِداخلہ مفتی سعیدنےکیا جگموہن کوگورنر بناکر ہندوارہ میں پرامن احتجاجی جلوس پر بھارتی فوج کی فائیرنگ سے 17 بے گناہ کو شہیدکیا اسلیے قوم جانے کہ شھیدوں کے خون سے وفاداری یہ ہے کہ ان بے ضمیروں کوووٹ دےکر شرک میں مبتلا نہ ہوجایےاور یہ جانے کہ جموں کشمیرسیاسی معاملہ نہیں ہے بلکہ دینی ہے
X
4/10/2016
General Secretary of Muslim Deeni Mahaz Muhammad Maqbool Bhat has said that Indian government and forces are feeling frustrated by the love and respect shown by kashmiri people towards mujahideen. This has led to this conspiracy of exploitation of NIT students by RSS and Shivsena. we know that BJP has come to the More
Frustrated by the love and respect shown by kashmiri people towards mujahideen
4/10/2016
General Secretary of Muslim Deeni Mahaz Muhammad Maqbool Bhat has said that Indian government and forces are feeling frustrated by the love and respect shown by kashmiri people towards mujahideen. This has led to this conspiracy of exploitation of NIT students by RSS and Shivsena. we know that BJP has come to the power over Gujrat pogrom of 2002. we are worried about the well being of muslims in general and kashmiri muslims in particular in India . Kashmir traders and students have to face harassment and humiliation time and again in India but kashmiri nation couldn't be supressed by these tactics in past neither can this happen in future. Through

مسلم دینی محازکےجنرل سیکٹری محمد مقبول بٹ نے کہا بھارت سرکار جموں کشمیرکے مجھاہدین کے شوقہ شھادت اور عوام کا مجھا ہدین کےساتھ والہانہ لگاواور صابت قدمی سے مرعوب ہوکر بوکھلاٹ کی شکار ہوگی ہےجسکی وجہ سےایک بہت بڑی سازش کے تحت شیوسینا بجرنگ دل اور آر ایس ایس کے غنڈوں نے طالب علموں کو استعمال کرکے این ای ٹی کالج میں فساد برپا کروایا ہم جانتےہیں باجپا سرکار کو گجرات میں مسلمانوں کا قتل عام کرنے پرہی منڈیٹ حاصل ہوا ہم اس بات سے فکرمند ہےبھارت میں رہ رہے مسلمان بلعموم اور کشمیری مسلمان بلخصوص محفوظ نہیں ہے کشمیری طالب علموں اورتجارت پیشوں کو آج پھلی بار مارا پیٹا نھیں گیا آج سے پھلے بھی کشمیریوں کو ہندوستان کے کئ ریاستوں میں حراص کیاگیا بھارت کے حکمران جان لیں کہ کشمیری قوم آجتک ایسے حربوں سے مرعوب ہوئ ہے نہ انشااللّا آئندہ ہوگی جموں کشمیر مسلم دینی محاذ منگل12 اپریل کشمیر بند قال کی مکمل حمایت کرتا ہے
X
4/7/2016
Those who prefer Khilafat or martyrdom over worldly gains and luxuries and spill their pious blood for Islam can't be enslaved by India or all the kufr of the world. the advocates of Ram Raj would have realised that they can't hold people who kick away medals and worldly luxuries as slaves for long. This was said More
Glowing tributes to brave youth have sacrificed their lives for us
4/7/2016
Those who prefer Khilafat or martyrdom over worldly gains and luxuries and spill their pious blood for Islam can't be enslaved by India or all the kufr of the world. the advocates of Ram Raj would have realised that they can't hold people who kick away medals and worldly luxuries as slaves for long. This was said by Muslim Deeni Mahaz while paying glowing tributes to the shaheed Waseem Ahmad Malla,Shaheed Naseer Ahmad Pandit and the guest mujahid martyred in Kupwara. General secretary MDM Muhammad Maqbool Bhat said that these martyrs are breaking the shackles of the slavery by spilling their warm blood. He said that these brave youth have sacrificed their lives for us and now it falls upon us to carry forward their mission. Meanwhile party leaders Khalid Bashir , Khalid Shakeel and Mufti Nadeem visited Kareem abad pulwama and Hafiz Nisar visited Pehli pora Shopian and paid tributes to the martyrs.

اقامتِ خلافت" یا "جامِ شہادت" کو فوقیت دے کر دنیاوی عیش و عشرت,مال و دولت اورملازمتوں کو پائے حقارت سے ٹھکرا کر ارضِ کشمیر کو اپنے مقدس لہو سے سیراب کرنے والوں کو ہندوستان کیا تمام کائنات کا کُفر مل کر بھی طویل مدت تک غلام رکھ سکتا ہے اور نہ ہی انھیں غلامی پہ رضامند کیا جاسکتا ہے بلکہ "رام راج" کے میٹھے سپنے دیکھنے, "جے ماتا دی" کا بے سُرا گیت گانے اور"اٹوٹ انگ" کے خیالی پلاؤ پکانے والوں نے بخوبی اندازہ لگایا ہوگا کہ جو "تمغوں و ترقیوں" اور سرکاری نوکریوں کو پسِ پُشت ڈال کر بے خوف وخطر" شہادت گہہ الفت"میں قدم رکھتے ہیں اُن کے سینوں پر زیادہ دیر تک مونگ نہیں دھلا جاسکتا ہے اور نہ ہی انھیں اپنی منزل سے ہمکنار ہونے کے لئے کوئی رکاوٹ یا دیوار کھڑی کی جاسکتی ہے ان باتوں کا اظہار مسلم دینی محاذ نے شہید وسیم احمدملہ,شہید نصیراحمدپنڈت اور کپوارہ میں ہوئے مہمان شہید کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کیا .محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے کہا کہ ہر گزرتے دن کے ساتھ ساتھ یہ شہدا ہندوستان کی غلامی کی زنجیروں کو اپنے گرم گرم لہو سے پگھلا رہے ہیں جس کے لئے پوری قوم مرہونِ منت ہے.بٹ صاحب نے کہا کہ اگرچہ یہ نوجوان بھی اپنی صلاحیتوں سے دنیاوی عیش و عشرت اور مال و متاع حاصل کرسکتے تھے مگران محسنوں نے اپنا مستقبل ہمارے کل کے لئے قربان کر کے پوری قوم کے کندھوں پر بارِگراں چھوڑ دیا اب یہ قوم پرمنحصر ہے کہ وہ کس طرح اس مقدس لہو کی حفاظت کرے گی. دریں اثنا محاذ کے رہنماؤں خالد شکیل و خالد بشیر و مفتی ندیم نے کریمہ آباد پلوامہ اور حافظ نثار نے پہلی پورہ شوپیاں جاکر ان شہدا کو زبردست الفاظ میں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے عوام بالخصوص نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ قرآن وسنت کی رسی کو مضبوطی سے تھامیں کیونکہ اسی میں ہماری فتح و نصرت کا راز پنہاں ہے
X
4/6/2016
Those who lay down their lives for the supremacy of the Islam and freedom from Indian clutches are the real heroes of the nation. With their blood these bravehearts kay foundation for a pious and virtuous Islamic society and to provide freedom to the enslaved people from the clutches of the tyrants. This was said More
Glowing tributes to shaheed Bilal Ahmad
4/6/2016
Those who lay down their lives for the supremacy of the Islam and freedom from Indian clutches are the real heroes of the nation. With their blood these bravehearts kay foundation for a pious and virtuous Islamic society and to provide freedom to the enslaved people from the clutches of the tyrants. This was said by MDM while paying glowing tributes to shaheed Bilal Ahmad. A delegation of MDM comprising of Khalid Shakeel, Mufti Nadeem and Khalid Bashir visited Karimabad to expresses condolences to the family of the martyr. The delegation said that Bilal left everything for the sake of Aakhirah and that includes his wife and two kids. He said that this valiant attitude is a slap for those who are after Worldly luxuries. Through

اعلائے کلمتہ اللہ اور آزادی برائے اسلام کی خاطر اپنی عزیز جانیں وقف کرنے والے سرفروش اور غازیانِ دین ہی قوم و ملت کے حقیقی معمار ہوتے ہیں جو اپنے لہو سے اسلام کی آبیاری اور آزادی کی تحریر رقم کر کے ایک صالح و پارسا قوم اور سماج کی تعمیرکر کے مظلوم و محکوم لوگوں کوزمانے کے خداؤں کے ظلم و جبر کے طوفان سے نکالنے کا عظیم و ارفع کام سرانجام دیتے ہیں ان باتوں کا اظہار مسلم دینی محاذ نے شہیدبلال احمد کی شہادت کے موقع پر خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کیا.دینی محاذ کے رہنماؤں خالد شکیل, مفتی ندیم اور خالد بشیر پر مشتمل ایک وفد کریم آباد پلوامہ گیا جہاں انھوں نے شہیدبلال احمد کے لواحقین کے ساتھ یکجیہتی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ شہید بلال احمد نے دنیاوی عیش و عشرت کو خیرآباد کہہ کر جس طرح سے عزیمت کی راہ اختیار کرتے ہوئے اپنے پیچھے صرف بیوی اور دوبچوں کو چھوڑ کر شہادت کو گلے لگایاوہ مراعات و مفادات اور اقتدار کی خاطر دین و ایمان کا سودا کرنے والوں کے لئے تازیانہ ہے اور ہندوستان کے لئے نوشتہ دیوار ہے کہ وہ جموں کشمیر کی سرِزمین سے چلے جائیں ورنہ وہ دن دور نہیں جب کشمیر کے اندر سویت یونین کا تاش کے پتوں کی طرح بکھرنے کی تاریخ دوبارہ دہرائی جائے گی
X
4/5/2016
General secretary of Muslimdeeni mahaz Muhammad Maqbool Bhat has expressed grief over the demise of the aunt if Shabir Ahmad Shah. he condemned the government tactics of not allowing Stable shah to attend her funeral. he termed it as political vendetta and moral degredation.he said that such tactics won't budge do More
Expressed grief over the demise of the aunt if Shabir Ahmad Shah
4/5/2016
General secretary of Muslimdeeni mahaz Muhammad Maqbool Bhat has expressed grief over the demise of the aunt if Shabir Ahmad Shah. he condemned the government tactics of not allowing Stable shah to attend her funeral. he termed it as political vendetta and moral degredation.he said that such tactics won't budge down a leader like Him.he said that in this hour of grief Shabir Shah should have been with his relatives but he is held captive deflating the so called battle of ideas. he said that in this hour of grief MDM stands with shabir Shah. meanwhile MDM has condemnedthe arrest speed of youth in qaimoh kulgam and Islamabad. Through

مسلم دینی محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے فریڈم پارٹی کے محبوس سربراہ شبیراحمد شاہ کی چاچی کے انتقال کرنے اور پھر شاہ صاحب کو ان کے جنازے میں شرکت نہ کرنے دینے کے ظالمانہ طرزِ عمل کو سیاسی انتقام گیری اور اخلاقی گراوٹ سے تعبیر کرتے ہوئے افسوس کا اظہار کیا اور کہا کہ ان حربوں سے نہ ہی محبوس سربراہ کے عزائم کو جھکایا جاسکتا ہے اور نہ ہی اس سے بھارتی و ریاستی حکومت کے مکروفریب کی پالیسی کے تئیں نفرت میں کمی کا کوئی اندیشہ ہے بلکہ ان چیزوں سے "اقامت و استقامت" کی تحریک ملتی ہے جس کی وجہ سے ظالم کا ظلم اور جابر کا جبر ضرور خاک میں مل کر فنا ہوتا ہے. محاذ کے جنرل سیکریٹری نے کہا کہ اس وقت جب کہ شاہ صاحب کو اس دکھہ کی گھڑی میں اپنے عزیزوں کے ساتھ ہونا چاہیے تھا برعکس اس کے انھیں پابندِ سلاسل رکھنا اور انھیں اپنی چاچی کے کفن دفن میں شامل نہ ہونے دینا ایک طرف یہ ظاہر کرتا ہے کہ battle of ideas کی راگنی کا راگ الاپنے والے کس طرح اس سے منحرف ہو کر اپنے مقدر اور ماتھے پہ رسوائی اورناکامی کے الفاظ ثبت کرتے ہیں وہی دوسری طرف یہ بھی عیاں ہوتا ہے کہ جب تک قوم و ملت کو بیچ کر اقتدار کی کرسی پر بیٹھنے والے "جعفروصادق" اپنے کیفرِ کردار تک نہیں پہنچتے تب تک ان کے ہاتھوں سے ہمیشہ انسانیت کی"قبا" چاک ہوتی رہے گی.بٹ صاحب نے کہا کہ مصیبت کی اس گھڑی میں مسلم دینی محاذ اور پوری قوم شاہ صاحب کے اس غم میں برابر کی شریک ہے.مزیدبرآں مسلم دینی محاذ نے قیموہ کولگام اور اسلام آباد میں نوجوانوں کی بلاجواز گرفتاری اور شبانہ چھاپوں کے دوران عام لوگوں کو ہراساں کرنے کو ریاستی دہشت گردی اور غنڈہ راج قرار دیتے ہوئے متنبہ کیا ہے کہ عام لوگوں کو تنگ و طلب کرنے کی پالیسی ترک کی جائے اور ان نوجوانوں کی رہائی فوری طور عمل میں لائی جائے ورنہ اس کے سنگین نتائج برآمد ہونگے جس کی تمام تر ذمہ داری پولیس و فوج پر عائد ہوگی جنھوں نے عام لوگوں خصوصًا نوجوانوں کو فرضی کیسوں میں پھنسا کر ان کے تعلیمی مستقبل کو تاریک بنانے کو اپنا وطیرہ بنایا ہوا ہے
X
4/4/2016
To provide Indian army 5 lakh kannals of land in karakh is a well planned conspiracy of India to form a base camp there. The aim is to kill three birds with a single stone. India aims to counter the Chinese threat,contain Pakistan's Kashmir policy and get a strong grip over Kashmir through this militarization of the More
5 lakh kannals of land in karakh is a well planned conspiracy of India to form a base camp
4/4/2016
To provide Indian army 5 lakh kannals of land in karakh is a well planned conspiracy of India to form a base camp there. The aim is to kill three birds with a single stone. India aims to counter the Chinese threat,contain Pakistan's Kashmir policy and get a strong grip over Kashmir through this militarization of the Ladakh region. It is something over which the entire nation should be worried. this was said by the general Secretary of MDM Muhammad maqbool Bhat. He said that entire Kashmir already appears to be a garrison where the Indian troops have killed lakhs of innocents and grave human rights violations have been done. On one side youth are being murdered and on the other hand ideological brainwashing is being done under the garb of operation like sadhbavna and Bharat darshan.our lands are being occupied like what Israel has done in Palestine. they are trying to increase the army number in ladakh so that the muslims there are pushed into Kashmir and the ladakh and jammu are broken off from our state. He said that the need of the hour is that there conspiracies are understood and thwarted with unison by the nation. meanwhile a delegation of MDM comprising of General secretary Muhammad maqbool Bhat and provincial ameer Khalid Shakeel visited the ailing leader Muhammad Astray Sahrai and enquired about his health.The delegation prayed for his speedy recovery.

لداخ میں ہندوستانی فوج کو پانچ لاکھ کنال سے زاید اراضی فراہم کرنا بھارت کا ایک سوچا سمجھا منصوبہ ہے جس کا مقصد جنگی حکمتِ عملی کے تحت لداخ کو بیس base camp بنا کر ایک تیر سے تین شکار کرنا ہے جہاں سے ہندوستان ایک تو خطے میں چین کے بڑھتے اثر رسوخ اور عزائم کو ناکام کرنا چاہتا ہے وہی پاکستان میں اندرونی تخریبی کاروائی کرا کے پاکستان کو اس میں الجھاکر اس کو کمزور کرنے اور پاکستان کی "کشمیرپالیسی" کو زک پہنچانے کی ہر ممکن کوشش کے ساتھ ساتھ جموں کشمیر پر فوجی طاقت کے بل بوتے پر اپنی گرفت مزید مضبوط کرنا چاہتا ہے جو پوری قوم کے لئے ایک تشویشناک اور حساس معاملہ ہے. ان باتوں کا اظہار مسلم دینی محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے کیا ہے.انھوں نے اخباروں کے نام اپنے بیان میں کہا کہ ہندوستان پہلے ہی جموں کشمیر کو فوجی جماؤ کی وجہ سے چھاونی میں تبدیل کرچکا ہے جس کا خمیازہ کشمیری قوم کو اس صورت میں بھگتنا پڑھ رہا ہے کہ آج تک ان"ابابیلوں" کے ذریعے لاکھوں بے گناہوں کو پیوندِ خاک بنایا گیا,ہزاروں بےنام قبروں کو آباد کیا گیا,لاتعداد عزت و عصمت کی چادروں کو تار تار کیا گیا اور جائدادوں و املاکوں کے لاتلافی نقصان کے ساتھ ساتھ آباد زمینوں پر فوجی بنکر اور اسلحہ کے ڈیپو بنانے کی وجہ سے یہ آباد زمین " بنجر" میں تبدیل کی گئی.جنرل سیکریٹری نے کہا کہ ایک طرف ہندوستانی فوج یہاں کی نوجوان نسل کو خون میں نہلا رہی ہے اور ساتھ ہی بھارتی تھنک ٹینکس "سدھ بھاونہ" اور "بھارت درشن" پروگراموں کے تحت اسکولوں و کالجوں میں زیرتعلیم طلاب کی ذہنی تخریبی کر رہا ہے وہی دوسری طرف "زرعی و زمینی جارحیت" کے ذریعے جموں کشمیر کی زمینوں کو ہڑپنے کے اسرائیلی دستور پر عمل پیرا ہے اور جس طرح اسرائیل نے فلسطینیوں کی زمین پر قبضہ کر کے فلسطین کی 90فیصد اراضی سے نکال باہر کر کے صرف ایک پٹی زمین"غزہ" کے اندر محصور کر دیا اُسی طرح ہندوستان جموں و لداخ پر "اسلحہ وآرمی"کے ذریعے مکمل کنٹرول کر کے وہاں سے مسلمانوں کو بیدخل کر کے "وادی کشمیر "میں محصور کرنا چاہتا ہے تاکہ دو بازو جموں و لداخ, کشمیر سے کاٹ کر ہندوستان میں مکمل طور سے ضم کئے جاسکیں اور پھر آہستہ آہستہ کشمیر کو نگل کر"انڈین نیشن"کا حصہ اور ہندوستان کا "اٹوٹ انگ" بنایا جاسکے.بٹ صاحب نے کہا کہ ہندوستان کے ان نت نئے ہتھکنڈوں و حربوں سے پوری قوم کو ہوشیار رہنا چاہیے اور ان سازشوں کے خلاف "بنیان المرصوص" بن کر "اقدامی لائحہ عمل" اپنانے کے ضرورت ہے تاکہ ہندوستان کی کوئی بھی چال کارگر نہ ہو اور اسے ہر محاذ پر منہ کی کھانی پڑے.دریں اثناء محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ صاحب اور امیرصوبہ خالد شکیل صاحب پر مشتمل ایک وفد محمد اشرف صحرائی صاحب کے گھر گیا جہاں اُنھوں نے علیل رہنما کی عیادت کی اور اللہ تعالیٰ سے دعا کی کہ وہ انھیں جلدازجلد شفایاب کریں
X
3/28/2016
The resistance movement can never be made result oriented unless the decay in the societal fabric is arrested. The ideological base of resistance movement can be made strong by working for reform of the moral fabric of the society. The idea that either moral values of the society can be worked on or the freedom mo More
Need of hour is to working for reform of the moral fabric of the society
3/28/2016 12:00:00 AM
The resistance movement can never be made result oriented unless the decay in the societal fabric is arrested. The ideological base of resistance movement can be made strong by working for reform of the moral fabric of the society. The idea that either moral values of the society can be worked on or the freedom movement can be taken forward,both can't happen simultaneously is wrong and against the commandments of the holy Quran.It is a matter of concern that in jammu and Kashmir the religious organisations only concentrate on the moral righteousness considering it the final and only aim! This thinking ceases any chances of collaboration between pro freedom and religious organisations . From an Islamic point of view the efforts for moral betterment can niether be holistically society centric nor entirely state centric both these fronts have to be taken up simultaneously in all Islamic states. Since in Jammu Kashmir state authority Is not in the hands of muslims Therefore in our society the efforts for moral betterment can only be society centric but to make these efforts result oriented it is essential that we gain freedom from the rule of the non believers. The history of Islam ( from Nooh A.S to present times) there is no such instance where a true Islamic society has thrived under the rule of deniers .Niether does political freedom essentially lead to a Islamic society. Politically free Islamic countries have failed till date in developing an Islamic society. We request the religious and pro freedom organisations in Jammu kashmir that they should understand the value of their collaboration and should cooperate with each other on both the fronts and desist from any clasification of these works.

معاشراتی بگاڑ کے ساتھ مزاحمتی تحریک کو کبھی بھی نتیجہ خیز نہیں بنایا جاسکتا ہے،اس لئے اصلاح معاشرہ کے ساتھ ہی مزاحمتی تحریک کیلئے فکری بنیادوں کو مضبوط بنایا جاسکتا ہے۔ اسلئے یہ کہنا پہلے ''اصلاح معاشرہ پھر آزادی کی تحریک یا پہلے آزادی کی تحریک پھر اصلاح کی کاوشیں '' یہ دونوں طرح کی سوچ اصلاح کے متعلق قرآن مجید کی جامع تعلیمات سے خلاف ہیں۔جموں کشمیر میں پریشان کن صورتحال یہ ہے کہ یہاں دینی جماعتیں صرف اصلاح معاشرہ کو ہی اصلی اور حتمی کام مانتی ہیں! اس سوچ کی وجہ سے دونوں طرح کی جماعتوں میں باہمی تعاون کے امکانات تقریبا ختم ہوگئے ہیں۔ اسلامی نقطہ نگاہ سے نہ تو اصلاح کی کاوشیں صرف society centric ہوتی ہیں اور نہ ہی یہ صرف state centric ہوتی ہیں بلکہ دونوں سطح پر اصلاحی کاوشیں اسلامی ریاستوں میں ساتھ ساتھ ہوتی ہیں۔ چونکہ جموں کشمیر میں state authority اغیار کے ہاتھوں میں ہے اسلئے یہاں اصلاح کی کاوشیں صرف society centric ہی ہوسکتی ہے مگر ان کوششوں کو موثر اور نتیجہ خیز بنانے کیلئے ضروری ہے کہ اغیار کی غلامی سے آزادی حاصل کی جائے۔آج تک اسلام کی تبلیغی تاریخ (نوح سے لیکر آج تک ) میں ہمیں ایسی کوئی مثال نہیں ملتی جہاں مکذبین (deniers) کی حکمرانی میں اسلامی معاشرہ اپنی تکمیل کو پہنچا ہو اور نہ ہی یہ صحیح ہے کہ سیاسی آزادی لازما اسلامی معاشرہ کا ذریعہ بنے گی سیاسی طور آزاد مسلم ممالک آج تک اسلامی معاشرہ تیار نہیں کر سکے ہیں۔ ہم جموں کشمیر کی دینی اور حریت پسند جماعتوں سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ اصلاح معاشرہ کی کاوشوں اور مزاحمتی تحریک کے درمیان لازمی تعلق کو سمجھیں اور ایک دوسرے کے ساتھ دونوں محاذوں پر تعاون کریں اور ان دونوں طرح کے کاموں میں اہم اور غیر اہم کی تفریق سے گریز کریں
X
3/27/2016
The spokesperson of Muslim Deeni Mahaz Sajad Ayoubi has said that whenever muslims deviated from the teachings of Islam ,land was filled with blood shed of muslims and others were given control over them . The spokesperson said that whenever man chose a system other than Islam made. Man made constitution instead o More
Muslims in Kashmir to surrender to the comandments of Allah completely
3/27/2016
The spokesperson of Muslim Deeni Mahaz Sajad Ayoubi has said that whenever muslims deviated from the teachings of Islam ,land was filled with blood shed of muslims and others were given control over them . The spokesperson said that whenever man chose a system other than Islam made. Man made constitution instead of islamic system and assemblies instead of the shura system of Islam muslims will face murder and blood shed. He said that the only way for muslims to attain back their glory is to turn back to Quran and The ways of the prophet. He said that muslims in kashmir are searching for solutions of their problems in the systems of Hindus and Jews which will only increase length of their slavery. Pro India parties like NC ,PDP, congress in assemblies are turning Halal into Haram and haram into halal. Therefore we request muslims in Kashmir to surrender to the comandments of Allah completely that is the only way to attain freedom from the cluthches of the slavery of India.

مسلم دینی محاذ کے ترجمان سجادایوبی نے کہا کہ جب بھی روئے زمین پر مسلمانوں نے اسلام اور احکامِ الٰہیہ سے روگردانی کی تب تب اللہ تعالٰی نے ان سے عزت و عظمت, سیادت و قیادت,ملک و حکومت اور امن و سکون چھین کر ان پر عذاب الٰہی کی شکل میں غیروں کو مسلط کر دیا.محاذ کے ترجمان نے اخباروں کے نام اپنے بیان میں کہا کہ اسلام کے آفاقی نظام کو ٹھکرا کر انسانوں کے بنائے ہوئے نظام کو گلے لگانے,قرآنی آئین کو جھٹلا کر انسانی آئین کو اپنانے,قانون سازی کا حق خالق سے چھین کر مخلوق کے ہاتھ میں تھما دینے,خلافت کی جگہ جمہوریت,سیکولرازم,سوشلزم,کیمونزم,نیشنل ازم اور دوسرے فرسودہ ازموں کے پیچھے چلنے, شورائی نظام سے منہ موڑ کر اسمبلیوں,پارلیمنٹوں و سینٹوں کی آبیاری کرنے, اُمتِ واحدہ کے تصور سے نکل کر ریاستوں و ملکوں میں بٹنے اور منہجِ سلف کو پسِ پشت ڈال کر "منہجِ یھود و ہنود" کا دم بھرنے سے اس وقت مسلم اُمہ "فساد فی الارض" کی مرتکب ہوچکی ہے جس کی وجہ سے پورے عالم اسلام پر ذلت و مسکنت کے بادل چھائے ہوئے ہیں اور تمام مسلمان عزت و عظمت کے اعلٰی منصب سے گر کر پستی میں ڈوب چکے ہیں جس سے نکلنے کا واحد راستہ اور علاج"رجوع الی القرآن اور اُسوہ رسول" ہے.ترجمان نے کہا چونکہ جموں کشمیر کے مسلمان بھی اسلام کے دامنِ رحمت سے نکل کر دوسرے باطل و گمراہ نظریات کی پناہ گاہ میں اپنی عافیت ڈھونڈتے ہیں جس کا خمیازہ ہمیں ہندوستان جیسے جابروغاصب اور اس کے کشمیری گماشتوں کے ظلم و ستم اور جبروقہر کے پہاڑ توڑنے کی صورت میں بھگتنا پڑرہا ہے اور لاتعداد اور ان گنت قربانیوں کے باوجود غلامی و جبر کی سیاہ رات طویل ہوتی جارہی ہے جس کی بنیادی وجہ بھی اسلام کے عالمگیر نظام ِ حیات کو چھوڑ کر ہندوستانی آئین کے ساتھ ساتھ جموں کشمیر کے نام نہاد جمہوری و سیکولر نظریہ کی حامل جماعتوں جیسے نیشنل کانفرنس,پی ڈی پی,کانگریس اور دوسری جماعتیں جو اسمبلیوں و پارلیمنٹ میں قانون ساز بن کر حلال کو حرام و حرام کو حلال اور بدی کو نیکی و نیکی کو بدی قرار دے کر اللہ تعالٰی کے "حلت و حرمت" کے اصول کو توڑ دیتے ہیں اور ظاہر ہے جو قوم الٰہی قانون کو پسِ پشت ڈال کر اسمبلی میں " مفتی کمپنی" کی قلم دوات اور "کانگریس" کے " ہاتھ" سے لکھے اور بنائے گئے قوانین کے ذریعے سے اپنی زندگی کے معاملات کا فیصلہ کرے گی اُس قوم کی آزادی,امن و سکون اور عزت و وقارکے خواب لاریب نیشنل کانفرنس کے " ہل" سے دفن ہوتے ہیں.لہذا مسلم دینی محاذ اہلیان جموں کشمیر خصوصًا جوانانِ کشمیر سے ملتمس ہے کہ وہ اسلام کو مکمل ضابطہ حیات مان کر اور پیغمبرِ اسلام کو " حَکم و فیصل" جان کر ان کے آگے اپنا سرخم تسلیم کریں تاکہ اس کے طفیل جبر و قہر اور غلامی کے بادل چھٹ جائیں اور جموں کشمیر کے فلک پر آزادی, امن و سکون, عزت و عظمت اور سربلندی کا سورج طلوع ہو انشاء اللہ
X
3/22/2016
On the eve of Pakistan day Muslim deeni mahaz has said that the country of Pakistan was founded in the basis of Islam and today efforts are being made to change the country into a liberal and secular nation. This is a deciet to the sacrifices of millions of muslims who laid their life for the creation of an Islami More
Today efforts are being made to change the Pakistan into a liberal and secular nation.
3/22/2016
On the eve of Pakistan day Muslim deeni mahaz has said that the country of Pakistan was founded in the basis of Islam and today efforts are being made to change the country into a liberal and secular nation. This is a deciet to the sacrifices of millions of muslims who laid their life for the creation of an Islamic Pakistan. He said that those people wished for a strong Pakistan that would be a fort for Islam and Muslims but today the efforts to convert it into a liberal and secular country are in contrary to those wishes . The spokesperson of MDM sajad ayubi said that in cities like ferozpure,jalandhar, amritsar and ludhinana . Millions of muslims were butchered so that this country comes into being for Islam and Muslims and is stablised. They promised to Allah regarding this country. Right now Pakistan is a sore of eyes for the pagan nations and they are ever ready to inflict wounds on the country. A vicious propaganda is unleasehed to tarnish the image of this country amongst muslims . Muslims should.learn to differentiate between Pakistan and it's government. People can have differences with the Pakistani government but they should not be enimical towards the country. We should support those people and organisations that are working for bringing back Pakistan on the path of shariah. Meanwhile the general Secretary of MDM Muhammad maqbool Bhat led a special prayer for the stability of Pakistan

مسلم دینی محاذ نے یومِ پاکستان کے موقعہ پر "نظریہ لاالہ الا اللہ"پر حاصل کیے گیے ملک کو لبرل ازم اور سیکولرازم کے رنگ میں رنگنے کی کو عالم اسلام کے ساتھ ساتھ اُن لاکھوں شہداء کی دی گیی قربانیوں کے ساتھ دھوکہ,فریب اور انحراف قرار دیا ہے جنھوں نے قیامِ پاکستان اور نظریہ پاکستان کی خاطر خاک وخون کے دریا پاٹ کر ایک خواب کو حقیقت میں بدل کر پوری ملت اسلامیہ کے لیے پاکستان کے نام پر ایک مضبوط و محفوظ قلعہ تعمیر کیا جس کی بنیاد انھوں نے اپنے خون اور ہڈیوں کے اینٹ و گارے سے ڈالی کیونکہ جس ملک کی بنیاد اسلام کے نام پر رکھی گئ ہو اور جس کا نظریہ کلمہ ہو اُس کو پاکستان دشمن قوتوں کی ایماء پر "آزادخیالی" اور "لادیننت " کی بھینٹ چڑھانا قیام و نظریہ پاکستان کے سینے میں چھرا گھونپنے کے مترادف ہے. محاذ کے ترجمان سجادایوبی نے کہا کہ فیروزپور,جالندھر, امرتسر, ہشیارپور,لدھیانہ اور بٹھنڈہ کے اُن مہاجروں کا عزم و ہمت اور لازوال قربانیوں کی داستان شاہد ہے جن کے پاک لہو سے نظریہ پاکستان کی تحریر رقم کی گئ اور جنھوں نے اپنے خون کے دریا بہا کر اپنے پیچھے آنے والوں کو اس دریا میں اپنی کشتیاں ڈال کر پاکستان پہنچنے اور بنانے کی تحریک دی کہ پاکستان صرف اور صرف اسلام کے لیے حاصل کیا گیا ہے اور جس کی بقاء اور استحکام اسی میں ہے کہ اس ملک کو اُسی نہج پر چلایا جایے جس پر چلانے کے عہدوپیمان اللہ تعالی سے کیے گیے ہیں.ترجمان نے کہا کہ اس وقت پاکستان تمام عالم کفر کی آنکھوں میں خار کی طرح کھٹک رہا ہے اور وہ اس تاک میں بیٹھا ہے کہ کب اور کس طرح پاکستان کو سیاسی,اقتصادی, معاشی اور اخلاقی سطح پر ٹھیس پہنچا کر کمزور بنایا جائے جس کے لئے وہ ہر ایک ذرایع و پروپگینڈا عملاتے ہوئے ایک تو مسلم اُمہ کو پاکستان سے متنفر کرنے کی کوشش کررہا ہے دوسرا پاکستان کے اندر اپنی مرضی کا گیم پلان کھیل کر قتل و غارت گری کے ذریعے پاکستان کو بدنام کرنے اور اس کی جڑیں کھوکھلا کرنے کے ہتھکنڈے آزما رہا ہے تاکہ اس ملک کو مشرق و مغرب کے مسلمانوں کے خوابوں کی تعبیر بننے سے روکا جایے.مشکل کی اس گھڑی میں جب پاکستان پر ہر طرف فتنوں اور سازشوں کی یلغار ہو رہی ہے اُمت خصوصًا جموں کشمیر کے عوام کو یہ بات زہن نشین کرلینی چاہیے کہ "پاکستان اور حکومت" دوالگ الگ چیزیں ہیں اور حکومت غلط اور پُرفتن راستے کا انتخاب تو کر سکتی ہے لیکن پاکستان روزِازل سے ہی اسلام کے نام پر معرضِ وجود میں آیا ہے اور پاکستان آج بھی حلقہ بگوشِ اسلام ہونے کے لئے ترس رہا ہے اس لئے مسلمانوں کو کفر کی پاکستان دشمن سازش کا شکار ہو کر اس کے مطعلق بدگمان نہیں ہونا چاہیے کیونکہ مسجد کے امام سے اس کی خامیوں کی وجہ سے اختلاف تو ہو سکتا ہے لیکن اس سے مسجد کی اہمیت,عظمت,محبت,عقیدت,تقدس اور حفاظت میں کمی کی گنجائش کا کوئی تصور نہیں ہے جس کا جیتا جاگتا ثبوت پاکستان کی وہ دینی و سیاسی جماعتیں ہیں جو سازشوں کے طوفان کے آگے اسلام کی شمع فروزاں کرنے کی خاطر خونِ جگر جلارہے ہیں اور پاکستان کے حکمرانوں کو اسلام نافذ کر کے اپنی ماضی کی غلطیوں کا ازالہ کرنے کی ترغیب دے رہے ہیں لہذا پاکستان کے تئیں بدگمانی سے پرہیز کیا جائے اور نفرت کی دیوار کھڑی کرنے والوں کے ارادوں کو ناکام بنایا جائے. دریں اثناء محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ کی قیادت میں محاذ کے مرکز پر پاکستان کی بقاء,سلامتی اور استحکام کی خاطر ایک دعائیہ مجلس منعقد کی گئ جس میں دعا کی گئ کہ اللہ تعالیٰ پاکستان کو تمام دشمنوں کے شر سے محفوظ رکھے اور پاکستان میں جلدازجلد اسلام کا نفاذ ہو کیونکہ نظرئے پاکستان میں ہی بقائے پاکستان کا راز پنہاں ہے
X
3/18/2016
Sectarian differences have been prevalent in the ummah right from the 3rd century of Hijrah and these differences in no way are the differences of Kuffar and Islam or Jannah and Hell. These are differences in understanding and comprehension . Rigidity and extremism in these sectarian difference is a result of prej More
Sectarian differences have been prevalent in the ummah right from the 3rd century of Hijrah
3/18/2016 12:00:00 AM
Sectarian differences have been prevalent in the ummah right from the 3rd century of Hijrah and these differences in no way are the differences of Kuffar and Islam or Jannah and Hell. These are differences in understanding and comprehension . Rigidity and extremism in these sectarian difference is a result of prejudice or ignorance. These differences can’t be sorted out till Qayamah. The people who rose to eliminate these differences they have turned into a sect themselves. Our ancestors had these differences in approach but they respected each other and despite these differences where helpful to each other in the matters of virtue. To convert Hanfi Muslims in to Salfi and vice versa was never the priority of the Ummah and never will be . Ulema and pious people always preferred the reformation in muslim and Dawah to Kuffar as their priority because any muslim who has Imaan and virtous deeds will be in Jannah no Matter what Maslak he follows. Muslms have been under slavery fr the past two hundred years therefore the enemies have always fanned these sectarian rifts in Muslim’s. Their main objective is to consume our abilities in these rifts so that the resistance movement can be weakened. This sectarian rift is being funded by Saudi Arabia, Iran and India and the agents of these countries are fanning this fire so that a civil war can be initiated. We request the youth to remain away from sectarian extremism and show a moderate and tolerant approach in these matters. They should remain vigilant from such preachers who propagate secterain hate to earn bread and butter. The main feature of these Preachers is that they never speak against congress , BJP, National Confrence PDP and other anti Muslim and Islam parties and only give efforts in propagating their sect.

مسلکی ا ختلافات امت اسلامیہ میں تیسری صدی ہجری سے ہی شروع ہوئے ہیں اور یہ اختلافات کفر اور اسلام کے اختلاف نہیں ہیں اور نہ ہی یہ جنت اور جہنم کا مسئلہ ہے،یہ دراصل تعبیر اور تشریح کے اختلافات ہیں، ایک مسلمان میں مسلک کے بارے میں شدت پسندی جہالت یا تعصب کی وجہ سے پیدا ہوتی ہے، یہ اختلافات ایسے ہیں جو قیامت تک ختم نہیں ہوسکتے اور جو لوگ مسلک اختلافات کو ختم کرنے کی بات کرتے ہیں وہ بذات خود ایک مسلک بن گئے یں ! ہمارے اسلاف مسلکی ختلافات کے باوجود نہ صرف ایک دوسرے کی عزت اور احرام کرتے کرتے تھے بلکہ معرو ف میں ایک دوسرے کے ساتھ اشتراک اور تعاون بھی کرتے تھے۔ حنفی مسلمانوں کو سلفی مسلمان بنانا یا سلفی مسلمانوں کو حنفی مسلمان بنانا نہ کبھی امت کی ترجیح رہی ہے اور نہ کبھی ہوسکتی ہے علماءاور صلحاءنے ہمیشہ مسلمانوں میں اصلاح اور غیر مسلموں میں دعوت اسلام کو ہی ہی ترجیح بنایا ہے، کیونکہ ایمان اور عمل صالح کا سرمایہ جس کسی مسلمان کے پاس ہوگا وہ انشا ءاللہ جنت میں جائے گا خواہ وہ کسی بھی مسلک یا جماعت کے ساتھ وابستہ ہو، جنت کی اجارہ داری کسی مسلک یا جماعت کو حاصل نہیں ہے۔ ملت اسلامیہ چونکہ دو صدیوں سے غلامی کی زندگی گزار رہی ہے اس لئے دشمن کی ہمیشہ یہی کوشش رہی ہے یہ ملت اسلامیہ کشمیر مسلکی اور جماعتی معرکہ آرائی میں ہی اپنی علمی و عملی صلاحیتو ں کو ضائع کرے تاکہ مزاحمتی تحریک جو ملت اسلامیہ کشمیر کی پہلی ترجیح ہے کیلئے افراد سازی کے امکانات ختم ہوں۔ کشمیر میں مسلکی آرائی کیلئے با ضابطہ سعودی عرب، ایران اور بھارت سے پیسہ آرہا ہے اور ان ممالک کے بے ضمیر ایجنٹ یہاں مسلکی اختلافات کو فروغ دے کر خانہ جنگی کا ماحول تیار کر رہے ہیں۔ ہم نوجوانوں سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ مسلک کے بارے میں اعتدال پسندی اور وسیع القلبی کا مظاہرہ کریں اور ایسے واعظوں اور خطیبوں سے خبردار رہیں جنہوں نے مسلکی شدت پسندی پھیلانے کو اپنا ذریعہ معاش بنایا ہے ایسے واعظوں ور خطیبوں کی پہچان یہ ہے کہ وہ کبھی بھی کانگریس ، بھاجپا ، نیشنل کا نفرنس اور پی ڈی پی جیسی اسام اور مسلمان دشمن جماعتوں کے خلاف نہیں بولیں گے بکہ صرف مسلکی اختلافات کو ہی اچھالیں گے
X
3/16/2016
پورے ہندوستان مےں زےر تعلےم کشمےری طالب علموں کے مستقبل کو تارےک بنانے اور داو ¿ پر لگانے کے ساتھ ساتھ انھےں ذہنی وجسمانی طور ہراساں کرنے کی کوشش سےاسی عناد اور کشمےر دشمنی پر مبنی کہانی ہے جس کی حقےقت اس وقت عےاں ہوگئی جب مرکزی وزارتِ داخلہ و انٹےلی جنس نے اپنے تازہ حکمنانے مےں کولکتہ پولےس و انٹےلی جنس کو تم تفصیلی خبر
پورے ہندوستان مےں زےر تعلےم کشمےری طالب علموں کے مستقبل
3/16/2016

پورے ہندوستان مےں زےر تعلےم کشمےری طالب علموں کے مستقبل کو تارےک بنانے اور داو ¿ پر لگانے کے ساتھ ساتھ انھےں ذہنی وجسمانی طور ہراساں کرنے کی کوشش سےاسی عناد اور کشمےر دشمنی پر مبنی کہانی ہے جس کی حقےقت اس وقت عےاں ہوگئی جب مرکزی وزارتِ داخلہ و انٹےلی جنس نے اپنے تازہ حکمنانے مےں کولکتہ پولےس و انٹےلی جنس کو تمام کالجوں، ےونےورسٹےوں اور دےگر تعلےمی اداروں مےں تعلےم حاصل کر رہے کشمےری طلاب کے متعلق تفصےلی معلومات پےش کرنے کو کہہ کر ان کے والدےن اور پوری قوم کو تشوےش و فکر مےں مبتلا کردےا، ان باتوں کا اظہار مسلم دےنی محاذ کے ترجمان سجاد اےوبی نے کےا۔ انھوں نے اخباروں کے نام اپنے اےک بےان مےں کہا کہ جے،اےن، ےو مےں مرحوم محمد افضل گورو تقرےب اس کے بعد طلباءلےڈران کی گرفتاری پھر ہندوستان کے طول و عرض خصوصََا مغربی بنگال کی مشہور جادوپورےونےورسٹی مےں مظاہرہ جس مےں کشمےر اور منی پور کی آزادی کی حماےت مےں نعرے بازی کی گئی، کا سارا نزلہ کشمےری طالب علموں پر گرا کر ان کے لئے ہندوستان کے تعلےمی اداروں کے دروازے ہمےشہ کے لئے بند کرنے کی کوشش کی جارہی ہے تاکہ ان کی وجہ سے ملک کے تعلےم ےافتہ طبقے اور دوانشوروں پر جموں کشمےر کے عوام پر ڈھائے جارہے مظالم کی داستان، بھارتی قےادت کی دھوکہ بازی اور مسئلہ کشمےر کی صحےح تارےخ اور حقےقی صورتحا ل عےاں نہ ہوجائے۔اےک طرف بھارت ”آزادی اظہار رائے“ کا حسےن اور پُر فرےب نعرہ دے کر اقوامِ عالم کی آنکھوں مےں دھول جھونک رہا ہے وہی دوسری طرف اظہارِ رائے کرنے والوں پر قدغن لگا کر معصوم اور بے خطا طالب علموں کے متعلق چھان بےن ، ان کے کوائف جمع کرانے اور ان کی سرگرمےوں پر نظر رکھنے کے حکم سے کشمےر کے نوجوان طبقے کے دلوں مےں نفرت و عداوت کو بڑھاوا دے رہا ہے جس کے سنگےن اور خطرناک نتائج نکل سکتے ہےں کےونکہ کائنات گواہ ہے کہ مسئلہ کشمےر اےک زندہ حقےقت ہے جس کو عالمی سطح پر مانا اور جانا جاچکا ہے لہذا اس پر بات کرنے اور کہنے سے نہ ہی کسی کو روکا جاسکتا ہے اور نہ ہی ”من کی بات“ کو دھونس و دباو ¿ کی پالےسی سے دباےا جاسکتا ہے۔درےں اثناءمحاذ کے ترجمان نے راجستھان کی مئی وار ےونےورسٹی مےں شک کی بنےاد پر گوشت کھانے کے الزام مےں کشمےری طلباءپر ہندو جنونےوں و سنگےوں کی طرف سے جان لےوا حملہ اور پھر ان کی گرفتاری کو بدترےن مسلم دشمنی قرار دےتے ہوئے خبردار کےا ہے کہ اس ”ڈراو ¿ اور دھمکاو ¿“ کے ہتھکنڈے سے نہ ہی کشمےرےوں کے جذبہءحرےت کو دباےاجاسکتا ہے اور نہ ہی ہمارے حوصلے پست کئے جاسکتے ہےں بلکہ ےہ ظلم و زےادتی ہماری استقامت کو توانائی فراہم کر کے ظلم کے آگے سےنہ سپر ہونے کے آداب سکھاتا ہے اور بھارت شاےد اس وہم مےں مبتلا ہے کہ وہ ہمارے طالب علموں کو علمی طور اپاہج کر کے قوم کو لاعلمی کی بےساکھےوں کے سہارے چلنے پر مجبور کردے گا مگر ”اصحاب الصفحہ“ سے لے کر اُندلس کی لائےبرےرےوں تک کا علمی خزانہ شاہد ہے کہ ےہ وہ قوم ہے جس کی شروعات ”قلم و اقرائ“ سے ہوئی اس لئے انھےں اس ورثے سے دور رکھنا طفلانہ پن وبچگانہ حرکت ہے۔مزےدبرآں جواہرلال نہرو ےونےورسٹی مےں پانچ طالب علموں کو ےونےورسٹی سے بےدخل ےا خارج کرنے کی سفارش اےک گندی سوچ اور مخصوص نظرےے کی حامل قوتوں وجماعتوں کی کارستانی کی تعبےر ہے۔س
X
3/15/2016
The waywardness and vulgarity prevalent in the kashmiri society has led it to a very serious and dangerous crossroad. It needs a quick and comprehensive attention otherwise our young generation will turn vestigial. This was said by the spokesperson of MDM Sajad Ayoubi. He said that on one side India is destroying More
The waywardness and vulgarity prevalent in the kashmiri society has led it to
3/15/2016
The waywardness and vulgarity prevalent in the kashmiri society has led it to a very serious and dangerous crossroad. It needs a quick and comprehensive attention otherwise our young generation will turn vestigial. This was said by the spokesperson of MDM Sajad Ayoubi. He said that on one side India is destroying the life and wealth of kashmiri muslims while as in the other moral degradation is being thrust upon our youth to destroy their ethic. He said that all Indian organisations along with JK bank and other organisations are encouraging this immorality. He said that with the onset of spring the Indian agencies hold programs like welcome spring etc in colleges and schools to set thousands of youth astray. He said that events like 'Mr.and Ms. Fresher'are being organised where youth are made to dance infront of strangers. This should be an eyeopener for the entire nation. Therefore we request the Imams Khateebs and other responsible people to play role in stopping this onslaught. Parents should give moral and religious education to their children and taught them about the moral principals of faith.

سماج مےں پھےلائی جارہی بے راہ روی، فحاشی اور بے حےائی نے جس پےمانے پر کشمےر کی نوجوان نسل کو تباہی کے دہانے پر لاکر کھڑا کےا ہے وہ اےک سنگےن اور حساس نوعےت کا معاملہ ہے جس پر فوری توجہ دےنے کی اشد ضرورت ہے ورنہ عنقرےب قوم کی نسلِ نو مکمل طور پر اخلاقی زوال کا شکار ہوکر ’عضوِ ناکارہ‘ بن کر رہ جائے گی ان باتوں کا اظہار مسلم دےنی محاذ کے ترجمان سجاد اےوبی نے کےا۔ اُنھوں نے کہا کہ اےک طرف ہندوستان جموں کشمےر کے مسلمانوں کی جان ومال کو طاقت کے بل پر تباہ و برباد کر رہا ہے وہی دوسری طرف اخلاقی جارحےت کے ذرےعے ےہاں کے نوجوان طبقے کو شکار کر کے اپنے مقصد مےں کامےاب ہوتا جارہا ہے اور اس مقصد کو حاصل کرنے مےں ےہاں کی تمام ہندنواز جماعتوں کے ساتھ ساتھ جموں کشمےر بنک اور دےگر ادارے جن کی شراکت سے اس بے حےائی اور بے راہ روی کے کاروبار کو فروغ دےا جارہا ہے، بالواسطہ طور اس فعلِ قبےحہ کو عملانے مےں برابر کی شرےک ہےں۔سجاد اےوبی نے کہا کہ بہار کی آمد اور اسکولوں و کالجوں کے کھلنے کے ساتھ ہی ہندوستان کی وہ اےجنسےاں جن کا کام صرف ےہ ہوتا ہے کہ وہ نوجوانوں کے اخلاق پر کاری ضربےں لگائےں، متحرک ہوتی ہےںاور پارکوں و ہوٹلوں مےں ”جشنِ آمدِ بہار“ اور کلچرل پروگرام کے نام پر لاتعداد نوجوانوں کو گمراہ کرکے انھےں بے حےائی وفحاشی کی طرف راغب کررہے ہےں وہی کالجوں مےں ”مسٹر اےنڈمس فرےشر“ اور ”کالج اپگرےڈےشن“ کے لئے معصوم طالبات کو غےروں کے سامنے نچا کر ان سے حےا کا زےور چھےن لےا جاتا ہے جو اس قوم کے لئے المےہ و لمحہ ¾ فکرےہ ہے۔لہذا مسلم دےنی محاذ ائمہ و خطبائ،دانشوارانِ قوم ،اساتذہ کرام اور ذی حس لوگوں سے اپےل کرتی ہے کہ وہ اس مسئلہ پر غوروفکر اور تدبر و تفکر کر کے اس کا سدباب ڈھونڈ نکالے تاکہ اس بے راہ روی اور فحاشی کے سےلاب مےں نئی پود کو بہہ جانے سے روکا جاسکے اور ساتھ ہی والدےن حضرات سے گذارش ہے کہ وہ اپنے بچوں کو اسلامی تعلےمات کے نور سے منور کرےں اور انھےں اسلام کے” نظرےہ حےاء “ کی طرف قائل و مائل کرےں اور مغرب زدگی، مشرکانہ و ہندووانہ تہذےب کی بھےنٹ چڑھنے نہ دےںکےونکہ ہندوستان چاہتا ہے کہ کشمےری قوم کے ان نوجوان معماروں کی ”اخلاقی مسمار“ سے ہی اسے اپنے خاکوں مےں رنگ بھرنے کا موقع ملے گا بصورت دےگر قرآن و سنت کے ہتھےار سے لےس نوجوانانِ کشمےر کے سامنے ہندوستان کو ہر محاذ پر سرنگوں ہونا پڑے گا
X
3/12/2016
The general Secretary of Muslim deeni Mahaz Muhhamad Maqbool Bhat has said that the use of force by Indian military and police to crush the protests of people won't break the profreedom resolve of the people. In the past 65 years India killed lacs of people in Kashmir,thousands of women were raped and men disapppe More
Past 65 years India killed lacs of people in Kashmir
3/12/2016
The general Secretary of Muslim deeni Mahaz Muhhamad Maqbool Bhat has said that the use of force by Indian military and police to crush the protests of people won't break the profreedom resolve of the people. In the past 65 years India killed lacs of people in Kashmir,thousands of women were raped and men disapppeared but this Did not succeed in crushing the sentiments of people. Participation of lacs of people in the funerals of mujahideen makes it evident where the heart of the people lies. The stonepelting and protests against the forces at places of encounters shows that the people of Kashmir have the sentiment of azadi in their hearts. If all this is not enough for India to understand the ground reality of Kashmir then India should gear itself for a fate like that of Russia in Afghanistan

مسلم دینی محاذکےجنرل سیکٹری محمد مقبول بٹ صاحب نے کہابہارتی افواج کی زور زبردستی اور نسل کشی کے خلاف عوامی احتِجاج کرنے والی عوام کو ہندوستان کے حکمران یا فوجی سربراہوں کی دہہمکیوں سے کشمیریوں کے جزبات و احساسات پر قدگن نہہیں لگا سکھتےیہ بہارتی حکمرانوں کی ناعاقبت اندیشی ہے ک 65 برسوں مین ہہندوستان کی جابر اورغاصب افواج نے لاکہوں کشمیریوں کا قتلِ عام کیا ہزاروں ماوں بہنوں بیٹیوں کی عصمتیں لوٹی ہزاروں نوجوان کو غایب کیا خربوں کی جیداد گن بوڈر اور بارود سے راکہہ کے ڈھیر میں تبدیل کیا اسکے باوجود مجاہہدین کے جنازوں میں لاکہوں لوگوں کی شرکت مجاہہدین کے خلاف فوجی محاصروں میں فوج پر سنگ باری اور دوران معرک مجاہدین کے ساتہہ اظہارِ یکجہتی پر ترانوں کی گونج سے صاف ظاہرہوا ک کشمیر کی حریت پسند عوام ظلم و جبر دہہونس و دباو سے دبنے والی قوم نہیں ہے اگر اس حقیقت کے باوجود بی بھارتی حکمران کی آنکھیں نھیں کھلے گی تو بھارت کا حشر وہی ھوگا جو روس کا افغانستان میں ہوا
X
3/4/2016
مسلم دینی محاذ نے شہدائے ترال محمد اسحاق پرے المعروف "نیوٹن" ,عاشق حسین بٹ اور محمد آصف میر کو شاندار خراج عقیدت پیش کیا.محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے کہا کہ ہر گزرتے دن کے ساتھ ساتھ یہ شہدا ہندوستان کی غلامی کی زنجیروں کو اپنے گرم گرم لہو سے پگھلا رہے ہیں جس کے لئے پوری قوم مرہونِ منت ہے.بٹ صاحب نے تفصیلی خبر
مسلم دینی محاذ نے شہدائے ترال محمد اسحاق پرے
3/4/2016

مسلم دینی محاذ نے شہدائے ترال محمد اسحاق پرے المعروف "نیوٹن" ,عاشق حسین بٹ اور محمد آصف میر کو شاندار خراج عقیدت پیش کیا.محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے کہا کہ ہر گزرتے دن کے ساتھ ساتھ یہ شہدا ہندوستان کی غلامی کی زنجیروں کو اپنے گرم گرم لہو سے پگھلا رہے ہیں جس کے لئے پوری قوم مرہونِ منت ہے.بٹ صاحب نے کہا کہ اگرچہ یہ نوجوان بھی اپنی صلاحیتوں سے دنیاوی عیش و عشرت اور مال و متاع حاصل کرسکتے تھے مگران محسنوں نے اپنا مستقبل ہمارے کل کے لئے قربان کر کے پوری قوم کے کندھوں پر بارِگراں چھوڑ گئے اب یہ قوم پرمنحصر ہے کہ وہ کس طرح اس مقدس لہو کی حفاظت کرے گی. کیا قوم بوقتِ جنازہ "شہدا کے وارث, زندہ ہے" کے فلک شگاف اور جزباتی نعرے دے کر اور ان کے کفن دفن کے ساتھ ہی بھول جانے کی پرانی روش پر چلے گی ؟ یا قوم ذہنی شعور کے ساتھ ان کے مشن کی آبیاری اور پائے تکمیل تک پہنچانے کے لئے جہد مسلسل کا وطیرہ اپنائے گی کیونکہ تاریخ کشمیر گواہ ہے کہ سوئی ہوئی قوم کو جگانے میں خونِ شہیداں کی چھینٹوں نے اہم اور تاریخی رول ادا کیا ہے. دریں اثنا محاذ کے حافظ نثار احمد اور احتشام الحق صاحب نے ترال جاکرتینوں شہدا کو زبردست الفاظ میں خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے عوام بالخصوص نوجوانوں سے اپیل کی کہ وہ قرآن وسنت کی رسی کو مضبوطی سے تھامیں کیونکہ اسی میں ہماری فتح و نصرت کا راز پنہاں ہے
X
3/2/2016
The mediocre politicians of Pakistan,have provided pretexts to internal and external enemies of the country to destroy Pakistan ,by hanging Mumtaz Qadri,the assasin of the former politician Salman Taseer . The country is yet to recover from the ramifications of a similar decision of Mushharaf when he ordered an at More
The mediocre politicians of Pakistan
3/2/2016 12:00:00 AM
The mediocre politicians of Pakistan,have provided pretexts to internal and external enemies of the country to destroy Pakistan ,by hanging Mumtaz Qadri,the assasin of the former politician Salman Taseer . The country is yet to recover from the ramifications of a similar decision of Mushharaf when he ordered an attack on Lal Masjid. Once again the Jews,Hindus and Christians have got a pretext by this hanging to exploit the sentiments of the people of Pakistan and instigate violence in the country . We strongly and clearly condemn the decision of Pakistan government of Hanging Mumtaz but we alert the muslims of Jammu Kashmir to remain vigilant from the Indian stooges in Kashmir and other non religious nationalist who will use this garb for anti Pakistan propaganda. We request the muslims and youth in particular to differentiate between the government of Pakistan and the state of Pakistan . The ideology of Pakistan is different and the rulers their are different . Among the 57 Islamic countries only Pakistan enjoys a political, geographical ,military and ideological significance. Even The biggest opponent of the creation of Pakistan in the subcontinent Maulana Hussain Ahmad Madni after its creation prayed for the stability of it and was always concerned for its welfare. Pakistan is a mosque whose protection is a responsibility on the entire Ummah. If some mediocre and undeserving people get authority of the mosque they can be changed through peacefull means and The leadership can be handed over to pious people.

پاکستان کے سابق سیاست کار سلمان تاثیر کے قاتل ممتاز قادری کو پھانسی دے کر پاکستان کے نا اہل حکومت نے صرف پاکستان دشمن ممالک اور اندرون پاکستان کام کر رہے ان کے آلہ کاروں کو پاکستان کو تباہ کرنے کے اسباب فراہم کئے ہیں۔لال مسجد پر چڑھائی کرنے کے مشرف کے ایسے ہی غلط فیصلے کی قیمت آج تک ملت پاکستان چکا رہی ہے۔ایک بار پھر یہود،ہنود اور نصاری ممتاز قادری کو پھانسی دئے جانے کے پاکستانی حکومت کے فیصلے کی آڑ میں ملت پاکستان میں لوگوں کے جذبات کا استحصال کر کے ان کو ملک میں تشدد بھڑکانے کیلئے آمادہ کر سکتے ہیں۔ ہم واضح اور سخت الفاظ میں ممتاز قادری کو پھانسی دئے جانے کے حکومت پاکستان کے فیصلے کی مذمت کرتے ہیں مگر ساتھ ہی ہم ملت اسلامیہ کشمیر کو یہاں کے بھارتی آلہ کاروں اور بے دین قوم پرستوں کے پاکستان مخالف پروپیگنڈا سے خبردار رہنے کی اپیل کرتے ہیں۔ہم ملت اسلامیہ با لخصوص نوجوانان ملت سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ حکومت پاکستان اور ریاست پاکستان میں تمیز کریں،نظریہ پاکستان الگ چیز ہے اور حکمرانوں کی بے دینی الگ چیز ہے۔57 اسلامی ممالک میں پاکستان کو ہی سیاسی ،جغرافیائی،فوجی اور نظریاتی اہمیت ایک مسلمہ بات ہے۔ برصغیر میں قیام پاکستان کے سب سے بڑے مخالف مولانا حسین احمد مدنی بھی قیام پاکستان کے بعد پاکستان کو مسجد مانتے تھے اور ہمیشہ اسکی سلامتی کیلئے متفکر رہے ۔پاکستان مسجد ہے جسکی حفاظت اور سلامتی امت مسلمہ پر فرض ہے اگر مسجد پر نا اہل اور بے غیرت لوگ مسلط ہوئے ہیں تو ان کو پر امن ذرائع سے تبدیل کر کے صالح لوگوں کو امامت سونپی جاسکتی ہے۔
X
2/27/2016
Muslim deeni mahaz has condemned the arrest of khalid Basir the Ameeri zillah Pulwama of MDM by Kakapora police . The spokesperson said that the arrest and pressure tactics won't break out resolve. He said that the arrests are a part of our struggle . It only proves that the opressors knows who are the people that More
Condemned the arrest of khalid Basir the Ameeri zillah Pulwama
2/27/2016
Muslim deeni mahaz has condemned the arrest of khalid Basir the Ameeri zillah Pulwama of MDM by Kakapora police . The spokesperson said that the arrest and pressure tactics won't break out resolve. He said that the arrests are a part of our struggle . It only proves that the opressors knows who are the people that are standing up against it. The spokesperson said that MDM will continue its activities with full vigour

X
2/26/2016
The Indian rulers in Jammu Kashmir are promoting Hindi language here at the cost of Urdu language. This is a very concerning matter. By promoting Hindi in the younger generation especially students Indian rulers and it's local stooges aim to achive three things: 1. To cut off the new generation from the Islamic t More
Promoting Hindi language here at the cost of Urdu language.
2/26/2016 12:00:00 AM
The Indian rulers in Jammu Kashmir are promoting Hindi language here at the cost of Urdu language. This is a very concerning matter. By promoting Hindi in the younger generation especially students Indian rulers and it's local stooges aim to achive three things: 1. To cut off the new generation from the Islamic teachings,history and culture and to depreive the muslims from their knowledge and literary resource. 2. To break the linguistic unity between Jammu Kashmir and the people of Pakistan so that the Linguistic unity among jammu kashmir is broken and the case for accesion with Pakistan is weakened. 3. Jammu Kashmir is linked to India linguistically through hindi. Language is not only a mean to communicate it is the basic constituent of the religion,history,culture and identity of any nation and people. Side Indian rulers work on the ideology of trinity (Hindi,hindu and hindustan) Since hindi language is the basis of the Hindu identity and hindu culture therefore it cant be seen in isolation from Hinduism. Islam does not put restrictions of learning a new language but the Indian rulers are promoting Hindi in order to curb Islam and muslims and to promote hindu culture in Jammu Kashmir. Therefore it is essential to remain aloof from hindi. The hatred for Urdu in the hearts of Indian rulers is not something hidden. Even Mohandas Gandhi had declined to accept Urdu as national language. Citing that it's script was arabic and thus Islamic. Indian rulers used this linguistic hatred to separate eastern and western Pakistan . They preached hatred of urdu to Bengali nationalists in order to divide Pakistan. We request the scholars and intelligentsia to come forward and work to protect Urdu in the state. They can form forums to protect urdu. The people at the helm of affairs in private schools are requested to promote Urdu thoroughly . Indian rulers have adopted the tactics that erstwhile British used against Persian in Sub continent. We request scholars,intelligentsia and pro freedom people to make people aware about this linguistic agression.

کشمیر میں بھارتی حکمران ہندی زبان کو ترویج اور فروغ دیکر جسطرح اردو زبان کو ختم کر رہے ہیں یہ صورتحال انتہائی تشویشناک ہے۔نئی نسل بالخصوص طلبہ و طالبات میں ہندی زبان کوفروغ دیکر بھارتی حکمران اور ان کے مقامی آلہ کار تین طرح کے مقاصد حاصل کرنا چاہتے ہیں۔(1 )نئی نسل کا تعلق اسلامی تعلیمات، تاریخ،اور تہذیب سے ختم کیا جائے اور ملت اسلامیہ کے علمی اور ادبی اثاثوں سے ان کو محروم کیا جائے۔(2 )جموں کشمیر اور اہل پاکستان کے درمیان موجودہ لسانی یگانگت کو ختم کر کے یہاں موجودہ نظریہ الحاق پاکستان کو کمزور کیا جائے ۔(3 ) ہندی کے ذریعے جموں کشمیر کو لسانی طور بھارت کے ساتھ جوڑنے کی کوشش کی جائے۔ زبان صرف بول چال کا ذریعہ ہی نہیں بلکہ کسی بھی ملت اور قوم کے مذہب،تاریخ، تہذیب اور تشخیص کی بنیادی علامت ہوتی ہے ۔چونکہ بھارتی حکومت نظریہ تثلیث (ہندی،ہندو اور ہندوستان )کیلئے کام کر رہی ہے اور ہندی زبان چونکہ ہندو شناخت اور ہندو تہذیب کا بنیادی عنصر ہے اس لئے ہندی زبان کو ہندو ازم سے الگ کر کے نہیں دیکھا جاسکتا ہے۔اسلام کسی زبان کے سیکھنے پر پابندی عائد نہیں کرتا مگر بھارتی حکمران چونکہ اسلام اور مسلمان دشمنی اور کشمیر میں ہندو تہذیب کو فروغ دینے اور اردو زبان کو یہاں ختم کرنے کیلئے ہندی زبان کو فروغ سے رہی یے۔اس لئے ہندی زبان سے اجتناب ضروری ہے۔ بھارتی حکمرانوں کی اردو دشمنی کوئی ڈھکی چھپی بات نہیں ہے موہن داس گاندھی نے بھی اردو کے عربی رسم جب کو اسلامی عدم خط قرار دے کر اردو کو ہندی کے ساتھ بھارت کی قومی زبان قرار رہنے سے انکار کر دیا تھا۔بھارتی حکمرانوں نے مشرقی پاکستان کو مغربی پاکستان سے الگ کرنے کیلئے مشرقی پاکستان میں اردو دشمنی کیلئے مقامی بنگالی قوم پرستوں کے ساتھ فضا تیار کی جس کی وجہ سے پاکستان دو لخت ہوگیا۔ ہم جموں کشمیر کے اہل علم و ادب سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ جموں کشمیر میں اردو کے تحفظ کیلئے 'انجمن تحفظ اردو' کا قیام عمل میں لائیں اور ساتھ ہی ہم غیر سرکاری اسکولوں کے منتظمین سے بھی گزارش کرتے ہیں کہ وہ بچوں اردو کے بجائے ہندی پڑھا کر بھارتی خاکوں میں رنگ بھرنے سے اجتناب کریں۔ہم والدین سے بھی ملتمس ہیں کہ وہ بچوں کو ہندی بولنےسے منع کریں۔بھارتی حکمران جموں کشمیر میں اردو کے ساتھ وہی کچھ کر رہے ہیں جو انگریز حکمرانوں نے اپنے دور اقتدار میں بر صغیر میں فارسی زبان کے ساتھ کیا تھا۔ہم اہل علم و ادب اور حریت پسندوں سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ بھارت کی اس لسانی جارحیت کے متعلق عوام کو آگاہ کریں۔
X
2/24/2016
Muslim deeni mahaz has expressed deep concern over the communal flare up against muslims in Jammu region. The ameer of Jammu province Maulana nisar Ahmad said that for long the muslims in Jammu have been harassed under different pretexts. Minor skirmishes between muslims and hindus are being fanned into communal t More
Concern over the communal flare up against muslims in Jammu region.
2/24/2016
Muslim deeni mahaz has expressed deep concern over the communal flare up against muslims in Jammu region. The ameer of Jammu province Maulana nisar Ahmad said that for long the muslims in Jammu have been harassed under different pretexts. Minor skirmishes between muslims and hindus are being fanned into communal tensions so that muslims feel insecure so that They migrate or be massacred as was done in the past. The incident of Sarod Kathua is a part of this vicious plan. Non state subjects in the area have been provided fake domicile certificates. Criminals are being settled in the name of refugees while as the original residents are being harrased and their properties destroyed. The muslims in Sarod Kathua have been subjected to worst state repression . He expressed solidarity with the affected families . He also expressed sympathy with the family of Muhammad Yaqoob Khan and said that the real solution to all these problems lies in ending The illegal Indian occupation and muslims should fight against this occupation as a United front.

مسلم دینی محاذ نے جموں خطے میں فرقہ پرست عناصر کی مسلمانوں کے خلاف جاری مسلسل اشتعال انگیز کارروائیوں پر تشویش کا اظہار کیا ہے محاذ کے امیر صوبہ جموں مولانا شیخ نثار احمد نے کہا ہے کہ گزشتہ کئی سال سے جموں کے مسلمانوں کو مختلف حیلوں و بہانوں سے خوفزدہ کیا جارہا ہے ہندو و مسلمانوں کے درمیان معمولی نزع کو بھی فرقہ وارانہ رنگ دیکر منظم و منصوبہ بند طریقے سے مسلمانوں کو عدم تحفظ کا شدید احساس دلایا جارہا ہے تاکہ وہ ذہنی طور ہجرت یا ماضی کی طرح مولی گاجر کی طرح کٹ مرنے کے لئے تیار رہیں سروڑ کٹهوعہ کا سانحہ بھی اس سازش کا حصہ ہے مخالف فرقے کے غیر ریاستی باشندوں کو جعلی پشتنی اسناد فراہم کر کے جموں میں بسایا جارہا ہے انسانیت کا رونا رو رو کر غیر ملکی شرنارتهوں کے نام پر پیشہ ور مجرموں کو بھی ملکیت و جائیداد کی فراہمی کی سازشیں عمل میں لائی جارہی ہیں جبکہ حقیقی مالکان کی ملکیت و جائیدادیں مختلف مذموم حربوں سے مسمار و تباہ کی جارہی ہیں سروڑ کٹهوعہ کے مظلوم مسلمانوں پر جو ظلم و ستم اور جبر و تشدد کیا گیا وہ بدترین سرکاری دہشت گردی اور انتقام گیری ہے انہوں نے متاثر کنبوں کے ساتھ ہمدردی جبکہ محمد یعقوب خان کے لواحقین کے ساتھ یکجہتی و تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان تمام مسائل کا حل بھارتی فوجی تسلط سے مکمل آزادی میں مضمر ہے اس لئے اسلامیان جموں کو آزادی کے حصول کی خاطر یکسوئی سے جدوجہد میں شامل ہونا چاہیے
X
2/23/2016
Muslim deeni mahaz has paid glorious tributes to the mujahideen who attained martyrdom in the historic battle at pampore. The spokesperson said that the bravery shown by these mujahideen against the Indian army and commandos refreshed the memories of the earliest battles of Islam and gave a new impetus to the Jiha More
Glorious tributes to the mujahideen who attained martyrdom in the historic battle at pampore
2/23/2016
Muslim deeni mahaz has paid glorious tributes to the mujahideen who attained martyrdom in the historic battle at pampore. The spokesperson said that the bravery shown by these mujahideen against the Indian army and commandos refreshed the memories of the earliest battles of Islam and gave a new impetus to the Jihad. The General secrerary Muhammad Maqbool Bhat said that through this exemplary fidayeen mission these mujahideen have a clear message that the worldly benefits and luxuries seldom matter to them and that prefer martyrdom for the cause of Khilafat e Islami . They replied to the cells of mother by saying that we will meet in jannah . Every mother will prefer to meet her mujahid son in the Jannah. Saluting the bravery shown by people of pampore and adjoining areas he said that when mujahideen are fighting the kuffar and the youth are raising the slogans for Islam and the elderly are praying to Allah,the divine help is emminent. After which the weapons of the kuffar are blunted and the episode of Abraha is repeated. He said that the land that has been areated by the blood of the martyrs calls for Khilafat e Islamiya and it is the duty of those paying homage to them that they strive for their cause.Insha Allah divine help will come to them if they are steadfast.

مسلم دینی محاذ نے پانپور کے طویل معرکے میں شہادت کا ارفع و عالی مقام پانے والے شہدائے اعظام کو شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان شہداء نے جس شجاعت و پامردی سے بھارتی فوج اور اس کے خصوصی کمانڈو دستوں کو ناکوں چنے چبوائے اس نے قرون اولی کے مجاہدین کی یاد ذہنوں میں تازہ کر کے جہادی جذبوں کو نئی جلاء عطاء کی ہے - محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے کہا ہے کہ مجاہدین نے بے مثال فدائی حملے کے ذریعے سے واضع پیغام دیا ہے کہ ان کے سامنے دنیاوی " مال و متاع " یا " رشتوں و ناطوں " کے بجائے " اقامت خلافت " یا "جام شہادت " کو فوقیت و ترجیح حاصل ہے - " موج چهی ژانڈان " (ماں بلارہی ہے ) کی شاطرانہ و للچاتی بھارتی پکار کا جواب جواب " در جنت چهسی پیاران " (میں جنت میں منتظر ہوں ) سے دے کر مجاہدین نے بھارت کے اس حربے کو بھی ناکام و نامراد بنا دیا - کیونکہ اب ہر مجاہد کی ماں اپنے جگر گوشے سے اس فانی دنیا کے بجائے ہمیشہ رہنے والے نعمتوں سے بھرے جنت میں ملاقی ہونا چاہے گی - بپانپور اور اس کے ملحقہ علاقوں کے عوام کے جذبوں کو سلام و خراج تحسین پیش کرتے ہوئے بٹ صاحب نے کہا کہ مجاہدین کفار و منافقین سے نبرد آزما ہوں اور نوجوان تکبیر کے نعروں و جہادی نغموں سے ان کا حوصلہ بڑھانے میں مصروف ہوں اور بزرگ و خواتین ان کے لءے اللہ کے حضور دست بدعا ہوں اللہ کی تائید و نصرت کو ان ہی حالات و مناظر کا انتظار ہوتا ہے - جس کے حصول کے بعد غاصبوں کا دنیاوی طاقت و فوجی ساز و سامان کسی بهی کام کا نہیں رہتا اور وہ ابرہہ کے افواج کی مانند ابابیل کے ذریعے سے بھی صحفہ ہستی سے ہی مٹ جاتے ہیں - انہوں نے کہا کہ جس سر زمین کو شہداء اپنے مقدس لہو سے سیراب کر رہے ہیں اس پر اللہ کا نظام قائم کرنا اس کے باشندوں خصوصی طور ان کے جنازوں میں شرکت کرنے اور ان کو خراج عقیدت پیش کرنے والوں پر قرض و فرض ہے اس لئے انہیں اس کی ادائیگی کے لئے نہ ہی شرمندگی محسوس کرنی چاہئے نہ ہی کوئی خوف و ڈر - بلکہ اللہ کی نصرت کے بھروسے پر اس مشن کی تکمیل کے لئے کمر بستہ ہو نا چاہیے
X
2/19/2016
Pakistani people should understand that if Pakistan backtracks from the Kashmir Issue,as is evident from the various feelers from the Pakistani government and that has been clearly put forth by former Pakistani Foriegn Minister Khurshid Mehmood Kasuri in his book Neither Hawk Nor Dove. He writes that independence More
Pakistani people should understand that if Pakistan backtracks from the Kashmir Issue..
2/19/2016 12:00:00 AM
Pakistani people should understand that if Pakistan backtracks from the Kashmir Issue,as is evident from the various feelers from the Pakistani government and that has been clearly put forth by former Pakistani Foriegn Minister Khurshid Mehmood Kasuri in his book Neither Hawk Nor Dove. He writes that independence of Kashmir is not possible and any solution to this problem will come forth from the Four point or the Chenab Formula. So that status quo is formalised as the final solution of the Kashmir imbroglio. After Kashmir the Indian rulers will lay hands on Khyber Pakhtoon Khwah, Balochistan and Sindh. Finally with the merger of Eastern and western Punjab the cherished dream of a unified greater India of the Indian leadership will be fullfilled. Indian rulers never accepted Pakistan from their heart and even today that publicly declare their wish of dismembering Pakistan and creating a unified greater India. On the other hand Pakistani rulers right from 1947 are knowingly or unknowingly becoming a tool to these Indian designs. In 1947,right after the death of Qaid Azam, Pakistan did not carry out a declared effective action for Kashmir and neither it tried to transfer the resolutions of UN regarding Kashmir from the Chapter 6 to Chapter 7 of the UN charter. Afterwards in February 1948 India annexed the Pakistani state of Junagadh but Pakistan remained a mute spectator. India annexed Hyderabad and Pakistan remained unmoved. Pakistan didn't even plea for the already put forth resolutions of these two states before the UN. In 1971 Pakistan was bifurcated but Pakistan failed in even trying to create a world opinion about this Indian aggression. In 1981 the Indian plans of carving out a Pashtunistan through Afghan ruler Dawar Khan was reacted to by Pakistan as well. In 1981 India made attempts to destroy the nuclear establishment of Pakistan but Pakistan remained quite. Even now India is supporting Tehreek Taliban and Balooch terrorist organisations and pakistan is behaving as a mute spectator. We ask the Pakistani people,will they remain quite over the Indian designs of dimembering Pakistan and creating a unified Bharat? Or will they fullfill their reponsibilities in protecting the ideological and geographical boundaries of Pakistan and the first step in this responsibility is liberate Kashmir from India. The creator of the term Pakistan chaudry Rehmat Ali meant Kashmir by the K in the name Pakistan. Backtracking from the freedom movement of Kashmir is in fact withdrawing from the ideological idea of Pakistan and a deciept to the Kashmir policy of the Qaid e Azam.

ہم یہ بات اہل پاکستان پر واضح کرنا چاہتے ہیں کہ اگر حکومت پاکستان تحریک آزادی کشمیر سے دستبردار ہوتی ہے جسطرح ایک کے بعد ایک عندیے حکومت پاکستان کی طرف سے مل رہے ہیں اور جس کی ناقابل تردید شہادت پاکستان کے سابق وزیر خارجہ خورشید محمود قصوری کی کتاب Neither Hawk Nor Dove ہے جس میں واضح اور غیر مبہم الفاظ میں یہ بات کہی گئی ہے کہ کشمیر کی آزادی ممکن نہیں ہے اور اب صرف چار نکاتی یا چناب فارمولہ پر کام کیا جاسکتا ہے تاکہ status quo کی تبدیلی کے ساتھ مسئلہ کشمیر کو ہمیشہ کیلئے حل کیا جا سکے۔کشمیر کے بعد بھارتی حکمران خیبر پختون خواہ کو اس کے بعد بلوچستان کو پھر سندھ کو پاکستان سے الگ کرنے کی کوششیں تیز کریں گے اور پھر آخر پر مشرقی پنجاب اور مغربی پنجاب کو ملا کر بھارتی حکمران اپنا اکھنڈ بھارت کا خواب پورا کریں گے ۔ بھارتی حکمرانوں نے پاکستان کو کبھی قبول نہیں کیا ہے وہ آج بھی اعلانیہ طور پاکستان کو توڑنے اور اکھنڈ بھارت کو قائم کرنے کیلئے کام کر رہے ہیں دوسری طرف پاکستان کے حمکران 1947 سے ہی بھارتی عزائم کے شعوری یا غیر شعوری طور معاون بن رہے ہیں۔ 1947 میں پاکستان نے (قائد اعظم کی وفات کے بعد ) کشمیر کے بارے میں اعلانیہ طور موثر کاروائی نہیں کی اور نہ ہی کشمیر کے تئیں UN کی قراردادوں کو UN چارٹر کے چیپٹر 6 کے بجائے چیپٹر 7 میں درج کراسکے۔پھر فروری 1948 میں پاکستان کی ریاست جوناگڑھ پر بھارتی قبضہ کے متعلق خاموشی اختیار کی گئی. اس کے بعد 1948 میں حیدر آباد پر بھارتی قبضہ کیخلاف بھی کچھ نہیں کیا گیا۔ اور نہ ہی ان دوریاستوں کے متعلق UNO میں موجود درخواستوں کی موثر طور پیروی کی گئی۔1971 میں پاکستان کو دو لخت کرنے کی بھارتی کارروائی کے خلاف بھی عالمی رائے عامہ منظم کرنے کی کوشش نہیں ہوئی۔1981 تک افغان حکمران داور خان کے ذریعہ پشتونستان کے نام پر خیبر پختون خواہ کو پاکستان سے الگ کرنے کی بھارتی کاوشوں کا موثر جواب نہیں دیا گیا۔1981 میں حکومت بھارت کی طرف سے پاکستان کی نیوکلیائی تنصیبات کو تباہ کرنے کے پروگرام پر بھی خاموشی اختیار کی گئی اور اس وقت تحریک طالبان اور بلوچ دہشتگرد جماعتوں کی بھارتی حمایت اور اعانت پر بھی حکومت پاکستان حسب روایت تماشائی بنی ہوئی ہے۔ ہم اہل پاکستان سے پوچھتے ہیں کیا وہ پاکستان کو توڑنے اور اکھنڈ بھارت میں شامل کرنے کے بھارتی حکمرانوں کے اعلانات اور عزائم پر خاموش ہی رہیں گے؟ یا پھر پاکستان کی نظریاتی اور جغرافیائی سرحدوں کی حفاظت کیلئے اپنی ذمہ داری نبھائیں گے اور اس ذمہ داری کی پہلی ترجیح کشمیر کی بھارت سے آزادی ہے مصور پاکستان مرحوم چودھری رحمت علی نے پاکستان نام میں 'ک'کشمیر کیلئے شامل کیا ہے۔ اور تحریک آزادئ کشمیر سے دستبرداری در اصل نظریہ پاکستان سے دستبرداری اور قائد اعظم کے کشمیر موقف سے انحراف ہے۔
X
2/14/2016
This organised genocide of kashmiri muslims by indian forces should be dealt by proactive resistance movement with long term strategy .The people who are ready to give such sacrifices can't be held enslaved for long. It was a cold blooded masacre and a single day strike can't be a response to this brutality. The l More
Genocide of kashmiri muslims by indian forces
2/14/2016 12:00:00 AM
This organised genocide of kashmiri muslims by indian forces should be dealt by proactive resistance movement with long term strategy .The people who are ready to give such sacrifices can't be held enslaved for long. It was a cold blooded masacre and a single day strike can't be a response to this brutality. The leadership should ponder over a proactive and prompt response to this barbaric act.

پلوامہ قتل عام کی جتنی مذمت کی جائے کم ہے ۔ اس کے خلاف دور رد اقدامی مزاحمت کی اشد ضرورت ہے ۔ جو قوم ایسی قربانیاں دینے کیلئے تیار ہے ان کو زیادہ دیر غلام نہیں بنایا جاسکتا۔یہ قتل عام ایک سوچے سمجھے منصوبہ کے تحت کیا گیا اور یک روزہ پڑتال اس کا جواب نہیں ہوسکتی۔ قیادت کو غور کرنا چاہئے اور اقدامی اور موثر مزاحمت کا راستہ اختیار کرنا چاہئے
X
2/7/2016
Muslim deeni mahaz has played glowing tributes to Raqib Bashir. A delegation of MDM comprising of Mufti Nadeem and Khalid Bashir visited Zadoora pulwama where they paid condolences to the family of the martyr. They said that the martyr have up a government job to join jihad. This is a lesson for the people who sel More
Glowing tributes to Raqib Bashir
2/7/2016
Muslim deeni mahaz has played glowing tributes to Raqib Bashir. A delegation of MDM comprising of Mufti Nadeem and Khalid Bashir visited Zadoora pulwama where they paid condolences to the family of the martyr. They said that the martyr have up a government job to join jihad. This is a lesson for the people who sell their conscience for petty benefits. They said that martyrs never die and are placed at the highest levels of Janah. Meanwhile the spokes person condemned the slapping of PSA on a Kashmir university student muzzafar ahmad Mir s/o late Ghulam Ahmad mir resident of Kangan he has been lodged to Kathua jail. Muzaffar was arrested on 13th November 2015 when he was heading towards university. Eversince her widowed mother kept visiting police and administration but Muzzafar was not released

مسلم دینی محاذ نے شہید سید راقب بشیر کو شاندار خراج عقیدت پیش کیا ہے ۔محاذ کے سر کردہ رہنمامفتی محمد ندیم خالد بشیر ایک وفد کے ہمراہ جڈورہ پلوامہ گئے جہاںانہوں نے شہید راقب بشیر کے لواحقین کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا اس موقعے پر انہوں نے کہا کہ شہید نے جس طرح سرکاری ملازمت کو خیر باد کہہ کر جہاد کا راستہ اختیار کیا تھا وہ ان لوگوں کے لئے ایک سبق ہے جو اپنا ضمیر بیچ کر سرکاری ملازمت حتٰی کہ پولیس کی نوکری اختیار کرنے پر آمادہ رہتے ہیں انہوں نے کہا کہ شہید کبھی مرتا نہیں بلکہ موت کا سامنا کئے بغیر جنت میں اعلٰی و ارفع مقام پانے کا نام شہادت ہے ۔جو صرف پاک و سعید ارواح کو ہی حاصل ہوتا ہیں اور شہید سید راقب ان ہی میں سے ایک تھا۔دریں اثناءمحاذ کے ترجمان نے کشمیر یونیورسٹی کے ایک طالب علم مظفر احمد میر ولد مرحوم غلام احمد میربرنہ بگ کنگن کو بدنام زمانہ پبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت کٹھوعہ جیل منتقل کرنے کو ریاستی دہشت گردی سے تعبیر کرتے ہوئے کہا ہے کہ مظفر احمد میر کو ۳۱نومبر ۵۱۰۲کو یونیورسٹی سے گھر جاتے ہوئے گرفتارکیا گیا تب سے ان کی بیوہ ماں کو انتظامیہ و پولیس اب تک ٹال مٹول کرکے ذہنی درد و کرب میں مبتلا کر تی رہی اور اب اسے پی ایس اے کے تحت کٹھوعہ جیل منتقل کیا گیا جو کہ سراسر ظلم و زیادتی ہے
X
2/6/2016
Muslim deeni mahaz has condemned the arrest spree of pro freedom leaders and volunteers in Kashmir and Chinab region. The spokesperson said that such tactics won't break the resolve of the freedom movement. The general secratary of MDM Muhammad Maqbool Bhat said that the Jammu region Maulana Nisar Ahmad was arr More
Condemned the arrest spree of pro freedom leaders and volunteers......
2/6/2016
Muslim deeni mahaz has condemned the arrest spree of pro freedom leaders and volunteers in Kashmir and Chinab region. The spokesperson said that such tactics won't break the resolve of the freedom movement. The general secratary of MDM Muhammad Maqbool Bhat said that the Jammu region Maulana Nisar Ahmad was arrested just because he was distributing pamphlets inconnection with the completion of 23 years of Dr Qasim's incarceration. Though distribution of these pamphelets is miniscule in comparison to the resistance to the Indian hegemony but even this is not allowed by India.Bhat sahib also condemned the lodging of Ameer Hamza in Kathua jail. He condemned the arrest spree in downtown,Ganderbal,Naina pulwama and arwani and said that these tactics won't break the resolve of the freedom loving people and it will only increase the hate in people towards India.

مسلم دینی محاذ نے وادی کے اطراف و اکناف اور چناب خطے میں تحریک آزادی کے قائیدین و کارکنان کی ہوئی گرفتاریوں کو مذموم قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ ان حربوں سے انہیں مرعوب نہیں کیا جاسکتاہے۔محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے کہا ہے کہ محاذ کے امیر صوبہ جموں مولانا شیخ نثار احمد کو صرف اس وجہ سے گرفتار کیا گیا کہ چناب خطے میں محاذکے امیر ڈاکٹر محمد قاسم کی اسیری کے تیئیس سال مکمل ہونے پر انکے کیس سے متعلق ایک پمفلٹ تقسیم کیا گیا جس میں ان کے بارے میں عدالتی فیصلوں کے بارے میں قانونی ماہرین کا تنقیدی جائزہ پیش کیا گیا ہے بھارت کو قابض و غاصب اور دین و ملت کا دشمن قرار دیکر اس کے خلاف جدوجہد کرنے کے مقابلے میں اس پمفلٹ کی تقسیم کاری کچھ بھی نہیں۔مگرقابض انتظامیہ نے اسی کو بنیاد بنا کر امیر صوبہ کو گرفتار کر لیا جو کہ مضحکہ خیز اور بوکھلاہٹ کی انتہاءہے۔بٹ صاحب نے تحریک حریت کے راہنماءامیر حمزہ کو کٹھوعہ جیل منتقل کرنے، شہر خاص گاندربل،نائن پلوامہ اور آرونی سمیت دیگر علاقوں میں نوجوانوں کی گرفتاری کو اسلام و آزادی کے جذبوں کو کچلنے کی ناکام کوشش قرار دیتے ہوئے کہاکہ اس سے بھارت کو ماضی کی طرح رسوائی اور عوامی نفرت کے سوا اور کچھ حاصل نہیں ہوگا۔
X
2/5/2016
Muslim deeni mahaz has paid glowing tributes to the mujahideen martyred in Hajin Bandipora. The spokesperson of MDM said that there youth have up their nears and dears,their land and worldly luxuries just to wage jihad for liberating fellow muslims of Kashmir . They are out benefactors who laid down their lives fo More
Glowing tributes to the mujahideen martyred in Hajin Bandipora
2/5/2016
Muslim deeni mahaz has paid glowing tributes to the mujahideen martyred in Hajin Bandipora. The spokesperson of MDM said that there youth have up their nears and dears,their land and worldly luxuries just to wage jihad for liberating fellow muslims of Kashmir . They are out benefactors who laid down their lives for us a favour we can never repay them. From shaheed Dr Abdul Qadeer Khan to these martyrs these sacrifices are question marks on the faces of those people who consider India and Pakistan as similar occupiers for Kashmir. India has done massacres in every inch of Kashmir while as pakistani mujahideen have dropped their blood in every nook and corner of Kashmir along with the local mujahideen. The spokesperson also expressed gratefullness to Pakistani people in observing Kashmir Solidarity day.He said that unlike the neighbours of Palestine Pakistani mujahideen have played an imperative role innfightingvfor Kashmiri brethern. He thanked the people of Pakistan,Kashmir,journalists,columnists,and youth who expressed solidarity with Dr Qasim on completion of 23 years of his incarceration.

مسلم دینی محاذ نے حاجن بانڈی پورہ میں شہید ہوئے مہمان مجاہدین کو شاندار خراج عقیدت پیش کیا ہے محاذ کے ترجمان نے کہا ہے کہ اپنے عزیز و اقارب، وطن عزیز اور دنیاوی عیش و عشرت کو خیر باد کہنے والے یہ مہاجر مجاہدین ہمارے انصار و محسن ہیں جو ہماری آزادی و بہتر مستقبل کے لئے اپنی عزیز جانیں قربان کر رہے ہیں ہم ان کے اور ان کے پیاروں کے احسانات کبھی بھی بهلا نہیں سکتے -ڈاکٹر عبدالقدیر خان شہید سے لیکر ان تین مہمان مجاہدین کی شہادتیں ان عناصر کے لئے سوالیہ ہے جو غاصب بھارت اور محسن پاکستان کو ایک ہی ترازو میں رکھنے کے قائل ہیں بھارت نے جہاں جموں کشمیر کے چپے چپے پر ظلم و ستم، جبر و تشدد اور قتل و غارت کی خونین تاریخ دہرائی -وہاں وہاں مقامی سرفروش نوجوان و مجاہدین کے ساتھ ساتھ مہاجر مہمان مجاہدین نے شجاعت، بہادری اور شہادتوں کی مثالی داستانیں بھی رقم کیں -ترجمان نے آج "یوم یکجہتی کشمیر "منانے پر اسلامیان پاکستان کو مسلم دینی محاذ اور جموں کشمیر کے عوام کی طرف سے شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ پاکستانی عوام مظلوم فلسطینی عوام کے ہمساءیوں کے برعکس جموں کشمیر کے عوام و مجاہدین کے دینی و ہمسائیگی کے حقوق بحسن و خوبی نبهارہے ہیں جس کی انہیں نہ صرف ماضی بلکہ آج بھی بھاری قیمت چکانی پڑ رہی ہے -انہوں نے پاکستانی عوام، اسلامیان جموں کشمیر، دینی و مزاحمتی تنظیموں، صحافیوں و قلمکاروں اور نوجوانوں کا تہہ دل سے شکریہ ادا کیا جنہوں نے محاذ کے امیر ڈاکٹر محمد قاسم کی اسیری کے تءییس برس مکمل ہونے پر ان کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کر کے ان کے حوصلوں و عزم و استقلال کو سراہا -23
X
2/4/2016
Muslim deeni mahaz has paid glowing tributes to the steadfastness of its ameer Dr Muhammad Qasim on the completion of 23 years of his incarceration. The general Secretary of MDM Muhammad Maqbool Bhat said that the bravery and resolution shown by Dr Qasim is exemplary. He said that India and it's stooges consider D More
Dr Muhammad Qasim completes 23 years of his incarceration.
2/4/2016
Muslim deeni mahaz has paid glowing tributes to the steadfastness of its ameer Dr Muhammad Qasim on the completion of 23 years of his incarceration. The general Secretary of MDM Muhammad Maqbool Bhat said that the bravery and resolution shown by Dr Qasim is exemplary. He said that India and it's stooges consider Dr Qasim as a threat to the Indian occupation therefore he is languishing behind bars in a case in which TADA court Jammu released him citing insufficient evidence. But the Supreme court sentenced him to life in the basis of a mere confessional statement that too given in detention. Later life sentence in his case was out at 14 years then 20 and when he spent 20 years life sentence was defined as imprisonment till death by the high court thus closing all the doors of judicial remedy for him. Though at the time of sentencing the supreme court has said that his under trail period will be considered as a part of the sentence thus making it clear that supreme court did not want him to be in prison till death. Adressing the general masses he said that out hopes should rest with Allah therefore special prayers should be made all around after Friday prayers for Dr sahib and other kashmiris and Muslims suffering incarceration.

مسلم دینی محاذ نے ڈاکٹر محمد قاسم کی اسیری کے ۳۲ سال مکمل ہونے پر ان کی صبر و استقامت ، ہمت و عزیمت اور عزم و استقلال کو سلام و خراج تحسین پیش کیا ہے محاذ کے جنرل سیکریٹری محمد مقبول بٹ نے کہا ہے کہ بھا رتی حکمران اور مقامی بھارت نواز سیاستدان ان کے دینی و سیاسی نظریات کو اپنے غاصبانہ قبضے و اقتدار کے لئے خطرہ سمجھتے ہیں اس لئے انہیں ایک ایسے کیس میں انہیں عمر قید کی سزا دلوائی گئی۔ جس میں ٹا ڈاکورٹ جموں نے انہیں کسی ثبوت، گواہی و شہادت کی عدم مو جودگی کی وجہ سے با عزت بری کر دیا تھا۔اس فیصلے کو سپریم کورٹ میں حکومت کی طرف سے چلینج کرنے کے بعد دوران حراست زبردستی دستخط شدہ تحریری بیان کی بنیاد انہیں عمر قید کی سزا دلوادی گئی۔ بعد میں عمر قید کی تشریح کبھی ۴۱سال اور کبھی ۰۲ سال کی گئی۔ مگر ۰۲ سال مکمل ہونے پر اس کی تشریح ”تا حیات“ قید کرنے کے ساتھ ہی انکی رہائی کے تمام اپنے قانونی دروازے بند کئے گئے ۔ حالانکہ سپریم کورٹ نے انہیں عمر قید کی سزا میں کہا تھا۔ کہ ان کی گرفتاری سے لیکرفیصلے تک کا مدت و عرصہ عمر قید میں شامل رکھاجائے ۔جس کا مطلب صاف مطلب یہ کہ عمر قید سے اس وقت کورٹ کا مقصد ”تا حیات قید “ نہیں تھا۔ کیونکہ پھر ”گرفتاری سے لیکر فیصلے تک کے مدت “کا سزا میں شامل رکھنے کا مطلب ہی کیا تھا بٹ صاحب اسلامیان جموں کشمیر سے مخاطب ہو کر کہا کہ مسلم کی امیدیں دنیاوی حکمرانوں اور ان کی عدالتوں سے نہیں بلکہ اللہ وحدہ لا شریک سے وابستہ ہوتیں ہیں اس لئے اج جمعة المبارک کے مقدس موقعے پر اسلام و آزادی کے ساتھ ساتھ ڈاکٹر محمد قاسم اور تحریک آزادی کے دیگر نظر بندوں کے صبر و ثبات، صحت و سلامتی اور جلد رہائی کے لئے اللہ کے حضور خشوع و خضوع سے دعا مانگیں ۔
X
2/3/2016
Muslim deeni mahaz has imperated That the kashmiri freedom movement is not an accidental or mere emotional movement started at the behest of some external forces . The spokesperson said That this is an ideological movement is against the illegal and polytheistic Indian subjugation. He said that this movement has n More
Kashmiri freedom movement is ideological movement
2/3/2016
Muslim deeni mahaz has imperated That the kashmiri freedom movement is not an accidental or mere emotional movement started at the behest of some external forces . The spokesperson said That this is an ideological movement is against the illegal and polytheistic Indian subjugation. He said that this movement has now been handed over to the third generation who are not afraid of death and detentions,who are upfront against bullets and nooses . These youth can't be hoodwinked by the cries of autonomy ,self rule or pacts like Shimla and Tashkand. Islam and Freedom are present in their subconscious and even modern science hasnt created any such weapon that can snatch this passion away. The spokesperson condemned the fresh arrest spree in entire valley and said that it is a tactic to crush our movement but it will achieve nothing but a failure.

مسلم دینی محاذ نے کہا ہے کہ تحریک آزادی جموں کشمیر نہ کوئی جذباتی و حادثاتی تحریک ہے نہ ہی کسی کی شہ یا اکساہٹ پر شروع کی گئی ہے -محاذ کے ترجمان نے کہا ہے کہ تحریک آزادی جموں کشمیر بھارتی غاصبانہ و مشرکانہ قبضے کے خلاف شروع کی گئی ایمان و عقیدہ توحید کی بنیاد پر ایک فکری و نظریاتی تحریک ہے - انہوں نے کہا کہ موجودہ دور کی طویل ترین جدوجہد کی یہ تحریک اب تیسری نسل کو منتقل ہو چکی ہے -جو جیل و تعذیب، لاٹھی و گولی حتی کہ پھانسی کے پھندوں سے ڈرا نہیں کرتی - بلکہ یہ گولی کے سامنے اپنا سینہ سپر کرنے اور پھانسی کے پھندوں کو چومنے کی ہمت و حوصلہ رکھتی ہے اسے نہ کھوکھلے و جذباتی نعروں یا اٹانومی و سیلف رول کے کھلونوں سے بہکایا جاسکتا ہے اور نہ ہی تاشقند و شملہ جیسے بے ذو معنی معاہدوں سے گمراہ کیا جاسکتا ہے - اسلام و آزادی اس کے رگ و ریشے میں سرایت کر چکی ہے اور جدید سائنس بھی آج تک ایسا کوئی ہتھیار ایجاد نہیں کر سکی ہے جو کسی ملت و قوم کے جذبوں، آرزءوں اور تمناؤں کو کچل سکے - ترجمان نے وادی کے طول و عرض میں مختلف بہانوں سے ہورہی گرفتاریوں کو کو مذموم حربوں سے تعبیر کرتے ہوئے کہا ہے کہ قابض انتظامیہ دلی کے اشاروں پر عوام خصوصی طور پر نوجوانوں کے اسلام و آزادی کے جذبوں کو کچلنے کی کوشش کررہی ہے مگر ایسے ہتھکنڈوں سے بھارت کے خلاف نفرت و غیض و غضب میں اضافے کے سواء انہیں اور کچھ حاصل ہی نہیں ہوگا -جبکہ اسلام و آزادی کے جذبوں کو اور زیادہ تقویت حاصل ہوگی -
X
1/31/2016
Muslim deeni mahaz has paid glowing tributes to the mujahideen martyred in dardpora kupwara. The spokesperson said that the death of these guest mujahideen proves that kashmiri people are not alone in their struggle and entire ummah especially pakistan is with us. He said that no such place exists in Kashmir where More
Glowing tributes to the mujahideen martyred in dardpora kupwara.
1/31/2016
Muslim deeni mahaz has paid glowing tributes to the mujahideen martyred in dardpora kupwara. The spokesperson said that the death of these guest mujahideen proves that kashmiri people are not alone in their struggle and entire ummah especially pakistan is with us. He said that no such place exists in Kashmir where the blood of these guest mujahideen have not shed their pious blood. Saluting the pro freedom sentiment of the people of kupwara,he said the zeal shown by the people in the funeral of these mujahideen has dispelled the aprehensions that has been put forward by Mir Jaffars and Mir Sadiqs of our times that the people of this area have moved away from the movement. It is a good message to the local stooges of India that the people of kupwara have not forgotten the wounds of Kunan poshpora handwara and kupwara. There wounds can be healed by freedom from India and not by the stooges of India.

مسلم دینی محاذ نے شہدائے درد پورہ کپوارہ کو شاندار خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ مہمان مجاہدین کی شہادت اس بات کا ثبوت ہے کہ اسلامیان جموں کشمیر بھارت کے خلاف اسلام وآزادی کی جدوجہد میں تنہا و اکیلے نہیں بلکہ امت مسلمہ بالخصوص اسلامیان پاکستان ان کے شانہ بشانہ کھڑی ہے - محاذ کے ترجمان نے کہا ہے کہ جموں کشمیر کا کوئی بھی ایسا علاقہ ایسا نہیں ہے جہاں پر ہمارے محسن و عظیم مجاہدین کا مقدس و پاک لہو نہ گرا ہو - اور زمین اس سے سیراب و رنگین نہیں ہوئی ہو - اسلامیان کپوارہ کے جذبوں کو سراہتے ترجمان نے کہا کہ انہوں نے مہمان شہداء کے آخری سفر میں جس جوش و خروش اور والہانہ انداز میں شرکت کی اس سے کافی حد تک وہ خدشات غلط ثابت ہوئے کہ وہ وقت کے جعفر و صادق کے بہکاوے میں آکر تحریک سے دور ہورہے ہیں - ترجمان کے مطابق انہوں نے بھارت و اس کے مقامی آلہ کاروں کو یہ واضع پیغام دیا کہ کپوارہ کے غیور عوام کنن پوشہ پورہ، ہندوارہ اور کپوارہ کے دلدوزسانحوں کے زخم و درد کبھی بھی بھول نہیں پائیں گیں - ان کا زخموں کا مرہم وقت کے جعفر و صادق یا ان کے آقاؤں سے نہیں بلکہ اسلام و آزادی کی کامیابی و حصول سے ہی ممکن ہے اور اسلامیان کپوارہ اس مقدس جدوجہد میں اپنا حصہ ماضی کی طرح ادا کرتے رہیں گے -
X
1/28/2016
Besides Secularism and Nationalism, Muslims round the world are faced up with two major & dangerous deviations, Rationalism and Humanism. There two deviations are being propagated by anti Muslim nations,non governmental organisations and important personalities right from the time it was realised that no religion More
Muslims round the world are faced up with two major and dangerous deviations
1/28/2016 12:00:00 AM
Besides Secularism and Nationalism, Muslims round the world are faced up with two major & dangerous deviations, Rationalism and Humanism. There two deviations are being propagated by anti Muslim nations,non governmental organisations and important personalities right from the time it was realised that no religion whether divine or man-made can be projected as an alternative to Islam. Since all other religions besides islam lack universalism therfore they have shrunken to respective places of worship and the followers have underwent complete secularization. Therefore to tackle the universality and appeal of Islam Rationalism and Humanism are being propagated as world religions. These two deviant ideologies are spreading like wild fire and today 13.4 percent of the world population prefers to be identified as a rationalist instead of identifying by respective religion. They raise slogans like 'Be rational be human' as if religion is devoid of any morality and logic. Question can be asked doesn't Islam provide teachings regarding human values and logic benchmarks? Since Mankind started its life in this planet with Islam and Allah sent His apostles at various places and times to various people therefore it proves that all the human and moral values have their roots in Islam and in Islam there is no conflict between the ration and the revelation. Islam terms the five senses and the mind as sources to learn and revelation as a source of divine knowledge. These concepts didnot originate from Socrates,Plato and Aristotle neither did the English revolution (1689) French Revolution (1789) Geneva convention (1864) or the UNO (1945) introduce these concepts.Unfortunately in Jammu and Kashmir well read people are falling prey to these deviant ideologies. We appeal them to read and understand Quran in light of the history from Adam to present times and not just the past 1437 years.

عالم اسلام کو اس وقت سیکولرازم اور نیشنلزم کے علاوہ جن دو خطرناک ترین گہرائیوں کا سامنا ہے وہ humanism اور rationalism کی گمراہیوں ہیں۔یہ دو گمراہ کن نظریات اسلام دشمن ممالک جماعتوں اداروں اور شخصیات نے اس وقت سے پھیلانے شروع کئے جب ان کو معلوم ہوا کہ اسلام کے مقابلہ میں کسی الہامی یا انسان ساختہ مذہب کو کھڑا نہیں کیا جا سکتا ۔چونکہ اسلام کے سوا تمام مذاہب نہ تو تبلیغی ہے اور نہ ہی آفاقی۔اس لیئے وہ اب پوری طرح اپنی اپنی عبادت گاہوں میں قید ہوچکے ہیں اور ان کے منانے والوں کی مکمل secularisationہو چکی ہے۔ اسلئے اسلام کی آفاقیت،کاملیت اور تبلیغی روح کا مقابلہ کرنے کیلئےhumanism اور rationalism کو عالمی مذہب کے طور پر پیش کیا جارہا ہے. یہ دونوں گمراہ کن نظریات کس سرعت سے پھیل رہے ہیں اس کا اندازہ اس بات سے لگایا جاسکتا ہے کہ اس وقت دنیا کے 13.4 فیصد لوگ اپنے آپ کو کسی مذہب سے منسوب کرنے کے بجائےrationalist کہلانا پشند کرتے ہیں اور یہ نعرہ لگاتے ہیں 'Be Rational be Human' جیسے مذہب انسانی اقدار اور عقلی معیارات سے عاری ہو۔ سوال یہ ہے کہ کیا اسلام میں انسانی اقدار کی تعلیم اور عقلی معیارات کا لحاظ نہیں؟چونکہ انسان نے کرہ عرض پر اپنی زندگی کا آغاز اسلام کے ساتھ ہی کیا ہے اور اللہ تعالی نے ہر قوم کیطرف پیغمبر بھیجے ہیں جو اس بات کی شہادت ہے کہ دنیا میں رائج تمام انسانی و اخلاقی اقدار سے اصل اسلامی تعلیمات ہی ہے اور یہ کہ اسلام میں عقل اور وحی کے درمیاں کوئی تضاد نہیں بلکہ اسلام حواس خمسہ اور عقل کو حصول علم کے ذ رائع اور وحی کو علم کا الہامی زریعہ قرار دیتا ہے اس لئے بنی نوع انسان کو انسانی اقدار اور عقلی تقاضوں کو پورا کرنے کی تعلیم نہ تو سقراط،افلاطون اور ارسطو نے دی یے نہ ہی برطانوی انقلاب (1689 )فرانسیسی انقلاب(1789 ) جنیوا کنونشن (1864 )اور UNO ۔(1945 )نے لوگوں کو پہلی بار ان اقدار سے روشناس کرایا ہے۔ جموں کشمیر میں بدقسمتی سے سب سے زیادہ ان گمراہ نظریات کا شکار تعلیم یافتہ جوان ہو رہے ہیں۔ہم ان سے گزارش کرتے ہیں کہ وہ قراں مجید کا مطالعہ 1437 برس کی تاریخ کے حوالے سے نہیں بلکہ آدم علیہ سلام سے لیکر آج تک کی تاریخ کے حوالے سے کریں۔
X
1/26/2016
Muslim deeni mahaz has played glowing tributes to Shaheed Mushtaq Ahmad Laroo. After participating in the funeral of the martyr a delegation of MDM visited the bereaved family. The delegation said that the Quran stops us from terming the martyr as dead .they said that Mushtaq gave up worldly luxuries to right in More
Glowing tributes to Shaheed Mushtaq Ahmad Laroo
1/26/2016
Muslim deeni mahaz has played glowing tributes to Shaheed Mushtaq Ahmad Laroo. After participating in the funeral of the martyr a delegation of MDM visited the bereaved family. The delegation said that the Quran stops us from terming the martyr as dead .they said that Mushtaq gave up worldly luxuries to right in the way of Allah. It should be an eye opener for those who have turned materialistic. They said that the relatives of the martyr who are satisfied with his mission are to be congratulated instead of being condoled . Meanwhile the ameer of Kashmir Province has condemned the harrasing activities of police and other forces in Bugam Kulgam and Down town srinagar. He said that such tactics won't break the resolve of people.

مسلم دینی محاذ نے شہید مشتاق احمد لارو کو شاندار خراج عقیدت پیش کیا ہے - شہید کے نماز جنازہ ادا کرنے کے بعد محاذ کے ترجمان نے اس کے آبائی گھر واقع پشواڑہ اسلام آباد میں لواحقین کے ساتھ اظہار یکجہتی کرتے ہوئے کہا کہ اللہ اپنی مقدس کتاب قرآن مجید میں شہید کو نہ صرف مردہ کہنے بلکہ مردہ تصور کرنے سے بھی منع کرتا ہے اس لئے شہید کے متعلق ایسا کہنے یا تصور کرنے سے ہمیں گریز کرنا چاہیے انہوں نے کہا کہ شہید مشتاق نے دنیاوی عیش و عشرت کو خیر باد کہہ کر جسطرح سے عزیمت کی راہ اختیار کر کے شہادت کو گلے لگایا وہ مراعات و مفادات اور اقتدار کی خاطر دین و ایمان کا سودا کرنے والوں کے لئے تازیانہ ہے ترجمان نے کہا کہ شہید کے وہ عزیز و اقارب جو اس کے اللہ کی راہ میں نکلنے پر راضی و مطمئن ہوتے ہیں وہ تعزیت کے نہیں بلکہ مبارکبادی کے مستحق ہوتے ہیں دریں اثنا محاذ کے امیر صوبہ کشمیر نے وادی کے طول و عرض خصوصی طور شہر خاص اور بوگام کولگام میں بھارتی فوج و پولیس کی کارروائیوں کو جبرو استبداد قرار دے کر کہا ہے کہ ایسے مذموم حربوں و ہتهکنڈوں سے یہاں کے غیور عوام کو اسلام و آزادی کی تحریک سے دستبردار نہیں کیا جاسکتا ہے.
X
1/23/2016
Muslim deeni mahaz has said that ‪India‬ has snatched the ‪‎freedom‬ and rights of the people of Jammu Kashmir by using excessive force. The spokesperson said that India has broken promises some to people of Kashmir and at international forums. The UN resolutions regarding Kashmir have been violated by India and h More
India‬ has snatched the ‪‎freedom‬ and rights of the people of Jammu Kashmir by using excessive force.
1/23/2016
Muslim deeni mahaz has said that ‪India‬ has snatched the ‪‎freedom‬ and rights of the people of Jammu Kashmir by using excessive force. The spokesperson said that India has broken promises some to people of Kashmir and at international forums. The UN resolutions regarding Kashmir have been violated by India and has strengthened its occupation of our territory. It is using every mean possible to crush the resistance of the Kashmiri people and has created a history of massacres and human rights violation in Jammu Kashmir. There fire they have no moral right of celebrating republic day on our land and by ‪celebrating‬ these days ,holding the population in seige,they are rubbing salt to our wounds. The spokesperson said that India should not be befooled by the participation of power hungry politicians, beauracrats and people after worldly possesions in these functions. If they well these crowds at international level then what stops them from holding a plebiscite in Jammu Kashmir. They know if a fair chance is given to the people they won't be able to even save their faces. Celebrating ‪‎republic‬ in a enslaved and caged territory can be termed at best as a joke.

مسلم دینی محاذ نے کہا ہے کہ بھارت نے جموں کشمیر پر فوجی قوت کے بل بوتے پر قبضہ کر کے عوام کی آزادی اور حقوق کو پامال و سلب کر رکھا ہے - محاذ کے ترجمان نے کہا ہے کہ بھارت اپنے وعدوں، بین الاقوامی قوانین و معاہدوں اور اقوام متحدہ کی قراردادوں کی خلاف ورزی کر کے نہ صرف جموں کشمیر پر جبری طور قابض ہے بلکہ اسے برقرار رکھنے کی خاطر اس کے خلاف مبنی بر حق عوامی جدوجہد کو کچلنے کے لئے ظلم و ستم، جبر و استبداد اور قتل و غارت کی خونین تاریخ رقم کر رہا ہے - ایسے میں اسے جموں کشمیر کی سر زمین پر اپنے آئینی دن کی تقریبات و جشن منانا عوام کے زخموں پر نمک پاشی کے مترادف ہے - ترجمان نے کہا کہ اقتدار پرست سیاستدانوں، جاہ پرست آفیسروں اور مفاد و مراعات کے متلاشی دنیا پرستوں کی شرکت سے بھارتی حکمران اگر کسی خوش فہمی میں مبتلاء ہوں تو مقامی و بین الاقوامی سطح پر ڈهونڈرا پیٹنے کے بجائے انہیں جموں کشمیر میں رائے شماری کرانی چاہیے - ترجمان کے مطابق بھارت اس حقیقت سے بخوبی واقف ہے کہ اس صورت میں نتیجہ ایسا آئے گا کہ بھارت بین الاقوامی برادری کو منہ دکھانے کے قابل بھی نہیں رہیگا - یہی وجہ ہے کہ بھارت جموں کشمیر کے عوام کو رائے شماری کا حق دینے کے لئے آمادہ ہی نہیں ہوتا - ان حالات میں اسے عوامی خواہشات و جذبات کے احترام کی بات کرنا بھی زیب نہیں دیتا کجا کہ وہ اسی مناسبت سے اپنے قومی دن کی تقریب و خوشی اس خطے میں مناءے جہاں وہ روز و شب عوامی خواہشات و جذبات کا ہی نہیں بلکہ عوام کے خون کی بھی ہولی دہائیوں سے کھیلتا چلا آرہا ہے -
X
1/21/2016
Muslim deeni mahaz while paying glowing tributes to the martyrs of Naina Batapora Pulwama has said that while the muslims of Jammu and Kashmir are grieved by their death but we feel proud by their bravery and sacrifice. The spokesperson said that on one side the people with the greed of power are trading off the a More
Glowing tributes to the martyrs of Naina Batapora Pulwama
1/21/2016
Muslim deeni mahaz while paying glowing tributes to the martyrs of Naina Batapora Pulwama has said that while the muslims of Jammu and Kashmir are grieved by their death but we feel proud by their bravery and sacrifice. The spokesperson said that on one side the people with the greed of power are trading off the ambitions of the Muslim nation for pety benefits of the world but On the other hand going men like shaheed Shariq are fighting a courageous battle where they lay down their own life in order to provide a pasage to the fellow mujahideen. The spokesperson saluted the courage of the people of pulwama have shown exemplary character.despite being fired upon the people participated in large number in the funeral of the martyrs and observing impromptu strike. It showed the love people have for the mujahideen and this love is not supressed by the feae of bullets. A delegation of MDM comprising of Mufti Nadeem and molvi Nisar Ahmad visited Nayina and Bandina to express solidarity with the relatives of the martyrs .

مسلم دینی محاذ نے شہدائے ناین بٹہ پورہ کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسلامیان جموں کشمیر کو اگر چہ ان شہیدوں کی شہادت و جدائی کا غم و قلق ہے مگر ساتھ ہی ان کے جذبہ جہاد و شوق شہادت پر فخر بھی ہے -محاذ کے ترجمان نے کہا ہے کہ جہاں اپنے حقیر دنیاوی مفادات کی خاطر اقتدار پرست قوم و ملت کے ارمانوں کا خون و سودا کرنے کے لئے مستعد ہیں وہیں شہید شارق نے ہزاروں بھارتی پولیس و فوج کے سامنے سینہ سپر ہو کر اپنی جان پر کھیل کر ساتھی مجاہدین کو نکلنے کا موقع فراہم کر کے اسلاف کے جذبہ ایثار و قربانی کی یاد تازہ کر دی - ترجمان نے نہتے مظاہرین پر بے تحاشا طاقت و فائرنگ کو بھارتی فوج و پولیس کی بوکھلاہٹ قرار دے کر پلوامہ کے عوام کے عزم و استقلال کو سلام پیش کرتے ہوئے کہا کہ شہداء کے آخری سفر میں عوام کے ٹھاٹھیں مارتے سمندر کی شرکت اور رضاکارانہ ہڑتال سے ثابت ہوتا ہے کہ اسلامیان جموں کشمیر مجاہدین سے کس درجہ والہانہ محبت و عقیدت رکھتے ہیں بھارت انہیں جو اور جیسا بھی نام دے اسلامیان جموں کشمیر انہیں اپنے عظیم ہیرو اور محسن تصور کرتے ہیں اور لاٹھی و گولی سے اس نظریے کو تبدیل نہیں کیا جاسکتا ہے - محاذ کے ناظم شعبہ دعوت و تبلیغ مفتی محمد ندیم اور امیر ضلع کولگام مولوی نثار احمد نے ایک وفد کے ہمراہ ناین اور بنڈنہ جاکر شہداء کے لواحقین کے ساتھ یکجہتی کا اظہار کیا اور شہداء کی بلندی درجات، زخمیوں کی فوری شفایابی اور لواحقین کے صبر جمیل کی دعا کی
X
1/20/2016
Condemning the massacre at Peshawar University Pakistan in strongest possible terms Ameer Muslim Deeni Mahaz has said that the spillers of the blood of Muslim scholars and teachers are those who have lost humanity and have turned into beasts. The attackers have turned into puppets in the hands of anti Islam forces More
Condemning the massacre at Peshawar University Pakistan
1/20/2016 12:00:00 AM
Condemning the massacre at Peshawar University Pakistan in strongest possible terms Ameer Muslim Deeni Mahaz has said that the spillers of the blood of Muslim scholars and teachers are those who have lost humanity and have turned into beasts. The attackers have turned into puppets in the hands of anti Islam forces. World knows it very well that the strings of terror in Pakistan are being pulled from the Indian consulates in jalalabad Pakistan. It is a repetition of the Mukhti Bahani experiment of 1971. In 1971 mukhti Bahani at the behest of India killed muslims in eastern Pakistan and the modern manifestation of Mukhti Bahani the TTP at the directions of Indian Masters is killing muslims in Pakistan. Only difference between the earlier and current versions of mukhti Bahani is that in 1971 they were without beards and nowadays they sport long beards and we're turbans. Dr. MUHAMMAD QASIM AMEER MUSLIM DEENI MAHAZ THROUGH SPOKESPERSON

پشاور یونیورسٹی میں لئے گئے قتل عام کی شدید ترین الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے مسلم دینی محاذ کے محبوس امیر ڈاکٹر محمد قاسم نے کہا ہے کہ اس طرح سے معصوم طلبہ اور اساتذہ کے خون کی ہولی کھیلنا انسانیت سے عاری درندوں کا ہی کام ہوسکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ پشاور کی یونیورسٹی پر حملہ کرنے والے اسلام دشمنوں کے ہاتھوں کی کٹھ پتلیاں ہیں ۔دنیا کے سامنے یہ بات عیاں ہے کہ پاکستانی سرزمین پر معصوموں کے خون کی ہولی حلال آباد اففغانستان میں قائم بھارتی قونصل خانوں سے کھیلی جارہی یے۔1971میں بھارت نے ملٹی باہنی کے نام سے تنظیم بنا کر مشرقی پاکستان میں شورش بپا۔کی تو اس وقت ٹی ٹی پی کی صورت میں رواں دور کی ملٹی باہنی قائم کرکے پاکستان میں قتل عام کیا جارہا یے۔1971 اور آج کی مکتی باہنی میں یہی فرق ہے کہ تب ان کی داڈھی اور دستور نہیں تھے جب کہ آج کے ملٹی باہنی والے دستار بھی لگاتے ہیں اور داڑھی بھی رکھتے ہیں۔لیکن دونوں تنظیموں کا کام ایک ہی ہے بھارت کے اشاروں پر مسلمانوں کا خون بہانا ڈاکٹر محمدقاسم امیر مسلم دینی محاذ بذریعہ ترجمان
X
1/16/2016
The ‪‎rants‬ of ‪‎autonomy‬ in Jammu and Kashmir are being raised to change the demand of complete freedom into a demand of autonomy. Ideological profreedom leadership should ponder over this conspiracy preferentially. Many issues have been raised in the past year that point towards this conspiracy- 1. The signif More
The ‪‎rants‬ of ‪‎autonomy‬ in JK are being raised to change the demand of complete freedom into a demand of autonomy.
1/16/2016 12:00:00 AM
The ‪‎rants‬ of ‪‎autonomy‬ in Jammu and Kashmir are being raised to change the demand of complete freedom into a demand of autonomy. Ideological profreedom leadership should ponder over this conspiracy preferentially. Many issues have been raised in the past year that point towards this conspiracy- 1. The significance of the constitution of Jammu Kashmir. 2. Observance of a separate republic day for.the state. 3. Significance of preserving article 370. 4. The issue of a separate state flag. Raking up these issues and then creating a debate around them cannot be a mere coincidence. This is being done by the Indian state it's local dispensation, certain NGO's and few well known people on purpose. Indian state wants to achieve 3 objectives out of it 1. To change the freedom struggle into a demand for autonomy. 2. Since Jammu is against autonomy therefore to grant it separate statehood as per the plan of rss put forward in 2002 or to make.it a part of himachal as suggested by Karan Singh in 1965. 3. To give a notion to the profreedom leadership that freedom is unachievable thus they knowingly or unknowingly work with pro India parties for autonomy. We appeal the muslims of Jammu Kashmir that they should remain vigilant about these conspiracies . Since this idea of autonomy is being supported by ‪USA‬,‪Britain‬ and ‪China‬ in addition to some Muslim countries. A Few section of ‪‎Pakistan‬ government and Some pro freedom leadership is also supporting the idea tacitly. Therefore it is imperative that this idea should be resisted tooth and nail and continuing freedom struggle has become a very sensitive issue. We request ideological ‎profreedom‬ leadership to remain away from debates of Autonomy and related issues. Dr. MUHAMMAD QASIM AMEER MUSLIM DEENI MAHAZ THROUGH SPOKESPERSON

جموں کشمیر کی تحریک آزادی کو نام نہاد اٹانومی کے مطالبے میں تبدیل کرنے کی کوشش تو نہیں ہو رہی؟ نظریاتی حریت پسند پہلی فرصت میں اس معاملے پر غور فکر کریں۔ پچھلے ایک سال میں جموں کشمیر میں کچھ ایسے issues ابھارے گئے مثلا۔1۔جموں کشمیر کیلئے اپنے آئین کی اہمیت۔2۔جموں کشمیر کا اپنا یوم جمہوریہ منانے کی بات۔3۔جموں کشمیر میں دفعہ 370کی حفاظت کی بات۔4۔جموں کشمیر میں ریاستی پرچم لہرانے کی بات وغیرہ اسطرح کے issuesکو ابھارنا پھر ان کو بحث و مباحثہ کا موضوع بنانامحض اتفاق نہیں ہے بلکہ بھارتی حکومت اور اسکے مقامی آلہ کارجماعتیں ادارے اور غیر سرکاری انجمنیں اور بعض معروف شخصیات ایک منصوبے کے تحت جموں کشمیر کی نام نہاد آٹونامی کے متعلق issues کو ابھار رہے ہیں اسطرح کے issues کو ابھار کر بھارتی حکومت تین طرح کے اہداف حاصل کرنا چاہتی ہے۔1۔ آزادی کی تحریک کو آٹو نامی کے مطالبے میں تبدیل کیا جائے۔2۔جموں صوبہ چونکہ آٹونامی کے خلاف ہے اسطرح جموں کو یا الگ ریاست کے طور پر جیسا کہ RSS نے 2002 میں تقسیم ریاست کا فارمولہ پیش کیا تھا یا پھر جموں کو بھارتی ریاست ہماچل پردیش کے ساتھ جوڑ دیا جائے جیسا کہ سابق صدر ریاست رکن سنگھ نے 1965 میں تجویز پیش کی تھی۔۔3۔ حریت پسندوں کو آزادی ناممکن ہے اس لئے آٹو نامی کے مطالبے میں بھارت نواز سیاسی جماعتوں کے ساتھ اشتراک عمل پر شعوری یا غیر شعوری طور پر آمادہ کیا جائے۔ ہم ملت اسلامیہ جموں کشمیر سے گذارش کرتے ہیں کہ یہ نام نہاد آٹونامی ے معاملہ کو چونکہ امریکہ برطانیہ اور چین کے ساتھ دیگر کئی مسلم ممالک کی حمایت حاصل ہیں۔اور بعض پاکستانی حکومتی حلقے اور یہاں کے بعض حریت پشند بھی پس پردہ اس کے حمایتی ہیں اسلئے اس کی مزاحمت کرنا اور تحریک آزادی کو جاری رکھنا انتہائی اہم اور حساس معاملہ بن گیا ہے۔ ہم نظریاتی حریت پسندں سے ملتمس ہے کہ وہ کسی بھی طور اس نام نہاد آٹونامی سے متلعق issues میں شریک نہ ہوں۔ ڈاکٹر محمدقاسم امیر مسلم دینی محاذ بذریعہ ترجمان
X
1/14/2016
Muslim deeni mahaz has said that the current difficult times should not create hopelessness among the muslims of Jammu Kashmir as the people in the path of Truth have had to face these difficulties in every era. The spokesperson said that not only history but Qur'an and Sunnah bear witness to the fact the truthful More
Current times should not create hopelessness among the muslims of Jammu Kashmir
1/14/2016
Muslim deeni mahaz has said that the current difficult times should not create hopelessness among the muslims of Jammu Kashmir as the people in the path of Truth have had to face these difficulties in every era. The spokesperson said that not only history but Qur'an and Sunnah bear witness to the fact the truthfull and righteous people have to face such hardship and have been tested time and again. Therefore the people on the path of truth have to face these conditions during the present times as well. He said that we have to look into our selves how much role we play for the freedom movement because according to our role we shall he rewarded or reprimanded on the day of judgement. Paying tributes to the people of Pulwama he said that the people there are proving that they are the real heirs of the martyrs. Commenting on the U turn of the administration he said that the administration is known for these uturns since long. Since 1947 they promised us at international forums but always betrayed later on. He appealed people to make prayers for Islam freedom and Martyrs after Friday prayers

مسلم دینی محاذ نے کہا کہ کہ موجودہ کٹهن و پر آشوب حالات میں اسلامیان جموں کشمیر کو دلبرداشتہ و مایوس نہں ہونا چاہیے کیونکہ اہل حق کو ہر دور میں ایسے ہی حالات کا سامنا کرنا پڑا ہے - محاذ کے ترجمان نے کہا ہے کہ نہ صرف تاریخ بلکہ قرآن و سنت اس بات کی گواہی دے رہے ہیں کہ مومن و صدیق، ولی و صحابہ اور نبی و مرسلین تک اس راہ میں نہ صرف آزمائے گءے بلکہ ہلا دیءے گءے ہیں اس لئے آج بھی اہل حق کو بھی ایسی صورتحال سے لازمی طور دوچار ہونا پڑے گا - ترجمان نے کہا کہ ہم میں سے ہر کسی کو اس بات کا محاسبہ کرنا چاہیے کہ ہم موجودہ اسلام و آزادی کی مقدس و مبنی برحق جدوجہد کا کس قدر تعاون و حمایت کر رہے هیں کیونکہ اسی کے مطابق یہاں دنیا میں ہمارا اجر و ثواب لکھا جاءیگا اور اسی کے مطابق میدان محشر میں ہماری اخروی زندگی کے متعلق فیصلہ بھی ہوگا - اسلامیان ضلع پلوامہ کے عزم و استقلال کو سلام و خراج تحسین پیش کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ حقیقی طور پر خود کو شہداء کے وارث ثابت کر رہے هیں - ترجمان نے قابض انتظامیہ کی قلابازی کے متعلق کہا کہ انہوں نے یہ ثابت کیا کہ اپنے آقاؤں کی طرح سے ان کے وعدے بھی مکر و فریب کے سواء اور کچھ بھی نہیں ہوتے -جنہوں نے انیس سو سنتالیس میں بین الاقوامی برادری کو گواہ ٹهراہ کر کشمیری عوام سے وعدے کءے مگر تاایں دم وفا نہ کءے - ترجمان نے اسلامیان جموں کشمیر سے مودبانہ اپیل کی کہ جمعتہ المبارک کے مبارک موقع پر بارگاہ الہی میں خشوع و خضوع سے اسلام و آزادی کے حصول، شہداء کے درجات کی بلندی اور نظربندوں کی صبر و استقامت ، صحت و سلامتی اور رہائی کے لئے دعاءووں کا اہتمام کریں -
X
1/12/2016
Muslim Deeni Mahaz while paying glowing tributes to Shaheed Sajad Ahmad Bhat has said that participation of a large number of people in the funerals of the Mujahideen cannot absolve us of our responsibilities towards the freedom movement. The spokesperson said that the Mujahideen achieve success of this world and More
Muslim Deeni Mahaz while paying glowing tributes to Shaheed Sajad Ahmad Bhat
1/12/2016
Muslim Deeni Mahaz while paying glowing tributes to Shaheed Sajad Ahmad Bhat has said that participation of a large number of people in the funerals of the Mujahideen cannot absolve us of our responsibilities towards the freedom movement. The spokesperson said that the Mujahideen achieve success of this world and hereafter when the first drop of their blood touches the ground . But we are left with the responsibility of furthering their mission for which we will be answerable in front of Allah. The one who struggles for the cause will be successful while as those who for mere worldly benefits is reluctant in struggling according to his capabilities or creates hurdles for this movement will be eternally damned. Therefore we should work for taking the mission of martyrs to its logical conclusion. The spokesperson termed the hurdles created by police in installing the memorial of martyrs in Shaheed Park Pulwama as frustration. He said that the park is in memory of the martyrs of 1931 and thus the tyranny meted out by police in the name of opposition the hoarding is a worst example of state terrorism. This cannot effect the immense love and respect for the martyrs in the heart of the people.

مسلم دینی محاذ نے شهید سجاد احمد بٹ کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا ہے کہ شہداء کے جنازوں میں جوش و جذبے سے شرکت اور ان کو شاندار انداز میں خراج عقیدت پیش کرنے سے ہم ان کے تئیں اپنی ذمہ داریوں سے بری الذمہ نہیں ہو سکتے - محاذ کے ترجمان نے کہا ہے کہ شہداء مقدس لہو کا پہلا ہی قطرہ زمین پر گرنے سے پہلے ہی اخروی زندگی کے مقصد میں کامیاب و کامران ہوجاتے ہیں مگر ان کے دنیاوی مقصد اسلام و آزادی کے حصول و تکمیل کی ساری ذمہ داری ہم پر قرض و فرض چهوڑ جاتے ہیں جن کے متعلق ہم سےمیدان محشر میں اللہ کی بارگاہ میں لازمی طور پر سخت محاسبہ ہوگا ہم میں سے جو اس کے لئے اخلاص کے ساته جدوجہد کریگا وہی وہاں کامیاب و کامران ہوگا اور جو دنیاوی مفادات ومراعات کی خاطر اس پاک و مقدس جدوجہد کا ساته دینے سے کتراءے گا یا اس کی راہ میں رکاوٹیں کھڑی کریگا اس کا حشر بھی ان کے دشمنوں و قاتلوں کے ساتھ ہی ہوگا - اس لئے ہمیں ان شہیدوں کے مقدس مشن اسلام و آزادی کے حصول و تکمیل کے لئے جہد و جہد کا ساته ہر قیمت پر دیتے رہنا چاہیے. ترجمان نے بهارتی قابض انتظامیہ و پولیس کی طرف سے پلوامہ کی شہید پارک میں شہداء کی یادگار نصب میں رکاوٹ و مداخلت کو بهوکلاہٹ قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ یہ پارک 1931 سے شہداء کے نام سے موسوم و منسوب ہے لہذا اس میں شہداء کی ہورڈنگ نصب کرنے کی راہ میں مداخلت کی آڑ میں ظلم و جبر، جیل و تعذیب اور لاٹھی وگولی کا بازار گرم کرنا سرکاری دہشت گردی کی بدترین مثال ہے - اس سے شہداء کے تئیں والہانہ عوامی عقیدت و احترام میں ذرہ برابر بھی کمی واقع نہیں ہو سکے گی بلکہ اس سے یہ دوبالا ہو گی - اور بہارت و اسکے آلہ کاروں کے خلاف نفرت و غیظ و غضب میں اور زیادہ اضافہ ہوگا -
X